سو لفظوں کی کہانیاں۔۔۔ چھبیس سے تیس

سید انور محمود نے 'مضامين ، كالم ، تجزئیے' میں ‏اپریل 1, 2016 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. سید انور محمود

    سید انور محمود رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏مئی 11, 2015
    پیغامات:
    225
    تاریخ: یکم اپریل ، 2016
    سو لفظوں کی کہانیاں۔۔۔ چھبیس سے تیس
    تحریر: سید انور محمود
    سو لفظوں کی کہانی نمبر 26۔۔۔۔ دھابے جی ۔۔۔۔۔۔

    عرش منیر نے حیدرآباد کا کرایہ ادا کیا
    اور ڈرایئور سے کہا جب دھابے جی آئے تو بتانا
    بار بار دھابے جی کا پوچھنے پر ڈرایئور نے
    بدتمیزی سے کہا ا اماں خاموش بیٹھو
    بس میں دو پارٹیاں بن گیں
    سب آپس میں لڑرہے تھے کہ دھابے جی آگیا
    چلو اماں اترو دھابے جی آگیا
    اترنا نہیں ہے بھیا
    تو پھر بار بار دھابے جی کا کیوں پوچھ رہی تھیں ؟
    عرش منیربولیں بھیا ڈرایئور آج میری طبیت خراب تھی
    ڈاکٹر نے دو گولی دے کر کہا تھا ایک گولی ابھی کھالو
    اور ایک جب دھابے جی آئے تب کھالینا
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    سو لفظوں کی کہانی نمبر 27۔۔۔۔کاروباری اور کمانڈو۔۔۔۔۔۔
    سیاست کے پروفیسر کاروباری اور کمانڈو کا فرق بتارہے تھے
    نواز شریف کو طیارہ ہائی جیکنگ کیس میں سزا ہوئی
    حسین نواز اپنے والد نواز شریف کی گرفتاری کے بعد جدہ پہنچے
    سعودی حکمرانوں سے اپنے والد اور چچا کی قید کی دھائی دی
    دسمبر 2000میں ایک لکھا ہوا معاہدہ طے پایا
    دس دسمبر 2000کونواز شریف سعودی عرب چلے گئے
    پرویزمشرف کو جمرات کی رات دبئی روانہ ہوجاناتھا لیکن
    حکومت سابق صدر سے لکھ کر اس بات کی ضمانت مانگ رہی تھی کہ وہ واپس آینگے
    پرویز مشرف صرف زبانی وعدئے پر 24 گھنٹے کی تاخیر سے دبئی روانہ ہوگئے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    سو لفظوں کی کہانی نمبر 28۔۔۔۔پی ٹی وی۔۔۔۔۔۔
    کل میرئے آفس کی ساتھی کہہ رہی تھیں
    ورلڈ ٹی ٹوئنٹی کے نشریاتی حقوق پاکستان ٹیلی ویژن کے پاس ہیں
    دہلی میں پاکستان اور بھارت کی خواتین کرکٹ ٹیم کا میچ تھا
    سولہ اوورز کے اختتام پر بارش شروع ہو گئی
    پاکستان دو رنز سے جیت گیا
    پی ٹی وی ویمبلڈن ٹینس کے ویمن سنگلز اور ڈبل دیکھا چکا ہے
    آج مکمل لباس والی کرکٹ ٹیم کی کوریج نہیں کررہا
    سراج الحق نے خواتین کی کرکٹ ٹیم کو مبارکباد دی ہے
    ضیا الحق نہیں تو کیا ہوا

    لبرل وزیراعظم کے دوست پی ٹی وی چیرمین عطا الحق قاسمی تو ہیں
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    سو لفظوں کی کہانی نمبر 29۔۔۔۔جیب کترا۔۔۔۔۔۔
    بس سے اترکر جیب میں ہاتھ ڈالا تو پتہ چلاجیب کٹ چکی ہے
    جیب میں نوئے روپے اور ماں کو لکھا ہوا پوسٹ کارڈ تھا
    میں نے ماں کو لکھا تھا کہ ابھی پیسے نہیں بھیج پاونگا
    کچھ دن گذرئے ۔۔۔ ماں کا خط ملا
    خط پڑھا حیران رہ گیا!
    بیٹا! ایک ہزار روپے کا منی آرڈر مل گیا
    کچھ دن بعد ایک اور خط ملا لکھا تھا
    بھائی نوئے روپے تمارئے اور نو سو دس روپے
    اپنے ملاکر منی آرڈر بھیج دیا تھا
    ماں تو سب کی ایک جیسی ہوتی ہے نا!
    وہ کیوں بھوکی رہے؟۔۔۔ تمھارا جیب کترا
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    سو لفظوں کی کہانی نمبر 30۔۔۔۔ نامعلوم۔۔۔۔۔۔
    بلاول 19 سال کا تھا تب ظالموں نے اسکی ماں کو مار دیا
    وہ اور اسکی بہنیں اپنی ماں کا غم منارہے تھے
    آصف زرداری مستقبل کی پلانگ کررہے تھے
    الیکشن جیتا پیپلز پارٹی کی حکومت بنائی، خودصدر بنے
    ملک کو لوٹ کر کنگال کردیا
    بیوی کے قاتل کو کبھی نہیں ڈھونڈا
    اب بلاول 28 سال کا ہے
    وہ مشرف کےبیرون ملک جانے سے بہت ناراض ہے
    وہ پوچھ رہا ہےکہ اسکی ماں کا قاتل کون ہے
    میں نے بے نظیر کی پولیٹکل سیکریٹری ناہید خان سے پوچھا
    انہوں نے کہا قاتل نامعلوم ہے اور نامعلوم کبھی پکڑا نہیں جاتا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں