کتاب اور صاحبِ کتاب ﷺ کا حق

عائشہ نے 'نثری ادب' میں ‏جون 12, 2012 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482

    ۔۔۔ اس (انقلاب ) کی قوت کا اندازہ مجھے اس دن ہوا جب یہ خبر جنگل کی آگ کی طرح سارے شہر میں پھیل گئی کہ آیت اللہ خمینی کی تصویر چاند میں نظر آتی ہے ۔ رات کو لوگ چھتوں پر چڑھ کر چاند کی طرف ٹکٹکی باندھ کر دیکھتے رہے ۔ دو چار لوگ ہمارے گھر كى چھت پر بھی چڑھے ہوئے تھے انہوں نے مجھے بھی اس كام ميں شريك كرنا چاہا ميں نے كہا اس طرح كا ايك تجربہ مجھے دس بارہ سال كى عمر ميں ہو چكا ہے ۔ ميں اب ايسے كسى اور تجربے كى تاب نہيں لا سكتا ۔آپ اپنا شوق پورا كريں اور خوش رہيں مجھے يونہی يادوں ميں گم رہنے ديں ۔
    میں گرمیوں کی چھٹیوں میں علی گڑھ سے امرتسر آیا ہوا تھا ۔ دو تين ہم عمر کزن ہمراہ تھے۔ رام باغ گیٹ کے باہر ایک انگوٹھیاں اور نگینے بیچنے والا پتھروں کے خواص بیان كر رہا تھا ۔ غربت ، بیماری ، بے روزگاری ، معطلی ، تنزلی ، چوری ، گرفتاری ، گمشدگی ، بے اولادی ، سایہ ، دورہ ، بواسیر ۔ زندگی کا کوئی مسئلہ ایسا نہ تھا جس کا حل کسى نہ كسى پتھر میں پوشیدہ نہ ہو ۔ ایک پتھر ايسا بھی تھا جس كى انگوٹھی پہننے والے كے تکیہ کے نیچے سے ہر روز نوٹ نکلتے ہیں ۔ اس شخص كے پاس خزانے کی ساری کنجیاں تھیں ، كامياب ہونے كے ليے ہر طرح كا پتھر تھا مگر پھر بھی وہ سڑک کے کنارے ٹاٹ بچھائے خاک پھانک رہا تھا ۔ اس نے ایک بھورے داغدار پتھر کی طرف اشارہ کیا اور کہا : اس میں حضرت سلیمان علیہ السلام کی تصویر نظر آتی ہے ۔ وہ دربار سجاتے ہیں ۔ جن کو حکم دیتے ہیں ۔ وہ ملکہ سبا کا تخت اٹھا کر لے آتا ہے ۔ اس انگوٹھی کے پہننے والے کے سارے كام خود بخود ہو جاتے ہيں ۔ طالب علم ہو تو علم کی ملکہ اس كے تابع ہو جاتى ہے ۔ يہ كہہ كر اس نے ہمارى طرف ديكھا ۔ پڑھائی کی مشقت کو آسان بنانے كى خاطر سارے كزن مٹھی کی دور بین بنا کر ایک سرے پر انگوٹھی رکھ کر دوسرے سے آنکھ لگا کر " معجزہ " دیكھنے ميں مصروف ہو گئے ۔
    پتھر والا کہتا : وہ جو سایہ سا نظر آ رہا ہے وہ حضرت سلیمان علیہ السلام ہیں۔ دیکھو اب وہ سايہ چل رہا ہے ۔ سامنے سے جن آ رہا ہے ۔ وہ سجدہ ميں گر گيا ۔ كيوں جى ٹھیک ہے نا ؟ مريل سى آواز ميں سب نے کہا : ٹھیک ہے اور كھڑے ہو گئے ۔ ميرى بارى آئى ۔ انگوٹھی والا كہتا رہا كہ اب يہ ہو رہا ہے اور اب وہ ہو رہا ہے مگر ميں نے بڑی صاف آواز ميں اور پنجابى كے بجائے اردو ميں جواب ديا : كچھ بھی نہیں ہو رہا ۔ خاک بھی نہیں ۔ بس پتھرہے اور وہی اس کا داغ ۔ اس نے سختى سے كہا : پھر دیکھو ۔ ميں نے دوسرى بار ہی نہيں تيسرى بار اور آخرى بار بھی ہمت كر كے وہی کہہ ديا جو مجھے نظر آ رہا تھا ۔ وہ شخص ناراض ہو گيا ۔ اس موقع كے ليے اس نے جو بقراطى دلائل اور بھارى بھر كم الفاظ چھانٹ كر عليحدہ ركھے ہوئے تھ انہيں ان پانچ چھ افراد ميں خزانے كى طرح لٹا ديا جو اس وقت تك وہاں جمع ہو چکے تھے ۔ خلاصہ كلام يہ كہ : " بعض اشخاص کی آنکھوں کے آگے پردہ ہوتا ہے اور بعض اشخاص سے حضرت سلیمان علیہ السلام خود پردہ کر لیتے ہیں ۔ وہ بے ہدایت اور بد عقیدہ لوگوں کے سامنے نہیں آتے ۔
    اس واقعہ كو ايك مدت گزر گئی مگر اس كى کسک دل ميں باقى رہی ۔ ميں نے مشاہدہ كيا ، پڑھا ، پوچھا ، غور کیا ۔ بالآخر اس نتيجہ پر پہنچا كہ جو لوگ مذہب کو مصلحت کی انگشتری میں نگینہ کی طرح سجا لیتے ہیں وہ ہدایت اور عقیدہ سے دور ہو جاتے ہیں اور ان کی وجہ سے بے علم اور سادہ دل لوگ بھی راستہ سے بھٹک جاتے ہیں ۔ ایسی نظر بندی ہوتی ہے کہ جو نہیں ہے وہ بھی نظر آنے لگتا ہے ۔ اس مقام پر مذہب اور تجارت کا فرق مٹ جاتا ہے ۔ عبادت اور تماشا ایک ہو جاتے ہیں ۔ توہمات ، بدعات اور خرافات کی ہو حق ہوتی ہے ۔ ایک دن یہ دونوں گروہ آپس میں جھگڑیں گے ۔ ایک دوسرے پر الزام ركھيں گے ۔ اس دن انہیں ياد دلايا جائے گا کہ ایک ہادی (صلی اللہ علیہ وسلم ) آيا تھا ۔ ايك كتاب لايا تھا ۔ ہدایت کی راہ اور عقیدہ کی درستی اسے نصیب ہوئی جس نے صرف ان کی پیروی کی تھی ۔ اے گرفتارِ افسانہ و افسوں ، اے پرستارِ ہیچ و زبوں ، کیا تم نے کتاب اور صاحبِ کتاب ﷺ کا حق ادا کیا تھا ؟ اس خيال سے دل كو قرار آ گيا ۔ کسک کی جگہ سكون نے لے لى ۔ ميرے اور پتھر والوں کے درميان فاصلہ بڑھتا چلا گیا ۔

    ***********************

    دوسرے دن مسز امینی نے بتایا کہ اس کی خالہ نے چاند میں بڑی شفاف تصویر دیکھی تھی ۔ دیکھی تو خود اس نے بھی تھی مگر وہ کوئی ایسی صاف نہ تھی ۔ مسز اسفرجانی نے کہا ۔ سر، آج کل قرآن کے اوراق میں سے بال نکل رہے ہیں ۔ کئی گھرانوں سے اس بات کی تصدیق ہو چکی ہے ۔ میرے یہاں بھی یہ واقعہ ہو چکا ہے۔ آپ بھی گھر جا کر اپنے نسخہ کو دیکھیں ۔ سر، آج کل کتنے عجیب و غریب واقعات رونما ہو رہے ہیں ۔ مس جہانگیری نے کہا، کوہ البرز کی کسی نہ کسی چوٹی پر ہر روز صبح سویرے تھوڑی سی دیر کے لیے برف سے بنی ہوئی آیت اللہ کی تصویر نظر ٓتی ہے ۔۔۔۔

    اقتباس
    لوحِ ایام : از مختار مسعود
    انتخاب و طباعت : ام نور العین ​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  2. Ishauq

    Ishauq -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏فروری 2, 2012
    پیغامات:
    9,614
    مختار مسعود کی تحریریں بڑی لاجواب ہوتی ہیں.
    مگر یہ اقتباس سب سے زبردست ہے.
    جزاک اللہ خیرا . سسٹر
     
  3. ابوعمر

    ابوعمر محسن

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 23, 2007
    پیغامات:
    171
    جزاک اللہ

    عمدہ اندازِ بیان اور سبق آموز تحریر
     
  4. محمد آصف مغل

    محمد آصف مغل -: منتظر :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 18, 2011
    پیغامات:
    3,848
    شیئرنگ کا بہت بہت شکریہ
     
  5. نعیم یونس

    نعیم یونس -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 24, 2011
    پیغامات:
    7,923
    جزاک اللہ خیرا یا اختی.
    توحید سے دوری ، شرک کی قربت کا باعث ہی بنتی ہے.
     
  6. ام محمد

    ام محمد -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏فروری 1, 2012
    پیغامات:
    3,122
    جزاک اللہ خیرا
    سسٹر یہ بات آپ نے صحیع کہی دین کےراستےپراپنوں کےطعنےبڑا دکھ دیتےھیں لیکن میں تو اب سوچتی ھوں کہ میرااپنا وہ ھےجو دین میں میرے ساتھ ھےصحابہ اکرام کی مثال ھمارےسامنے ھےکس طرح دین کی خاطرانھوں نے رشتوں کی قربانی دی اللہ ھمیں ان جیسا حوصلہ دےآمین دین کی سمجھ رکھنے والے نہ بٹیں بلکہ خود کوایک خاندان سمجھیں آج اس کیی ااشد ضرورت ھے-اللہ ھمیں صرف اپنے لیے ملوائے اورجداکرےآمین
    واقعہ سنا تھا کچھ مختصر سا یاد ھے وہ یہ کہ کچھ باایمان نوجوان ایک طوطے کے ذریعہ قسمت کا حال بتانے والے بابا جی کے پاس گئے ان میں سےایک نے اپنا ھاتھ آگے کر کے کہا کہ بابا جی بتاؤ اس ھاتھ کا تپھڑآپ کوکب پڑے گا بابا بچاراپریشان ھوگیا ھاتھ جوڑنے لگا کہ میرےحال پر رحم کرو میری روزی روٹی خراب نہ کرو-
    آج یہ باتیں ھمارے لیے بہت بڑاالمیہ ھیں یہ بابے مسلمانوں کی بد اعتقادیوں کی وجہ سے بیٹھے ھیں اور کما رھے ھیں اللہ ھمارے حال پررحم کرے-آمین-
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  7. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482
    واياكم آمين ،
    بالكل درست ۔ اور ان بابوں کے سامنے ہمارى قوم ميں اس بچے جيسى ہمت بھی نہيں جو كھٹ سے کہہ دے : كچھ بھی نہیں ہو رہا ۔ خاک بھی نہیں ۔ بس پتھرہے اور وہی اس کا داغ ۔
     
  8. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,450
    آخری حربہ
     
  9. irum

    irum -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏جون 3, 2007
    پیغامات:
    31,582
    جزاکم اللہ خیرا
     
  10. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482
    اس سے آگے بھی ہے : " آپ کا بچہ وہابی ہو گیا ہے " ۔ بچپن ميں ہميں ميلاد ميں " آمد " نظر نہيں آتى تھی تب يہى سنتے تھے ۔
    واياكم سسٹر۔
     
  11. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482
    واياك ، آپ بھی اپنے پسنديدہ اقتباسات شئير كيجيے گا ۔
    مجھے ان كى تحريروں ميں قرآنى مطالعے كى جھلك نظر آتى ہے۔ مثلا :
    يہ دراصل قرآن مجيد سے مستعار لى گئی ايك آيت كى منظر كشى ہے ۔
     
  12. dani

    dani نوآموز.

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 16, 2009
    پیغامات:
    4,333
    واہ بابوں کی کھال اتار دی ہے مصنف نے
     
  13. dani

    dani نوآموز.

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 16, 2009
    پیغامات:
    4,333
    زبردست سوال :00001:
     
  14. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482
    خمینی کے پیروکاروں کو آج کل پھر چاند میں کچھ نظر آیا ہے۔ کسی نے ان سے بڑا منطقی سوال کیا ہے۔۔۔
    chand.jpg
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 3
  15. عمر اثری

    عمر اثری -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 21, 2015
    پیغامات:
    460
    زبردست...
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں