قضائے عمری اور اس کی حقیقت

بابر تنویر نے 'متفرقات' میں ‏نومبر 4, 2011 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    7,136
    سوال: ‌زید کے ذمہ بے شمار قضا نمازیہ ہیں۔ اس کو پنچ وقتہ پڑھتا رہتا ہے۔ کی کوئ ایسی صورت ہے کہ جلد سے جلد اس ذمہ سے بری ہوجاۓ اور اللہ تعالی کے عذاب سے بج جاۓ۔
    جواب۔ زید کے ذمہ بے شمار نمازیں ہیں اور جلد سے جلد بھی ہونا چاہتا ہے تو اس کے لیۓ اعلی حضرت یوں فرماتے ہیں" اس کے لیۓ جائز ہے کہ جب آدمی رکو‏ع اور سجدہ میں تین تین بار سبحں ربی العظیم، سبحن ربی اعلی کی جگہ صرف ایک بار کہے مگر یہ ہمیشہ ہر طرح کی نماز میں یاد رکھنا چاہیۓ کا جب آدمی رکوع‏ میں پورا پہنچ جاۓ اس وقت سبحان کا سین شرو‏ع کرے اور جب پوری تسبیح ختم کر لے اس وقت سجدہ سے سر اٹہاۓ اسی طرح سجدوں میں پورا پہنچ لےااس وقت تسبیح شرو‏ع کرے اور جب پوری تسبیح ختم کر لے اس وقت سجدہ سے سر اٹھاۓ اور دوسری تحفیف یہ ہے کہ فرضوں کی تیسری اور چوتھی رکعت میں الحمد شریف کی جگہ فقط سبحن اللہ تین بار کہہ کر رکو‏ع میں چلا جاۓ مگر یہاں ضروری ہے کہ سیدھا کھڑا ہو کر سبحان اللہ شروع کرے اور سبحن اللہ تین بار پورا کھڑے کھڑے کہہ کر رکوع کے لیۓ سے جھکاۓ۔ یہ تخفیف صرف فرضوں کی تیسری اور چوتھی رکعت میں ہے۔ اور وتر کی تینوں رکعتوں میں الحمد اور سورہ دونوں ضرور پڑھی جائیں۔ تیسری تخفیف پچھلی (قعدہ اخیرہ کی) التحیات کے بعد دونوں درود اور دعاء کی جگہ صرف اللھم صل علی سیدنا محمد و آلہ کہہ کر سلام پھیر دیں۔ چوتھی تخفیف وتر کی تیسری رکعت میں دعاء قنوت کی جگہ فقط ایک تین بار "رب اغفرلی" کہے۔ (فتاوی رضویہ ج 3 ص 622۔ وھو تعالی اعلم۔
    How to pray Qaza-E-Umree Namaz Salat Missed Life | Salah Namaz Islam
    السلام علیکم و رحمہ اللہ و برکاتہ،
    آج سے تقریبا 5 سال پہلے یہ فتوی پہلی بار میری نظر سے گذرا اس فتوی دینی حیثیت پر تو علماء حضرات سے تبصرہ کی درخواست ہے۔ میں یہاں اس سلسلے متعلقہ ویب سائٹ کے منتظم سے میری کچھ گفتگو ہوئ جسے آپ کی خدمت میں پیش کر رہا ہوں
    To: almajma@islamicacademy.or
    g
    Subject: Email Us
    Below is the result of your feedback form. It was submitted by
    on October 31st, 2006 at 12:28AM (EST).
    name: Baber Tanweer
    body: Dear Sir, Assalma O Alaikum,
    I was going throuhng your fatawa. the mufti sahib have mentioned the way of offering
    Qazai Umry. I request you to give me any reference from Quran of hadith to prove this
    Fatwa.

    Wassalam,
    Baber TAnweer.
    submit: Submit Your Comments
    محترم السلام علیکم، میں نے آج قضاۓ نام کی نماز کے بارے میں آپ کا فتوی پڑھا۔ میں آپ سے درخواست کرتا ہوں کہ مجھے قران اور حدیث سے اس کا حوالہ دے دیجیۓ۔
    والسلام بابر تنویر۔

    وہاں سے کچھ ایسے جواب آیا۔

    Islamic Academy < almajma@islamicacademy.org > wrote:
    Wa Alaikum Assalam Wa Rehmatullahi Wa Barakaatuhu,

    Thanks for your kind email. Please accept our gratitude for giving us a chance to
    fullfil your Islamic needs.

    We provide Fatawas from Sunni Ulema from all over the world. If you need explaination
    on this fatwa visit Amjadia in Karachi and they will explain you. They also agree with
    this Fatwa. We are not forcing anyone to use these insturctions. Fatwa bilkul Durust
    hay, jaiz hay or Islam ki roo say bilkul Sahi. Email kay zariay samjhana mushkil hoga,
    aap Amjadia chalay jain. Ager aap use kerain gay to aap ka hi faida hay kay kam waqt
    main jald namazain utar jain gee. Agar shak hay to aap full namaz hi perh liay karain.
    Shukrya.
    Wassalam Maalkhair,
    Mohammad Tahir Shafi Qaderi,

    وعلیکم السلام و رحمہ اللہ و برکاتہ،
    آّپ کی ایمیل کا شکریہ اور ہم آپ کے شکر گذار ہیں کہ آپ نے ہمیں اپنی دینی ضروریات کی تکمیل کا موقع فراہم کیا۔
    ہم پوری دنیا کے سنی علماء کے فتوی پیش کرتے ہیں۔ اگر آپ کو اس فتوے کا سلسلے مزید وضاحت درکا ہے تو امجدیہ چلے جائیں وہ آپ کو اس کی وضاحت کر دیں گے۔ وہ بھی اس فتوی میں ہم سے اتفاق رکھتے ہیں۔ ہم اس فتوی کو قبول کرنے میں کسی پر کوئ زبردستی نہیں کر رہے ہیں۔ فتوی بالکل درست ہے، جائز ہے اور اسلام کی رو سے بالکل صحیع۔ ایمیل کے ذریعے سمجھانا مشکل ہوگا۔ آپ امجدیہ چلے جائیں۔ اگر آپ ایسا کریں گے تو آپ ہی کا فائدہ ہے، کم وقت میں جلدی نمازیں اتر جائیں گی۔ اگر شک ہو تو آپ فل نماز پڑھ لیا کریں۔
    و السلام مع الخیر۔ محمد طاہر شفیع۔




    From: BABER TANWEER [
    Sent: Tuesday, October 31, 2006 11:50 PM
    To: almajma@islamicacademy.org
    Subject: RE: Email Us

    Dear Brother Mohammad Tahir Qadri Sahib, Assalamo Alaikum.
    Thanks for your promt reply to my query regarding this matter.
    First of all I would like to make it clear I did not ask for any explanation. I just wanted to get a clear picture of this practice, which in my opinion have no base at all. Brother, As a muslim I want to seek knowledge from where ever it is possible to practice the Islam in a better way.
    Now I want to write some of my views which , I hope will not offend you or your Aqida..
    I was expecting a very clear reply with all the references from Quran and hadith in favor of this Namaz. I spend the whole night to go through the books and ahadeeth but I am sorry to say that this kind of namaz have never been mentioned anywhere.
    Namaz is the second piller of Islam and it was made obligatory for all muslims to pray 5-time every day and the method of prayers was taught to us by the Prophet (Peace be upon him). It has been mentioned a difference between the believer and a kifir is Namaz. And A muslim shold not leave the Namaz at any circumstances. Someone who do not offer namaz without a valid reason is out of Islamic circle and there is no difference between him and a kafir or mushrik.
    This is a duty of our Ulemas to tell the muslims to be regular in 5-times in the masijid. If they miss any prayer they should offer qaza as early as possible and possibly before the other prayer. Thye should never stop praying for a long time.
    Moreover, We have very clear instructions regarding the method and time of prayers in quran and ahadeeth e Rasul (Peace be upon him). I have never find any Hadeeth or instruction of Sahaba regarding the Namaz called Qazae Umri. It means that there no prayer called qaze umri. Otherwise there must have been clear instructions in this regards from our Prophet(Peace be upon him). In my opinion , instead of showing them this wrong path, our ulemas tell them about the punishment and consequences of leaving the 5-time prayers..
    Secondly, no mufti or Alam have a right to change the basic method of prayer. Please show a single hadeeth of Rasul(Peace be upon him) or practice of Sahabas in favor of this method. By doing so you have change the structure of Namaz.
    You have mentioned in your mail you are not forcing any one to follow Fatwa. Brother, it is not a matter of forcing any one. A mufti have a great responsibility to guide the muslims and he should be very careful because if he will ask them to do something which is against the islamic teaching and instructions he will be punished for acts and deeds.
    These are the views of a simple and honest muslim and I hope you will not find them offensive to you or Islam.
    Wassalam,
    Baber Tanweer.

    میں نے انہیں کچھ ایسے جواب دیا۔
    بھائ محد شفیع طاہر صاحب آپ کا فوری جواب دینے کہ شکریہ۔
    سب سے پہلے عرض کردوں کہ میں نے آپ سے وضاحت طلب نہیں کی تھی بلکہ آپ میں اس بارے میں ایک واضح تصور قائم کرنا چاہتا تھا۔ اور میرے خیال میں اس طرح نماز پڑھنے کی کوئ بنیاد ہی نہیں ہے۔ محترم ایک مسلمان ہونے کے ناطے میری یہ کوشش ہے کہ میں ایک اچھا مسلمان بننے کے لیۓ ہر ممکن ذرائع سے اسلامی تعلیمات کا حصول چاہتا ہوں۔
    اس بارے میں میرا استدلال سن لیجیۓ امید ہے کہ یہ آپ ک ناراضگی کا سبب نہیں بنے گا۔
    میں آپ سے قران اور احادیث کے ساتھ ایک واضح جواب کی توقع کر رہا تھا۔ میں آج ساری رات احادیث کی مختلف کتابوں کا مطالعہ کرتا رہا ہوں مگر مجھے کہیں بھی اس نماز کا کوئ ثبوت نہیں ملا۔
    نماز ہمارے دین کا ایک ستون ہے اور ہر مسلمان کے لیۓ پانچوں وقت کی نماز کا پڑھنا ضروری ہے اور نماز پڑھنےکا مکمل طریقہ ہیں نبئ کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے سکھا دیا ہے۔ اور احادیث میں آیا ہے کہ ایک مسلمان اور کافر کے درمیان فرق نماز ہے۔ یہ ہمارے علماء کی ڈیوٹی ہے کہ وہ مسلمانوں کو ہمیشہ پانچ وقت کی نماز مسجد میں پڑھنے کی اہمیت بتائیں۔
    نماز پڑھنے کا طریقہ ہمیں نبئ کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے مکمل طور پر بتا دیا ہے۔ اور میری نظر سے ایسی کوئ حدیث نہیں گذری جس میں کسی ایسی نماز کا ذکر ہو جس کا نام "‍‍قضاۓ عمری" ہو۔ اگر اس نماز کا کوئ وجود ہوتا تو ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اس کے بارے واضح طور پر ہمیں تعلیم دے دیتے۔ میرے خیال میں اس طرح نماز پڑھنے کے بجاۓ علماء کا فرض ہے کہ پانچوں وقت نماز نہ پڑھنے والوں کو بتائیں کے نماز نہ پڑھنے سے انہیں کس طرح اللہ تعالی کے غضب کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔
    اس کے علاوہ میرے خیال میں کسی بھی مفتی کو یہ حق حاصل نہیں ہے کہ نماز پڑھنے کے طریقے میں کوئ ردو بدل کرے کیونکہ نماز پڑھنے کا طریقہ ہمیں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے مکمل طور پر بتا دیا ہے۔ اور اگر کوئ ایسا کرے گا تو اس اپنے اس عمل کی سزا ملے گی۔
    یہ ایک سیدھے سادے مسلمان کے خیالات ہیں اور میں امید کرتا ہوں کہ یہ خیالات آپ کو ناگوار نہیں گذریں گے۔ جاری ہے

    ----- Original Message ----
    From: Islamic Academy <almajma@islamicacademy.org>
    To: BABER TANWEER
    Sent: Tuesday, October 31, 2006 10:02:27 PM
    Subject: RE: Email Us
    Wa Alaikum Assalam Wa Rehmatullahi Wa Barakaatuhu,
    Tanweer brother you have showed once again like many who email us that why there is a difference between us and Ulema. You have used your logic to try to prove a Fatwa wrong from a Mufti who has spent his life time studying Islam. How many hours have you spent? We go to Urdu Bazar pick up some books and start to chellange them and start to tell them what Islam says. Like they don’t know. Okay, now look at Quran and Ahadees and give me the verdict of taking an injection for a sick person when fasting during Ramadan. Then we will discuss further. Good Luck.
    Regards.
    Wassalam Maalkhair,
    Mohammad Tahir Shafi Qaderi,

    و علیکم السلام و رحمہ اللہ و برکاتہ،
    بھائ تنویر ایک بار پھر آپ نے ان دوسری ایمیل کی طرح جو کہ ہمیں اکثر وصول ہوتی ہیں کہ ہم میں اور علماء میں اختلاف کیوں ہے۔ آپ نے اپنی منطق کو استعمال کرتے ہوۓ ایک مفتی کا فتوی غلط ثابت کرنے کی کوشش کی جن کی ساری عمر دین کی تعلیم حاصل کرنے میں گذری ہے۔ یہ بتایۓ کہ آپ نے اس موضوع کی تحقیق کرنے میں کتنے گھنٹے صرف کیۓ ہیں؟ ہم اردو بازار سے چند کتابیں لا کر اور انہیں پڑھ کر ان علماء کو چیلنج کرنا شروع کر دیتے ہیں۔ جیسے کہ انہیں کوئ علم ہے ہی نہیں۔ اچھا ذرا قران اور حدیث سے روزے کے دوران انجیکشن لینے کے بارے میں تو کوئ حکم نکال کر بتایۓ۔ مزید گفتگو آپ کا جواب ملنے کے بعد ہوگی۔ گڈ لک۔

    TO:
    almajma@islamicacademy.org
    Message flagged
    Wednesday, November 1, 2006 9:18 AM
    Message body

    Dear Brother Mohammad Tahir Qadri,
    Fisrt of All I am no way near these respected Ulemas' and Muftis' Knwledge and I always seek their guidence in practing Islam.
    As per your mail you consider the Namaz and taking an Injection during the Ramadan as the same. Brother, the namaz was made obligatory for us and Our prophet have taught us how to pray during his life time. If you made any change in it then he should provide us the basis of it.
    Now as far as any situation, which was not present at the time of propet (Peace be upon him) Our Ulemas should guide us in this regards. Brother, a sick person have a right not to fast in Ramadan and when he recovers, he can fast for the missed days after Ramadan. It has very clearly been mentioned in Quran. In the light of this the question of taking injection during fasting have no validity.
    If you have any thing in favor of Qazai umre then write to me . Otherwise Good luck to you.
    Wassalam,
    Baber Tanweer.
    محترم جناب محمد طاہر قادری صاحب،
    سب سے پہلے عرض کر دوں کہ میری نظر میں علماء کی بہت قدر ہے۔ اور میں ہمیشہ اسلام پر صحیع طور پر عمل کرنے کے ان کی رہنمائ کا ہمیشہ طالب رہتا ہوں۔
    آپ کی ایمیل کے مطابق آپ کے نزدیک نماز پڑھنا اور روزہ کے دوران انجیکشن ایک ہی اہمیت کے حامل ہیں۔ نماز پڑھنا ہر مسلمان کے لیۓ فرض ہے اور اس کا طریقہ ہمیں نبئ کریم سکھا چکے ہیں۔
    جہاں تک کسی ایسی صورت حال کا تعلق ہے جو کہ نبئ کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے دور میں موجود نہیں تھی تو ہمیں اس بارے میں علماء کی رہنمائ کی ضرورت پڑتی ہے۔ جہاں تک روزے کے دوران انجیکشن لینے کا تعلق ہے تو اس سلسلہ میں قران میں نہایت واضح طور پر بتا دیا گیا ہے کہ ایک بیمار انسان روزہ نہ رکھے اور بعد میں فوت شدہ روزوں کی قضا کر لے۔ تو بھائ جب بیمار آدمی کو روزہ ہی کی رخصت مل گئ تو انجیکشن لینے یا نہ لینے کا سوال کیسے اٹھتا ہے۔
    اگر آپ کے پاس قضاۓ عمری کے حق میں کچھ دلائل ہوں تو تحریر کریں۔ آپ کو بھی گڈ لک۔
    و السلام۔
    بابر تنویر۔

    تو دوستو اس کے بعد آج تک ان کا کوئ جواب نہیں آیا۔
     
    Last edited by a moderator: ‏نومبر 4, 2011
  2. محمد زاہد بن فیض

    محمد زاہد بن فیض -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏جنوری 2, 2010
    پیغامات:
    3,697
    جزاک اللہ خیرا سر جی بہت مفید معلومات
     
  3. ساجد تاج

    ساجد تاج -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 24, 2008
    پیغامات:
    38,720
    جزاک اللہ خیرا
     
  4. حرب

    حرب -: مشاق :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 14, 2009
    پیغامات:
    1,082
    جزاک اللہ خیر۔۔۔
    بس اپنے اپنے حصے کا چراغ جلاتے جائیں۔۔۔
     
  5. 03arslan

    03arslan -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏اگست 11, 2009
    پیغامات:
    418
    گڈ۔ نائس شیئرنگ
    تمام اختلافی مسائل کا حل قرآن و سنت میں‌ہے
     
  6. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    7,136
    شکریہ بھائ۔ اللہ تعالی سے دعا ہے کہ وہ ہمیں اس راستے پر چلنے کی توفیق عطا فرماۓ جس پر چل کر ہم دنیا کے امتحان میں کامیاب ہو جائیں اور پھر اللہ تعالی کی مہربانی سے آخرت میں بھی ہم سرخ رو ہوجائیں۔ و السلام
     
  7. زبیراحمد

    زبیراحمد -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏اپریل 29, 2009
    پیغامات:
    3,378
    مطلب میں یہ سمجھوں کہ اگر مجھ سے کوئی نماز قضا ہوگئی ہے تو میں فرض اور وتر ایسے ہی پڑھوں جیسے پڑھی جاتی ہے اس میں کوئی ردو بدل نہیں ہے!
    کیا میں تنویر صاحب آپ کی بات درست سمجھا ہوں ؟ رہنمائی فرمائیں
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں