سو لفظوں کی کہانیاں۔۔۔ اکتالیس سے پینتالیس

سید انور محمود نے 'مضامين ، كالم ، تجزئیے' میں ‏مئی 25, 2016 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. سید انور محمود

    سید انور محمود رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏مئی 11, 2015
    پیغامات:
    225
    تاریخ: 25 مئی ، 2016

    سو لفظوں کی کہانیاں۔۔۔ اکتالیس سے پینتالیس
    تحریر: سید انور محمود
    سو لفظوں کی کہانی نمبر 41۔۔۔۔ روٹی ۔۔۔۔۔۔
    دونوں کا انتقال ایک ہی دن ہوا
    وزیر کا انتقال لندن کے مہنگے اسپتال میں اور
    شرفو کا انتقال کراچی کے سول اسپتال میں
    سوئم تک رشتہ دار کھانا کھلاتے رہے
    اب شرفو کے گھر میں کھانے کےلیے کچھ نہیں تھا
    شرفو کی بیوی وزیر کی گھریلو ملازمہ ہے
    وزیر کی میت آئی اور تدفین ہوگئی
    وزیر کی بیوہ عدت گذار رہی تھی
    اس کا فون آیا کام بہت ہے کل جلدی آجانا
    جب وہ کام پر جارہی تھی تو رشتہ دار پوچھ رہے تھے
    وہ عدت کیوں نہیں کررہی کیا وجہ ہے؟

    اس نے سب کی طرف دیکھا اور کہا ‘‘روٹی’’
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    سو لفظوں کی کہانی نمبر 42۔۔۔۔گندا انڈا ۔۔۔۔۔۔

    میں غفور کو بتارہا تھا کہ انڈا بہت کام کی چیز ہے
    انڈا کھانے سے طاقت آتی ہے
    کھانے کی بہت ساری ڈشیں بنتی ہیں
    مگر جو گنداانڈا ہوتا ہے اس سے کچھ نہیں بنتا
    غفور بولا میری اماں گندے انڈے کا استمال جانتی ہیں
    کیا کرتی ہیں گندے انڈے کا تماری اماں؟
    میری اماں گندے انڈےسے میری نظر اتارتی ہیں
    ان کو جمع کرتی ہیں اور گندی جگہ پر پھینک دیتی ہیں
    گندے انڈے پھرجمع ہورہے تھے لیکن آج ختم ہوگئے
    ہمارئے علاقے میں ماضی کے ضمیر فروش آئے تھے
    اماں نے گندے انڈے ان ضمیرفروشوں پر پھینک دیے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    سو لفظوں کی کہانی نمبر 43۔۔۔۔موچی دروازہ ۔۔۔۔۔۔
    قادر بلوچ نے اپنے دوست گلو بٹ کو لاہورفون کیا
    اڑے گلو بٹ کیا حال ہے
    کل تو تمارےلیڈر نے سب کو اڑا دیا
    اڑے کیا عمران خان، کیا مشرف، کیا دوسرے
    سب کو دھوبی پاٹ مارا ڑے
    گلو بٹ: شکریہ کل تو ساڈا شیر گرج رہا تھا
    قادر بلوچ: گھر پر لائٹ نہیں تھی، تقریر سیل والے ریڈیوپر سنا
    کارکنوں کےنعرئے نہیں سنائی دیے کیوں؟
    گلوبٹ: یار قادر بلوچ ، نواز شریف وزیر اعظم ہاوس
    سے قوم سے خطاب کررہے تھے
    قادر بلوچ: نہیں ڑے، قسم سے ہم تو سمجھا
    نواز شریف موچی دروازے سے تقریر کر رہا ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    سو لفظوں کی کہانی نمبر 44۔۔۔۔سنگدل ۔۔۔۔۔۔
    جیب میں صرف 10 روپے تھے
    پیچھے سے کسی نے میرئے کندھے پر ہاتھ رکھا
    میں نے جیب میں سے 10 روپے نکال کر اس کو دے دیے
    تھوڑی دیر بعد ایک فقیر اللہ کے نام پر مانگ رہا تھا
    وہ آگے بڑھا توایک اور بندہ آکر بولا ٹکٹ
    ابھی تو دیا تھا
    مجھے نہیں پہلے والےفقیر کو دیا تھا
    میرئے پاس اب پیسے نہیں ہیں
    کنڈکٹر بولا پھرنیچے اترو
    دوسرےفقیر نے کنڈکٹر کو دس روپے دیکر کہا یہ ان صاحب کا ٹکٹ
    میں نے اس کی طرف دیکھا تو وہ مسکرا کر بولا
    میں فقیر ضرور ہوں سنگدل نہیں
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    سو لفظوں کی کہانی نمبر 45۔۔۔۔بھیک ۔۔۔۔۔۔
    اس نے دو نامی گرامی بھکاریوں ڈار اور ایدھی کے نام بتائے
    ڈار ملک کے نام پر بھیک اور قرضہ مانگ کرلاتے ہیں
    ڈار کے قرضے اور بھیک کی وجہ سے
    ہر پاکستانی لاکھ روپے کا مقروض ہے
    ایدھی صرف اپنے ملک میں ہی بھیک مانگتے ہیں
    ایدھی کی مانگی ہوئی بھیک سے
    لاکھوں ضرورت مندوں کی مدد کی جاتی ہے
    بھکاری تو دونوں ہیں، ان میں خاص فرق کیا ہے؟
    ڈار کی نگاہیں قرضہ یا بھیک مانگتے وقت جھکی ہوتی ہیں
    ایدھی کو بھیک دینے والے کی نگاہوں میں التجا ہوتی ہے کہ
    وہ انکی بھیک کو قبول کرلیں
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں