امام نسائی رحمہ اللہ کی وفات کا قصہ

اہل الحدیث نے 'تاریخ اسلام / اسلامی واقعات' میں ‏فروری 7, 2021 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. اہل الحدیث

    اہل الحدیث -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 24, 2009
    پیغامات:
    5,050
    امام نسائی رحمہ اللہ کی وفات کا قصہ
    تحریر: محدث العصر حافظ زبیر علی زئی رحمہ اللّٰہ
    امام نسائی یعنی ابو عبدالرحمٰن احمد بن شعیب بن علی بن سنان بن بحر النسائی رحمہ اللّٰہ (م303ھ) کا شمار حدیث کے مشہور اماموں میں ہوتا ہے اور ان کی کتاب: ’’سنن نسائی‘‘ کتب ستہ میں شامل ہے۔
    امام نسائی کے بارے میں عوام و خواص میں یہ قصہ مشہور ہے کہ انھیں شام کے ناصبیوں نے بہت مارا تھا اور وہ اسی مار کی وجہ سے شہید ہوگئے تھے۔
    اس قصے کی روایات کا مختصر اور جامع جائزہ درج ذیل ہے:
    1- حاکم نیشاپوری نے فرمایا:
    ’’فحدثني محمد بن إسحاق الأصبھاني قال: سمعت مشایخنا بمصر یذکرون أن أبا عبدالرحمٰن فارق مصر في آخر عمرہ و خرج إلٰی دمشق فسئل بھا عن معاویۃ بن أبي سفیان و ما روي في فضائلہ فقال: لا یرضی معاویۃ رأسًا برأس حتی یفضل؟! قال: فمازالوا یدفعون في حضنیہ حتی أخرج من المسجد ثم حمل إلٰی مکۃ و مات بھا سنۃ ثلاث و ثلاثمائۃ وھو مدفون بمکۃ‘‘
    پس مجھ سے محمد بن اسحاق (بن محمد بن یحییٰ بن مندہ) الاصبہانی نے بیان کیا: میں نے مصر میں اپنے استادوں کو یہ بیان کرتے ہوئے سنا کہ ابو عبدالرحمٰن (النسائی) نے آخری عمر میں مصر کو الوداع کہا اور دمشق کی طرف چلے گئے تو وہاں اُن سے معاویہ بن ابی سفیان (رضی اللّٰہ عنہ) کے بارے میں پوچھا گیا اور ان کے فضائل کی روایات کے بارے میں پوچھا گیا تو انھوں نے کہا: کیا معاویہ اس پر راضی نہیں کہ ان کا معاملہ برابر برابر ہو جائے؟ چہ جائے کہ انھیں فضیلت دی جائے؟! کہا: لوگ انھیں سینے (یا خصیوں) پر مارتے رہے حتیٰ کہ وہ مسجد سے نکال دیئے گئے پھر انھیں اٹھا کر مکہ لے جایا گیا اور وہ وہیں 303ھ میں فوت ہوئے اور مکہ میں دفن ہوئے۔
    (معرفۃ علوم الحدیث للحاکم ص 83 ح 182، و عنہ ابن نقطۃ فی التقیید 1/ 154)
    اس روایت کی سند میں ’’مشائخنا‘‘ سارے مشائخ مجہول ہیں، لہٰذا یہ سند ضعیف ہے اور اس پر حافظ ابن عساکر کا حاشیہ (تہذیب الکمال 1/ 45) بے فائدہ ہے۔
    اس روایت کو حافظ ذہبی نے بغیر کسی سند کے ابن مندہ عن حمزہ العقبی المصری وغیرہ سے نقل کیا ہے۔ (سیر اعلام النبلاء 14/ 132) یہ روایت بے سند ہونے کی وجہ سے مردود ہے۔
    2- کہا جاتا ہے کہ حاکم نے امام ابو الحسن علی بن عمر الدارقطنی رحمہ اللّٰہ سے نقل کیا:
    ’’کان أبو عبدالرحمٰن أفقہ مشایخ مصر في عصرہ و أعرفھم بالصحیح والسقیم من الآثار و أعلمھم بالرجال فلما بلغ ھذا المبلغ حسدوہ فخرج إلی الرملۃ فسئل عن فضائل معاویۃ فأمسک عنہ فضربوہ فی الجامع فقال: أخرجوني إلٰی مکۃ فأخرجوہ إلٰی مکۃ وھو علیل و توفي بھا مقتولاً شھیدًا‘‘
    ابو عبدالرحمٰن النسائی اپنے دور کے اساتذۂ مصر میں سب سے بڑے فقیہ، صحیح اور ضعیف روایات کو سب سے زیادہ جاننے والے اور اسماء الرجال کے سب سے بڑے ماہر تھے، پھر جب وہ اس مقام پر پہنچے تو لوگوں نے ان سے حسد کیا، پھر وہ رملہ تشریف لے گئے تو ان سے معاویہ (رضی اللّٰہ عنہ) کے فضائل کے بارے میں پوچھا گیا تو وہ چپ رہے پھر لوگوں نے انھیں جامع مسجد میں مارا تو آپ نے فرمایا: مجھے مکہ لے جاؤ۔ پھر وہ آپ کو مکہ لے گئے اور آپ بیمار تھے اور مکہ میں شہادت نصیب ہوئی۔
    (تہذہب الکمال للمزی 1/ 45 واختصرہ الذہبی فی سیر اعلام النبلاء 14/ 133)
    اگر یہ روایت حاکم یا امام دارقطنی سے باسند صحیح ثابت ہو جائے تو عرض ہے کہ امام دارقطنی 306ھ یا 305 ھ میں پیدا ہوئے تھے اور امام نسائی 303ھ میں فوت ہو گئے تھے لہٰذا یہ روایت منقطع و مردود ہے۔
    یہ وہ روایات ہیں جنھیں بعض علماء اور واعظین مزلے لے لے کر بیان کرتے ہیں۔
    مثلاً شاہ عبد العزیز دہلوی نے امام نسائی کے بارے میں لکھا ہے:
    ’’ان کی موت کا واقعہ یہ ہے کہ جب آپ مناقب مرتضوی (کتاب الخصائص) کی تصنیف سے فارغ ہوئے تو انھوں نے چاہا کہ اس کتاب کو دمشق کی جامع مسجد میں پڑھ کر سنائیں تاکہ بنی امیہ کی سلطنت کے اثر سے عوام میں ناصبیت کی طرف جو رجحان پیدا ہو گیا تھا اس کی اصلاح ہو جائے، ابھی اس کا تھوڑا سا حصہ ہی پڑھنے پائے تھے کہ ایک شخص نے پوچھا: امیر المومنین معاویہ رضی اللّٰہ عنہ کے مناقب کے متعلق بھی آپ نے کچھ لکھا ہے؟ تو نسائی نے جواب دیا کہ معاویہ رضی اللّٰہ عنہ کے لئے یہی کافی ہے کہ برابر برابر چھوٹ جائیں، ان کے مناقب کہاں ہیں۔
    بعض لوگ کہتے ہیں کہ یہ کلمہ بھی کہا تھا کہ مجھے ان کے مناقب میں سوائے اس حدیث ’لاَ اَشْبَعَ اللّٰہُ بَطنَہ‘ کے اور کوئی صحیح حدیث نہیں ملی۔
    پھر کیا تھا، لوگ ان پر ٹوٹ پڑے اور شیعہ شیعہ کہہ کر مارنا پیٹنا شروع کیا۔ ان کے خصیتین میں چند شدید ضربیں ایسی پہنچیں کہ نیم جان ہو گئے خادم انھیں اٹھا کر گھر لے آئے۔
    پھر فرمایا کہ مجھے ابھی مکہ معظمہ پہنچا دو تاکہ میرا انتقال مکہ یا اس کے راستے میں ہو۔
    کہتے ہیں کہ آپ کی وفات مکہ معظمہ پہنچنے پر ہوئی اور وہاں صفا و مروہ کے درمیان دفن کئے گئے۔ بعض کا قول یہ بھی ہے کہ مکہ جاتے ہوئے راستہ میں رملہ (فلسطین) میں انتقال ہوا۔ پھر وہاں سے آپ کی نعش مکہ معظمہ پہنچائی گئی۔
    واللّٰہ اعلم‘‘ (بستان المحدثین ص 267۔268)
    یہ سارا بیان زیبِ داستان ہے اور باسند صحیح ہر گز ثابت نہیں۔
    اگر کوئی شخص یہ کہے کہ امام نسائی کی وفات کہاں ہوئی تھی؟
    تو اس کا جواب یہ ہے کہ امام نسائی کے شاگرد ابن یونس المصری (مورخ) نے لکھا ہے:
    ’’وکان خروجہ من مصر في ذی القعدۃ سنۃ اثنتین و ثلاثمائۃ و توفي بفلسطین یوم الاثنین لثلاث عشرۃ خلت من صفر سنۃ ثلاث و ثلاثمائۃ‘‘
    آپ ذوالقعدہ 302ھ کو مصر سے روانہ ہوئے اور 13/ صفر 303ھ بروز سوموار فوت ہوئے۔
    (سیر اعلام النبلاء 14/ 133، المستفاد من ذیل تاریخ بغداد 19/ 49، تاریخ ابن یونس المصری 2/ 24 ت 55)
    حافظ ذہبی نے اس قول کو ’’أصح‘‘ قرار دیا ہے۔ (النبلاء 14/ 133)
    سوال یہ ہے کہ امام نسائی کے شاگرد اور مورخِ تاریخ مصر نے اتنے اہم واقعے کا ذکر کیوں نہیں کیا (بشرطیکہ) اگر ایسا کوئی واقعہ رونما ہوا تھا؟!
    حافظ ذہبی نے بغیر کسی سند کے وزیر ابن حنزابہ (جعفر بن الفضل) سے نقل کیا ہے کہ میں نے محمد بن موسیٰ (بن یعقوب بن مامون) المامونی (الہاشمی، وثقہ الذہبی فی تاریخ الاسلام) صاحب النسائی سے سنا: ابو عبدالرحمٰن النسائی نے علی رضی اللّٰہ عنہ کے خصائص (مناقب) پر جو کتاب لکھی، میں نے کچھ لوگوں کو اس کا انکار کرتے ہوئے سنا اور فضائلِ شیخین پر کتاب نہ لکھنے کا انکار کرتے ہوئے سنا تو میں نے اس بات کا ان (نسائی) سے ذکر کیا۔ پھر انھوں نے فرمایا: میں دمشق میں داخل ہوا، اور وہاں علی (رضی اللّٰہ عنہ) کے مخالفین بہت زیادہ تھے تو میں نے کتاب الخصائص لکھی، مجھے یہ امید تھی کہ اللّٰہ تعالیٰ انھیں اس کتاب کے ذریعے سے ہدایت دے گا۔ پھر اس کے بعد انھوں نے صحابہ کے فضائل پر کتاب لکھی تو میرے سامنے انھیں کہا گیا: آپ معاویہ رضی اللّٰہ عنہ کے فضائل نہیں لکھتے؟ تو انھوں نے کہا: ان کے لئے میں کیا لکھوں؟ کیا وہ حدیث جس میں آیا ہے: ’’اللھم! لا تشبع بطنہ‘‘ اے اللّٰہ! اس کے پیٹ کو سیر نہ کرنا؟ تو وہ سائل خاموش ہو گیا۔ (النبلاء 14/ 129)
    یہ قصہ بھی بے سند ہے اور اگر کہیں ثابت بھی ہو جائے تو کسی قسم کی مارکٹائی کا اس قصے میں نام و نشان تک نہیں۔
    اگر کوئی شخص کہے کہ ان قصوں میں صحیح یا حسن سند کا ہونا ضروری نہیں تو عرض ہے کہ یہ اصول غلط ہے اور اس کے مختصر رد کے لئے دیکھئے میرا مضمون: امام مسلم رحمہ اللّٰہ کی وفات کا سبب؟ (مقالات: ج 6 ص 269)
    اس تحقیق کا خلاصہ یہ ہے کہ امام نسائی کے بارے میں بستان المحدثین وغیرہ کا قصہ اصولِ محدثین کی رُو سے باسند صحیح ہرگز ثابت نہیں اور نہ امام نسائی کا شیعہ ہونا کہیں ثابت ہے، بلکہ وہ اہلِ سنت کے جلیل القدر اماموں میں سے تھے۔ رحمہ اللّٰہ
    ……… اصل مضمون ………
    اصل مضمون کے لئے دیکھئے تحقیقی و علمی مقالات (جلد 6 صفحہ 272 تا 275) للشیخ زبیر علی زئی رحمۃ اللّٰہ علیہ
     
Loading...
Similar Threads
  1. اہل الحدیث
    جوابات:
    0
    مشاہدات:
    285
  2. khalid Bin Salam
    جوابات:
    3
    مشاہدات:
    790
  3. محمد اسد حبیب
    جوابات:
    3
    مشاہدات:
    2,656
  4. اہل الحدیث
    جوابات:
    0
    مشاہدات:
    216
  5. اہل الحدیث
    جوابات:
    0
    مشاہدات:
    176

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں