یمنی صدر کی درخواست پر سعودیہ سمیت کئی مسلم ممالک کی حوثیوں کے خلاف فوجی کارروائی عاصفۃ الحزم

ابوعکاشہ نے 'خبریں' میں ‏مارچ 26, 2015 کو نیا موضوع شروع کیا

موضوع کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے کھلا نہیں۔
  1. فرخ

    فرخ -: محسن :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 12, 2008
    پیغامات:
    369
    یہ وہ بات ہے جو میں شروع سے کہہ رہا ہوں۔۔ ایران کی پشت پناہی کرنے والے روسی اور سعودیوں کی پشت پناہی کرنے والے امریکی اصل فتنہ ہیں۔۔۔ ورنہ یہودیوں کو تو اسلامی ادوار میں بیت المقد س میں بھی امان حاصل رہی ہے۔۔۔۔
    خود سوچئیے اس جنگ سے فائدہ نہ ایران کا ہے نہ سعودیوں کا، جن کا اسلحہ بک رہا ہے، وہی ان کی پشت پناہی کر رہے ہیں۔۔۔ مگر ہر چیز کو مسلکی اور مذھبی اختلافات میں تولیں گے،تو اصل دشمن نظر نہیں آئے گا اپ کو۔۔۔

     
  2. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,903
    آپ تو ایسے لکھ رہے کہ ابھی ابھی کسی غار سے نکل آئے ہیں ۔ اور یہاں مکاتب فکر کی بندر بانٹ دیکھ کر پریشان ہو گئے کہ یہ سب غلط ہے ۔۔ سب نے جنت میں جانا ہے اور یہ گروہ بندی کیوں ؟؟ اور تلوار لیکر سب کی گردنیں اتارے میں لگے کہ یہ سب غلط ہے ۔ اللہ ہی حافظ ہے ۔۔۔
     
  3. فرخ

    فرخ -: محسن :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 12, 2008
    پیغامات:
    369
    بہت خوب، جملے پکڑنا تو کوئی آپ سے سیکھے۔۔۔ کوئی دینی عالم تو بتائیے جو ایٹمی ٹیکنالوجی سے متعلق اچھا علم فراہم کر سکیں؟
     
  4. فرخ

    فرخ -: محسن :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 12, 2008
    پیغامات:
    369
    میں نے شائید آپ کو پہلے بھی بتایا تھا کہ میں پیدائیشی یا گھریلو اھلحدیث نہیں ہوں۔۔ میں نے بریلیوی اور دیوبندیوں کے مکس کلچر یا کھچڑی کلچر میں آنکھ کھولی تھی اور پھر وقت کے ساتھ تحقیق کرتے ہوئے اھلحدیث مکتبہ ء فکر کو اپنایا تھا۔۔ میں غاروں میں نہیں رہا، بلکہ ان سب میں گروہ بندیوں اور مسلمانوں کو ان گروہوں کا حصہ بننے کے طریقوں سے واقف ہونے کے بعد یہ بات کہہ رہا ہوں ۔۔۔ یہ انہی علماء کے کرتوت ہیں جن کی تقاریر قرآنی آیات، درود شریف اور دیگر خوبصورت اور مسلمانوں کے لئے مقدس ترین کلمات سے شروع ہوتی ہیں اور پھر اپنی دکان کے سوا دوسروں کی دکانداری پر تنقید ، دین سے ہٹے ہوئے اور حتٰی کہ کفر کے راستوں پر چلنے والے قرار دینے پر ختم ہوتی ہے۔۔۔۔ ایسے علماء کی حرکتیں اور ان کے پیچھے چلنے والے مسلمانوں کے نتائج کوئی پہلی مرتبہ نہیں دیکھ رہا میں۔۔۔۔۔
     
  5. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,903
    فرخ بھائی ۔ اگر آپ کی بات مان لی جائے کہ اگر جنگ کا فائدہ نا ہوا۔۔ ؟؟
    سوال یہ ہے کہ اس جنگ کا فیصلہ کس نے کیا ؟
    کیا کوئی گروہ ؟
    کوئی جماعت ؟
    یا آپ نے یا میں نے ؟
    ظاہر ہے کہ ایک ملک نے یہ کاروائی کی جسے اتحادی ممالک کی حمایت حاصل تھی ۔ ۔ ان میں بے شمار ایسے علماء موجود ہں ۔ جنہیں اللہ نے فہم وبصیرت سے نوازہے ۔کوئی بھیڑبکریاں چرانے والے نہیں کہ انہیں جیسے ہانک دیا جائے اوروہ اسی سمت چل دیے ۔
    کسی بھی جنگ کے فوائد اور نقصانات کیا ہوتے ہیں ۔اس کا اندازہ لگانا بھی قبل ازوقت ہے اور اس طرح کی نجومیوں والی قیاس آرئیاں درست نہیں ۔
    رہی بات اسلحہ خریدنے کی تو کیا اسلحہ خریدنا حرام ہے ؟
    اب اگر ایران سے پابندی ختم ہوں گی تو کیا وہ اسلحہ نہیں خریدے گا ؟
    یہ تو جنگی ضروریات ہیں ۔ ہرزمانے میں مسلمانوں کی یہودیوں اورعیسائیوں سے یہ ضرورت پوری ہوتی رہی ہے ۔
    اصل دشمن کا فیصلہ اپنے وقت پر ہو گا ۔۔
    علماء کرام کی ''شیعہ اور یہود کی مشترکہ قدروں " پر کتابیں موجود ہیں ۔۔ اور آپ کہتے ہیں کہ علماء کے پاس کام کی باتیں نہیں ۔وجہ یہ ہے ہم اپنے اصل دشمن کو نہیں پہچان نہیں سکے ۔ کام کی باتیں اگر اصل دشمن سے لینی ہے ۔ تو بحث کس چیز پر ۔؟انتظار فرمائیں جب تک کہ اللہ فیصلہ نا کردے
     
  6. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,903
    ان شاء اللہ ۔ آپ بھی جملے پکڑنا سیکھ جائیں گے : ) کیا امریکہ اور برطانیہ میں کلیسا میں بیٹھنے والے ایٹمی ٹیکنالوجی کا علم رکھتے ہیں ۔ اور کیا یہ ضروری ہے کہ یہ علم علماء کے پاس ہونا چاہے ۔ اللہ رحم فرمائے ۔
     
  7. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,903
    یہ الگ موضوع ہے ۔ لیکن تمام علماء کرام کو موردالزام ٹھہرانا درست نہیں ۔ جہاں تک تکفیر کی بات ہے تو اس میں کوئی شک نہیں کہ ایسے علماء قصوروار ہیں جو لوگوں کی ایسی تربیت کرتے ہیں ۔ فی الوقت یہ بھی اس تھریڈ کا موضوع نہیں ۔ جزاکم اللہ خیرا۔
     
  8. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,487
    ترکی نے بھی عاصفۃ الحزم کے لیے مدد کی پیش کش کر دی
    ترک وزیرخارجہ مولود کاوس اوغلو نے کہا ہے کہ ان کا ملک یمن میں جاری بحران کا سیاسی حل چاہتا ہے لیکن اس نے ایران کے حمایت یافتہ حوثی شیعہ باغیوں کے خلاف سعودی عرب کی قیادت میں فضائی مہم کے لیے مدد کی پیش کش کی ہے۔

    کاوس اوغلو نے لیتھوینیا کے دورے کے موقع پر جمعہ کو نیوز کانفرنس کے دوران کہا ہے کہ ''ترکی نے سعودی عرب کی قیادت میں آپریشن کے لیے لاجسٹیک مدد کی پیش کش کی ہے اور ہم سراغرسانی میں مدد بھی کرسکتے ہیں لیکن ہم یمن میں جاری بحران کا سیاسی حل چاہتے ہیں''۔

    واضح رہے کہ نیٹو اتحاد میں شامل ممالک میں ترکی کی دوسری بڑی فوج ہے۔اس نے ابھی تک سعودی عرب کی قیادت میں یمن میں حوثی شیعہ باغیوں کے خلاف گذشتہ ہفتے سے جاری آپریشن فیصلہ طوفان میں کوئی فعال کردار ادا نہیں کیا ہے۔

    کاوس اوغلو کا کہنا ہے کہ ترکی سے ابھی تک سعودی عرب کی سیاسی حمایت کے سوا کوئی مطالبہ نہیں کیا گیا ہے لیکن انھوں نے حوثی شیعہ ملیشیا کو تنقید کا نشانہ بنایا ہے۔ ترک وزیرخارجہ کا کہنا تھا کہ ''حوثی یمن میں جو کچھ کررہے ہیں،وہ ناقابل قبول ہے۔اس سے ملک عدم استحکام کا شکار ہورہا ہے''۔
    حوثی باغیوں نے اپنے اتحادیوں کے ساتھ مل کر گذشتہ سال ستمبر سے دارالحکومت صنعا پر قبضہ کررکھا ہے۔اس کے بعد انھوں نے یمن کے جنوبی شہر عدن اور دوسرے شہروں کی جانب بھی چڑھ دوڑے تھے۔ان کی اس توسیع پسندانہ یلغار کے بعد سعودی عرب نے صدر عبد ربہ منصور ہادی کی درخواست پر یمن میں حوثیوں اور ان کی اتحادی ملیشیاؤں پر فضائی حملے شروع کیے تھے۔

    ترکی کی جانب سے سعودی عرب کی قیادت میں اس مہم کے لیے زبانی حمایت سے اس کے ایران کے ساتھ تعلقات مزید خراب ہوسکتے ہیں۔گذشتہ ہفتے ترک صدر رجب طیب ایردوآن نے ایران پر مشرق وسطیٰ میں اپنی بالادستی قائم کرنے کا الزام عاید کیا تھا اور اس سے مطالبہ کیا تھا کہ وہ حوثیوں کی حمایت سے دستبردار ہوجائے۔

    ایران حوثیوں کی یمن کی مجاز صدر عبد ربہ منصور ہادی کی حکومت کے خلاف مہم کی تو حمایت کرتا ہے لیکن وہ حوثیوں کو فوجی امداد دینے یا وہاں اپنے فوجی بھیجنے کی تردید کرتا چلا آرہا ہے۔ایران نے صدر ایردوآن کے بیان پر تہران میں متعیّن ترک سفیر کو طلب کیا تھا اور ان سے اس بیان پر احتجاج کیا تھا۔رجب طیب ایردوآن ترکی کی جانب سے ایران مخالف ان بیانات کے باوجود آیندہ ہفتے تہران کا دورہ کرنے والے ہیں۔




    http://urdu.alarabiya.net/ur/intern...ی-کی-حوثی-مخالف-مہم-کے-لیے-مدد-کی-پیش-کش.html
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  9. Bilal-Madni

    Bilal-Madni -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 14, 2010
    پیغامات:
    2,469
    يهوديو کے سگے بھائ روافض يمن مےہی دفن هو جائے گےانشاالله يمن مي سلفيو پر بہت ظلم كيا ہے انھو نے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  10. dani

    dani نوآموز.

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 16, 2009
    پیغامات:
    4,329
    بڑی اچھی بات ہے یہاں تو مسلکی اختلافات کو ہوا دی جا رہی ہے جسے فرخ بھائی بھجاتے بھجاتے تھک گئے ہیں لیکن حسن نصراللہ لبنان کی حکومت پر بھونک رہا ہے تو مسلمانوں کے اتحاد کے لیے بھونک رہا ہے ایرانی جنرل قسم سلیمانی عراق شام اور اب یمن میں اسلام نافذ کرتا پھر رہا ہے، عراق میں نوری المالکی سنی مسلمانوں کے لیے شہد کی نہریں نکال رہا ہے اور بشار الکلب ہوائی جہازوں سے پھول برسا رہا ہے۔ غیر جانب داری کی جدھر حد ختم ہوتی ہے ادھر بے غیرتی کی سرحد شروع ہوتی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  11. dani

    dani نوآموز.

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 16, 2009
    پیغامات:
    4,329
    یہ غیر جانب دارشیعہ غنڈوں کی رواداری
    یمن آپریشن کی حمایت، حزب اللہ کی لبنانی حکومت مفلوج کرنے کی دھکی
    یمن میں ایران نواز حوثی شدت پسندوں اور سابق صدرعلی عبداللہ صالح کے حامیوں کے خلاف سعودی عرب کے ’’فیصلہ کن طوفان‘‘ آپریشن پر لبنانی حکومت کی جانب سے کھل کر حمایت کو حزب اللہ نے سخت تنقید کا نشانہ بنایا ہے اور ساتھ ہی دھمکی دی ہے کہ وہ یمن میں فوجی آپریشن کی حمایت پر بیروت حکومت کو مفلوج کرسکتی ہے۔

    العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق لبنانی وزیراعظم تمام سلام کی 28 مارچ کو مصرمیں منعقدہ عرب سربراہ کانفرنس میں شرکت بھی حزب اللہ سخت ناگواری گذری ہے۔ سربراہ کانفرنس میں وزیر اعظم سلام کی جانب سے یمن میں جاری فوجی آپریشن کی حمایت پر حزب اللہ نے سخت برہمی کا اظہار کرتے ہوئے اس بات کا عندیہ دیا ہے کہ وہ کسی بھی وقت بیروت حکومت کو مفلوج کرسکتی ہے۔

    میڈیا رپورٹس کے مطابق لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ اوروزیراعظم تمام سلام کے درمیان اس وقت اختلافات زیادہ شدت اختیار کرگئے ہیں۔ وزیراعظم نے حزب اللہ کے سربراہ حسن نصرا للہ کی جانب سے آج[ بدھ ] کے روز ہونے والے کابینہ کے اجلاس میں رخنہ ڈالنے سے متعلق بیان پر کڑی تنقید کی ہے۔ وزیراعظم کا کہنا ہے کہ حزب اللہ یمنی بحران کو دانستہ طورپر لبنان میں منتقل کرنے کی سازش کررہی ہے۔

    رپورٹ کے مطابق حزب اللہ اور لبنانی حکومت کےدرمیان تنائو اس وقت پیدا ہوا جب شرم الشیخ میں منعقدہ عرب سربراہ کانفرنس کے موقع پر وزیراعظم تمام سلام نے یمن میں حوثیوں کے خلاف سعودی عرب کے فوجی آپریشن کی کھل کر حمایت کی۔ شرم الشیخ میں یمن میں فوجی آپریشن کی حمایت کے ساتھ ہی حزب اللہ کی قیادت اور جماعت کے حامیوں کی طرف سے ایک طوفان کھڑا کردیا گیا۔ ہرطرف سے وزیراعظم تمام سلام کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا جانے لگا۔ حزب اللہ کی جانب سے متعدد مرتبہ دھمکی آمیز بیان میں کہا گیا کہ اگر بیروت نے یمن میں فوجی کارروائی کی حمایت واپس نہ لی تو حکومت کو مفلوج کرکے رکھ دیا جائے گا۔

    حزب اللہ کے رکن پارلیمنٹ اور حکومت میں شامل وزیر حسین الحاج حسن نے ایک ٹی وی انٹرویو میں کہا کہ عرب سربراہ کانفرنس سے وزیراعظم تمام سلام کا خطاب پوری لبنانی قوم کی نمائندگی نہیں کرتا۔ ہم نے یمن میں ان کی جانب سے فوجی کارروائی کی حمایت کو مسترد کردیا ہے۔

    انہوں نے کہا کہ شرم الشیخ میں منعقدہ عرب سربراہ کانفرنس میں وزیراعظم تمام سلام کو وہی کچھ کہتے سنا گیا جو وہاں پر بیشتر عرب ممالک کے قائدین کہہ رہے تھے۔ وزیراعظم کی جانب سے یمن میں سعودی عرب کی فوج کشی کی حمایت کرنا لبنان کے قومی موقف سے انحراف ہے۔

    دوسری جانب وزیراعظم تمام سلام نے بھی حزب اللہ رہ نمائوں کی تنقید کا بھرپور جواب دیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ میں نے شرم الشیخ میں عرب سربراہ کانفرنس کے دوران جو کچھ بھی کہا وہ قومی مفاد میں کہا ہے۔ یمن میں جاری سعودی عرب کے فوجی آپریشن کی حمایت کرنا لبنان کے قومی مفاد میں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہمیں پوری عرب دنیا کے اجتماعی فیصلے کا ساتھ دینا چاہیے۔ لبنان بھی عرب دنیا کا حصہ ہے۔ اس لیے ہم کوئی الگ سےموقف اختیار نہیں کرسکتے۔ عرب ممالک کی اجتماعی سوچ سے ہٹ کر فیصلے کرنا قومی مفاد کے خلاف ہوگا۔
    http://urdu.alarabiya.net/ur/middle...-اللہ-کی-لبنانی-حکومت-مفلوج-کرنے-کی-دھکی.html
     
  12. dani

    dani نوآموز.

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 16, 2009
    پیغامات:
    4,329
    رفیق الحریری کے قاتلوں کو سعد الحریری کا منہ توڑ جواب
    لبنان کے سابق وزیراعظم سعد حریری نے شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے سیکرٹری جنرل حسن نصراللہ کے اس بیان کی شدید مذمت کی ہے جس میں انہوں نے یمن میں سعودی عرب کے ’فیصلہ کن طوفان‘ آپریشن پر کڑی نکتہ چینی کی تھی۔ سعد حریری کا کہنا ہے کہ حزب اللہ سربراہ کا بیان ’’نفرت کا طوفان‘‘ ہے انہوں نے یمن میں ایرانی مداخلت روکنے کے لیے سعودی عرب کی فوجی کارروائی کی مذمت کر کے اپنی نفرت کا اظہار کیا ہے۔

    العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق مائیکرو بلاگنگ ویب سائیٹ ’’ٹیوٹر‘‘ پر پوسٹ کیے گئے ایک بیان میں سعد حریری کا کہنا تھا کہ حزب اللہ کے جنرل سیکرٹری حسن نصراللہ کا بیان ’نفرت کا طوفان‘ ہے جو کسی تبصرے کے لائق نہیں ہے۔ سعودی عرب پر تنقید ایک ایسے شخص کی جانب سے کی گئی ہے جو غصے میں بے قابو اور ذہنی توازن کھو چکا ہے۔ اس طرح کے بیانات غصے اور ذہنی توازن درست نہ ہونے اور اندر سے ٹوٹ پھوٹ کا شکار شخص ہی دے سکتا ہے۔

    انہوں نے مزید کہا کہ حزب اللہ کے سربراہ کی تنقید کے باوجود لبنان اور سعودی عرب کے درمیان دوستانہ تعلقات پر کوئی فرق نہیں پڑے گا۔ دونوں ملکوں کے عوام میں نفرت کے بیج بونے کی سازشیں ماضی میں بھی بہت ہوتی رہی ہیں۔ اس نوعیت کی شرانگیز مہمات آئندہ بھی کامیاب نہیں ہوں گی۔

    سعد حریری کا کہنا تھا کہ سعودی عرب اور تمام خلیجی ممالک نے لبنان کی ہمیشہ مشکل وقت میں مدد کی ہے۔ لبنان میں ہونے والی خانہ جنگی کے خاتمے اور تعمیرو ترقی کے میدان میں سعودی عرب کی مساعی کو ہمیشہ قدر کی نگاہ سے دیکھا جائے گا۔

    http://urdu.alarabiya.net/ur/middle...د،-سعد-حریری-کا-حزب-اللہ-کو-منہ-توڑ-جواب.html
     
  13. dani

    dani نوآموز.

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 16, 2009
    پیغامات:
    4,329
    ایسے غیر جانب دار سنیوں سے بہتر حزب اللہ کا بانی ہے جس نے حسن نصراللہ کی بکواس کا منہ توڑ جواب دیا ہے
    لبنان کی ایران نواز شیعہ ملیشیا حزب اللہ کے بانی رہ نما اور تنظیم کے سابق سیکرٹری جنرل صبحی الطیفلی نے یمن میں حوثی شدت پسندوں کے خلاف جاری سعودی عرب اور اتحادیوں کے آپریشن کی بہ ظاہر حمایت کی ہے۔ انہوں حزب اللہ کی جانب سے گذشتہ جمعہ کو اپنی تقریر میں یمن میں فوج کشی پر سعودی عرب پر تنقید بھی مسترد کردی ہے۔

    ترک خبر رساں ایجنسی’’اناطولیہ‘‘ سے بات کرتے ہوئے صبحی الطفیلی کا کہنا تھا کہ[HIGHLIGHT] حزب اللہ خود شام میں صدر بشارالاسد کی حمایت میں لڑ رہی ہے۔ اسے یمن میں جاری بغاوت کی حمایت نہیں کرنی چاہیے۔ حزب اللہ کے سربراہ حسن نصراللہ کی جانب سے سعودی عرب کو تنقید کا نشانہ بنانا حیرت کی بات ہے[/HIGHLIGHT]۔

    انہوں نے حزب اللہ کے سیکرٹری جنرل کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ’’فیصلہ کن طوفان‘‘ آپریشن پر تنقید کرنے سے قبل [HIGHLIGHT]حسن نصراللہ اپنے گریبان میں جھانکیں۔ کیا وہ شام میں بغاوت کی مخالفت نہیں کررہے ہیں۔ [/HIGHLIGHT]دوسروں کی شکست سے قبل آپ کو خود شکست خوردہ ہوچکے ہیں۔ جو بات آپ دوسروں کے بارے میں کہتے ہیں خود اس کے تیرو نشتر آپ ہی کی طرف ہیں۔
    http://urdu.alarabiya.net/ur/middle-east/2015/04/01/حزب-اللہ-کے-بانی-رہ-نما-کی-یمن-فوجی-آپریشن-کی-حمایت.html

    شامی باغی تو بہت برے ہیں اس لیے ان پر بم برسیں اور یمنی باغی اچھے ہیں اس لیے ان پر بمباری نہ ہو؟
    یہ ہے آپ لوگوں کی غیر جانب داری؟
    اس سے بہتر سعودیہ ہے جس نے
    نہ مصر میں بغاوت کی حمایت کی ،
    نہ شامی Bاغیوں کی حمایت کی اپنے ملک سے جو نوجوان شام میں بغاوت کرنے گئے انہیں واپس بلوایا اور
    وہی یمنی باغیوں کا بھی مخالف ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 3
  14. فرخ

    فرخ -: محسن :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 12, 2008
    پیغامات:
    369
    مجھے اس جملے پر احتجاج کرنے کا پورا حق ہے ۔ اور غیر جانبدار رہنے کا بھی۔۔۔۔۔۔
    لیکن بے غیرتی کی حد ہی دیکھنی ہے، تو ماضی میں انہی سعودیوں کی امریکی نوازیوں کا ڈھیر دیکھ لیجئے گا اور اس وقت بھی جب فلطینیوں پر بمباری کی جاتی رہی، یہ سعودی اس وقت سوئے رہے تھے۔۔۔ یہود و نصارٰی کی دوستی میں شائید فلطیینی بے غیر ت رہے، اور باقی غیر شعیہ مسلم دنیا بھی بے غیرت ہی تھی کہ جن کے لئے ایسے کوئی اتحاد نہ بن سکے۔۔۔۔ اور یہ سعودی امریکی صدر کو بوسے دیتےرہے اور انتہائی غیرت کے ثبوت دیتے رہے۔۔۔۔۔ ۔ کہتے ہیں تو آپ کی طرح ان کے کرتوتوں پر مشتمل آرٹیکلز اور تصاویر کا ڈھیر لگا دوں؟ انٹرنیٹ بھرا پڑا ہے ان سے۔۔۔!

     
  15. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,903
    غیرجانبدار رہنا بہتر ہے ـ کیونکہ آپ تو ان لوگوں میں شامل نہیں جو بے غیرت ہیں ـ لوگوں کے ایسے اعتراضات کو مان لیا جائے جو وہ سعودیہ پر کرتے رہتے ہیں ـتو پھر بھی ہم یہی کہیں گے،ایران،شیعہ ،حوثی ،لبنانی،حزب الشیطان ،بشارالکلب کے سینوں میں اللہ سے دشمنی ، اس کے قرآن سے دشمنی ،رسول ﷺ سے دشمنی ،صحابہ کرامؓ اور ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا سے بغض موجود ہے ـ یہ بے غیرتی تو سعودیہ کے حکمرانوں، ان کے علماء میں موجود نہیں ـ الحمد للہ ـ وہ شخص بھی بڑا بے غیرت ہے جو ان تمام حقائق کو پس پشت ڈال کر ایران سے کسی قسم کی اتحاد کی بات کرتا ہے یا اہل ایمان کے ساتھ موازنہ کرتا ہے ۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 3
  16. طالب علم

    طالب علم -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 24, 2007
    پیغامات:
    958
    سعودی عرب سے تکلیف کی اصل وجہ؟؟؟؟؟
    ------------

    اس وقت عالم کفر ڈرتا ہے تو صرف اہل توحید اوراہل ایمان سے
    اللہ کی قسم کھا کر کہتا ہوں کہ دھرتی کے اوپر اگر اہل توحید کے لئے کوئی زمین ایسی ہے جہاں پر نہ گھوڑے پوجے جاتے ہیں،
    نہ قبریں پوجی جاتی ہیں،نہ جھنڈے پوجے جاتے ہیں
    نہ کڑے اور منکے پوجے جاتے ہیں
    وہ دھرتی صرف مملکت سعودی عربیہ کی ہے
    اللہ رحمت کرے محمد بن عبدالوہاب نجدی رحمتہ اللہ علیہ پر
    اللہ کروٹ کروٹ جنت عطا کرے محمد بن سعود رحمتہ اللہ علیہ کو
    اللہ ہر دم اس کی قبر کو نور سے بھر دو ملک عبدالعزیز رحمتہ اللہ علیہ کو
    اس نے اس دھرتی کو شرک سے، اہل شرک سے پاک کر کے ایک اللہ کی توحید کاجھنڈا گاڑا
    دنیا کے کونے کونے میں پھر لیجئے
    کہیں گھوڑے شاہ،
    کہیں کھوتے شاہ، کہیں بٹیرے شاہ،
    کہیں تیتر شاہ
    کہیں حسین کی پوجا
    کہیں حسن کی پوجا
    کہیں فاطمہ کی پوجا

    کہیں علم کی پوجا
    کہیں قبر کی پوجا

    اور اگر کسی دھرتی پہ پوجا ہوتی ہےصرف اللہ کی تو پوری دنیا کے اندر وہ دھرتی مملکت سعودیہ عربیہ ہے

    ----------مقرر سید توصیف الرحمٰن۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    آج مجھے افسوس ہے ہمارے پرنٹ اور الیکٹرانک میڈیا میں کوئی نظر نہیں آتا جو اہل توحید کی سائیڈ لے سکے۔ سارے ہی ان آل یہود یعنی ایران کی سائیڈ لینے پر تلے بیٹھے ہیں، خیر لیتے رہیں سائیڈ، گو کہ آپکا پراپیگینڈہ بہت مظبوط ہے لیکن توحید کی دولت تو آپ ہمارے سینوں سے نہیں نکال سکتے۔۔۔۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 3
  17. فرخ

    فرخ -: محسن :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 12, 2008
    پیغامات:
    369
    میرے آل سعود کی امریکی مہربانیوں والی بے غیرتیوں پر نکتہ چینی کا یہ ہر گز مطلب نہیں کہ میں شیعوں، حوثیوں وغیرہ کو صحیح مانتا ہوں یا ان کی بے غیرتی سے واقف نہیں ہوں۔۔۔ اور نہ ہی ابھی تک میں مذھبی بنیادوں پر انکا موازنہ کر رہا ہوں۔۔ مگر شیعوں کے دشمنی ، بے غیرتی وغیرہ کا یہ مطلب بھی نہیں کہ سعودی بہت باغیرت قسم کے کام کر رہے ہیں۔۔۔ دو غلط کبھی صحیح کو جنم نہیں دے سکتے۔۔۔۔
    بات پہلے بھی صاف کہی، اب بھی کہہ رہا ہوں۔۔۔ اس جنگ کا فائدہ صرف اور صرف غیرمسلموں اور اسلام دشمن قوتوں کو ہی ہورہا ہے۔اور لڑنے والوں کا نقصان ہی نقصان۔۔۔ دوسری طرف یمن میں اس بمباری سے ان لوگوں کے مارے جانے کی بھی خبریں مل رہی ہیں جو اس جنگ کا حصہ نہیں بنے۔۔۔ بدقسمتی سے ان میں بچے بھی شامل ہیں۔۔۔۔ گویا جو اسرائیل چاہ رہا ہے ، اس جنگ سے شرکاء پورا کرتے نظر آرہے ہیں۔۔۔۔
     
  18. فرخ

    فرخ -: محسن :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 12, 2008
    پیغامات:
    369
    سعودی عرب نہیں، آل سعود اور ان کے امریکیوں کے ساتھ روابط۔۔۔
    عرب۔
     
  19. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,903
    سمجھا دیں کہ سعودیہ کے بے غیرت قسم کے کام کون سے ہیں ۔ اگر کسی کا نامحرم کوہاتھ ملانا یا حکمرانوں کا بوسہ لینا وغیرہ ۔ ان جرائم کی حیثیت کیا ہے ؟ ایران اور شیعہ کی بے غیرتیوں کے مقابلے میں کیا ان پر الزام بنتا ہے؟
     
  20. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,903
    ہم یمن میں حزب اللہ کا ایڈیشن نہیں چاہتے: سعودی سفیر
    (العربیہ)
    واشنگٹن میں سعودی عرب کے سفیر عادل الجبیر کا کہنا ہے یمن میں کارروائی کا مقصد وہاں دستور کی بحالی اور استحکام ہے۔ حوثیوں نے ایران اور حزب اللہ کی مدد سے یمن میں معاملات کو اس نہج پر پہنچایا ہے۔
    عرب امریکن تعلقات کونسل کے زیر اہتمام 'یمن میں افراتفری: تجزیہ، نشاندہی اور افق' کے عنوان سے امریکی کانگریس میں ہونے والی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مسٹر الجبیر کا کہنا تھا کہ 'ریاض کئی برسوں سے یمن میں استحکام اور حکومت کے کردار کو مضبوط بنانے کی کوششیں کرتا چلا آیا ہے۔'
    انہوں نے مزید کہا کہ ہم یمن میں کارروائی نہیں کرنا چاہتے تھے مگر یمنی صدر عبد ربہ منصور ہادی کے مطالبے پر اس کے سوا کے ہمارے پاس کوئی اور چارہ نہ تھا۔ ہمارا اول اور آخر مقصد یمن میں دستوری حکومت کا تحفظ ہے جس پر ایران اور حزب اللہ کی حمایتی تنظیمیں قبضہ کرنا چاہتی تھیں۔
    سعودی سفیر کے مطابق تاریخ میں ایسا کبھی نہیں ہوا کہ کسی ملک میں سرگرم ملیشیا کے پاس بیلسٹک میزائل، لڑاکا طیاروں سے لیکر دیگر قسم کا بھاری اسلحہ ہو۔ اسی لئے عرب اتحادی فوج کی کارروائی جاری ہے اور وہ بھاری اسلحہ کے گودام تباہ کر رہی ہے۔ انہوں نے الزام عاید کیا کہ حوثیوں نے پناہ گزینوں کے کیمپ سمیت دودھ تیار کرنے والی فیکٹری کو نشانہ بنایا۔

    یمن کے معزول صدر علی عبداللہ صالح نے حوثیوں کے ساتھ اتحاد کر کے انتہائی منفی کردار ادا کیا۔ ایران، حزب اللہ اور علی عبداللہ صالح کی وفادار فوج کی مدد کے بغیر حوثی کبھی یمنی شہروں پر قبضہ نہ کر پاتے۔
    عادل الجبیر کے بقول لبنان میں حزب اللہ ملیشیا موجود ہے جس نے ملک پر قبضہ جما رکھا ہے، ہم یمن میں حوثیوں کے ذریعے ایسا نہیں ہونے دیں گے۔ حوثی یمن میں دہشت گردی کر رہے ہیں۔ ان کا نظریہ واضح ہے اور اس کا یمن پر چنداں منفی اثر نہیں پڑے گا۔
    اپنی تقریر کے اختتام پر عادل الجبیر نے کہا کہ ایران اور حزب اللہ یمن میں جاری کشمکش کو فرقہ وارانہ رنگ دینا چاہتے ہیں تاکہ دنیا کے سامنے سنی۔شیعہ لڑائی کے طور پر پیش کیا جا سکے۔ ہم اس دعوی کی تردید کرتے ہیں کیونکہ یمن میں جاری لڑائی خیر اور شر کے درمیان ہے، شیعہ اور سنی کے درمیان نہیں۔
     
Loading...
موضوع کی کیفیت:
مزید جوابات کے لیے کھلا نہیں۔

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں