اللہ ساتوں آسمانوں کے اوپر عرش پر مستوی ہے

جمیل نے 'اسلامی متفرقات' میں ‏اپریل 2, 2010 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. جمیل

    جمیل ركن مجلسِ شوریٰ

    شمولیت:
    ‏جولائی 20, 2009
    پیغامات:
    750
    اھل سنت والجماعت کا اس با ت پر اعتقاد جازم ہے کہ اللہ سبحانہ وتعالی آسمانوں کے اوپر عرش پر(اس کے شایان شان کیفت کے ساتھ) مستوی ہے۔ ؟ حدیث صحیح میں ہے کہ اللہ تعالی رات کے آخری پہر آسمان دنیا پر اتر آتاہے۔۔۔
    - اللہ سبحانہ وتعالی کائنات کی ہر(ظاہر وپوشیدہ :اللہ کے لیے کوئي چیز پوشیدہ نہیں) شئی سے باخبر ہے۔ علم کے لحاظ سے ساری کائنات کو گھیرے ہوے ہے۔جیسا کہ اللہ کا فرمان ہے (وان اللہ قد احاط بکل شیئ علما) اور صحیح مسلم میں ہے کہ ایک لونڈیہ کو آزاد کرانے کے تعلق سے معاویہ بن حکم السلمی رضی اللہ عنہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے پوچھتے ہیں۔ تو اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کہتے ہیں تم اسے میرے پاس لے آؤ تو اللہ وہ لے آئے اپنی لونڈیہ کو۔ تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اس لونڈیہ سے پوچھا کہ اللہ کہاں ہے ،اس نے جواب دیا آسمان کے اوپر اور پوچھا میں کون ہوں تو اس نے کہا آپ اللہ کے رسول ہیں تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے کہا یہ تو مؤمنہ ہے اسے آزاد کردو [ar](حديث معاوية بن الحكم السلمي في قصة ضربه لجاريته وفيه " قلت يا رسول الله أفلا اعتقها ؟ قال ائتني بها ، فأتيته بها فقال لها : أين الله ؟ قالت في السماء ، قال من أنا " قالت : أنت رسول الله ، قال : أعتقها فإنها مؤمنة" - صحيح الإمام مسلم) [/ar]
    [AR]أين الله؟[/AR]
    مگر دارالافتاء دارالعلوم دیوبند کے ویب سائیٹ پر لکھاہے کہ اللہ ہر جگہ ہے۔ اور یہ اہل سنت والجماعت کا متفقہ عقیدہ ہے۔جو کہ بالکل غلط ہے۔ قرآنی آیات اور احادیث صحیحہ اس کی تردید کرتی ہیں۔جیسا کہ اوپر تھوڑی سی تفصیل بیان کی گئی ہے۔

    آپ نے فتوی نمبر 8138 میں فرمایا کہ اہل سنت والجماعت کے عقیدہ کے مطابق اللہ ہر جگہ موجود ہے۔ کیا آپ مجھے اس کا ثبوت قرآن کریم اور حدیث اور چاروں ائمہ کے اقوال سے دے سکتے ہیں؟ کیوں کہ میں نے عبداللہ بن امام احمد بن حنبل رحمة اللہ علیہ کی کتاب میں پڑھا ہے۔
    جواب:آپ نے عبد اللہ بن امام احمد بن حنبل رحمہ اللہ کی کتاب میں کیا پڑھا، اس کی وضاحت نہیں کی۔ اللہ تعالیٰ ہرجگہ موجود ہے، یہ اہل سنت والجماعت اور چاروں ائمہ کا متفقہ عقیدہ ہے۔ قرآنی آیات سے اس کا ثبوت ملاحظہ ہو:
    نَحْنُ اَقْرَبُ اِلَیْہِ مِنْ حَبْلِ الْوَرِیْدِ، وَهُوَ مَعَکُمْ اَیْنَ مَا کُنْتُمْ، اَیْنَمَا تُوَلُّوْا فَثَمَّ وَجْہُ اللّٰہِ، وَکَانَ اللّٰہُ بِکُلِّ شَیْءٍ مُّحِیْطًا (القرآن)

     
  2. جمیل

    جمیل ركن مجلسِ شوریٰ

    شمولیت:
    ‏جولائی 20, 2009
    پیغامات:
    750
    ان لوگوں کا رد جو یہ کہتے ہیں کہ اللہ ہر جگہ ہے

    جو حضرات عربی جانتے ہیں وہ لوگ اسلام ویب۔نیٹ کا مراجعہ کریں۔ وہ لوگ جو یہ کہتے ہیں کہ اللہ ہر جگہ ہے۔ انکی بات کا غلط ہونا مضبوط دلائل سے ثابت کیا گیاہے۔


    [AR]الحمد لله والصلاة والسلام على رسول الله وعلى آله وصحبه أما بعد:
    فالواجب على المسلم أن يعتقد أن الله تعالى مستو على عرشه ، وعرشه فوق سماواته ، وأنه بائن من خلقه جل وعلا ليس حاّلاً فيهم ، فهو العلي الأعلى ، فوق جميع مخلوقاته سبحانه وتعالى وتقدس. وهذا ما دلت عليه نصوص الكتاب والسنة ، وإجماع الصحابة والتابعين ومن بعدهم من أهل القرون المفضلة.
    قال الله تعالى ( سبح اسم ربك الأعلى )
    وقال الله تعالى ( يخافون ربهم من فوقهم )
    وقال الله تعالى ( ثم استوى على العرش ) في سبعة مواضع من القرآن .
    وقال الله تعالى ( إليه يصعد الكلم الطيب )
    وقال الله تعالى ( بل رفعه الله إليه )
    وقال الله تعالى ( أأمنتم من في السماء )
    والسماء بمعنى العلو ، أو هي السموات المعروفة و ( في ) بمعني (على ) أي: على السماء ، إذ ليس الله تعالى محصوراً ولا داخلا في شيء من خلقه ، وهذا نحو قوله تعالى ( قل سيروا في الأرض ) أي على الأرض . وكقوله تعالى ( ولأ صلبنكم في جذوع النخل ) أي على جذوع النحل.
    إلى غير ذلك من الآيات الدالة على علوه تعالى على خلقه.
    كما دلت عليه نصوص السنة ومنها:
    1- ما رواه مسلم من حديث معاوية بن الحكم السلمي في قصة ضربه لجاريته وفيه.. فقلت : يا رسول الله أفلا أعتقها ؟
    قال : "ادعها ، فدعوتها ، فقال لها أين الله ؟ قالت : في السماء .
    قال : من أنا ؟ قالت : أنت رسول الله. قال : أعتقها فإنها مؤمنة ".
    2- ما رواه مسلم عن جابر بن عبد الله أن رسول صلى الله عليه وسلم قال في خطبته يوم عرفة : " ألا هل بلغت ؟ فقالوا : نعم _ يرفع أصبعه إلى السماء وينكتها إليهم _ ويقول : اللهم اشهد ".
    3- ما رواه البخاري ومسلم من حديث أبي هريرة أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال : " الملائكة يتعاقبون فيكم ، ملائكة بالليل وملائكة بالنهار ، ويجتمعون في صلاة الفجر وصلاة العصر ، ثم يعرج إليه الذين باتوا فيكم فيسألهم وهو أعلم بهم : كيف تركتم عبادي ؟ فيقولون : أتيناهم وهم يصلون وتركناهم وهم يصلون " .
    4- ما رواه أبو داود والترمذي من حديث عبد الله بن عمرو بن العاص أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال " الراحمون يرحمهم الرحمن ، ارحموا من في الأرض يرحمكم من في السماء ".
    5- ما رواه البخاري عن أنس أن زينب بنت جحش كانت تفخر على أزواج النبي صلى الله عليه وسلم تقول :" زوجكن أهاليكن ، وزوجني الله من فوق سبع سموات ".
    6- ما في الصحيحين من حديث أبي سعيد قال : قال: رسول الله صلى الله عليه وسلم :" ألا تأمنوني وأنا أمين من في السماء ، يأتيني خبر السماء صباحاً ومساء".
    7- ما رواه مسلم من حديث أبي هريرة أن رسول صلى الله عليه وسلم قال: "والذي نفسي بيده ما من رجل يدعو امرأته إلى فراشه فتأبى عليه إلا كان الذي في السماء ساخطاً عليها حتى يرضى عنها زوجها ".
    8- ما في الصحيحين من حديث أبي هريرة قال: قال: رسول الله صلى الله عليه وسلم " كان ملك الموت يأتي الناس عياناً ، فأتى موسى عليه السلام فلطمه فذهب بعينه ، فعرج إلى ربه عز وجل فقال : يارب بعثتني إلى موسى فلطمني" الحديث.
    9- ما رواه النسائي من حديث سعد بن أبي وقاص أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال لسعد بن معاذ : " لقد حكمت فيهم بحكم الملك من فوق سبع سموات ".
    10- وما جاء في قصة معراجه صلى الله عليه وسلم وارتفاعه إلى مستوى سمع فيه صريف الأقلام ، وكلامه مع ربه جل وعلا ، ثم مروره على موسى ، ثم رجوعه إلى ربه جل وعلا سائلاً التخفيف في أمر الصلاة.
    إلى غير ذلك من الأحاديث الصحيحة الثابتة الدالة على إثبات هذا الأمر العظيم .
    وهذا الأمر مستفيض عن أصحاب النبي صلى الله عليه وسلم ومن بعدهم من التابعين وحسبنا من ذلك ما قال عبد الله بن رواحة رضي الله عنه :
    شهدت بأن وعد الله حق وأن النار مثوى الكافرينا
    وأن العرش فوق الماء طاف وفوق العرش رب العالمينا
    وتحمله ملائكة كرام ملائكة الإله مقربينا
    وأما الإجماع فقد حكاه غير واحد من أئمة المسلمين.
    1_ قال الإمام الأوزاعي ( المتوفى سنة 157هـ ) : ( كنا والتابعون متوافرون نقول : إن الله تعالى فوق عرشه ، ونؤمن بما وردت به السنة من صفاته ) .
    2- وقال الإمام عثمان بن سعيد الدارمي ( المتوفى سنة 280 هـ ) في رده على بشر المريسي:
    (اتفقت الكلمة من المسلمين أن الله تعالى فوق عرشه ، فوق سماواته ).
    3ــ وقال الإمام قتيبة بن سعيد ( المتوفى سنه 240هـ) : ( هذا قول الأئمة في الإسلام وأهل السنة والجماعة : نعرف ربنا عز وجل في السماء السابعة على عرشه ، كما قال ( الرحمن على العرش استوى )
    4ــ وقال الإمام أبو زرعة الرازي ( المتوفى سنة 264هـ ) والإمام أبو حاتم : (أدركنا العلماء في جميع الأمصار ، فكان مذهبهم أن الله على عرشه بائن من خلقه ، كما وصف نفسه ، بلا كيف ، أحاط بكل شيء علما ).
    5ــ وقال الإمام بن عبد البر حافظ المغرب ( المتوفى سنة 463هـ ) في كتابه التمهيد ( 6/ 124) في شرح حديث النزول ( …
    وهو حديث منقول من طرق متواترة ، ووجوه كثيرة من أخبار العدول عن النبي صلى الله عليه وسلم … وفيه دليل على أن الله عز وجل في السماء على العرش من فوق سبع سموات ، كما قالت الجماعة ، وهو من حجتهم على المعتزلة والجهمية في قولهم : إن الله عز وجل في كل مكان وليس على العرش . و الدليل على صحه ما قاله أهل الحق في ذلك : قول الله عز وجل ( الرحمن على العرش استوى …) انتهى
    6- وقال الإمام الحافظ أبو نعيم صاحب الحلية في كتابه محجة الواثقين : ( وأجمعوا أن الله فوق سمواته ، عال على عرشه ، مستو عليه ، لا مستولٍ عليه كما تقول الجهمية إنه بكل مكان …).
    وبهذا يعلم أن القول بأن الله في كل مكان ليس من أقوال أهل السنة ، بل هو قول الجهمية والمعتزلة ، ولهذا قال ابن المبارك رحمه الله ( المتوفى سنه 181هـ ) وقد سئل : كيف ينبغي أن نعرف ربنا ؟ قال: على السماء السابعة على عرشه ، ولا نقول : كما تقول الجهمية : إنه هاهنا في الأرض ).
    قال الإمام الذهبي في نهاية كتابه : العلو : ( والله فوق عرشه كما أجمع عليه الصدر الأول ، ونقله عنهم الأئمة. وقالوا ذلك رادين على الجهمية القائلين بأنه في كل مكان محتجين بقوله ( وهو معكم ) فهذان القولان هما اللذان كانا في زمن التابعين وتابعيهم ، وهما قولان معقولان في الجملة. فأما القول الثالث المتولد أخيراً من أنه تعالى ليس في الأمكنة ولا خارجا عنها ولا فوق العرش ولا هو متصل بالخلق ، ولا بمنفصل عنهم ، ولا ذاته المقدسة متحيزة ، ولا بائنة عن مخلوقاته ، ولا في الجهات ، ولا خارجا عن الجهات ، ولا ، ولا ، فهذا شيء لا يعقل ولا يفهم ، مع ما فيه من مخالفة الآيات والأخبار ، ففر بدينك وإياك وآراء المتكلمين ) . انتهى
    فمن قال : إن الله في كل مكان ، يريد نفي علوه على عرشه ، وأنه بذاته في الأمكنة فقوله باطل بل هو كفر بالله تعالى ، لما فيه من إثبات الحلول والامتزاج بالمخلوقات.
    ولهذا قال الإمام ابن خزيمة ( من لم يقل إن الله فوق سمواته على عرشه بائن من خلقه وجب أن يستتاب ، فإن تاب و إلا ضربت عنقه ، ثم ألقي على مزبلة لئلا يتأذى به أهل القبلة ولا أهل الذمة ).
    ومن قال إن الله في كل مكان يريد بذلك علمه تعالى وأنه لا يعزب مكان عن علمه ، فهذا حق ، وينبغي له أن يصرح مع ذلك بأن الله بائن عن خلقه مستو على عرشه لئلا يوهم كلامه حلول الله في خلقه ، تعالى الله عن ذلك .
    وهذا هو معنى قوله تعالى ( وهو معهم أينما كانوا )
    وقوله (ما يكون من نجوى ثلاثة إلا هو رابعهم …) الآية. وقد صح عن الإمام مالك بن أنس رحمه الله أنه قال : ( الله في السماء ، وعلمه في كل مكان لا يخلو منه شيء ) وقد نقل الإمام أبو عمرو الطلمنكي الإجماع على أن المراد بهذه الآية : العلم. وقال القاضي أبو بكر الباقلاني في كتابه الإبانة:
    ( فإن قال: فهل تقولون إنه في كل مكان؟
    قيل له: معاذ الله ، بل هو مستو على عرشه كما أخبر في كتابه فقال الرحمن على العرش استوى ) وقال الله (إليه يصعد الكلم الطيب والعمل الصالح يرفعه ) وقال( أأمنتم من في السماء أن يخسف بكم الأرض فإذا هي تمور) . ولو كان في كل مكان لكان في بطن الإنسان وفمه ، والحشوش ، والمواضع التي يرغب عن ذكرها ، ولوجب أن يزيد بزيادة الأمكنة إذا خلق منها ما لم يكن ، وينقص بنقصانها إذا بطل منها ما كان ، ولصح أن يُرْغب إليه إلى نحو الأرض ، وإلى خلفنا وإلى يميننا وإلى شمالنا ، وهذا قد أجمع المسلمون على خلافه وتخطئة قائله ) انتهى
    وهذه المسألة قد اهتم أهل السنة ببيانها والتصنيف فيها ، فمن أراد الاطلاع على كلام السلف واستدلالاتهم فليرجع إلى هذه المصادر ، ومنها :
    1- كتاب الإيمان والتوحيد لابن منده .
    2- الإبانة لابن بطة العكبري.
    3- التوحيد لابن خزيمة.
    4- كتاب أصول اعتقاد أهل السنة والجماعة للطبري اللالكائي.
    5- كتاب الإبانة للإمام أبي الحسن الأشعري .
    6- كتاب العلو للحافظ الذهبي.
    7- كتاب الفتوى الحموية لابن تيمية.
    8- كتاب اجتماع الجيوش الإسلامية لابن القيم.
    والله أعلم.

    [/AR]​
     
  3. عیاض

    عیاض -: معاون :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 19, 2010
    پیغامات:
    3
    بہت اچھی شیئرنگ ہے ۔ اور حیرانی ہوتی ہے کہ یہ لوگ کیسے اپنے آپ کو بے دھڑک اہل السنہ کہتے ہیں ۔ شرم تم کو مگر نہیں آتی ۔

    جزاک اللہ ۔
     
  4. محمد ارسلان

    محمد ارسلان -: Banned :-

    شمولیت:
    ‏جنوری 2, 2010
    پیغامات:
    10,422
    اللہ تعالیٰ اپنی زات مبارک کے لحاظ سے عرش پر مستوی ہے

    اور بےشک اللہ کا علم اللہ کی قدرت ہر جگہ ہے۔
     
  5. جمیل

    جمیل ركن مجلسِ شوریٰ

    شمولیت:
    ‏جولائی 20, 2009
    پیغامات:
    750
    اللہ کے بارے میں ہر مسلم ومومن کایہ عقیدہ ہونا ضرور ی ہے کہ اللہ تعالی ساتوں آسمانوں کے اوپر عرش پر اپنی شایان شان کیفیت کے ساتھ مستوی ہے۔[ar](الرحمن علی العرش استوی)[/ar] اس کا علم ساری کائنات کو گھیرے ہوے([ar] وأن الله قد احاط بكل شيئ علما[/ar]) ۔وہ ہر چیز سے باخبر ہے۔کوئي چیز اس سے پوشیدہ نہیں۔ وہ ہمیں دیکھ رہاہے۔ وہ علم کے لحاظ سے شہ رگ سے بھی قریب ہے۔ اللہ تعالی ہمارے دل میں پید ا ہونے والے وسوسوں تک کو جانتاہے۔[ar](ولقد خلقنا الانسان ونعلم ماتوسوس بہ نفسہ ونحن اقرب الیہ من حبل الورید)[/ar]
    حضرت زینب بنت جحش فخر کیا کرتی تھیں اللہ نے ان کی شادی ساتوں آسمانوں کے اوپر کرادی ۔اس حدیث سے بھی یہی معلوم ہوتاہے کہ اللہ ساتوں آسمانوں کے اوپر عرش پر مستوی ہے۔
    اور ایک مرتبہ حجۃ الوداع کے موقع پر نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے وہاں حاضر مجمعہ سے خطاب کرتے ہوے کہا کہ کہ کیا میں نے تم تک دین کو پہنچادیا۔ تو سب نے کہا، ہاں ۔ تو نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اپنی انگلی سے آسمان کی بلند کرتے ہوے کہا، اللھم اشھد اے اللہ تو گواہ رہنا۔
    [ar]4- ما رواه أبو داود والترمذي من حديث عبد الله بن عمرو بن العاص أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال " الراحمون يرحمهم الرحمن ، ارحموا من في الأرض يرحمكم من في السماء ".[/ar]
    ابوداود اور ترمذی میں عبد اللہ بن عمرو بن العاص سے مروی ہے کہ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے کہا۔رحم کرنے والے لوگوں پر (الرحمن : بے حد مہربانی کرنے والا) اللہ ان پر رحم کریں گا۔
    زمین والوں پر رحم کرو ،توجو ذات آسمان کے اوپر ہے یعنی اللہ تم پر رحم فرمائے گا۔
    لھذا احادیث سے یہی معلو م ہوتاہے کہ اللہ آسماں پر ہے ہر جگہ نہیں ہے جیسا کہ گمراہ فرقے۔ جھمیہ اور معتزلہ کہتے ہیں۔
    اللہ تعالی ہر جگہ ہے تو اس کا مطلب یہ ہوگا۔ معاذ اللہ انسانوں کے پیٹ میں اور اچھی اور گندی جگھوں میں بھی اللہ ہے۔ بہت غلط مطلب نکلتاہے۔
    [ar]ولهذا قال الإمام ابن خزيمة ( من لم يقل إن الله فوق سمواته على عرشه بائن من خلقه وجب أن يستتاب ، فإن تاب و إلا ضربت عنقه ، ثم ألقي على مزبلة لئلا يتأذى به أهل القبلة ولا أهل الذمة ).[/ar] اسی لیے امام ابن خزیمہ نے کہا، ہے جو یہ نہ کہے کہ اللہ آسمانوں کے اوپر عرش پر ہے مخلو‍ق سے الگ ہے۔ اس سے تو بہ کروائی جائے گی۔ توبہ کرلیا تو ٹھیک ورنہ اس کی گردن ماردی جائے گی۔۔۔ میرے بھائيوں! قرآن حدیث اور اجماع ائمہ رحمہم اللہ کا متفق علیہ عقیدہ یہی ہے کہ اللہ ہر جگہ نہیں ساتوں آسمانوں کے اوپر عرش پر مستوی ہے اور اس کا علم ساری کائنات کو گھیرے ہوے ہے۔
     
    Last edited by a moderator: ‏اپریل 3, 2010
  6. عیاض

    عیاض -: معاون :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 19, 2010
    پیغامات:
    3
    مجھے اس بارے ایک مسئلہ پیش ہے ۔ اہل السنہ کے بعض مشہور لوگ ایسے ہیں جو اللہ کی صفات میں تاویل بھی کرتے ہیں جیسا کہ سیوطی مودودی وغیرہ ۔ ان لوگوں کے بارے ہم کیا رائے اختیار کریں ، انہوں نے حدیث اور تفسیر میں کافی کام کیا ہے ۔
     
  7. جمیل

    جمیل ركن مجلسِ شوریٰ

    شمولیت:
    ‏جولائی 20, 2009
    پیغامات:
    750
    اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم نے جو اللہ کی جو صفات بیان کی ہیں۔اور اللہ نے اپنے کلام مجید میں اپنی صفات بیان فرمایاہے اس کو ہو بہو مانیں گے۔ مثلا اللہ تعالی نے اپنے لیے ہاتھ ثابت کیاہے۔ تو ہم اس کی تاویل کیے بغیر مانیں گے کہ اللہ کو ہاتھ ہے مگر مخلوق جیسا نہیں۔ بلکہ اس کے شایان شان ہے۔اسی طرح ہنستا ہے ،غصہ ہوتاہے ،سنتا ہے دیکھتاہے،انسانوں جیسا نہیں بلکہ اس کے شایان شان۔
    اللہ کی صفات کو بغیر کسی تاویل ،تعطیل ،تحریف ،تشبیہ اور تمثیل کے مانیں گے۔ یہی عقیدہ ہے سب آئمہ ہدی کا اور اہل سنت والجماعت کا بھی یہی عقیدہ ہے۔
    صفات میں تاویل جھمیہ ،معتزلہ اور بعض صفات میں اشاعرہ بھی کرتے ہیں۔
    جو لوگ تاویل کے عقیدہ پر مرگئے ہم ان کے لیے اللہ سے مغفرت کی امید کرتے ہیں۔ کیونکہ انہوں نے برا ارادہ نہیں کیا تھا۔ ارادہ نیک تھا مگر طریقہ غلط تھا۔[AR]ونحن نرجو أن يغفر الله لهم خطأهم، وأن يكونوا داخلين في قوله تعالى: وَلَيْسَ عَلَيْكُمْ جُنَاحٌ فِيمَا أَخْطَأْتُمْ بِهِ وَلَكِنْ مَا تَعَمَّدَتْ قُلُوبُكُمْ وَكَانَ اللَّهُ غَفُورًا رَحِيمًا [الأحزاب:5][/AR] -انہوں نے ایسا صرف اس لیے کیا تھا کہ اللہ کو مخلوق سے تشبیہ نہ دی جائے ،اسی لیے انہوں یہ سمجھا کہ اس سے تشبیہ لازم آتی ہے۔ اس لیے تاویل کرنا ضروری سمجھا۔ تو انہوں نے تاویل کردی۔ مگر انہوں نے یہ نہیں سوچا کہ اگر تشبیہ لازم آتی تو اللہ کے رسول جو مفسر قرآن، اور شارح اسلام تھے کبھی اس بارے میں نہیں بتایا۔ اور صحابہ میں سے کسی نے نہیں پوچھا،وہ لوگ کیسے شرک اور کفر پر خاموش ہوتے۔وہ سب سے زیادہ دین کو جاننے والے تھے۔ مطلب یہ نکلا کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اور صحابہ کرام اس کو ظاہری معنی پر ہی محمول کرتے تھے۔ یعنی اللہ کے شایان شان ، اللہ دیکھتاہے مخلوق کے دیکھنے کی طرح نہیں، وہ سنتاہے ، ہنستا اور غصہ ہوتاہے مخلوق کی طرح نہیں بلکہ اس کی شایان شان کیفت کے ساتھ۔وغیرہ ،
    مزید تفصیل کے لیے یہاں
     
  8. الطحاوی

    الطحاوی -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 5, 2008
    پیغامات:
    1,826
    وقال القاضي أبو بكر الباقلاني في كتابه الإبانة:
    بس میراسوال اتناہے کہ اسی مفتی صاحب سے دوبارہ پوچھ کر بتادیں کہ قاضی ابوبکرباقلانی کی کوئی کتاب ’’الابانہ‘‘کے نام سے ہے یہ کس مورخ نے ذکر کیاہے؟
     
  9. جمیل

    جمیل ركن مجلسِ شوریٰ

    شمولیت:
    ‏جولائی 20, 2009
    پیغامات:
    750
    السلام علیکم۔ بھائي صاحب۔ابوبکر الباقلانی الابانۃ کی شرح لکھی ہے ،!ابوکر الباقلانی
    امام ابن کثیر نے کہا ہے کہ ابو بکر الباقلانی رات میں اس وقت تک نہیں سوتے تھے جب تک کہ وہ بیس صفحات نہ لکھ لیں یہ سلسلہ لمبی مدت تک رہا۔ آپ نے بہت ساری کتابیں تصنیف کی ہیں۔ ان میں سے چند
    شرح الابانۃ
    [AR] شرح اللمع
    ؛ الإمامة الكبرى والإمامة الصغرى
    ؛ التبصرة بدقائق الحقائق
    ؛ أمالي إجماع أهل المدينة؛ المقدمات في أصول الديانات؛ إعجازالقرآن
    ؛ مناقب الأئمة
    ؛ حقائق الكلام
    ؛ التعريف والإرشاد
    ؛ التمهيد في أصول الفقه
    ؛ المقنع في أصول الفقة
    ؛ كتاب في الرد على الباطنية الفاطميين
    ، سماه: كشف
    الأسرار وهتك الأستار
    ؛ تمهيد الأوائل وتلخيص المسائل
    . بغداد میں وفات پائی
    .
    [/AR]
    ابوبکر الباقلانی
     
  10. جمیل

    جمیل ركن مجلسِ شوریٰ

    شمولیت:
    ‏جولائی 20, 2009
    پیغامات:
    750
  11. حرب

    حرب -: مشاق :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 14, 2009
    پیغامات:
    1,082
    اگر آپ کے علم میں ہے تو بتائیں کے یہ کس قسم کی تاویل پیش کرتے ہیں اس حوالے سے کچھ ہم کو بھی پتہ چلے۔۔۔۔
     
  12. الطحاوی

    الطحاوی -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 5, 2008
    پیغامات:
    1,826
    ’’کتاب الابانۃ‘‘اصلاجومشہور ہے توامام ابوالحسن اشعری والی،ویسے اس میں بھی کچھ شکوک شبہات پیش کئے گئے ہیں۔کتاب الابانہ جو قاضی ابوبکر باقلانی کی ہے تووہ اس وقت مفقود ہے یعنی اس کا کوئی بھی نسخہ کہیں دستیاب نہیں ہے۔صرف علمائے متقدمین کی کتابوں میں اس کاذکرملتاہے۔اس کے کچھ اقتباسات شیخ الاسلام ابن تیمیہ نے اپنے فتاوے میں اورابن قیم نے اجتماع جیوش الاسلامیہ میں نقل کئے ہیں اوراسی سے ہمارے ان مفتی صاحب نے بھی اخذ کیاہے لیکن انہوں نے بجائے اس کے کہ جہاں سے لیاہے اس کو ذکرکرتے براہ راست اصل ماخذ کاذکرکیاہے۔
    اب اس سلسلے میں دوسری بحث کی جانب آتے ہیں۔تاویل کاطریقہ مشہور ومعروف ہے اس کو گمراہی کہنا شدت پسندی ہے جس سے بچناچاہئے۔اسے بھی ایک طریقہ تسلیم کرناچاہئے چاہے افضل اوربہتر نہ سمجھاجائے۔
    اورجہاں تک بات امام ابن خزیمہ کے اس قول
    ولهذا قال الإمام ابن خزيمة ( من لم يقل إن الله فوق سمواته على عرشه بائن من خلقه وجب أن يستتاب ، فإن تاب و إلا ضربت عنقه ، ثم ألقي على مزبلة لئلا يتأذى به أهل القبلة ولا أهل الذمة کی ہے تو ان کی کتاب التوحید اٹھاکر دیکھ لیجئے خود انہوں‌نے بعض مواقع پر تاویل کی ہے۔مثلامشہور حدیث کہ اللہ نے آدم کو اپنی صورت پر پیداکیاہے دیکھ لیجئے کیاتاویل کی ہے تواس قول کا زیادہ مستحق کون ہوگا۔
     
  13. حرب

    حرب -: مشاق :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 14, 2009
    پیغامات:
    1,082
    مگر تاویل کیا پیش کی سوال یہ ہے؟؟؟۔۔۔ اب میرے پاس یہ کتاب نہیں ہے تو میں اس صورت میں کیا کروں؟؟؟۔۔۔ برائے مہربانی مجھے وہ تاویل بھی پوری پیش کردیں مگر اردو میں ہو تاکہ سمجھنے میں آسانی ہو۔۔۔ کیونکہ اگر ابن خزیمہ سے تاویل ثابت ہے تو پھر یہ عمل بُرا کہاں سے ہوا؟؟؟۔۔۔
     
  14. جمیل

    جمیل ركن مجلسِ شوریٰ

    شمولیت:
    ‏جولائی 20, 2009
    پیغامات:
    750
    کتاب التوحید امام ابن خزیمہ کی کتاب ڈاون لوڈ کیجئیے!یہاں کلک کرکے
     
  15. الطحاوی

    الطحاوی -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 5, 2008
    پیغامات:
    1,826
  16. جمیل

    جمیل ركن مجلسِ شوریٰ

    شمولیت:
    ‏جولائی 20, 2009
    پیغامات:
    750
    [AR]أما كتاب (الإبانة عن إبطال مذهب أهل الكفر والضلالة) فهو من كتب الباقلاني المشهورة، ولا يزل مفقوداً، وقد ذكره القاضي عياض في (ترتيب المدارك) 2/601، وشيخ الإسلام في (درء تعارض العقل والنقل) 3/382، 3/206، وفي (نقض التأسيس) 2/34، وابن القيم في (اجتماع الجيوش الإسلامية) ص303، وابن كثير في (البداية والنهاية) 11/350 باسم شرح الإبانة، والذهبي في العلو ص173، وأشار سزكين إلى هذا الكتاب ضمن مؤلفات الباقلاني [/AR]
    [AR]رجوع الباقلاني عن التأويل إلى مذهب السلف[/AR]
     
  17. الطحاوی

    الطحاوی -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 5, 2008
    پیغامات:
    1,826
    چلئے آپ نے حوالہ بھی فراہم کردیا میری بات کاجس سے میری بات اوربھی زیادہ موکد ہوگئی کہ مفتی صاحب نے اصل ماخذ کو دیکھانہیں لیکن اس کاذکر کردیا۔
     
  18. جمیل

    جمیل ركن مجلسِ شوریٰ

    شمولیت:
    ‏جولائی 20, 2009
    پیغامات:
    750
  19. الطحاوی

    الطحاوی -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 5, 2008
    پیغامات:
    1,826
    میں سمجھانہیں کہ امام ابن خزیمہ کی سیرت کا لنک دینے کا کیامقصد ہے؟؟؟
     
  20. حرب

    حرب -: مشاق :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 14, 2009
    پیغامات:
    1,082
    حدیث کا آدم کی تاویل اگر کسی کے پاس ہو تو برائے مہربانی اس کو یہاں‌پر پیش کریں مگر درخواست ہے وہ اردو میں‌ہو۔۔۔
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں