اردو کے ساتھ اردو والوں کا رو یہ

اسلم صیاد نے 'ادبی مجلس' میں ‏مئی 14, 2011 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. اسلم صیاد

    اسلم صیاد -: معاون :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 7, 2011
    پیغامات:
    64
    السلام علیکم !

    آج کل اردو زبان کی سرپرستی وغیرہ کے تعلق سے حکومت ہند کی طرف سے جتنا پرو پیگنڈہ کیا جاتا ہے وہ ظاہر ہے مگر عملا اردو کے ساتھ جو نا انصافی ہو رہی ہے وہ بھی اظہر من الشمس ہے ۔ان سب کے باو جود خود اردو والوں کی طرف سے جو ظلم و ستم اردو زبان پر ہو رہا ہے وہ تو نا قابل بیان ہے۔

    مثلا یہ کہ:۔
    (1) جن لوگوں کی مادری زبان اردو ہے اکثر ان کی اولادوں کا حال یہ ہے کہ زبان اردو تو کجا اس کی ابتدائی صؤرت سے بھی نا آشنا ہیں (صرف بول چال جاری ہے)

    (2) اپنی مادری زبان اردو کو چھوڑ کر بقیہ جس زبان میں چاہے مثلا ہندی انگریزی وغیرہ میں اپنے بچوں کو ذریعہ تعلیم دلوانے کے تو دیوانے بنے جارہے ہیں ۔خصوصا انگریزی ذریعہ تعلیم تو گویا ایسا معلوم ہوتا ہے کہ اب انگریزی دور ہی شروع ہو رہا ہے اور بغیر انگریزی کے چارہ نہیں ۔
    اس لئے کوئی دوسری زبان چاہے کتنی ہی اہم کیوں نہ ہو مگر انگریزی میڈیم کے بغیر بچوں کا مستقبل نہیں ۔

    (3) انگریزی ذریعہ تعلیم کے دیوانوں کا تو یہ حال ہے کہ بچہ چاہے آئندہ چل کر دینی تعلیم کچھ بھی نہ حاصل کر سکے مگر انگریزی پڑھانا ہے ۔آج یہی وجہ ہے کہ بچے نے انگریزی کی مکمل تعلیم حاصل کر لی مگر کلمہ طیبہ سے نا بلد ہے ۔دینی شعور نہیں ہے اخلاق و عادات درست نہیں ہیں وغیرہ۔

    (4)آج جس طرح سے ہند و پاک کے مسلمانوں نے اپنی مادری زبان اردو سے بے اعتنائی برتی ہے شاید ہی کسی قوم نے اپنی مادری زبان کے ساتھ ایسا سلوک کیا ہو۔

    (5)چونکہ ہندوستان میں مسلمانوں کی عمومی زبان اردو ہے اور اس کو نہ سیکھ کر اپنی تہذیب ،تاریخ اور اپنی خصوصیات کو بھلا رہے ہیں ۔وہ تو شاید ایک الم ناک داستان ہو گی ۔ان سب کی وجہ سے اپنی آخرت اور دنیا جس طرح سے برباد کر رہے ہیں وہ نہ پوچھیئے۔

    (6)الحمد للہ کچھ ایسے ادارے ہیں جو نہایت سنجیدگی اور حکمت عملی سے اردو کو فروغ دے رہے ہیں ۔جن میں سے ایک اردو مجلس ہے جس کا بنیادی مقصد ہی اردو کو فروغ دینا ہے۔ کاش اس اردو مجلس سے ہر ایک مسلمان جڑ کر اردو کو ترویج و ترقی دیتے تو توقع ہے کہ اردو پھلے گی اور پھولے گی ۔ورنہ نئی نسل کا تو خدا ہی حافظ ہےکہ اردو کے تعلق سے اس کا کیا رویہ رہے گا اور ہند و پاک میں اردو کا مستقبل کیا ہو گا ۔اللہ ہم سب کو اردو مجلس کے ساتھ مل کر اردو کی ترقی اور دین اسلام کی اشاعت کی توفیق عطا فرمائے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  2. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,432
    وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ ۔
    الحمد للہ ۔ جزاکم اللہ خیرا وبارک فیکم۔
    اللہ آپ کی دعا قبول فرمائے اور ہم سب کو اردو مجلس کے ساتھ ملکر اردو کی ترقی اور دین خالص اسلام کی اشاعت کی توفیق عطا فرمائے ، آمین ۔
     
  3. نعمان نیر کلاچوی

    نعمان نیر کلاچوی ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 25, 2011
    پیغامات:
    552
    آمین۔۔۔ جزاک اللہ بھائی انتہائی فکر انگیز تحریر ہے
     
  4. کفایت اللہ

    کفایت اللہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏اگست 23, 2008
    پیغامات:
    2,021
    ماشاء اللہ اسلم بھائی کیا زبردست تحریر پیش کی ہے اللہ برکت دے بھائی واقعی آپ نے صحیح کہا اردومجلس سے جہاں ہمیں دین سیکھنے کو مل رہا ہے وہیں اردوزبان بھی سیکھنے کو مل رہی ہے ، آپ تو میرے کلاس فیلو اورہم مدرسہ ساتھی ہیں اچھی طرح جانتے ہیں‌ کہ اردو میں میرا کیا حال ہے الحمدللہ جب سے میں نے یہاں قدم رکھا بہت کچھ سیکھا ہے اورروزآنہ کچھ نہ کچھ سیکھنے کو مل رہا ہے ، بعض‌ بھائیوں‌ کی اردو تو مجھے بہت اچھی لگتی ہے مثلا عکاشہ بھا ئی ، ام نورالعین صاحبہ ، رفی بھائی اوربھی بہت سے لوگ ہیں‌۔

    بالخصوص نعمان بھائی تو ماشاء اللہ زبرست ادیب ہیں‌ میں تو ان کی ہر تحریر پڑھتا ہوں‌ ، اورسیکھتا ہوں‌ ، آپ بھی ان کی تحریر پڑھا کریں ، ان شاء اللہ بہت فائدہ ہوگا۔
     
  5. abrarhussain_73

    abrarhussain_73 --- V . I . P ---

    شمولیت:
    ‏اپریل 6, 2009
    پیغامات:
    371
    بہت خوب۔ شکریہ
     
  6. ابو عبداللہ صغیر

    ابو عبداللہ صغیر -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏مئی 25, 2008
    پیغامات:
    1,980
    وعلیکم السلام و رحمۃ اللہ و برکاتہ
    ایک بہترین تحریر کے لیے جزاک اللہ
    ہمارا بھی ادھر یہی حال ہے۔ ہم اردو بولتے ہوئے نا چاہتے ہوئے بھی کافی سارے الفاظ انگش کے یوز کر جاتے ہیں۔
    اردو کو ہاتھ سے لکھنے میں‌تو جان جاتی ہے۔کبھی کوئی بھائی چھوٹی موٹی تحریر بھی کہے کہ لکھ دو تو کوشش ہوتی ہے کہ ٹائپ کر کے پرنٹ نکال دیں۔ لکھنا نہ پڑے۔
     
  7. منصف

    منصف -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 10, 2008
    پیغامات:
    1,920
    بہت اچھی تحریر اسلم صیاد جزاک اللہ ۔۔۔

    یہ بات بالکل درست ہے کہ اردو کے ساتھ جو نارواں سلوک اپنے لوگ کررہے ہیں وہ غیر بھی نہ کریں۔۔
    اس میں ایک اہم کردار میڈیا کا ہے کیونکہ اب وہ زمانہ نہیں رہا کہ لوگ کتب بینی کریں یا ادبی باتوں کو اپنے گفتگو کا حصہ بنائے
    اب جو کچھ ہے میڈیا ہے لوگ اسی سے اثر لیتے ہیں ۔۔۔خاص کر کے "بازاری اور گھٹیا" جملہ جو خصوصاَ بھارتی فلموں کا خاصہ ہے
    اسکو اپنایا جاتا ہے اور ضمن میں اردو میڈیا بالخصوص دنیا میڈیا کا تھرڈ کلاس اور انتہائی پست درجہ کا "پاکستانی" میڈیا اس سے
    بھی دو ہاتھ آگے ہے ۔۔۔

    جب سے پاکستان نے بھارت کی نقالی کی ہے بالخصوص ڈراموں اور دوسرے پروگرامز میں تو "ادب" سے مکمل کنارہ کش ہوگیا ہے
    جو کبھی پاکستان کا خاصہ ہؤا کرتا تھا ۔۔

    گورے میڈیا کا کالا بھارت جس بھونڈے طریقہ سے "ہندی" کو فروغ دے رہا ہے وہ ایک مضحیکہ خیز ہونے کے ساتھ سنجیدہ سازش ہے
    چنانچہ 70-80 کی دہائیوں کی فلموں کو لے لیں تو محض چند جملے "سنسکرت" کے ہؤا کرتے تھے مثلاً "وشواش" ۔۔۔"وچن" وغیرہ
    تاہم "مسلمان" رائٹرز اور ڈئلوگ لکھنے والے کی وجہ سے "اردو" زیادہ بولی جاتی تھی ۔۔۔خاص کرکے عدالتی کارروائی کے "سین" میں پر نوے اور دو ہزار کی تقریباً تمام فلموں پر متعصب قسم کے ہندوؤں کا راج رہا ہے چنانچہ بہت سے الفاظ جو کہاردو کے تھے اب
    عجیب اللغت جناتی زبان "سنسکرت" کا حصہ بن گئے جسے ان پڑھ لوگ "ہندی" کہتے ہیں
    مثال کے طور پہ جس ادکار کو ستر-اسی کی دہائیوں کی فلموں میں "خراش" آتی تھے اب اسی اداکار کو "خروش" آتی ہے ۔۔
    بھلا کوئی بتائے "خروش" ہوتی کیا بلا ہے ۔۔۔ایسیے ہی دوسرے گھٹیا الفاظوں کی مثالیں بھری پڑیں ۔۔۔

    بہرکیف قصور انکا نہیں اپنے لوگوں کا ہے جو کارٹونی زبان سیکھے گا کارٹون ہی بنے گا


    میکڈونلڈ اور برگرز زدہ معاشرہ میں اردو دم توڑرہی ہے اور مجھے خدشہ ہے کہ جس تیزی سے انگریزی کو فروغ دیا جارہا ہے
    اسی تیزی سے "اردو" روبہ زوال ہے ۔۔۔

    اس ضمن میں "اردو مجلس" کی کاوش قابل ستائش ہے ۔۔فروغ اردو کے لیے ویب فورم میں "اردو مجلس" اردودان کے لیے
    قابل تقلید ہے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  8. جاسم منیر

    جاسم منیر Web Master

    شمولیت:
    ‏ستمبر 17, 2009
    پیغامات:
    4,638
    ماشاءاللہ بہت ہی زبردست اور فکر انگیز تحریر ہے۔ جزاک اللہ‌خیرا بھائی
    آمین۔
    میرے خیال سے بحیثیت والدین بھی ہمیں چاہیے کہ ہم اپنے بچوں کو اچھے اچھے اسلامی ناول، اسلامی کتابیں پڑھنے کے لیے دیا کریں، تاکہ ایک تو ان میں اردو سیکھنے، بولنے اور لکھنے کا شوق پیدا ہو اور دوسرا انکی تربیت کے لیے بھی یہ ضروری ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  9. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,485
    مطالعہ بہت ضرورى ہے۔
     
  10. شبر

    شبر نوآموز

    شمولیت:
    ‏جون 19, 2016
    پیغامات:
    8
    اسلام علیکم۔۔۔
    جناب ہندوستان کی صورت حال سے آگاہی ہوئی۔ جس کیلئےمشکور ہوں۔ بندے کا تعلق چونکہ پاکستان سے ہے اس لئے یہاں کی بات ہی رکھ سکتا ہوں۔ ہماری تو قومی زبان ہی اردو ہے اور دکھ کے ساتھ کہنا پڑے گا کہ یہاں بھی اردو کے ساتھ کوئی اچھا سلوک نہیں ہو رہا۔
    اردو ہے جس کا نام۔۔۔۔۔
    جناب مشکود ہوں کہ آپ نے ایک اہم موضوع پر غور و فکر کی دعوت دی۔ اردو زبان کی اہمیت مسلم اور حالت زار سب پہ آشکار ہے۔ آپ نے اس پر بھرپور روشنی ﮈالی ہے۔ جناب سوال تو یہ ہے کہ زبانیں کیسے ترقی کرتی ہیں اور ان کی ترقی کا پیمانہ کیا ہے؟ اگر ادب تو تخلیق کار کی ﺫمہ داریاں کیا ہیں؟ اردو لکھنے پڑھنے پر ہم کیسے نئی نسل کو مائل کر سکتے ہیں؟ جبکہ اردو کے علماء کی مناسب پزیرائی بھی نہیں ہو رہی۔
    یہ سوالات میری کم علمی کا اظہار تو ہیں ہی۔۔لیکن امید کرتا ہوں میری کم علمی کو شفقت سے نظر انداز کرتے ہوے ان کا جواب دے دیا جاۓ گا شاید میرے ساتھ ساتھ کسی اور صاحب کے خدشات و تفکرات کا تدارک بھی ہو سکے۔
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں