کامیابی سے محروم لوگ

عائشہ نے 'قرآن - شریعت کا ستونِ اوّل' میں ‏فروری 16, 2016 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    23,983
    تفسیر: وان تقولوا علی اللہ ما لا تعلمون۔ "اور یہ کہ تم اللہ کے بارے میں ایسی بات کہو جو تم نہیں جانتے۔"

    (اقتباس از : تفسیری نکات وافادات از حافظ ابن القیم، جمع وترتیب: مولانا عبدالغفار حسن رحمہ اللہ)

    جو اللہ نے نہیں فرمایا وہ اس کی طرف منسوب کرنا بہت ہی بڑا جرم ہے۔ اس کی حرمت نہایت شدید ہے۔ اسی لیے محرمات میں اس کو چوتھے نمبر پر رکھ کر ان محرمات میں سے شمار کیاہے جن کی حرمت پر تمام شریعتوں اور ادیان کا اتفاق ہے۔ یہ فعل کسی صورت میں بھی جائز نہیں ہو سکتا۔ اس کو تو صرف حرام ہی قرار دیا جا سکتا ہے۔​
    محرمات کی دو قسمیں:
    1) حرام ذاتی: وہ حرام کی ہوئی شے جو کسی حال میں بھی حلال نہیں ہو سکتی۔
    2) حرام عارضی: جس کی حرمت کسی وقت میں ہو اور کسی وقت نہ ہو۔
    محرم ذاتی کے بارے میں اللہ تعالی کا ارشاد ہے:
    قُلْ إِنَّمَا حَرَّمَ رَبِّيَ الْفَوَاحِشَ مَا ظَهَرَ مِنْهَا وَمَا بَطَنَ (الاعراف: 33)
    کہہ دیجیے میرے رب نے فواحش (بے حیائی کے کاموں) کو حرام کر دیا ہے خواہ وہ چھپے ہوں یا کھلے۔۔۔"
    اس کے بعد ایسی محرم چیز کو بتایا جو فواحش سے بھی زیادہ خطرناک ہے یعنی:
    وَالْإِثْمَ وَالْبَغْيَ بِغَيْرِ الْحَقِّ (الاعراف: 33) گناہ اور ظلم ناحق طور پر"
    پھر اس سے بھی زیادہ محرم شدید کا تذکرہ کیا:
    وَأَن تُشْرِكُوا بِاللَّـهِ مَا لَمْ يُنَزِّلْ بِهِ سُلْطَانًا (الاعراف: 33)
    اور یہ کہ تم اللہ کے ساتھ شریک ٹھہراؤ ایسی چیز کو جس کی اللہ نے کوئی دلیل نہیں اتاری۔۔۔"
    اس کے بعد اس سے بھی بڑھ کر حرام کام کو بیان فرمایا ہے:
    وَأَن تَقُولُوا عَلَى اللَّـهِ مَا لَا تَعْلَمُونَ (الاعراف: 33)
    "اور یہ کہ تم اللہ کے بارے میں ایسی بات کہو جو تم نہیں جانتے۔"
    محرمات میں اس کا درجہ سب سے بڑھا ہوا ہے۔اس کا گناہ بھی سب سے زیادہ ہے، یہ ایک گناہ نہیں بلکہ گناہوں کا مجموعہ ہے۔
    1) اللہ پر جھوٹ باندھنا اور اس کی طرف ایسی بات منسوب کرنا جو اسے زیب نہیں دیتی۔
    2) اس کے دین کو بدل ڈالنا۔
    3) جو اس نے ثابت کیا ہے اس کی نفی اور جس کی نفی کی ہے اس کا اثبات۔
    4) باطل کو حق اور حق کو باطل قرار دینا۔
    5) اس کے دوستوں سے دشمنی اور دشمنوں سے دوستی۔
    6) جو اس کو ناپسند ہے، اس سے محبت اور جو اس کو محبوب ہے اس سے نفرت۔
    7)اس کے اقوال، افعال، صفات، اور ذات کے بارے میں ایسی باتیں کہنا جو اس کی شان سے فروتر ہیں۔
    اس سے بڑھ کر اور کون سی چیز حرام ہو سکتی ہے؟ یہ کفروشرک کی اصل جڑ ہے۔ تمام گمراہیوں اور بدعتوں کی بنیاد ہی اسی پر رکھی جاتی ہے۔ ہر گمراہ کن عبادت کا سرچشمہ بھی قول علی اللہ بلاعلم ہے۔ اسی لیے سلف نے اس سے نہایت شدت اور سختی سے روکا ہے۔ اور اسی لیے بلا برہان و دلیل کے کسی چیز کو حرام ٹھہرانے سے اللہ تعالی نے منع فرمایا ہے۔
    وَلَا تَقُولُوا لِمَا تَصِفُ أَلْسِنَتُكُمُ الْكَذِبَ هَـٰذَا حَلَالٌ وَهَـٰذَا حَرَامٌ لِّتَفْتَرُوا عَلَى اللَّـهِ الْكَذِبَ ۚ إِنَّ الَّذِينَ يَفْتَرُونَ عَلَى اللَّـهِ الْكَذِبَ لَا يُفْلِحُونَ﴿١١٦
    ترجمہ: "جن چیزوں کو تمہاری زبانیں جھوٹ موٹ بیان کرتی ہیں ان کو مت کہو کہ یہ حلال ہے اور یہ حرام ہے تا کہ تم اللہ پر جھوٹ باندھو۔ سمجھ لو کہ اللہ تعالیٰ پر بہتان بازی کرنے والے کامیابی سے محروم ہی رہتے ہیں۔"
    شرک و کفر قول بلا علم کی ایک شاخ ہے۔ ہر مشرک و کافر قول بلا علم کا مرتکب ہو گا۔ لیکن یہ ضروری نہیں ہے کہ ہر قائل بلا علم (اللہ پر بلا علم بولنے والا) مشرک اور کافر بھی ہو۔ کیوں کہ بعض مرتبہ قول بلا علم بدعت اور تعطیل (انکار) صفات تک محدود رہتا ہے۔ گویا شرک و کفر قول بلا علم کا ایک فرد ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 4
    • مفید مفید x 2
  2. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    6,294
    جزاک اللہ خیرا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  3. نصر اللہ

    نصر اللہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏دسمبر 19, 2011
    پیغامات:
    1,816
    بارک اللہ فیک بہت مفید پوسٹ ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  4. محمد عرفان

    محمد عرفان -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 16, 2010
    پیغامات:
    757
    جزاك الله خيرا أحسن الجزاء
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  5. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    23,983

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں