موطا امام مالک روایۃ ابن القاسم حدیث نمبر 117

اہل الحدیث نے 'اسلامی متفرقات' میں ‏ستمبر 22, 2020 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. اہل الحدیث

    اہل الحدیث -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 24, 2009
    پیغامات:
    5,050
    موطا امام مالک روایۃ ابن القاسم حدیث نمبر 117 :

    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب قُباء جاتے تو ام حرام بنت ملحان (رضی اللہ عنہا) کے پاس تشریف لے جاتے، وہ آپ کو کھانا کھلاتی تھیں۔

    ام حرام بنت ملحان (سیدنا) عبادہ بن الصامت (رضی اللہ عنہ) کی بیوی تھیں۔

    پس اس دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ان کے پاس تشریف لے گئے تو انھوں نے آپ کو کھانا کھلایا اور آپ کے سر (کے بالوں) میں ٹٹولنے لگیں۔

    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم سو گئے پھر جب آپ نیند سے بیدار ہوئے تو ہنس رہے تھے۔

    ام حرام نے کہا : میں نے آپ سے پوچھا : یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ! آپ کیوں ہنس رہے ہیں ؟

    آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : مجھے (نیند میں) میری امت کے کچھ لوگ دکھائے گئے جو اس سمندر کے درمیان اللہ کے راستے میں جہاد کر رہے تھے گویا کہ وہ تختوں پر بادشاہ بیٹھے ہیں۔

    انھوں نے کہا : میں نے عرض کیا : یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ! اللہ سے دعا کریں کہ اللہ مجھے اُن میں شامل کرے تو آپ نے ان کے لیے دعا فرمائی پھر سر رکھ کر سو گئے۔

    پھر جب نیند سے اُٹھے تو آپ ہنس رہے تھے۔

    ام حرام نے کہا کہ میں نے پوچھا : یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ! آپ کس وجہ سے ہنس رہے ہیں ؟

    آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : میری اُمت کے کچھ لوگ مجھے (نیند میں) دکھائے گئے جو تخت نشین بادشاہوں کی طرح بیٹھے اللہ کے راستے میں جہاد کر رہے ہیں۔ جیسا کہ آپ نے پہلی دفعہ فرمایا تھا۔

    تو ام حرام نے کہا کہ میں نے کہا : یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ! آپ اللہ سے دعا کریں کہ وہ مجھے ان میں شامل کرے۔

    آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : تم پہلے گروہ میں ہو۔

    (سیدنا انس رضی اللہ عنہ نے) فرمایا : پھر وہ (سیدنا) معاویہ بن ابی سفیان (رضی اللہ عنہ کے دورِ امارت) کے زمانے میں سمندری جہاد میں شامل ہوئیں پھر جب وہ سمندر سے باہر تشریف لائیں تو سواری سے گر کر فوت ہو گئیں۔

    تحقیق : سندہ صحیح۔

    تخریج : متفق علیہ۔

    الموطأ (روایۃ یحییٰ 2/ 464، 465 ح 1026، ک 21ب 18 ح 39) التمہید 1/ 225، الاستذکار : 963۔

    ❀ وأخرجہ البخاری (2788، 2789) ومسلم (160/ 1912) من حدیث مالک بہ۔

    تفقہ :

    نمبر 1 :

    اُم حرام اور اُم سلیم (رضی اللہ عنہما) دونوں بہنیں تھیں۔

    ابن عبدالبر نے فرمایا : میرا خیال ہے کہ اُم حرام یا اُم سلیم نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو دودھ پلایا تھا یعنی ان میں سے ایک آپ کی رضاعی والدہ اور دوسری رضاعی خالہ تھیں۔ دیکھیے التمہید (1/ 226)

    یہی بات امام عبداللہ بن وہب المصری وغیرہ سے مروی ہے۔

    نمبر 2 :

    اگر عورت اپنے خاوند کے مال میں سے کسی کو کھانا وغیرہ کھلائے اور خاوند کی ناراضی معلوم نہ ہو تو یہ کھانا حلال ہے اور عورت کے خاوند کو بھی ثواب ملتا ہے۔

    نمبر 3 :

    کفار کے خلاف سمندری جہاد کرنا اور بحری بیڑے بنانا بڑی فضیلت والا کام ہے۔

    نمبر 4 :

    عورتوں کا جہاد میں شریک ہونا جائز ہے۔

    نمبر 5 :

    مردوں اور عورتوں کے لیے بحری سفر کرنا جائز ہے۔

    نمبر 6 :

    ہر مسلمان حکمران کے ماتحت جہاد کرنا قیامت تک جائز ہے چاہے بادشاہ ہو یا خلیفہ وغیرہ۔

    نمبر 7 :

    اس حدیث میں سیدنا معاویہ بن ابی سفیان کاتبِ وحی رضی اللہ عنہ کی بڑی فضیلت ہے کہ جن کی زیرِ نگرانی یہ عظیم جہادی مہم روانہ ہوئی تھی اور اس پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم بہت خوش تھے۔

    نمبر 8 :

    اللہ کے راستے میں شہید ہو جانے والے یا اسی حالت میں طبعی موت مرنے والے دونوں اشخاص کا اجر برابر ہے اور بعض علماء کے نزدیک شہید کا اجر زیادہ ہے۔

    نمبر 9 :

    بعض علماء کے نزدیک بری جہاد سے سمندری جہاد افضل ہے اور عصرِ حاضر میں یہی بات راجح نظر آتی ہے لہٰذا مسلمانوں کو چاہیے کہ بہترین بحری بیڑے تیار کریں۔

    نمبر 10 :

    اسی روایت کی دوسری صحیح سند میں آیا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا یہ سونا قیلولہ یعنی دوپہر کے وقت تھا اور یہ کہ ام حرام نے اپنے خاوند سیدنا عبادہ بن الصامت رضی اللہ عنہما کے ساتھ مل کر سمندری جہاد کیا تھا۔

    چند مزید فوائد بھی پیشِ خدمت ہیں :

    نمبر 1 :

    سیدنا معاویہ رضی اللہ عنہ کی یہ جنگی مہم اور بحری جہاد سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کے دورِ خلافت میں تھا اور قبرص کے مقام پر سیدہ ام حرام رضی اللہ عنہا فوت ہوئیں تھیں۔

    نمبر 2 :

    انبیاء کے خواب وحی ہوتے ہیں۔

    نمبر 3 :

    یہ حدیث بھی دلائلِ نبوت میں سے ہے۔ رسول اللہصلی اللہ علیہ وسلم نے غیب کی خبریں بیان فرمائیں جو آپ کی وفات کے بعد بعینہ پوری ہوئیں۔

    نمبر 4 :

    جن روایات میں سمندری سفر کی ممانعت آئی ہے وہ ساری ضعیف و مردود ہیں۔

    نمبر 5 :

    نیک کام میں شمولیت کی تمنا کرنا تقاضائے ایمان ہے۔

    نمبر 6 :

    اچھے کام کے لیے کسی سے دعا کروانا جائز ہے۔

    اصل مضمون کے لیے دیکھیے الاتحاف الباسم تحقیق و شرح موطا امام مالک روایۃ ابن القاسم (ص 202 تا 204)

    (شیخ حَافظ زبیر علی زئی رحمہ اللہ)
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں