ظل محمدَی عرف امامت محمَّدِی۔ از:مولانا محمد جونا گڑھی رحمہ اللہ علیہ

ابوبکرالسلفی نے 'اردو یونیکوڈ کتب' میں ‏ستمبر 18, 2011 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. ابوبکرالسلفی

    ابوبکرالسلفی محسن

    شمولیت:
    ‏ستمبر 6, 2009
    پیغامات:
    1,672
    بسم اللہ الرحمٰن الرحیم


    [FONT="Al_Mushaf"]ظل محمَّدِی
    عرف
    امامت محمَّدِی

    مصنف: خطیب الہند مولانا محمد جونا گڑھی رحمہ اللہ علیہ
    کمپوزنگ: أبوبکرالسلفی


    حضرات!
    مولانا محمد صاحب رحمہ اللہ کا زیر نظر مضمون سب سے پہلے اخبار"محمدی" دہلی کے شمارہ 13 جلد 16میں 15 مارچ سنہ 1943ء کو شائع ہوا تھا۔
    دوسری بار یہی مضمون ایک رسالے کی شکل میں بنام" ظل محمدی عرف امامت محمدی" اشاعت پذیر ہوا۔
    عوام کی آگاہ کے خیال سے اب اسے پھر شائع کیا جارہا ہے تاکہ لوگ نقلی اماموں کی ہوس کاریوں کا شکار نہ ہوں۔
    [FONT="Al_Mushaf"]
    وَمَا تَوفِیقِی اِلَّا باللہِ
    [/FONT]

    [FONT="Al_Mushaf"]بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
    نَحمَدُہ وَ نُصَلِّی عَلیٰ رَسُولِ الکَرِیم۔[/FONT]​

    اس سے پہلے اخبار محمدی کے نمبر ۳ جلد ۱۴ میں ایک بسیط مضمون اسی مسئلے پر نکل چکا ہے اور اس سے پہلے بھی دو مضمون اسی مسئلے پر "محمدی" میں اور بھی شائع ہو چکے ہیں۔ جن مقامات میں امامت کا وبائی کیڑا اب تک پیدا نہیں ہوا وہ حضرات اس مضمون کی اہمیت کا احساس گونہ کریں لیکن جہاں یہ فتنہ پیدا ہو چکا ہے وہاں کے اصحاب خوب جانتے ہیں کہ اس کے شعلے کس قدر بلند ہوچکے ہیں۔ اور اس کی وجہ سے کس قدر افتراق اور شقاق جماعت میں رونما ہوگیا ہے۔ اس لئے ہم چاہتے ہیں کہ موجودہ مدعیان امامت کے خلاف دلائل کا ایک بیش قیمت ذخیرہ دنیا کے سامنے پیش کردیں۔ [FONT="Al_Mushaf"] لِّيَهْلِكَ مَنْ هَلَكَ عَن بَيِّنَةٍ وَيَحْيَىٰ مَنْ حَيَّ عَن بَيِّنَةٍ[/FONT] تاکہ ہر شخص اپنے لئے راستہ صاف کرلے اور جو حق پر قائم رہے وہ بھی بدلائل اور جو باطل پر مرنا چاہے وہ بھی بعد از دلائل گو اس سے پہلے کے تین نمبروں میں بہت سے دلائل آچکے ہیں لیکن آج میں انشاء اللہ آپ کو صرف وہ حدیثیں سناؤں گا جو اس مسئلے کو ایسا صاف کردیں جس کے بعد کسی کو شک شبہ باقی نہ رہے ۔[FONT="Al_Mushaf"]وَالتَّو فیقُ بِیَدِاللہِ۔[/FONT]
    (1)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمَ : " مَا مِنْ أُمَّتِي أَحَدٌ وَلِيَ مِنْ أَمْرِ الْمُسْلِمِينَ ، النَّاسِ ، شَيْئًا لَمْ يَحْفَظْهُمْ بِمَا يَحْفَظُ بِهِ نَفْسَهُ وَأَهْلَهُ ، إِلا لَمْ يَجِدْ رَائِحَةَ الْجَنَّةِ " [/FONT]
    [FONT="Al_Mushaf"] المعجم الصغير للطبراني » بَابُ الْمِيمِ » مَنِ اسْمُهُ مُحَمَّدٌ
    رقم الحديث: 919
    المعجم الأوسط للطبراني » بَابُ الْمِيمِ » مَنِ اسْمُهُ : مُحَمَّدٌ
    رقم الحديث: 7795
    [/FONT]
    "یعنی میری امت میں سے جو بھی مسلمانوں کے کسی امر کا والی بنے، پھر جس طرح وہ اپنے آپ کو اور اپنی اہل و اعیال کی حفاظت کرتا ہے اسی طرح مسلمانوں کی حفاظت نہ کرے تو اسے جنت کی خوشبو تک نہ ملے گی۔"

    پس معلوم ہوا کہ مسلمانوں کے امام امیر اور خلیفہ کے لیے یہ ضروری ہے کہ وہ اپنے آپ اور اپنے اہل و عیال اور مسلمانوں کی حفاظت پر اور انہیں دشمنان ِ دین کی ایذاؤں اور ان کی ماتحتی سے بچانے پر قادر ہو اور اگر وہ ایسا نہ کرے تو وہ جنت سے محروم ہے۔

    (2)
    اگر وہ امامیہ ہمیشہ یہ حدیث پیش کرتا رہتا ہے کہ تم میں سے کوئی رات نہ گزارے ، صبح نہ کرے، شام نہ کرے، مگر اس حالت میں کہ اس کا امام ہو۔
    یاد رہے کہ اول تو اس حدیث کے شروع مں ہے مَنِ استطاع یعنی جسے طاقت ہو وہ ایسا کرے ۔ ظاہر ہے کہ ہندوستان میں غیر مسلم حکومت ہے اس لئے جس طرح اس حکومت سے جہاد کی طاقت سردست ہم میں نہیں اسی طرح ان کی حکومت میں رہتے ہوئے اپنی سلطنت یعنی خلافت و امارت قائم کرنے کی بھی طاقت ہم میں نہیں۔ پس ہم من استطاع میں سردست داخل نہیں۔ اللہ تعالیٰ وہ وقت جلد لائے۔
    دوسرے اس روایت میں ہے
    [FONT="Al_Mushaf"]وَلَكِنِّي أَكْرَهُ أَنْ أُبَايِعَ أَمِيرَيْنِ مِنْ قَبْلِ أَنْ يَجْتَمِعَ النَّاسُ عَلَى أَمِيرٍ وَاحِدٍ[/FONT]

    [FONT="Al_Mushaf"]مسند أحمد بن حنبل » مُسْنَدُ الْعَشَرَةِ الْمُبَشَّرِينَ بِالْجَنَّةِ ... » بَاقِي مُسْنَد المُكْثِرِينَ مِنَ
    الصَّحَابَةِ » مسْنَدُ أَبِي سَعِيدٍ الْخُدْرِيِّ رَضِيَ اللَّهُ ...
    رقم الحديث: 11030
    [/FONT]
    یعنی دو اماموں سے بیعت کرنا حرام ہے جب تک ایک امام کی بیعت پر تمام مسلمانوں کا اجتماع نہ ہو جائے تب تک بیعت کرنا ہی مکروہ ہے۔ چنانچہ صحیح حدیث میں آچکا ہے کہ جب دو اماموں کے لئے بیعت کی جائے تو ان دونوں میں سے پچھلے کو قتل کردو۔ اس لئے ٹھیک بات تو یہ ہے کہ موجودہ ہندوستانی دعویدارانِ امامت پہلے آپس میں نمٹ لیں یہاں تک کہ ایک رہ جائے۔
    تیسرے یہ کہ یہ حدیث ضعیف ہے ۔ اس کا راوی بشیر بن حرب ہے۔
    راوی کا حکم یہاں دیکھیں۔

    (3)
    [FONT="Al_Mushaf"]عن عمرو البكالي قال : سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يقول[/FONT]
    "[FONT="Al_Mushaf"] إِذَا كَانَ عَلَيْكُمْ أُمَرَاءُ يَأْمُرُونَكُمْ بِالصَّلاةِ وَالزَّكَاةِ وَالْجِهَادِ ، فَقَدْ حَرَّمَ اللَّهُ عَلَيْكُمْ سَبَّهُمْ ، وَحَلَّ لَكُمُ الصَّلاةُ خَلْفَهُمْ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"] المعجم الكبير للطبراني » بَابُ الْوَاوِ » وَائِلُ بْنُ حَجَرٍ الْحَضْرَمِيُّ القيل » بَابٌ
    رقم الحديث: 13581
    [/FONT]
    "یعنی جب تم پر ایسے امیر امام ہوں جو تمہیں نماز کا، زکوٰۃ کا اور جہاد کا حکم دیں تو اس وقت ان کو برا کہنا تم کو حرام ہوگا اور ان کی اطاعت تمہارے لئے حلال ہوگی۔"
    معلوم ہوا کہ جہاد کا حکم نہ دینے والے اماموں کو برا کہنا اور ان کی اطاعت نہ کرنا شرعیت کا حکم ہے۔یہ بھی واضح رہے کہ نماز و زکوٰۃ کا حکم بھی مثل نہتے بے قدرت لوگوں کو دنیا مراد نہیں۔ بلکہ امام ڈنڈے کے زور سے زکوٰۃ اور جہاد قائم رکھے گا اور جو ایسا نہ کر سکے وہ شرعاً امامت کا اہل نہیں۔

    (4)
    اس امامت بمعنی امارت و خلافت کے فرائض منصبی بھی بذبان رسول معظم معصوم ﷺ سن لیجئے:
    [FONT="Al_Mushaf"]زرین جییش قال انی سمعت رسول اللہ یقول ۔
    فَأَمَّا الْبَرَّةُ فَتَعْدِلُ فِي الْقَسْمِ ، وَيُقْسَمُ بَيْنَكُمْ فَيْأكُمْ بِالسَّوِيَّةِ [/FONT]
    [FONT="Al_Mushaf"]المعجم الكبير للطبراني » بَابُ الظَّاءِ » الاخْتِلافُ عَنِ الأَعْمَشِ فِي حَدِيثِ عَبْدِ اللَّهِ ... » وَخَالَفَهُمْ إِسْرَائِيلُ
    رقم الحديث: 10067
    [/FONT]
    "یعنی نیک امامت وہ ہے جو عدل و انصاف کے ساتھ تقسیم کرے اور مال غنیمت وفے کو تم میں برابری کے ساتھ بانٹ دے۔"
    لیکن موجودہ دعویدارانِ امامت تو کفر کے غلام ہیں نہ یہ جہاد کر سکیں نہ ان کے ہاتھ اسلام سے برسرِ پیکار آنے والے کافروں کے مالِ غنیمت آئیں نہ انہیں تقسیم کی ضرورت پس منصب امامت کے لائق یہ ہرگز نہیں اس لئے کہ فرائض امامت ان کے بس کے نہیں۔

    (5)
    [FONT="Al_Mushaf"]عن عبادۃ بن الصامت رضی اللہ عنہ قَا لَ قَالَ رَسولَ اللہِﷺ:
    سيكون أمراء من بعدي يأمرونكم بما تعرفون ويعملون ما تنكرون فليس أولئك عليكم بأئمة[/FONT]
    [FONT="Al_Mushaf"]مجمع الزوائد، الصفحة: 5/230
    [/FONT]
    "یعنی میرے بعد ایسے امام ہوں گے جو تمہیں تو وہ حکم کریں گے جو تم جانتے ہو( یعنی اپنے حقوق تم سے طلب کریں گے وغیرہ) لیکن خود وہ کریں گے جس سے تم انکاری ہو(یعنی فرائض امامت ادانہ کریں گے یا نہ کرسکیں گے) یا درکھو یہ تمہارے امام نہیں۔"
    پس آج کل کے موجودہ مدعیان امامت خواہ ہندوستان وغیرہ کے کسی حصہ کے ہوں ان کی امامت کے ماننے سے اللہ کے رسول ﷺ ہمیں منع فرماتے ہیں۔ صاف ارشاد ہے کہ یہ لوگ امام نہیں۔

    (6)
    [FONT="Al_Mushaf"]عن عَلَى عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ[/FONT]
    " [FONT="Al_Mushaf"]لَا يَحِلُّ لِلْخَلِيفَةِ مِنْ مَالِ اللَّهِ إِلَّا قَصْعَتَانِ : قَصْعَةٌ يَأْكُلُهَا هُوَ وَأَهْلُهُ ، وَقَصْعَةٌ يَضَعُهَا بَيْنَ يَدَيْ النَّاسِ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"]مسند أحمد بن حنبل » مُسْنَدُ الْعَشَرَةِ الْمُبَشَّرِينَ بِالْجَنَّةِ ... » مُسْنَدُ الْخُلَفَاءِ الرَّاشِدِينَ
    رقم الحديث: 565
    [/FONT]
    "یعنی امام و خلیفہ کے لیے اللہ کے مال (یعنی بیت المال) میں سے صرف دو پیالوں (برتنوں) کے سوا اور کچھ حلال نہیں۔ ایک برتن اپنے اور اپنے گھر والوں کے کھانے پینے کے لیے دوسرا برتن مہمان کے سامنے رکھنے کے لئے۔"
    یہ بھی یاد رہے کہ یہ چیز بھی امام کی ملکیت نہیں ۔ چنانچہ جب امام اوّل خلیفۃ المسلمین امیر المومنین صدیق اکبر حضرت ابوبکر صدیق ؓ کے انتقال کا وقت آتا ہے تو آپ اپنی صاحبزادی امَّ المومنین حضرت عائشہ صدیقہ ؓ سے فرماتے ہیں کہ یہ چیزیں بیت المال کی ہیں انہیں میرے بعد بیت المال میں داخل کرادینا:
    [FONT="Al_Mushaf"]فإنا كنا ننتفعبذلك حين كنا نلي أمر المسلمين[/FONT]
    [FONT="Al_Mushaf"] المعجم الكبير » العشرة المبشرون بالجنة، رقم: 38
    [/FONT]
    "کیوں کہ ان سے نفع اٹھانے کے حقدار ہم وہیں تک تھے جب تک مسلمانوں کے کام کے ہم ولی تھے۔"
    لیکن آج کل تو آپ جانتے ہوں گے کہ موجودہ امامت تو ہے ہی صرف ٹکے رولنے کے لیے۔ چنانچہ مدعی امامت علاوہ نقدی کے ہزار ہا روپے کی غیر منقول جائیدادیں اور زمینیں چھوڑ کر جاتے ہیں۔

    (7)
    [FONT="Al_Mushaf"]عن سعد بن تمیم قال : قلت یا رسول اللہ مَا لِلْخَلِيفَةِ بَعْدَكَ ؟ قَالَ[/FONT] : " [FONT="Al_Mushaf"]مَا لِي مَا رَحِمَ ذَا الرَّحِمِ ، وَأَقْسَطَ فِي الْقِسْطِ ، وَعَدَلَ فِي الْقِسْمَةِ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"] المعجم الكبير للطبراني » بَابُ السِّينِ » سَعْدُ بْنُ تَمِيمٍ أَبُو بِلالٍ السَّكُونِيُّ ، رقم الحديث: 5324
    [/FONT]
    "حضرت سعد پوچھتے ہیں کہ یا رسول اللہ! آپ کے بعد جو خلیفہ اور امام ہو اس کا حق کیا ہے؟ آپ نے فرمایا جو میرا ہے جب تک کہ قابل رحم لوگوں پر رحم کرے، انصاف اور عدل کا دامن نہ چھوڑے اور مسلمانوں میں (مال غنیمت وغیرہ) کی تقسیم عدل کے ساتھ کرے۔"
    مسلمانو! بتلاؤ کہ یہ تہی دست غلامانِ کفرنہ تو مظلوموں کی امداد پر قادر ہیں نہ ان کے گھر عدالتیں ہیں، جن میں یہ عدل و انصاف کے ساتھ فیصلہ کریں نہ یہ کافر سلطنتوں سے جہاد کرسکتے ہیں جس کے بعد مال غنیمت کی تقسیم کا وقت آئے۔ پھر یہ امامت ہے یا قیامت؟

    (8)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَن اَبِی بَکرِ اَنَّ رَسولَ اللہِﷺ قَالَ[/FONT] " [FONT="Al_Mushaf"]مَنْ وَلِيَ مِنْ أَمْرِ الْمُسْلِمِينَ شَيْئًا ، فَأَمَّرَ عَلَيْهِمْ أَحَدًامُحَابَاةً ، فَعَلَيْهِ لَعْنَةُ اللَّهِ ، لَا يَقْبَلُ اللَّهُ مِنْهُ صَرْفًا وَلَا عَدْلًا ، حَتَّى يُدْخِلَهُ جَهَنَّمَ[/FONT]"
    [FONT="Al_Mushaf"]مسند أحمد بن حنبل » مُسْنَدُ الْعَشَرَةِ الْمُبَشَّرِينَ بِالْجَنَّةِ ... » مُسْنَدُ الْخُلَفَاءِ الرَّاشِدِينَ » مُسْنَدُ أَبِي بَكْرٍ الصِّدِّيقِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ...
    رقم الحديث: 21
    [/FONT]
    "یعنی جو شخص مسلمانوں کے کسی کام کا والی ہو پھر ان پر کسی کو امیر وامام بنالے محض اس کی محبت کی وجہ سے تو اس پر اللہ کی لعنت ہے۔ نہ اس کے فرائض قبول نہ نوافل وہ جہنمی شخص ہے۔"
    موجودہ زمانے کے وہ دعویدارانِ امامت جو اپنے بعد یہ منصب اپنے فرزندوں کو محض اپنی محبت کی وجہ سے سونپ کر گئے ہیں اللہ جانے کے اللہ کے ہاں ان کا کیا حال ہوگا؟

    (9)
    [FONT="Al_Mushaf"][FONT="Al_Mushaf"]عَنْ مُعَاذِ بْنِ جَبَلٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ[/FONT] [/FONT]: " [FONT="Al_Mushaf"]لا تَقُومُ السَّاعَةُ حَتَّى يَبْعَثَ اللَّهُ أُمَرَاءَ كَذَبَةً ، وَوُزَرَاءَ فَجَرَةً ، وَأُمَنَاءَ خَوَنَةً ، وَقُرَّاءً فَسَقَةً سِمَتُهُمْ سِمَةُ الرُّهْبَانِ ، وَلَيْسَ لَهُمْ رَغْبَةٌ ، أَوْ قَالَ : لَيْسَ لَهُمْ رَعْبَةٌ أَوْ قَالَ : رَعَةٌ فَيُلْبِسُهُمُ اللَّهُ فِتْنَةً غَبْرَاءَ مُظْلِمَةً يَتَهَوَّكُونَ فِيهَا تَهَوُّدَ الْيَهُودِ فِي الظُّلَمِ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"]البحر الزخار بمسند البزار » البحر الزخار مسند البزار » مُسْنَدُ معاذ بْن جبل رضي الله عَنْهُ . » أَوَّلُ الْخَامِسِ وَالْعِشْرِينَ ، والله المعين من ...
    رقم الحديث: 2311
    [/FONT]
    "یعنی قیامت قائم ہونے سے پہلے جھوٹے امیر وامام، بدکاروزیر خیانت کار اور فاسق قاریوں کا ہونا ضروری ہے۔ ان کی حالت ظاہری تو عیسائیوں کے درویشوں کی سی ہوگی۔ لیکن نہ انہیں رغبت ہوگی نہ ان کی رعیت ہوگی نہ وہ پرہیز گار ہوں گے۔ ان پر فتنے نازل ہوں گے جو غبار آلودہ اندھیریوں والے ہوں گے جن میں وہ مثل یہودیوں کے حیران و سرگرداں رہیں گے۔"

    (10)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَآلِهِ وَسَلَّمَ[/FONT] : " [FONT="Al_Mushaf"]يَكُونُ عَلَيْكُمْ أُمَرَاءُ هُمْ شَرٌّ عِنْدَ اللَّهِ مِنَ الْمَجُوسِ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"]المعجم الصغير للطبراني » بَابُ الْمِيمِ » مَنِ اسْمُهُ مُحَمَّدٌ
    رقم الحديث: 1015
    [/FONT]
    "یعنی تم پر ایسے امام ہوں گے کہ جو مجوسیوں سے بدتر ہوں گے۔"

    (11)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَنْ أَبِي بَرْزَةَ ، قَالَ : سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَقُولُ[/FONT] : " [FONT="Al_Mushaf"]إِنَّ بَعْدِي أَئِمَّةً ، إِنْ أَطَعْتُمُوهُمْ أَكْفَرُوكُمْ ، وَإِنْ عَصَيْتُمُوهُمْ قَتَلُوكُمْ : أَئِمَّةُ الْكُفْرِ ، وَرُءُوسُ الضَّلالَةِ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"]مسند أبي يعلى الموصلي » تَابِعُ مُسْنَدِ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ ... » شَهْرُ بْنُ حَوْشَبٍ ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ
    رقم الحديث: 7383
    [/FONT]
    "یعنی میرے بعد ایسے امام ہوں گے کہ اگر تم انہیں مان لو گے تو وہ تمہیں کافر بنا دیں گے اور اگر ان کی نافرمانی کرو گے تو وہ تمہیں قتل کردیں گے۔ یہ کفر کےا مام اور گمراہی کے سردار ہوں گے۔"

    پس
    بہر دست نباید دا ددست
    طبرانی کی حدیث میں ہے کہ صحابہ ؓ نے دریافت کیا کہ حضور ایسے وقت میں ہم کیا کریں؟ آپ نے فرمایا:
    (12)
    " [FONT="Al_Mushaf"] كَمَا صَنَعَ أَصْحَابُ عِيسَى ابْنِ مَرْيَمَ ، نُشِرُوا بِالْمَنَاشِيرِ وَحُمِلُوا عَلَى الْخَشَبِ مَوْتٌ فِي طَاعَةٍ خَيْرٌ مِنْ حَيَاةٍ فِي مَعْصِيَةِ اللَّهِ عَزَّ وَجَلَّ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"] المعجم الصغير للطبراني » بَابُ الْفَاءِ » مَنِ اسْمُهُ الْفَضْلُ
    رقم الحديث: 751
    [/FONT]
    "یعنی ان گمراہ کن اماموں کے زمانے میں تم وہی کرنا جو حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے حواریوں نے کیا کہ آروں سے چیرے گئے اور سولیوں پر لٹکادیے گئے۔(لیکن بروں کی اطاعت قبول نہیں کی) یاد رکھو اطاعت اللہ میں مرجانا اس زندگی سے بہت ہی بہتر ہے جو نافرمانی اللہ میں گزرے۔"

    (13)۔
    [FONT="Al_Mushaf"]عن عبادة بن الصامت قال : ذكر رسول الله - صلى الله عليه وسلم - الأمراء فقال [/FONT]: " [FONT="Al_Mushaf"]يكون عليكم أمراء إن أطعتموهم أدخلوكم الناروإن عصيتموهم قتلوكم[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"] مجمع الزوائد ومنبع الفوائد » كتاب الخلافة » باب في أئمة الظلم والجور وأئمة الضلالة
    رقم الحدیث: 9209
    [/FONT]
    "یعنی تم پر ایسے امیر'امام اور خلیفہ ہوں گے کہ اگر تم ان کا کہا کرو گے تو وہ تمہیں جہنم میں پہنچا دیں گے اور اگر نا فرمانی کرو گے تو وہ تمہیں قتل کروا ڈالیں گے۔"

    (14)
    [FONT="Al_Mushaf"]عن علی رضی اللہ عنہ اَنَّ رَسُولُ اللہِ صلی اللہ علیہ وسلم قال[/FONT]: " [FONT="Al_Mushaf"]غَيْرُ الدَّجَّالِ أَخْوَفُ عِنْدِي عَلَيْكُمْ مِنَ الدَّجَّالِ : أَئِمَّةٌ مُضِلُّونَ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"] مسند أبي يعلى الموصلي » مُسْنَدُ عَليِّ بْنِ أَبِي طَالبٍ
    رقم الحديث: 457
    [/FONT]
    "یعنی دجال سے بھی زیادہ مجھے تم پر ڈ ان اماموں کا ہے جو گمراہ کرنے والے ہوں گے۔"

    (15)
    [FONT="Al_Mushaf"] عن معاذ بن جبل قال قال رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم[/FONT]: " [FONT="Al_Mushaf"]ثَلاثُونَ نُبُوَّةٌ وَمُلْكٌ ، وَثَلاثُونَ مُلْكٌ وَجَبَرُوتٌ ، وَمَا وَرَاءَ ذَلِكَ فَلا خَيْرَ فِيهِ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"]المعجم الأوسط للطبراني » بَابُ الْوَاوِ » مَنِ اسْمُهُ وَلِيدٌ
    رقم الحديث: 9506
    [/FONT]
    "یعنی تیس سال تک تو خلافت مجہاج نبوت پر رہے گی پھر جبریہ ملوکت ہو جائےگی۔ اس کے بعد تو امامت خیر سے کالی ہو جائے گی۔"
    یہ ہمارا زمانہ ہے کہ اس میں مدعیان امامت کی موجودہ خانہ ساز امامت بے خیر اور پر از شر ہے۔ اللہ تعالیٰ محفوظ رکھے۔

    (16)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَنِ ابنِ عَبَّاس رضی اللہ عنہ قَالَ قَالَ رَسُولُ اللہِ ﷺ[/FONT]:
    "[FONT="Al_Mushaf"] أَوَّلُ هَذَا الأَمْرِ نُبُوَّةٌ وَرَحْمَةٌ ، ثُمَّ يَكُونُ خِلافَةً وَرَحْمَةً ، ثُمَّ يَكُونُ مُلْكًا وَرَحْمَةً ، ثُمَّ يَكُونُ إِمَارَةً وَرَحْمَةً ، ثُمَّ يَتَكادَمُونَ عَلَيْهِ تَكادُمَ الْحُمُرِ[/FONT]
    [FONT="Al_Mushaf"] المعجم الكبير للطبراني » بَابُ الظَّاءِ » الاخْتِلافُ عَنِ الأَعْمَشِ فِي حَدِيثِ عَبْدِ اللَّهِ ...
    رقم الحديث: 10984
    [/FONT]
    "یعنی یہ امر اسلام ابتداء تو نبوت اور رحمت ہے پھر خلافت اور رحمت ہوگا، پھر امارت اور رحمت ہوگا، پھر تو امارت کے لئے ایک پر ایک اس طرح گرنے لگے گا جیسے گدھے۔"
    یہ ہمارا زمانہ ہے کہ باوجود ضعف کے، باوجود امامت کے قابلیت نہ ہونے کے چو طرف سے دعوے دار کھڑے ہوگئے ہیں بزبان رسول معصوم مثل گدھوں کے ہیں۔

    (17)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَن زَیدِبنِ ثَابِت رضی اللہ عنہ قَالَ قَالَ رَسُول اللہِ ﷺ[/FONT] :" [FONT="Al_Mushaf"]بِئْسَ الشَّيْءُ الإِمَارَةُ لِمَنْ أَخَذَهَا بِغَيْرِ حَقِّهَا فَتَكُونُ عَلَيْهِ حَسْرَةً يَوْمَ الْقِيَامَةِ[/FONT]"
    [FONT="Al_Mushaf"] المعجم الكبير للطبراني » بَابُ الزَّايِ » مَنِ اسْمُهُ زَيْدٌ » زَيْدُ بْنُ ثَابِتٍ الأَنْصَارِيُّ يُكْنَى أَبَا سَعِيدٍ ...
    رقم الحديث: 4694
    [/FONT]
    "یعنی بغیر حق کے امام بن جانا یہ بدترین چیز ہے۔ قیامت کےدن اس پر سخت افسوس ہوگا۔"

    (18)
    برادران! موجودہ اماموں کا سارا زور اس مسئلے پر صرف جلَب زر' اخذ مال اور کشید زکٰوۃ کے لیے ہے جسے وہ ہضم کر جاتے ہیں اور صاف کہہ دیتے ہیں کہ امام سے حساب لینے والا کون؟ اس لیے میں آپ کو ایک واقعہ سنا کر سرِدست اس مضمون کو ختم کرتا ہوں۔ پھر ان شاء اللہ مزید بیان کسی اور نمبر میں آئے گا۔
    حضرت امیر معاویہ جمعہ کے لیے منبر پر کھڑے ہوئے بیان میں یہ بھی فرماجاتے ہیں کہ مال غنیمت سب ہمارا مال ہے۔ یہ فے جو کفار سے حاصل ہوتی ہے یہ بھی ہمارا حق ہے۔ ہم جسے چاہیں دیں جسے چاہیں نہ دیں! اس پر کوئی کچھ نہیں بولتا۔
    دوسرے جمعے کے خطبے میں بھی یہ جملہ پھر دہراتےہیں، لیکن مجمع آج بھی خاموش ہے۔
    اب تیسرا جمعہ آتا ہے۔ اور آپ اپنے خطبے میں پھر یہی فرماتے ہیں۔ یہ سنتے ہیں ایک صاحب غصے سے کھڑے ہو جاتے ہیں اور فرماتے ہیں۔
    : [FONT="Al_Mushaf"]كَلا ، إِنَّمَا الْمَالُ مَالُنَا وَالْفَيْءُ فَيْئُنَا ، مَنْ حَالَ بَيْنَنَا وَبَيْنَهُ حَكَّمْنَاهُ إِلَى اللَّهِ بِأَسْيَافِنَا[/FONT]
    "یعنی آپ کا قول غلط ہے۔ بلکہ یہ مال صرف ہمارا ہی مال ہے اور غنیمت و فے کے مالک ہم ہی ہیں۔ سنو ہم میں اور اس می جو بیچ میں آئے گا، ہم اپنی تلواریں اپنے کندوں پر رکھ لیں گے،ن یہاں تک کے اللہ ہم میں اور ان میں فیصلہ کردے۔
    حضرت معاویہ ؓ خاموش ہوگئے۔ گھر پہنچ کر اسے بلوالیا۔ سب لوگ کانپنے لگے کہ دیکھئے اب کیا ہو؟
    تھوڑی دیر بعد جب عام اجازت ہوگئی تو لوگوں نے وہاں جاکر دیکھا کہ وہ تو حضرت امیر کے ساتھ ان کے تخت پر تشریف فرما ہیں۔ اب حضرت امیر معاویہ نے لوگوں سے فرمایا۔" اس نے مجھے زندہ کرلیا اللہ تعالیٰ اس کی عمر میں برکت دے، سنو!
    "میں نے رسول اللہﷺسے سنا تھا کہ ایسے امام بھی ہونے والے ہیں کہ جو اپنی سب باتیں لوگوں سے منوالیں گے، اور کوئی نہ ہوگا جو ان کی تردید کے لیے کھڑا ہو ۔ یہ جہنم مین ذلت کے ساتھ ڈال دیے جائیں گے۔ چونکہ پہلے اور دوسرے جمعے میں میرے اس خلافِ حق جملے پر کسی نے مجھے جواب نہیں دیا۔ اس لیے میں تو ڈر گیا کہ میں ھبی انہیں اماموں میں سے نہ ہو ں۔ لیکن تیسرے جمعے کو یہ باہمت دیندار شخص کھڑے ہوگئے اور حق بات ذبان سے نکالی۔ میری بات کاٹ دی، اور مجھے زندہ رکھ لیا۔ اللہ تعالیٰ اس کی عمر بڑھائے!۔
    [FONT="Al_Mushaf"]المعجم الكبير » باب الميم » من اسمه معاوية » معاوية بن أبي سفيان بن حرب بن أمية » من روى عن معاوية من أهل مصر » أبو قبيل حي بن هانئ عن معاوية
    رقم الحدیث: 925
    [/FONT]

    [FONT="Al_Mushaf"] تاريخ الإسلام الذهبي » الطبقة السادسة » تراجم أَهْل هَذِهِ الطبقة » حرف الميم » مُعَاوِيَة بن أَبِي سفيان ع . صخر بن حرب بن أمية بن ...
    رقم الحديث: 1862
    [/FONT]

    سَر دَست میں اس مضمون کو ختم کرتا ہوں اور اپنےد وستوں سے کہا ہوں کہ روپڑی تنظیم ہو یا دہلوی امامت یا بنگالی منڈلی اور مدعیانِ امامت صرف اس کے دعوے سے مرعوب نہ ہو جاؤ صرف اتنا سن کر کہ بیعت نہ کرنے والا جاہلیت کی موت مرنے والا ہے وغیرہ، ان کے ہاتھ پر بیعت نہ کرلو، بلکہ یہ سمجھو کہ اس کے لیے شرط اولین یہ ہے کہ وہ آزاد خود مختار مسلم بادشاہ ہو۔ اس وقت بے بیعت والے پر یہ حدیث چسپاں ہوگی۔ یہ لوگ مدّعی وہ امام نہیں ہیں۔
    ان کی مثال اور ان کی دلیل کی مثال بالکل وہی ہے، جو مرزا غلام احمد قادیانی کی اور حضرت عیسیٰ کے آنے کے متعلق پیشین گوئیوں والی حدیثوں کی ہے۔ یہ تو سچ ہے کہ بیعت کا مسئلہ ہے،لیکن اس کے لائق یہ مدعی نہیں جس طرح یہ سچ ہے کہ حضرت عیسیٰ علیہ السلام آنے والے ہیں لیکن مرزا غلام احمد وہ عیسیٰ نہیں۔

    ہر ہاتھ کو عاقل ید بیضا نہیں کہتے
    جس پاس عصا ہو اسے موسیٰ نہیں کہتے
    پس، ان دلائل پر ٹھنڈے دل سے غور کرکے ان جھوٹے اماموں کا ساتھ چھوڑ کر ظلِ محمدی میں آجایئے اور ان سے کہہ دیجئے۔
    کس نیاید بزیر سایہ بوم
    گرہما از جہاں شود معدوم

    (19)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَنْأَبِي مَسْعُودٍ الْأَنْصَارِيِّ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ
    لِقُرَيْشٍ[/FONT] : " [FONT="Al_Mushaf"]إِنَّ هَذَا الْأَمْرَ لَا يَزَالُ فِيكُمْ وَأَنْتُمْ وُلَاتُهُ حَتَّى تُحْدِثُوا أَعْمَالًا ، فَإِذَا فَعَلْتُمْ ذَلِكَ ، سَلَّطَ اللَّهُ عَلَيْكُمْ شِرَارَ خَلْقِهِ[/FONT]
    [FONT="Al_Mushaf"]مسند أحمد بن حنبل » مُسْنَدُ الْعَشَرَةِ الْمُبَشَّرِينَ بِالْجَنَّةِ ... » مُسْنَدُ الْأَنْصَارِ » حَدِيثُ أَبِي مَسْعُودٍ عُقْبَةَ بْنِ عَمْرٍو الْأَنْصَارِيّ ...
    رقم الحديث: 21766
    [/FONT]
    [FONT="Al_Mushaf"](رواہ طبرانی)
    [/FONT]"یعنی اے قریشیو! امر خلافت و امامت تم میں ہی رہے گا اور تم ہی اس کے والی ہو یہاں تک کہ تم نئی بدعتیں کرنے لگو گے اس وقت اللہ تعالیٰ تم پر اپنی بدترین مخلوقات مسلط کر دے گا۔"

    یہی ہوا قریش میں سے امامت نکل گئی اور آج ہندوستانی غلام امامت کے دعویداربن بیٹھے ہیں جو بزبانِ پیغمبر علیہ الصلوٰۃ والسلام بدترین مخلوقات ہیں۔

    (20)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ[/FONT] :
    َ[FONT="Al_Mushaf"]حَدٌّ يُقَامُ فِي الأَرْضِ بِحَقِّهِ أَزْكَى فِيهَا مِنْ مَطَرٍ أَرْبَعِينَ عَامًا[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"]المعجم الكبير للطبراني » بَابُ الظَّاءِ » الاخْتِلافُ عَنِ الأَعْمَشِ فِي حَدِيثِ عَبْدِ اللَّهِ ... » أَحَادِيثُ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الْعَبَّاسِ بْنِ عَبْدِ ...
    رقم الحديث: 11773
    [/FONT]
    "یعنی ایک حد کا قائم ہونا چالیس سال کی بارش سے زیادہ بہتر ہے اور ہر طرح کی ترقی کا باعث ہے۔"
    پس جن اماموں کی امامت چوروں ، زانیوں وغیرہ پر حد جاری نہیں کرسکتی یا نہیں کرتی۔ یہ زمین کے بوجھ ہیں اور ان کا زمانہ اللہ کے نزدیک بدترین زمانہ ہے۔

    (21)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ[/FONT] : " [FONT="Al_Mushaf"]إِذَا بُويِعَ لِخَلِيفَتَيْنِ فَاقْتُلُوا الأَحْدَثَ مِنْهُمَا[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"] المعجم الأوسط للطبراني » بَابُ الْأَلِفِ » بَابُ مَنِ اسْمُهُ : إِبْرَاهِيمُ
    رقم الحديث: 2822
    [/FONT]

    [FONT="Al_Mushaf"]صحيح مسلم » كِتَاب الْإِمَارَةِ » بَاب إِذَا بُويِعَ لِخَلِيفَتَيْنِ
    رقم الحديث: 3450
    [/FONT]
    [FONT="Al_Mushaf"](رواہ البزار)
    [/FONT]"یعنی جب دو اماموں کے ہاتھ پر بیعت کی جائے تو دوسرے کو قتل کردو۔"

    پس ہمارے زمانے میں چاروں طرف سے جو اماموں کی چیخ و پکار ہو رہی ہے حدیث کی رو سے ان سب کو پہلے نمٹ لینا چاہیے یہاں تک کہ ایک رہ جائے۔ اس سے پہلے مسلمانوں کو ان کی طرف بیعت کے لئے ہاتھ بڑھانا حرام ہے۔

    (22)
    [FONT="Al_Mushaf"]عن عبد اللہ ابن الزبیر رضی اللہ عنہ ان رسول اللہﷺ[/FONT] " [FONT="Al_Mushaf"]إِذَا كَانَ فِي الأَرْضِ خَلِيفَتَانِ فَاقْتُلُوا آخِرَهُمَا[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"]مسند الشاميين للطبراني » مِنْ فَضَائِلِ سَعِيدِ بْنِ بَشِيرٍ
    رقم الحديث: 2720
    [/FONT]

    [FONT="Al_Mushaf"]المعجم الكبير للطبراني » بَابُ الْمِيمِ » مَنِ اسْمُهُ مُعَاوِيَةَ » مُعَاوِيَةُ بْنُ أَبِي سُفْيَانَ بْنِ حَرْبِ بْنِ ...
    رقم الحديث: 16094
    [/FONT]
    "یعنی زمین پر جب دو امام ہو جائیں تو پچھلے کو قتل کردو۔" اب بتلاؤ یہ درجنوں امام بیعت کے قابل ہیں یا کسی اور چیز کے؟

    (23)
    [FONT="Al_Mushaf"]عَنْ عُبَادَةَ بْنِ الصَّامِتِ ، قَالَ : قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ[/FONT] : "[FONT="Al_Mushaf"] أَقِيمُوا حُدُودَ اللَّهِ فِي الْقَرِيبِ وَالْبَعِيدِ وَلَا تَأْخُذْكُمْ فِي اللَّهِ لَوْمَةُ لَائِمٍ[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"]سنن ابن ماجه » كِتَاب الصَّلَاةِ » أَبْوَابُ مَوَاقِيتِ الصَّلَاةِ
    رقم الحديث: 2533
    [/FONT]
    "یعنی اللہ کی حدوں کو جاری کر و قریب والوں میں بھی اور دور والوں میں بھی۔ خبردار اس بارے میں کسی ملامت کرنے والے کی ملامت کی پرواہ نہ کرنا۔"
    لیکن موجودہ مدعیانِ امامت تو خود اپنے گھر کے مقدمات بھی دوسروں کی عدالتوں میں لئے پھرتے ہیں۔ ان غلاموں سے اس پر عمل کہاں ہوسکتا ہے؟ پس انہیں امام ماننا اللہ کے دین کی ہنسی اڑانا ہے۔

    (24)
    [FONT="Al_Mushaf"]عن شداد ابن اوس قال سمعت رسول الله صلى الله عليه وسلم يذكر الإمارة فقال[/FONT] : "[FONT="Al_Mushaf"] أول الإمارة ملامة ، وثانيها ندامة ، وثالثها عذاب من الله يوم القيامة ، إلا من رحم وعدل ، وقال : هكذا وهكذا بيده بالمال[/FONT] "
    [FONT="Al_Mushaf"]المعجم الكبير » باب الشين » من اسمه شداد » شداد بن أوس الأنصاري » ما أسند شداد » عنبسة بن أبي سفيان عن شداد
    رقم الحدیث: 7186
    [/FONT]
    "یعنی امامت کا ذکر کرتے ہوئے حضور ﷺ نے فرمایا اس کا اوّل ملامت ہے اس کا ثانی ندامت ہے اور اس کا ثالث قیامت کا عذاب ہے بجزان کے جو رحم کریں عدل کریں اور بے روک دوسروں کو مال دیتے رہیں۔"
    فرمایئے!موجود ہ امام نہ تو کسی پر رحم کر سکیں کیوں کہ یہ خود دوسروں کے رحم پر جیتے ہیں نہ یہ عدل کر سکیں کیونکہ یہ خود رعیت ہیں۔ تو مال کے دینے کا وقت ہی نہیں کہاں ہے۔ پھر یہ تو ایسے چور اور ڈاکو ہیں کہ مسلمانوں کی زکوٰتیں بھی ڈکارجائیں ان کے فطرے اور قربانی کی کھالیں بھی نوچ کھائیں۔ یہ دینے کا تو نام ہی نہیں جانتے۔ ہاں لینے کے لئے ان کی زنبیل ہر وقت کھلی رہتی ہے۔

    (25)
    حضرت ابوبکر صدیق رضی اللہ عنہ سے مروی ہے:
    [FONT="Al_Mushaf"]إن الرجل إذا كان أميرا ، فتظالم الناس بينهم ، فلم يأخذ لبعضهم من بعض ، انتقم الله منه[/FONT]
    [FONT="Al_Mushaf"] المعجم الكبير » باب الراء » من اسمه رافع » رافع بن أبي رافع الطائي
    رقم الحدیث: 4467
    [/FONT]

    "یعنی جب لوگ ایک دوسرے پر ظلم کریں اور امام ان سے بدلہ نہ لے تو اللہ تعالیٰ خود امام کو اپنے انتقام میں پکڑلیتا ہے۔"
    [FONT="Al_Mushaf"]
    اللھم ارنا الحق حقا وار زقنا اتباعہ۔
    [/FONT]

    [FONT="Al_Mushaf"]الراقم الحاجز
    محمد بن ابراہیم میمن جونا گڑھی
    مدرس مدرسہ محمدیہ
    مالک ومنصرم اخبار محمدی[/FONT]



    امام غرباء اور ان کے مریدوں نے شرک کا دروازہ کھول رکھا ہے۔
    حضرات! آپ کے سامنے رسالہ مقالہ بنام"ظل محمدی" عرف "امامت محمدی" پیش کردیا گیا ہے۔ اس سے آپ کے سامنے امامت شرعی کی حقیقت واضح ہوجائے گی اور جعلی اور نقلی اماموں کا پول کھل جائے گا ۔ اس غور سے کل مرد اور عورتیں پڑھیں اور مصنوعی اماموں سے خود بچیں اور دوسروں کلو بھی بچائیں۔
    ونیز اس سے بھی خطر نام مسئلہ ان کا شرکیہ منتروں ، جنتروں سے دم جھاڑہ کرنے کا ہے۔ یہ فرقہ اس میں مولوی عبد الوہاب صاحب صدری اور ان کے لڑکے مولوی عبد الستار کا پیرو ہے۔ مولوی عبد الوہاب صاحب اپنی زندگی میں کافی عرصے تک اس کی اشاعت کرتے رہے۔ آخر کار بغیر توبہ فوت ہوگئے۔ ان کے بعد ان کے صاحبزارے مولوی عبد الستار کی بھی یہ ہی روش ہے۔ لہٰذا آپ مولوی صاحب اور ان کے صاحبزادے کے الفاظ مشرکانہ ان کے صحیفہ سے پڑھیں۔ یہ ایک سوال قائم کر کے پھر اس کاجواب خود ہی ا س طرح لکھتے ہیں:
    س: شرکیہ الفاظ سے سانپ و کتے وغیرہ کے کاٹے ہوئے پردم کرنا جائز ہے یا نہیں؟
    ج: بہتر تو نہیں ہاں اگر کسی مسلمان کی خیر خواہی کے لئے بوقت مجبوری ضرورت کر بھی دے تو کوئی مضائق نہیں۔ [FONT="Al_Mushaf"]لقولہ علیہ السلام من الستطاع ان ینفع اخاہ فلیفعل۔[/FONT](فتح) (صحیفہ ماہِ رمضان المبارک سنہ 45)
    اس صحیفہ کے ٹائیٹل پر مولوی عبد الوہاب کے دستخط بحیثیت مالک و مولوی عبد الجلیل کے دستخط بحیثیت ایڈیٹر کے ثبت ہیں۔ اور مولوی عبد الستار کے دستخط بحیثیت مفتی کے اس طرح ہیں۔ مفتی ابو محمد عبد الستار غفرلہ الغفار المہاجری ۔ اس صورت سے یہ تینوں اس شرکیہ دم جھاڑے پر متفق اور شریک ہیں۔
    جب یہ فتویٰ عوام کے سامنےا ٓیا اور لوگوں نے پڑھا تو مولوی عبد الوہاب سے لوگوں نے کہا کہ اہل حدیث اور شرک؟ کیا قرآن مجید کی آیات اور احادیث کی دعائیں اور علاج معالجے سے مارگزیدہ اور کتے اور بچھو کے کاٹے ہوئے اور جادو لگے ہوئے کے لئے دم کرنا کافی نہیں۔ جس سے جناب کو شرک کی لعنت اختیار کرنی پڑی؟
    اس پر مولوی عبدا لوہاب صاحب اس سے بھی اور کئی قدم آگے بڑھ گئے اور اس طرح گویا ہوئے:
    سانپ' بچھو' کتے وغیرہ زہریلے جانوروں کے کاٹے ہوئے پر شرکیہ الفاظ سے غیر مسلم یا مسلم (جس کو زمانہ جاہلیت س کوئی رقیہ یاد ہے) دم جھاڑاکردے تو کوئی مضائقہ نہیں۔ لیکن یہ جواز ہر جگہ ہر وقت نہیں ہے بلکہ جہاں پہ دیگر علاج ناممکن ہے یعنی جہاں پہ دیگر مسلم شخص نہیں ہے یا ہے تو ادعیہ ماثورہ نہیں جانتا یا ادعیہ ماثورہ بھی جانتا ہے لیکن ادعیہ ماثورہ کے استعمال کرنے سے قاصر ہے۔ چنانچہ سورہ فاتحہ ہر ایک بیماری کے لئے شفا ہے۔ معوذتین بڑا رقیہ ہے۔ لیکن وہ مسحور جس کا سحر مدفون ہے اس پر یہ آیتیں دم کیجئے کچھ فائدہ نہیں جب تک اس دفن کئے ہوئے سحر کو نہ نکالا جائے۔ چنانچہ رسول اللہ ﷺ پر جب جادو کیا گیا تو آپ کے پاس اللہ تعالیٰ کے بھیجے ہوئے فرشتے آئے اور نہوں نے بتایا کہ فلاں کنوئیں میں فلاں چیزوں کے اندر آپ پر جادو کیا گیا ہے۔ چنانچہ آپ نے وہ جادو نکلوا کر دیکھا تو معلوم ہوا کہ آپ کے بال لے کر ان پر گرہ دی گئی ہے۔ آپ معوذتین کی ادھر ایک ایک آیت پڑھتے ہوئے ادھر ایک ایک گرہ کھولتے ہوئے اللہ تعالیٰ نے آپ کو کلی شفابخشی۔
    غور طلب یہاں پر یہ ہے کہ اس وقت تو جبرائیل علیہ السلام اور آپ کو بتایا کہ فلاں جگہ جادو مدفون ہے۔ لیکن آج جب کہ جبرئیل علیہ السلام آکر ہمیں نہیں بتاتے تو لامحالہ جادو گر جو اس کام سے واقفیت رکھتا ہے اس سے کھلوانا پڑے گا۔ اور اب یہ ظاہر بات ہے کہ جادو گر شرکیہ الفاظ اور شنیعہ افعال کرتے کراتے ہیں اور یہ چیز حرام ہے۔ لیکن ایسی لاچاری و مجبوری کی صورت میں جائز ہے۔(صحیفہ دہلی، ماہ جمادی الثانی سنہ 46)
    حضرات! آپ نے ان کی ان ہفوات کو غور سے ملاحظہ فرمائیں۔ مسلم اور غیر مسلم کا شرکیہ الفاظ سے جھاڑ پھونک کی اجازت دے رہے ہیں ادھر قرآن مجید سے شفا ہونے کا انکار کررہے ہیں۔ اوپر سے الحمدشریف اور قل اعوذب برالفلق اور قل اعوذب برب الناس پڑھ کر دم کرنے کو بے فائدہ کہتے ہوئے فرماتے ہیں کہ ان سے کچھ فائدہ نہیں۔ )معاذاللہ)
    ادھر جادو گروں کو حضرت جبرائیل علیہ السلام کا رتبہ عطا فرما رہے ہیں۔
    جب مولوی عبد الوہاب کا تمرد اس حد تک پہنچ گیا تو دہلی کے اہل حدیثوں کی طرف سے علمائے اہل حدیث کی خدمت میں مولوی عبد الوہاب کے یہ صحیفے پیش کئے گئے اور ان سے دریافت کیا گیا کہ ایسے شخص کے متعلق آپ حضرات فرمائیں کہ کیا صحیفے کی یہ عبارتیں شرک باللہ کے دروازے نہیں کھول رہیں؟ ونیز ایسے شخص کے متعلق آپ حضرات کا کیا فتویٰ ہے؟
    جس پر علماء نے بالا اتفاق فتویٰ دیا کہ:
    "یہ کلمات شرکیہ و کفریہ ہیں مولوی عبد الوہاب کو ان سے توبہ کرکے موحد ہونا چاہیے ورنہ ان سے مسلمان قطع تعلق کرلیں۔"
    جن علماء نے ان کے متعلق مشرک ہونے کا فتویٰ دیا ان کے نام ہیں:
    مولانا سید ابو الحسن صاحب نبیرہ حضرات میاں صاحب دہلوی رحمہ اللہ
    مولانا عبد الرحمٰن صاحب مبارک پوری رحمہ اللہ
    مولانا ثناء اللہ صاحب امرتسری رحمہ اللہ
    مولانا عبد الواحد صاحب غزنوی رحمہ اللہ
    مولانا محمد داؤد صاحب غزنوی
    مولانا محمد اسماعیل صاحب گوجرانوالہ
    مولانا ابو الاابو لاقاسم صاحب بنارسی رحمہ اللہ
    مولانا محمد یوسف صاحب فیض آبادی رحمہ اللہ
    مولانا احمد اللہ صاحب محدث رحمہ اللہ
    مولانا شرف الدین صاحب محدث رحمہ اللہ
    مولانا محمد یونس صاحب قریشی وہلوی رحمہ اللہ
    مولانا حافظ عبد اللہ صاحب روپڑی
    مولانا عبد التواب صاحب ملتانی
    مولانا محمد صاحب سورتی رحمہ اللہ پروفیسر جامعہ ملیہ
    مولانا عبد الوہاب آروی
    مولانا عبد لغفور صاحب غزنوی رحمہ اللہ
    مولانا محمد حسین صاحب غزنوی رحمہ اللہ
    مولانا عبید اللہ صاحب اٹاوی رحمہ اللہ
    مولانا عبد الحکیم صاحب محدث نصیر آبادی رحمہ اللہ
    مولانا عبد الغنی صاحب جودھ پوروالے رحمہ اللہ
    مولانا حکیم حافظ عبید الرحمٰن صاحب رحمہ اللہ عمر پوری
    وغیرہ ۔ جن کی تعداد 61 ہے۔ ملاحظہ ہو" متفقہ فتاویٰ علمائےاہل حدیث مطبوعہ آرمی پریس دہلی۔
    لیکن مولوی عبد الوہاب صاحب پر ان علماء کے فتوؤں کا کوئی اثر نہ ہو۔ اور اپنی مولویت پر اتر آئے اور برابر شرک پر اڑے رہے۔
    ایک دفعہ اپنے فرزند مولوی عبد الستار اور چند مریدوں کے ساتھ حج کو گئے۔ کسی مخبر نے جلالت الملک سلطان ابن سعود رحمہ اللہ کو ان کے متعلق خبر کردی۔ سلطان موصوف نے ان کو اپنے دربار میں بلا کر ان سے توبہ کرنے کو کہا مگر یہ صاحب کس کی ماننے والے تھے۔ آخر سلطان نے ان کے خلاف ایک حکم جاری فرمایا اور کہا کہ اگر یہ شخص توبہ کرلے تو خیر ورنہ میں اور جملہ موحدین ان سے بیزار ہیں۔ ملاحظہ ہو فتاویٰ علمائے نجد مترجم مطبوعہ دہلی۔
    آخر مولوی عبد الوہاب انہیں شرکیہ عقائد کا ارمان لے کر بغیر توبہ فوت ہوگئے۔اب ان کے بعد ان کے صاحب زادے مولوی عبد الستار انہیں باتوں پر اڑے ہوئے ہیں۔
    جماعت اہل حدیث کے مقتدر عالم و اہل قلم مولانا امام خان صاحب نو شہروی مقیم لاہور لکھتے ہیں:
    ہماری جماعت کے ایک عالم دین کا تمردد وطغیان کا مولوی عبد الوہاب صاحب ملتانی اپنے وفورِ علم اور کثرت شزوذ۔
    (در شدوز) کی وجہ سے کسی تعارف کے محتاج نہیں۔ ان کا آخری اجتہاد مسئلہ دم جھاڑہ ہے۔شرکیہ منتروں سے یعنی یہ کہ مسموم ہویا مریض مارگزیدہ یا مصروع ای من کان شرکیہ الفاظ سے تعویذ یا دم کیا جاسکتا ہے۔ اور ظاہر ہے کہ جماعت اہل حدیث کی نزاکت توحید اسے کسی عنوان گوارا نہیں کر سکتی تھی اور نہ کرسکی۔ آخر جماعت ہی سے مولوی عبد الوہاب کا اخراج کردیا گیا،
    وہ حسین ہیں تو ہوا کریں
    وہ مہ جبین ہیں تو کیا کریں
    میری حسرتوں کا کیا ہے
    خوں میرے دل سے وہ اتر گئے
    مولوی عبد الوہاب اس حسرت کو لے کر قبر میں جا سوئے اور ان کے بعد ان کے خلف الصدق عبد الستار صاحب اسی دم جھاڑے کا ارمان لئے بیٹھے ہیں۔ مدعی توحید اور اس قسم کے شرک ہائے جلی؟(تراجم علمائے اہلحدیث صفحہ 183، مطبوعہ جید پریس دہلی)

    حضرات! اب تو آپ کو ان کی پوزیشن معلوم ہوگئی ۔ مولوی عبد الوہاب صاحب تو فوت ہوچکے مگر مولوی عبد الستار اور ان کے مریدوں کے لئے ابھی توبہ کا دروازہ کھلا ہوا ہے اگر ان میں اللہ کا خوف ہے تو ان کو اور ان ے مریدوں کو چاہیے کہ فوراً توبہ کر کے اپنا توبہ نامہ صحیفہ میں شائع کرکے اعلان کردیں کیونکہ صحیفہ ہی سے شرک کی یہ آواز اٹھی ہے لہٰذا اسی میں اعلان توبہ بھی ہو۔ ورنہ جو وعیدیں بت پرستوں اور گور پرستوں وغیرہ پر قرآن مجید میں موجود ہیں ان سے یہ کب بچ سکتے ہیں؟
    ایک عذر اور اس کا جواب
    بہت سے حضرات فرماتے ہیں کہ ہمارے سامنے تو مولوی عبد الستار وغیرہ کبھی ایسی باتوں کا ذکر نہیں فرماتے ۔ لہٰذا ہم کیسے تسلیم کریں؟ اس کا جواب یہ ہے کہ اب تو آپ کو ان کے صحیفے کے حوالوں سے سب کچھ معلوم ہوگیا ہے۔ لہٰذا اب تو ہوشیار ہو جاؤ۔ دیھک لکھتم کے بکتم نہیں چلا کرتی۔
    بعض حضرات فرماتے ہیں! اجی ہمارے یہاں تو کوئی کام نہیں ہوتا۔ اس لئے ہم ایسے فرقوں میں گسنے پر مجبور ہیں۔ سو واضح ہوکہ اس کے متعلق آپ کو غلط فہمی لگی ہوئی ہے کیا جماعت اہل حدیث کے علمی ادارے اعلیٰ پیمانے کی جمعیتیں اور کانفرنسیں، بہترین دینی مدارس نہایت عمدہ عمدہ مساجد، اچھے جید علمائے اہل حدیث جو کہ اپنے وعظ و رشد سے لوگوں کو مستفید فرما رہے ہیں ملک میں موجود نہیں؟ کیا تم ان باتون کا انکار کرسکتے ہو؟
    میں نے تمہارے آگے ساری باتیں کھول کر رکھ دی ہیں۔
    [FONT="Al_Mushaf"] لِّيَهْلِكَ مَنْ هَلَكَ عَن بَيِّنَةٍ وَيَحْيَىٰ مَنْ حَيَّ عَن بَيِّنَةٍ[/FONT]۔(الانفال:42)
    اب جو چاہے دلائل کو دیکھتے ہوئے ہلاک اور گمراہ ہو اور جو چاہے دلائل کو دیکھتے ہوئے ایمان کی زندگی گزارے۔
    [FONT="Al_Mushaf"]وما علینا الالباغ۔ وما توفیقی الاباللہ۔
    [/FONT]​
    [/FONT]
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں