ہاں! خوارج کے نزدیک مسلمان عورتوں کا قتل جائز ہے۔!!!

’’عبدل‘‘ نے 'فتنہ خوارج وتكفير' میں ‏اکتوبر، 11, 2012 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. ’’عبدل‘‘

    ’’عبدل‘‘ -: محسن :-

    شمولیت:
    ‏جنوری 2, 2012
    پیغامات:
    118
    السلام علیکم ورحمۃ اللہ۔
    جناب کسی عورت کا قتل؟؟؟
    جنگ میں تو کسی کافرہ عورت کا دانستہ قتل بھی حرام ہے اور نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کام سے سختی کے ساتھ منع فرمایا تھا۔
    تو پھر کس شرعی قاعدہ کی بنیاد پر ، کس منہج کے تحت ٹی ٹی پی نے اپنی نام نہاد جنگ میں ایک مسلمان بچی کو دانستہ طور پر قتل کرنے جیسا قبیح عمل کیا؟؟؟

    آپ بھی سوچ رہیں ہوں گے کہ کس چیز نے ان کو اس مذموم عمل پر ابھارا؟؟؟

    جی ہاں!! اسکی دلیل ہے ان کے پاس۔۔ مسلمان عورتوں کو قتل کیا جا سکتا ہے۔۔اور ان کے آباو اجداد بھی اسی شرعی کلئیے کے تحت یہ کام کرتے آئے ہیں۔۔ اور وہ ہے:
    [h2]
    اختلاف رائے!!
    [/h2]

    حضرت عبد اﷲ بن خباب رضی اللہ عنہ اور ان کی زوجہ کا سفاکانہ قتل

    امام طبری، امام ابن الاثیر اور حافظ ابن کثیر روایت کرتے ہیں :
    اس واقعے کے بعد:
    لہذا ، یہ کوئی انہونی اور نئی حرکت ہر گز نہیں کہ جس پر حیرت کا اظہار کیا جائے۔
     
  2. عبد الرحمن یحیی

    عبد الرحمن یحیی -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 25, 2011
    پیغامات:
    2,312
    [font="al_mushaf"]بارك اللہ فیك ڈاکٹر[/font]
     
  3. dani

    dani نوآموز.

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 16, 2009
    پیغامات:
    4,329
    جزاک اللہ خیرا
    اللہ میرے وطن کو ان امریکی ایجنٹوں سے پاک فرمائے

     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں