عازمین حج کے لئے ایک راہنما تحریر

یوسف ثانی نے 'ماہ ذی الحجہ اور حج' میں ‏اگست 26, 2012 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. یوسف ثانی

    یوسف ثانی -: معاون :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 25, 2012
    پیغامات:
    36
    مناسک حج اور اِن کی ترتیب
    اقسام حج:میں حج تمتع سب سے افضل ہے ۔ پاکستانی عازمین عموماََ حج تمتع ہی کرتے ہیں۔اس میں گھر سے روانگی کے وقت یا میقات کے پاس صرف عمرہ کی نیت کی جاتی ہے اور عمرہ مکمل کر لینے کے بعد احرام کھول دیا جاتا ہے۔(ارکان ِعمرہ : دو فرائض۔ (۱) احرام مع نیت و تلبیہ (۲)طواف کعبہ۔ دو واجبات: (۱) صفا و مروا کی سعی (۲)حلق یا قصر )۔ پھر آٹھ ذی الحجہ کو دوبارہ حج کی نیت سے مکہ ہی سے احرام باندھا جاتا ہے۔ حج قرن میں حج و عمرہ دونوں جبکہ حج مفرد میں صرف حج کی نیت کی جاتی ہے۔
    فرائضِ حج: (۱) اِحرام۔مردوں کے لےے دو چادریںجبکہ عورتوں کے لےے معمول کا لباس۔ نیت کرنا اور تین بار تلبیہ پڑھنا۔(۲) وقوفِ عرفات۔(۳) طوافِ زیارت (خانہ کعبہ کے گرد سات چکر لگانا)۔
    واجباتِ حج: ۱۔ وقوفِ مزدلفہ ۲۔رمی (جمرات شیطان کو سات سات کنکریاں مارنا) ۳۔حج کی قربانی ۴۔بالوں کا حلق یا قصر ۵۔ صفا و مروا کی سعی (صفا پہاڑی سے مروا پہاڑی تک آنا اور جانا، کل سات مرتبہ) ۶۔ طوافِ وداع۔
    ۸ ذی الحجہ: ٭اپنی رہائش پر غسل یا وضو کرکے احرام باندھنا۔٭اگر مکروہ وقت نہ ہو تو دو رکعت نفل نماز ادا کرنا۔٭ پھر حج کی نیت کرنا کہ اے اللہ میں حج کی نیت کرتا کرتی ہوں، اس کو میرے لئے آسان فرما دیجئے اور قبول فرمائے ۔(اَللّٰھُمَّ اِنّی اُریدُالحَجَّ فَیَسِّرہُ لِی وَ تَقَبَّلہُ مِنِّی )٭ اس کے بعد تین مرتبہ تلبیہ پڑھنا۔ ٭ اب احرام کی پابندیاں شروع ہوگئیں۔ ٭اس کے بعدحرم سے کوئی آٹھ کلومیٹر دور واقع منیٰ کو روانگی، جہاں دن اور رات کو منیٰ میں قیام کرنا۔
    ۹ ذی الحجہ:٭ طلوع آفتاب کے بعد منیٰ سے 14 کلومیٹر دور عرفات کو روانگی۔٭غسل یا وضو کرکے زوال سے غروبِ آفتاب تک دوسرا فرض وقوفِ عرفات کرنا جوکھڑے ہوکر کرناافضل ہے ۔٭غروبِ آفتاب کے بعد نمازِ مغرب پڑھے بغیر عرفات سے ۹ کلومیٹر دور مزدلفہ روانہ ہونا۔٭ مزدلفہ پہنچنے کے بعد (رات جس وقت بھی پہنچیں) مغرب اور عشا کی نمازیں اکٹھی پڑھنا۔٭ یہ مبارک رات ہے۔ اس رات ذکر اذکار، دعا اور آرام کرنا ہے۔
    10 ذی الحجہ:٭ مزدلفہ ہی میں نمازِ فجر کے بعد سے طلوع آفتاب کے قریب تک وقوفِ مزدلفہ کرنا۔٭ رَمی کے لئے کنکریاں مزدلفہ سے اٹھانا۔ ( احتیاطاََ ستّر 80کنکریاں جمع کر لیں)۔٭طلوع آفتاب کے بعد مزدلفہ سے پانچ کلو میٹردور منیٰ روانہ ہونا۔٭زوال سے پہلے منیٰ میں جمرہ عقبہ کی رمی کرنا یعنی سات کنکر یاںمارنا۔ رمی کے دوران آپ کا رُخ اس طرح ہو کہ دائیں جانب منیٰ اور بائیں جانب مکہ ہو۔٭ جمرہ عقبہ کی رمی کے آغاز سے ہی تلبیہ بند کردینا۔٭ بطور شکرانہ حج کی قربانی کرنا جو عید الضحیٰ کی قربانی سے الگ ہے۔٭ قربانی کرنے کے بعدبالوں کاحلق (گنجا ہونا) یا قصر کرنا(کم از کم سر کے ایک چوتھائی بالوں کو انگلی کے ایک پور کے برابر کاٹنا)۔ خواتین تمام بالوں کے آخری سرے کو تقریباََ دو انچ تک کاٹیں۔٭ اب زوجین کے تعلقات کے علاوہ احرام کی جملہ پابندیاں ختم ہوگئیں۔٭ غسل یا وضو کے بعد احرام میں ہی یا پھر عام لباس پہن کر مکہ روانہ ہونا۔٭ تیسرا اور آخری فرض، طوافِ زیارت کی ادائیگی جو۰۱ تا ۲۱ ذی الحج کی جاسکتی ہے مگر۰۱ ذی الحج کو کرنا افضل ہے۔٭طوافِ زیارت کے بعد دو رکعت نمازِ طواف ادا کرنا۔ ٭ اگر ممکن ہو توملتزم پر دعا کرنا۔٭ زم زم کا پانی سیر ہوکر پینا۔٭ صفا و مروا کی سعی کرنا۔٭ جمرات کی رمی کے لئے منیٰ روانگی۔
    ۱۱ ذی الحجہ:٭بعد زوال اور غروبِ آفتاب سے قبل پہلے جمرہ اولیٰ پھر جمرہ وسطیٰ کی رَمی کرنا یعنی سات کنکریاں مارنا۔ اس کے بعد دعا کرنا کہ یہ قبولیت کی گھڑی ہے٭ آخر میں جمرہ وعقبہ کی رمی کرنا ۔ اس رَمی کے بعد کوئی دعا نہیں ہے۔
    12 ذی الحجہ:٭زوال اور غروبِ آفتاب کے درمیان تینوں جمرات کی بالترتیب رَمی کرنا۔٭ منیٰ میں ہی قیام کریں یا مکہ روانہ ہو جائیں۔ ٭افضل یہی ہے کہ 13 ذی الحجہ کو تینوں جمرات کی بالترتیب رَمی کرکے ہی مکہ روانہ ہوں۔
    13 ذی الحجہ:٭اگر 13 ذی الحجہ کی صبح منیٰ میں ہوگئی تو13 ذی الحجہ کی رمی بھی واجب ہوگی، ورنہ نہیں۔

    بیت اللہ کی کہانی
    پہلا وہ گھر خدا کا: بے شک سب سے پہلی عبادت گاہ جو انسانوں کے لیے تعمیر ہوئی، وہ وہی ہے جو مکہ میں واقع ہے۔ اس کو خیر و برکت دی گئی تھی اور تمام جہان والوں کے لیے مرکزِ ہدایت بنایا گیا تھا۔ اس میں کُھلی ہوئی نشانیاں ہیں، ابراہیم ؑ کا مقام ِعبادت ہے۔ اور اس کا حال یہ ہے کہ جو اس میں داخل ہوا مامون ہوگیا۔ لوگوں پر اللہ کا یہ حق ہے کہ جو اس گھر تک پہنچنے کی استطاعت رکھتا ہو وہ اس کا حج کرے۔ اور جو کوئی اس حکم کی پیروی سے انکار کرے تو اسے معلوم ہوجانا چاہیے کہ اللہ تمام دنیا والوں سے بے نیاز ہے۔(آلِ عمران....97)
    بیت اللہ کی جگہ اللہ نے تجویز کی: یاد کرو وہ وقت جبکہ ہم نے ابراہیم ؑکے لیے اس گھر (خانہ کعبہ) کی جگہ تجویز کی تھی (اس ہدایت کے ساتھ) کہ میرے ساتھ کسی چیز کو شریک نہ کرو۔ اور میرے گھر کو طواف کرنے والوں اور قیام و رکوع و سجود کرنے والوں کے لیے پاک رکھو۔ اور لوگوں کو حج کے لیے اذنِ عام دے دو کہ وہ تمہارے پاس ہر دور دراز مقام سے پیدل اور اونٹوں پر سوار آئیں تاکہ وہ فائدے دیکھیں جو یہاں ان کے لیے رکھے گئے ہیں۔ اور چند مقرر دنوں میں ان جانوروں پر اللہ کا نام لیں جو اس نے انہیں بخشے ہیں۔خود بھی کھائیں اور تنگ دست محتاج کو بھی دیں۔ پھر اپنا میل کچیل دور کریں اور اپنی نذریں پوری کریں۔اور اس قدیم گھر کا طواف کریں۔یہ تھا (تعمیرِ کعبہ کا مقصد) اور جو کوئی اللہ کی قائم کردہ حرمتوں کا احترام کرے تو یہ اس کے رب کے نزدیک خود اسی کے لیے بہتر ہے( الحج....30)
    کعبہ مرکز اور امن کی جگہ ہے:اور یہ کہ ہم نے اس گھر (کعبہ) کو لوگوں کے لیے مرکز اور امن کی جگہ قرار دیا تھا اورلوگوں کو حکم دیا تھا کہ ابراہیم ؑ جہاں عبادت کے لیے کھڑا ہوتا ہے اس مقام کو مستقل جائے نماز بنالو، اور ابراہیم ؑاور اسماعیل ؑ کو تاکید کی تھی کہ میرے اس گھر کو طواف اور اعتکاف اور رکوع اور سجدہ کرنے والوں کے لیے پاک رکھو۔(البقرة....125)
    ابراہیم ؑو اسمٰعیل ؑ کی دعا:اور یاد کرو، ابراہیم ؑاور اسمٰعیل ؑجب اس گھر کی دیواریں اٹھا رہے تھے، تو دعا کرتے جاتے تھے: اے ہمارے رب! ہم سے یہ خدمت قبول فرمالے، تو سب کی سننے اور سب کچھ جاننے والا ہے۔ اے رب، ہم دونوںکو اپنا مسلم بنا۔ ہماری نسل سے ایک ایسی قوم اٹھا، جو تیری مسلم ہو۔ ہمیں اپنی عبادت کے طریقے بتا اور ہماری کوتاہیوں سے درگزر فرما۔ تو بڑا معاف کرنے والا اور رحم فرمانے والا ہے۔ اور اے رب! ان لوگوں میں خود انہی کی قوم سے ایک رسول اٹھائیو جو انہیں تیری آیات سنائے، ان کو کتاب اور حکمت کی تعلیم دے اور ان کی زندگیاں سنوارے۔ تو بڑا مقتدر اور حکیم ہے(البقرة۔129)
    قیام کا ذریعہ ہے: اللہ نے مکانِ محترم، کعبہ کو لوگوں کے لیے (اجتماعی زندگی کے) قیام کا ذریعہ بنایا اور ماہِ حرام اور قربانی کے جانوروں اور قَلادوں کو بھی (اس کام میں معاون بنا دیا) تاکہ تمہیں معلوم ہو جائے کہ اللہ آسمانوں اور زمین کے سب حالات سے باخبر ہے اور اُسے ہر چیز کا علم ہے۔ خبردار ہوجاﺅ! اللہ سزا دینے میں بھی سخت ہے اور اس کے ساتھ بہت درگزر اور رحم بھی کرنے والا ہے۔ (المآئدة....۹۹)

    مناسک حج سے متعلق قرآنی ہدایات
    حج کی نیت: اللہ کی خوشنودی کے لیے جب حج اور عُمرے کی نیت کرو، تو اُسے پورا کرو، اور اگر کہیں گھر جاﺅ تو جو قربانی میسر آئے، اللہ کی جناب میں پیش کرو اور اپنے سر نہ مونڈو جب تک کہ قربانی اپنی جگہ نہ پہنچ جائے۔ مگر جو شخص مریض ہو یا جس کے سر میں کوئی تکلیف ہو اور اس بنا پر اپنا سر منڈوا لے، تو اَسے چاہیے کہ فدیے کے طور پر روزے رکھے یا صدقہ دے یا قربانی کرے۔ پھر اگر تمہیں امن نصیب ہو جائے (اور تم حج سے پہلے مکّے پہنچ جاؤ) تو جو شخص تم میں سے حج کا زمانہ آنے تک عُمرے کا فائدہ اٹھائے، وہ حسب مقدور قربانی دے، اور اگر قربانی میسر نہ ہو، تو تین روزے حج کے زمانے میں اور سات گھر پہنچ کر، اس طرح پُورے دس روزے رکھ لے۔ یہ رعایت اُن لوگوں کے لیے ہے، جن کے گھر بار مسجد حرام کے قریب نہ ہوں۔ اللہ کے ان احکام کی خلاف ورزی سے بچو اور خوب جان لو کہ اللہ سخت سزا دینے والا ہے۔
    حج کے ساتھ کاروبار کرنا:حج کے مہینے سب کو معلوم ہیں۔ جو شخص ان مقرر مہینوں میں حج کی نیت کرے، اسے خبردار رہنا چاہیے کہ حج کے دوران میں اس سے کوئی شہوانی فعل، کوئی بدعملی، کوئی لڑائی جھگڑے کی بات سرزد نہ ہو۔ اور جو نیک کام تم کرو گے، وہ اللہ کے علم میں ہوگا۔ سفر حج کے لیے زاد راہ ساتھ لے جاؤ، اور سب سے بہتر زاد راہ پرہیزگاری ہے۔ پس اے ہوشمندو! میری نافرمانی سے پرہیز کرو۔ اور اگر حج کے ساتھ ساتھ تم اپنے رب کا فضل بھی تلاش کرتے جاؤ، تو اس میں کوئی مضائقہ نہیں۔ پھر جب عرفات سے چلو، تو مشعرِ حرام (مُزدلفہ) کے پاس ٹھیر کر اللہ کو یاد کرو اور اُس طرح یاد کرو جس کی ہدایت اس نے تمہیں کی ہے، ورنہ اس سے پہلے تو تم لوگ بھٹکے ہوئے تھے۔ پھر جہاں سے اور سب لوگ پلٹتے ہیں وہیں سے تم بھی پلٹو اور اللہ سے معافی چاہو، یقیناً وہ معاف کرنے والا اور رحم فرمانے والا ہے۔
    حج کے بعد: پھر جب اپنے حج کے ارکان ادا کر چکو، تو جس طرح پہلے اپنے آبا و اجداد کا ذکر کرتے تھے، اُس طرح اب اللہ کا ذکر کرو، بلکہ اس سے بھی بڑھ کر (مگر اللہ کو یاد کرنے والے لوگوں میں بھی بہت فرق ہے) اُن میں سے کوئی تو ایسا ہے، جو کہتا ہے کہ اے ہمارے رب، ہمیں دنیا ہی میں سب کچھ دیدے۔ ایسے شخص کے لیے آخرت میں کوئی حصہ نہیں۔ اور کوئی کہتا ہے کہ اے ہمارے رب، ہمیں دنیا میں بھی بھلائی دے اور آخرت میں بھی بھلائی، اور آگ کے عذاب سے ہمیں بچا۔ ایسے لوگ اپنی کمائی کے مطابق (دونوں جگہ) حصہ پائیں گے اور اللہ کو حساب چُکاتے کچھ دیر نہیں لگتی۔ یہ گنتی کے چند روز ہیں جو تمہیں اللہ کی یاد میں بسر کرنے چاہئے۔ پھر جو کوئی جلدی کرکے دو ہی دن میں واپس ہوگیا تو کوئی حرج نہیں، اور جو کچھ دیر زیادہ ٹھہر کر پلٹا تو بھی کوئی حرج نہیں۔ بشرطیکہ یہ دن اس نے تقویٰ کے ساتھ بسر کیے ہوں۔اللہ کی نافرمانی سے بچو اور خوب جان رکھو کہ ایک روز اس کے حضور میں تمہاری پیشی ہونے والی ہے ۔(بقرة:196 تا 203)
    حالت احرام میں شکار حلال نہیں:اے لوگو جو ایمان لائے ہو، بندشوں کی پوری پابندی کرو۔ تمہارے لیے مویشی کی قسم کے سب جانور حلال کیے گئے، سوائے اُن کے جو آگے چل کر تم کو بتائے جائیں گے۔ لیکن احرام کی حالت میں شکار کو اپنے لیے حلال نہ کرلو، بے شک اللہ جو چاہتا ہے حکم دیتا ہے۔(المآئدة....۱)
    احرام میں شکارکا کفارہ : اے لوگو جو ایمان لائے ہو، اللہ تمہیں اُس شکار کے ذریعہ سے سخت آزمائش میں ڈالے گا جو بالکل تمہارے ہاتھوں اور نیزوں کی زد میں ہوگا، یہ دیکھنے کے لیے کہ تم میں سے کون اس سے غائبانہ ڈرتا ہے، پھر جس نے اس تنبیہ کے بعد اللہ کی مقرر کی ہوئی حد سے تجاوز کیا اس کے لیے دردناک سزا ہے۔ اے لوگو جو ایمان لائے ہو! احرام کی حالت میں شکار نہ مارو۔ اور اگر تم میں سے کوئی جان بوجھ کر ایسا کرگزرے گا تو جو جانور اس نے مارا ہو اُسی کے ہم پلّہ ایک جانور اُسے مویشیوں میں سے نذر دینا ہوگا جس کا فیصلہ تم میں سے دو عادل آدمی کریں گے۔ اور یہ نذرانہ کعبہ پہنچایا جائے گا۔ یا نہیں تو اس گناہ کے کفارہ میں چند مسکینوں کو کھانا کھلانا ہوگا یا اُس کے بقدر روزے رکھنے ہوں گے تاکہ وہ اپنے کیے کا مزا چکھے۔ پہلے جو کچھ ہوچکا اُسے اللہ نے معاف کر دیا۔ لیکن اب اگر کسی نے اس حرکت کا اعادہ کیا تو اس سے اللہ بدلہ لے گا۔ اللہ سب پر غالب ہے اور بدلہ لینے کی طاقت رکھتا ہے۔(المآئدة....95)
    احرام میں سمندر کا شکار حلال ہے: تمہارے لیے سمندر کا شکار اور اس کا کھانا حلال کر دیا گیا۔ جہاں تم ٹھیرو وہاں بھی اسے کھا سکتے ہو اور قافلے کے لیے زادِراہ بھی بنا سکتے ہو۔ البتہ خشکی کا شکار جب تک تم احرام کی حالت میں ہو، تم پر حرام کیا گیا ہے۔ پس بچو اس خدا کی نافرمانی سے جس کی پیشی میں تم سب کو گھیر کر حاضر کیا جائے گا۔(المآئدة....96)

    سفرِحج کی قیام گاہیں
    ۱۔ ہوٹل یا رہائشی عمارت: حجاج کرام ایام حج سے پہلے اور بعد میں یہیں رہائش پذیرہوتے ہیں۔ چالیس روزہ سفرِ حج کے دوران یہاںکم و بیش ایک ماہ کا قیام ہوتا ہے، لہٰذا ہوٹل کا نام، پتہ، فون اور حدود اربعہ وغیرہ صاف صاف اپنی جیبی ڈائری اور موبائل فون میں محفوظ کر لیں۔ یہ معلومات کسی ایک فرد کے پاس نہیں بلکہ ہر حاجی یعنی مرد، عورت اور بچوں تک کے پاس موجود ہونا چاہئے تاکہ خدا نخواستہ بچھڑنے یا راستہ بھولنے کی صورت میں کسی کو بھی پتہ بتا کر ہوٹل پہنچا جاسکے۔ اگرہوٹل کا بزنس کارڈ مل جائے تو اسے ضرور اپنے ہمراہ رکھیں۔اس رہائش گاہ میں باورچی خانہ کی سہولت موجودہوتی ہے تاہم کھانے پینے اور برتن وغیرہ کا تمام انتظام حجاج کرام یا توخود کرتے ہیں یا ان کا گروپ اجتماعی طور پر کرتا ہے۔
    ۲۔ منیٰ کے خیمے : ایام حج (8۔13ذی الحجہ) کے پانچ چھ روزہ قیام کے لئے یہ ایک طرح سے بیس کیمپ ہوتا ہے۔ منیٰ کے انہی خیموں سے تمام کے تمام پچیس تیس لاکھ حاجی ایک ہی دن بعد نماز فجر تا دوپہر وقوف عرفت کے لئے میدانِ عرفات جاتے ہیں۔ خواتین اور مردوں کے لئے علیحدہ مگر متصل الاٹ کردہ ایئر کنڈیشنڈ خیموں میں پچیس تیس افراد کی گنجائش ہوتی ہے۔ ان خیموں میں بعض گروپوں کی طرف سے کھانے پینے کا انتظام ہوتا ہے تاہم خیمہ بستی سے ملحق بازار میں بھی کھانے پینے کی اشیاءبآسانی مل جاتی ہیں۔ خیمہ بستی مکتب نمبر اور خیمہ نمبر پر مشتمل ہوتی ہے، جو حجاج کے شناختی کارڈ پر بھی درج ہوتا ہے۔کچھ لوگ اپنے ساتھ ملٹی ساکٹس والے کیبل ایکس ٹینشین بھی لے جائیں کیونکہ ہر خیمہ میں موبائل وغیرہ کی چارجنگ کے لئے بجلی کے ساکٹ بہت کم ہوتے ہیں۔سامان برائے قیامِ منیٰ : تالے چابی والے ایک بڑے بیگ میں پانچ چھ روزہ قیام کے لئے ضرورت کی تمام بنیادی اشیاءساتھ لے جائیں۔ باقی سامان اورسوٹ کیس مقفل حالت میں ہوٹل ہی میں چھوڑ جائیں۔ خواتین اور مردوں کے بیگ الگ الگ ہوں۔ منیٰ سے عرفات اور مزدلفہ روانگی: کے وقت ہر حاجی صرف ایک مختصر سا کالج بیگ اور پانی کا تھرموس اپنے ساتھ لے جائے اور بڑا بیگ یہیں چھوڑ جائے۔
    ۳۔ میدان عرفات: یہاں بھی ہر مکتب کے لئے الگ الگ قناتیں لگی ہوتی ہیں، جہاںمغرب تک قیام کرنا ہوتا ہے۔ یہاں بیت الخلاءکے سوا کوئی سہولت موجود نہیں ہوتی۔ لہٰذا غیر ہموار فرش پر بیٹھنے ، لیٹنے اور نماز کے لئے چٹائی نما جائے نماز یا چادر اور ہوا بھرے تکیہ اپنے ہمراہ لے کرآئیں۔ گرمیوں میں دستی پنکھے بھی ساتھ لا سکتے ہیں۔اکثر مقامات پر مختلف اداروںکی طرف سے یہاں مفت لنچ پیک بھی مل جاتا ہے ۔ خطبہ حج : خطبہ حج ریڈیو ٹی وی سے براہ راست نشر کیا جاتا ہے کیونکہ بہت کم لوگوں کے لئے یہ ممکن ہوتا ہے کہ وہ مسجدِ نمرہ میں جاکر خطبہ حج سن سکیں۔آپ کے گروپ لیڈرز کم از کم دو ایف ایم ریڈیو، اسپیکرز اور فاضل بیٹری سیل ضرور ساتھ لے جائیں تاکہ خواتین اور مرد الگ الگ خطبہ حج سننے کی سعادت حاصل کر سکیں۔
    ۴۔ مزدلفہ : آفتاب غروب ہوتے ہی لاکھوں حجاج کرام ایک ساتھ مزدلفہ کی طرف چل پڑتے ہیں۔ جن گروپوں کو ٹرانسپورٹ نہیں ملتی وہ پیدل چلنے پر مجبو ر ہوتے ہیں۔ حج کا یہ سب سے مشکل ترین مرحلہ ہوتا ہے جو رات کے اندھیرے میں طے کرنا پڑتا ہے۔ مغرب و عشاءکی نماز مزدلفہ پہنچ کر اکٹھے پڑنی پڑتی ہے، خواہ آدھی رات کے بعد ہی مزدلفہ کیوں نہ پہنچیں۔ لاکھوں لوگوں کے رش کی وجہ سے گاڑیاں بھی رینگتی ہوئی چلتی ہیں۔کوشش کریں کہ آپ اپنے اہل خانہ اور گروپ کے ساتھ ایک ہی گاڑی میں سوار ہوں یا ایک ساتھ پیدل چلیں۔ مزدلفہ میں بیت الخلاءکے سوا کوئی اورسہولت موجود نہیں ہے ۔ وسیع و عریض میدان میں کھلے آ سمان تلے وقوف کرنا ہوتا ہے۔ مزدلفہ میںجس وقت بھی پہنچیں، مغرب اور عشاءکی نماز اکٹھے ادا کرنا ہے اور پھر نماز فجر تک وقوف کرنا ہے۔ فجر کی نماز پڑھتے ہی لاکھوں حاجی ایک ساتھ َ منیٰ کی طرف چل پڑتے ہیں۔ حج کا یہ دوسرا مشکل ترین مرحلہ ہوتا ہے لیکن دن کی روشنی اور منیٰ پہنچنے کی کوئی جلدی نہ ہونے کی وجہ سے یہ سفرتناﺅ والا نہیں ہوتا۔البتہ سواری نہ ملنے کی صورت میں لاکھوں حجاج کے ہمراہ انتہائی رش میں بہت زیادہ چلنا پڑتا ہے۔
    منیٰ۔عرفات۔مزدلفہ۔منیٰ کا سفر: تقریباََ چوبیس گھنٹوں پر مشتمل حج کا سب سے مشکل اور مشقت سے بھرپور مرحلہ یہی ہوتا ہے۔ لہٰذا کوشش کریں کہ اس دوران ہر فرد کے پاس ایک مختصر سا بیگ ہو جسے اسکول بیگ کی طرح پشت پر لٹکایا جاسکے ۔ ایک پانی کا تھرموس ہو۔ بیگ میں ایک اضافی احرام (اورخواتین کے لئے اضافی جوڑا) اور ایک اضافی چپل موجود ہو تاکہ احرام ناپاک ہونے اور چپل گم ہونے کی صورت میں تبدیل کئے جاسکیں۔ کچھ خشک خوراک مثلاََ بسکٹ وغیرہ بھی لے لیں ۔ اگر آپ بلڈ پریشر، ذیابطیس یا اور کسی مرض میں مبتلا ہوں تو کم از کم دو دن کی دوائی کی خوراک بھی ساتھ رکھ لیں۔
    منیٰ، عرفات اور مزدلفہ کے عوامی بیت الخلا : ان تنگ بیت الخلا کے اندر ہی غسل کے لےے شاور بھی نصب ہیں۔ لہٰذا یہاں دورانِ غسل ناپاک چھینٹوں سے بچنے کی خاص ضرورت ہوتی ہے۔ بغیر خوشبو والے صابن کی چھوٹی چھوٹی ٹکیاں اور حمام میں احرام کو محفوظ رکھنے کے لئے پلاسٹک کے مضبوط شاپر بیگز اپنے ساتھ منیٰ ، عرفات اور مزدلفہ کے بیت الخلا میںلے جانا سود مند رہتا ہے۔ مردانہ غسل خانوں کی دوسری طرف زنانہ غسل خانے ہوتے ہیں۔
    منیٰ ،عرفات اور مزدلفہ میں قبلہ رُخ: ان تینوں جگہوں پر قیام اور وقوف کے لےے کی گئیں حد بندیاں قبلہ رُخ نہیں ہیں۔ تاہم قبلہ نما کے نشانات آویزاں ہیں۔ انہیں دیکھ کر ہی نماز کے لئے اپنی صفیں بنائیں۔
    مزدلفہ اور کنکریاں: مزدلفہ میں جگہ جگہ کنکریوںکے ڈھیر لگے ہوتے ہیں۔ہر حاجی کو کل 70 کنکریاں درکار ہوتی ہیں۔ احتیاطاََ 80 کنکریاں فی حاجی چن لیں۔ یہاں پر کنکریوں کے پیکٹس بھی تقسیم کئے جاتے ہیں۔ اگر پیکٹس مل جائیں تو ٹھیک ورنہ خود ہی اپنے لئے اور اپنی خواتین و بچوں کے لئے کنکریاں چُن لیں۔
    بالوں کاحلق یا قصر:حج کا واجب رکن، جس کے بغیر حاجی احرام کی پابندیوں سے باہر نہیں آسکتا۔منیٰ میں بالعموم حلق یا قصر کا کوئی معقول انتظام نہیں ہوتا۔ گو کہ بعض خیموں میں حجام از خود پہنچ جاتے ہیں۔ جمرات کے قریب حجام کی چند دکانیں موجود ہیں ۔ لوگ اپنی مدد آپ کے تحت بھی ایک دوسرے کے بال مونڈتے نظر آتے ہیں۔ آپ کے پاس ریزر یا ہیئر ٹرمرمشین ہو تو ایک دوسرے کا حلق یا قصرکر سکتے ہیں۔ لیکن ایسا وہی کر سکتا ہے، جس نے پہلے خود حلق یاقصر کروالیا ہو۔چند ایک خواتین پہلے اپنے بال اپنے شوہر سے کٹوا کر پھر دوسری خواتین کے بال خودکاٹ سکتی ہیں۔ بال کاٹنے کے لئے ایک چھوٹی قینچی اپنے ہمراہ لے جائیں۔
    صفا و مروا کی سعی: وھیل چیئر پر طواف وسعی کروانے کے لئے مزدوربھی مل جاتے ہیں۔ کوشش کیجئے کہ اپنے گروپ کے ضعیف مرد و خواتین کو وھیل چیئر پر خود سعی کروائیں۔ اور اگر مزدور لینا ہی ہو تو مزدوری کی رقم پر پہلے سے طے کرلیں ۔
    طوافِ زیارت کے لئے منیٰ سے بیت اللہ شریف جانے اور آنے کے لےے ٹرانسپورٹ کا انتظام کرنا بھی ایک بڑا مسئلہ ہے۔ اگرآپ کے گروپ کی طرف سے ایسا انتظام نہیں ہے تو آپ پبلک ٹرانسپورٹ استعمال کرسکتے ہیں۔اس مقصد کے لیے عین ممکن ہے کہ آپ کو میلوں پیدل بھی چلنا پڑے۔ اگر ٹرانسپورٹ میسر نہ آئے تو منیٰ تا بیت اللہ شریف پیدل بھی جایا جاسکتا ہے۔ اگر پیدل چلنا پڑے تو کسی ایسے گروپ کے ساتھ چلیں، جنہیں راستوں کا بخوبی علم ہو۔ جمرات سے دور مکاتب والوں کو بھی منیٰ والی اپنی قیام گاہ سے جمرات آنے جانے میں کافی پیدل چلناپڑتا ہے۔اب یہاں ٹرین سروس کا بھی آغاز ہوگیا ہے۔اس سہولت سے بھی فائدہ اٹھایا جاسکتا ہے۔

    مسائل اور مناسک ِ حج پر ہدایاتِ نبوی ﷺ

    حج کی فضیلیت: اُمُّ المومنین عائشہ صدیقہؓ نے رسول اﷲ ﷺ سے پوچھا کہ ہم جہاد کو بہت بڑی عبادت سمجھتے ہیں تو پھر ہم بھی کیوں نہ جہاد کریں؟ تو آپ ﷺ نے فرمایاسب سے افضل جہاد ”حجِ مقبول“ ہے۔سیدنا ابو ہریرہؓ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اﷲ ﷺ کو یہ فرماتے ہوئے سنا کہ جو شخص اﷲ کے لےے حج کرے پھر حج کے دوران کوئی فحش بات کرے اور نہ گناہ کرے تو وہ حج کرکے اس طرح بے گناہ واپس لوٹے گا جیسے اس کی ماں نے اسے بے گناہ جنم دیاتھا۔سیدنا عبداﷲ بن عباسؓ کہتے ہیں کہ قبیلہ خشعم کی ایک عورت نے کہا کہ یا رسول اﷲ! ﷺ اﷲ میرے ضعیف با پ پر حج فرض ہے مگر وہ سواری پر نہیں جم سکتے ۔ توکیا میں ان کی طرف سے حج کرلوں؟ آپ ﷺ نے فرمایا ہاں کرلے۔( بخاری)
    حضرت علی مرتضیؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: جس کے پاس سفر حج کا ضروری سامان ہو اور اس کو سواری میسر ہو جو بیت اﷲ تک اس کو پہنچا سکے اور پھر وہ حج نہ کرے تو کوئی فرق نہیں کہ وہ یہودی ہوکر مرے یا نصرانی ہوکر۔ایسا اس لئے ہے کہ اﷲ تعالیٰ کا ارشاد ہے کہ :”اﷲ کے لئے بیت اﷲ کا حج فرض ہے ان لوگوں پر جو اس تک جانے کی استطاعت رکھتے ہوں“۔ (جامع ترمذی)
    حج اور عمرہ پے در پے کرنا: حضرت عبداﷲ ابن مسعودؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا کہ حج اور عمرہ پے در پے کیا کرو کیونکہ حج اور عمرہ دونوں فقرو محتاجی اور گناہوں کو اس طرح دور رکردیتے ہیں جس طرح لوہا اور سنا ر کی بھٹی لوہے اور سونے چاندی کا میل کچیل دور کردیتی ہے ۔ اور ”حج مبرور “ کا صلہ اور ثواب تو بس جنت ہی ہے۔(جامع ترمذی، سنن نسائی) حضرت عبداﷲ بن عمرؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: جب کسی حج کرنے والے سے تمہاری ملاقات ہو تو اس کے اپنے گھر میں پہنچنے سے پہلے اس کو سلام کرو اور مصافحہ کرو اور اس سے مغفرت کی دعا کے لئے کہو۔ کیونکہ وہ اس حال میں ہے کہ اس کے گناہوں کی مغفرت کا فیصلہ ہوچکا ہے ۔ (مسند احمد) حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ اﷲ کا جو بندہ حج یا عمرہ کی نیت سے یا راہ خدا میں جہاد کے لئے نکلا۔پھر راستہ ہی میں اس کو موت آگئی تو اﷲ تعالیٰ کی طرف سے اس کے واسطے وہی اجر و ثواب لکھ دیا جاتا ہے جو حج و عمرہ کرنے والوں کیلئے یاراہ جہاد کرنے والے کے لےے مقرر ہے۔ (بیہقی)
     
    Last edited by a moderator: ‏مارچ 26, 2018
  2. Ishauq

    Ishauq محسن

    شمولیت:
    ‏فروری 2, 2012
    پیغامات:
    9,576
    جزاک اللہ خيرا
     
  3. یوسف ثانی

    یوسف ثانی -: معاون :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 25, 2012
    پیغامات:
    36
    مقاماتِ حج: سیدنا عبداﷲ بن عباسؓ سے روایت ہے کہ نبی ﷺ نے مدینہ والوں کیلئے ذوالحلیفہ کو میقات قراردیا تھا اور شام والوں کیلئے جحفہ اور نجد والوں کیلئے قرن المنازل اوریمن والوں کیلئے یلملم۔ یہ مقامات یہاں کے رہنے والوں کیلئے بھی میقات ہیں۔ اور جو شخص حج یا عمرہ کے ارادہ سے غیر مقام کا رہنے والا ان مقامات کی طرف سے ہوکر آئے، اس کی بھی میقات ہیں پھر جو شخص ان مقامات سے مکہ کی طرف کا رہنے والا ہو تو وہ جہاں سے نکلے احرام باندھ لے اسی طرح مکہ والے مکہ ہی سے احرام باندھ لیں۔امیر المومنین عمرؓ فرماتے ہیں کہ میں نے نبی ﷺ کو وادیِ عقیق میں یہ فرماتے ہوئے سنا کہ آج شب کو میرے پروردگار کی طرف سے ایک آنے والا آیا اور اس نے مجھ سے کہا کہ اس مبارک وادی یعنی عقیق میں نماز پڑھو اور کہو کہ ”میں نے حج اور عمرہ دونوں کا احرام باندھا“۔ایک اور روایت میںسیدنا عبداﷲ بن عمرؓ کہتے ہیں کہ نبی ﷺ کو اخیر شب میں جب آپ ﷺ ذوالحلیفہ میں تھے، وادیِ عقیق میں یہ خواب دکھایا گیا اور آپ ﷺ سے کہا گیا کہ اس وقت آپ ﷺ ایک مبارک وادی میں ہیں ۔ واضح رہے کہ نبی ﷺ کے خواب بھی وحی میں شامل ہیں۔ (صحیح بخاری)
    آدابِ حرمین شریفین: حضرت ابو سعید خدریؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲﷺ نے فرمایا: حضرت ابراہیم ؑ نے مکہ کے ”حرم“ ہونے کا اعلان کیا تھا اور میں مدینہ کے ”حرم“ قرار دیئے جانے کا اعلان کرتا ہوں۔ اس کے دونوں طرف کے دروں کے درمیان پورا رقبہ واجب الاحترام ہے۔ اس میں خوں ریزی کی جائے اور نہ کسی کے خلاف ہتھیاراٹھایاجائے۔ جانوروں کے چارے کی ضرورت کے سوا درختوں کے پتے بھی نہ جھاڑے جائیں۔ حضرت جابرؓ سے راوی ہےں کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: کسی مسلمان کے لئے جائز نہیں کہ وہ مکہ میں ہتھیار اٹھائے۔ (صحیح مسلم)
    احرام: سیدنا ابن عباسؓ کہتے ہیں کہ نبی ﷺ اور آپ کے صحابہؓ، کنگھی کرنے اور تیل ڈالنے اور چادر تہہ بند پہننے کے بعد مدینہ سے چلے، پھر آپ ﷺ نے کسی قسم کی چادر اور تہہ بند کے پہننے سے منع نہیں فرمایا سوائے زعفران سے رنگے ہوئے کپڑے کے جس سے بدن پر زعفران جھڑے۔ پھر صبح کو آپ ﷺ ذوالحلیفہ میں اپنی سواری پر سوار ہوئے یہاں تک کہ جب مقامِ بیداءمیں پہنچے تو آپ ﷺ کے صحابہ نے لبیک کہا اور اپنے قربانی کے جانوروں کے گلے میں ہار ڈالے ۔ پھر آپ ﷺ چوتھی ذی الحجہ کو مکہ پہنچے اور آپ ﷺ نے کعبہ کا طواف کیا اور صفا مروہ کے درمیان سعی کی اور آپ ﷺ اپنی قربانی کے جانوروں کی وجہ سے احرام سے باہر نہیں ہوئے کیونکہ آپ ﷺ ان کے گلے میں ہار ڈال چکے تھے۔ پھر آپ ﷺ مکہ کی بلندی پر مقام حجوں کے پاس اترے اور آپ ﷺ حج کا احرام باندھے ہوئے تھے طواف کرنے کے بعد آپ کعبہ کے قریب بھی نہ گئے یہاں تک کہ عرفہ سے لوٹ آئے۔ اور آپ ﷺ نے صحابہ کو حکم دیا کہ وہ کعبہ کا اور صفا مروہ کا طواف کریں اس کے بعد اپنے بال کتروا ڈالیں اور احرام کھول دیں۔اور بال کتروانے کے بعد جس کے ہمراہ اس کی بیوی ہو اس سے صحبت کرنا، خوشبو لگانا اور کپڑے پہننا سب جائز ہوگیا۔سیدنا یعلی بن امیہؓ کہتے ہیں کہ نبی ﷺ مقام جعرانہ میں تھے کہ ایک شخص آپ ﷺ کے پاس آیا اورپوچھا کہ یا رسول اﷲ ﷺ اس شخص کے بارے میں کیاحکم ہے، جس نے عمرہ کا احرام باندھا ہو حالانکہ وہ خوشبو سے تر ہو؟ تو نبی ﷺ نے کچھ دیر سکوت فرمایا پھر آپ ﷺ پر وحی نازل ہونے لگی۔ بعد ازاں آپ ﷺ نے فرمایا کہ جو خوشبو تجھے لگی ہوگی اس کو تین مرتبہ دھو ڈالو اور اپنا جبہ اپنے جسم سے اتار دو اور عمرہ میں بھی اسی طرح اعمال کرو جس طرح اپنے حج میں کرتے ہو۔ (صحیح بخاری)
    سیدنا عبداﷲ بن عمرؓ جب حج کیلئے مکہ جانے کا ارادہ کرتے تو تیل لگاتے جس میں خوشبو نہ ہوتی تھی پھر ذوالحلیفہ کی مسجد میں آتے اور نماز پڑھتے اس کے بعد سوار ہوتے پھر جس وقت وہ سوار ہوتے اور سواری کھڑی ہوجاتی تو احرام باندھتے اس کے بعد کہتے کہ میں نے نبی ﷺ کو ایسا ہی کرتے دیکھا ہے۔ اُمُّ المومنین حضرت عائشہ صدیقہؓ کہتی ہیں کہ ہم حج کے مہینے میں حج کے احرام کے ساتھ مدینے سے نکلے پھر ہم مقامِ سرف میں اترے پھر آپ ﷺ اپنے صحابہ کے پاس تشریف لائے اور فرمایا کہ تم میں سے جس شخص کے ہمراہ قربانی کا جانور نہ ہو اور وہ چاہے کہ اس احرام سے عمرہ کرے تو وہ ایسا کرلے اور جس شخص کے ہمراہ جانور ہو وہ ایسا نہ کرے۔ اُمُّ المو¿منین عائشہ صدیقہؓ ایک دوسری روایت میں کہتی ہیں کہ ہم رسول اﷲ ﷺ کے ہمراہ حجة الوداع کے سال مکہ کی طرف چلے تو ہم میں سے بعض لوگوں نے عمرہ کا احرام باندھا تھا اور بعض لوگوں نے عمرہ اور حج دونوں کا احرام باندھا تھا اور بعض لوگوں نے صرف حج کا احرام باندھا تھا اور رسول اﷲ ﷺ نے حج کا احرام باندھا تھا پس جس نے حج کا احرام باندھا تھا یا حج و عمرہ دونوں کا احرام باندھا وہ احرام سے باہر نہیں ہوا یہاں تک کہ قربانی کا دن آگیا۔ اُمُّ المومنین حفصہؓ نے عرض کیا کہ یا رسول اﷲ ﷺ! لوگوں کا کیا حال ہے کہ وہ عمرہ کرکے احرام سے باہر ہوگئے اور آپ ﷺ عمرہ کرکے احرام سے باہر نہیں ہوئے تو نبی ﷺ نے فرمایا کہ میں نے اپنے سر کے بال جمائے اور اپنی قربانی کے گلے میں ہار ڈال دیا لہٰذا میں جب تک قربانی نہ کرلوں احرام سے باہر نہیں آسکتا۔ (بخاری)
    مردوں اورعورتوں کے احرام کا فرق: حضرت عبداﷲ بن عمر فرماتے ہیں کہ ایک شخص نے رسول اﷲ ﷺ سے دریافت کیا کہ حج یا عمرہ کا احرام باندھنے والاکیا کیا کپڑے پہن سکتا ہے؟ آپﷺ نے فرمایا کہ حالت احرام میں نہ تو قمیض پہنو اور نہ پاجامہ ۔ نہ ہی سر پر عمامہ پہنو اور نہ پاو¿ں میں موزے پہنو۔ ایسا کوئی کپڑا بھی نہ پہنو جس کو زعفران یاخوشبو لگا ہو۔ (صحیح مسلم) حضرت عبداﷲ بن عمرؓ راوی ہےں کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: عورتوں کو احرام کی حالت میں دستانے پہننے اور چہرے پر نقاب ڈالنے اور زعفران یا خوشبو لگے کپڑوں کا استعمال نہیں کرنا چاہئے۔ ان کے علاوہ جو رنگین کپڑے وہ چاہیں پہن سکتی ہیں۔ اسی طرح وہ چاہیں تو زیور بھی پہن سکتی ہیں اور شلوار اور قمیض اور موزے بھی پہن سکتی ہیں۔ ( ابو داؤد)
    احرام کھولنا: سیدنا ابنِ عمرؓ راوی ہیں کہ رسول اﷲ ﷺ نے اپنے حج میں سر کے بالوں کو منڈوا ڈالا تھا۔سیدنا ابنِ عمرؓ مزید کہتے ہیںکہ رسول اﷲ ﷺ نے یہ بھی فرمایا کہ اے اﷲ سر منڈوانے والوں پر اپنی رحمت فرما۔ صحابہ نے عرض کیا کہ یا رسول اﷲ ﷺ بال کتروانے والوں پر بھی رحمت کی دعا فرمائیے تو آپ ﷺ نے فرمایا اے اﷲ سر منڈوانے والوں پر رحمت نازل فرما۔ صحابہ نے پھر عرض کیا کہ یا رسول اﷲ ﷺ بال کتر وانے والوں پر بھی رحمت کی دعا فرمائیے تو آپ ﷺ نے تیسری بار فرمایا کہ بال کتروانے والوں پر بھی رحمت فرما۔ (بخاری)
    تلبیہ پڑھنا: سیدنا ابنِ عمرؓ کہتے ہیں کہ رسول اﷲ صلی اللہ علیہ وسلم نے احرام باندھتے ہی تلبیہ یعنی لبیک نہیں پکارا ۔ البتہ جب آپ ﷺ ذوالحلیفہ کی مسجد کے قریب پہنچے تو تلبیہ پڑھی۔سیدنا ابنِ عباسؓ سے روایت ہے کہ عرفہ سے مزدلفہ تک سیدنا اسامہؓ نبی ﷺ کے ہمر کاب تھے۔ پھر آپ ﷺ نے مزدلفہ سے منیٰ تک فضلؓ بن ابی طالبؓ کو ہمرکاب کرلیا تھا۔ سیدنا ابن عباسؓ کہتے ہیں کہ دونوں صحابیوں کا بیان ہے کہ نبی ﷺ برابر لبیک کہتے رہے یہاں تک کہ آپ ﷺ نے جمرة العقبہ کی رمی کی۔سیدنا عبداﷲ بن عمرؓ کہتے ہیں کہ رسول اﷲ ﷺ کا تلبیہ یہ تھا ” اے اﷲ میں تیرے دروازہ پر بار بار حاضر ہوں اور تیرے بلانے کا جواب دیتا ہوں تیرا کوئی شریک نہیں ہر طرح کی تعریف اور احسان تیرا ہی ہے اور بادشاہی تیری ہی ہے کوئی تیرا شریک نہیں۔ (بخاری)
    خلاد بن سائب تابعی اپنے والد سائب بن خلاد انصاری سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا کہ: میرے پاس جبرئیل ؑ آئے اور انہوں نے اﷲ تعالیٰ کی طرف سے مجھے حکم پہنچایا کہ میں اپنے ساتھیوں کو حکم دوں کہ تلبیہ بلند آواز سے پڑھیں۔ (موطا امام مالکؒ، جامع ترمذی، سنن ابی داؤد، سنن نسائی، سنن ابن ماجہ، مسند دارمی): حضرت سہل بن سعد سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: اﷲ کا مو¿من و مسلم بندہ جب حج یا عمرہ کا تلبیہ پکارتا ہے ۔تو اس کے داہنی طرف اور بائیں طرف اﷲ کی جو بھی مخلوق ہوتی ہے خواہ وہ بے جان پتھر اور درخت یا ڈھیلے ہی ہوں وہ بھی اس بندے کے ساتھ لبیک کہتی ہیں۔ ( ترمذی، ابن ماجہ) عمارہ بن خزیمہ بن ثابت انصاری اپنے والد سے روایت کرتے ہیں کہ رسول اﷲ ﷺ جب احرام باندھ کر تلبیہ سے فارغ ہوتے تو اﷲ تعالیٰ سے اس کی رضا اور جنت کی دعا کرتے اور اس کی رحمت سے دوزخ سے خلاصی اور پناہ مانگتے(مسند شافعی)
    حطیم کعبہ کا حصہ ہے: حضرت عائشہ صدیقہؓ کہتی ہیں کہ میں نے حطیم دیوار کی بابت پوچھا کہ کیا وہ بھی کعبہ میں سے ہے؟ تو نبی ﷺ نے فرمایا ہاں۔ میں نے عرض کیا کہ پھر ان لوگوں نے اس کو کعبہ میں کیوں نہ داخل کیا؟ تو رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا کہ تمہاری قوم کے پاس خرچ کم ہوگیا تھا۔ میںنے عرض کیا کہ کعبہ کا دروازہ اس قدر اونچا کیوں ہے؟ تو آپ ﷺ نے فرمایا کہ یہ تمہاری قوم نے اس لےے کیا تھا کہ جس کو چاہیں کعبہ کے اندر داخل کریں اور جس کو چاہیں روک دیں۔ اگر تمہاری قوم کا زمانہ، جاہلیت سے قریب نہ ہوتا اور مجھے اس بات کا خوف نہ ہوتا کہ ان کے دلوں کو برا معلوم ہوگا تو میں ضرور حطیم کو کعبہ میں داخل کردیتا اور اس کا دروازہ زمین سے ملادیتا ۔ اُمُّ المومنین حضرت عائشہ صدیقہؓ کہتی ہیں کہ نبیﷺ نے فرمایا کہ اے عائشہؓ اگر تمہاری قوم کا دور، جاہلیت سے قریب نہ ہوتا تو میں کعبہ کے منہدم کردینے کا حکم دیتا اور جو حصہ اس میں سے خارج کردیا گیا ہے اس کو دوبارہ اسی میں شامل کردیتا اور اس کو زمین سے ملادیتا اور اس میں دروازے بناتا ایک شرقی دروازہ اور ایک غربی دروازہ اور میں اس کو ابراہیم ؑ کی بنیاد کے موافق کردیتا۔سیدنا ابو ہریرہؓ راوی ہیں کہ آپ ﷺ نے فرمایا کہ چھوٹی چھوٹی پنڈلیوں والا ایک حبشی (قیامت کے قریب) کعبہ کو منہدم کردے گا۔سیدنا ابن عباسؓ راوی ہیں کہ نبی ﷺ نے فرمایا، گویا کہ میں اس سیاہ فام شخص کو دیکھ رہا ہوں جو کعبے کا ایک ایک پتھر اکھیڑ ڈالے گا۔ (بخاری)
    طوافِ کعبہ میں رمل کرنا: سیدنا ابن عباسؓ کہتے ہیں کہ رسول اﷲ ﷺ اور صحابہ جب حج کرنے مکہ تشریف لائے تو مشرکوں نے یہ چرچا کیا کہ اب ہمارے پاس ایک ایساگروہ آنے والا ہے جس کو یثرب کے بخار نے کمزور کردیا ہے پس اس بات کی اطلاع پاکر نبی ﷺ نے انہیں حکم دیا کہ تین چکروں میں رمل کریں اور دونوں یمانی رکنوں کے درمیان معمولی چال چلیں ۔ تمام چکروں میں رمل نہ کر نے کے حکم سے یہ مقصود تھا کہ لوگوں پر سہولت ہو، اس کے علاوہ اور کوئی وجہ نہ تھی۔سیدنا عبداﷲ بن عمرؓ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اﷲ ﷺ کو دیکھا جب آپ ﷺ مکہ تشریف لاتے تو پہلے طواف میں حجر اسود کا بوسہ دیتے اور سات چکروں میں سے تین میں رمل کرتے۔ (بخاری) سیدنا ابن ِعمرؓ کہتے ہیں کہ رسول اﷲ ﷺ جب پہلا طواف کرتے تھے تو اس کے تین چکروں میں رمل یعنی دوڑ کر چلا کرتے تھے اور اگلے چار چکروں میں مشی یعنی معمولی چال سے چلا کرتے تھے اور صفاومروہ کے درمیان سعی کرتے تو بطن المسیل میں سعی(دوڑا) کرتے تھے۔ (بخاری)
    حضرت جابرؓ سے روایت ہے کہ نبی ﷺ مکہ پہنچے تو سب سے پہلے حجر اسود پر آئے اور اس کا استلام کیا۔ پھر آپ نے داہنی طرف طواف شروع کیا۔ پہلے تین چکروں میں آپ ﷺنے رمل کیااور اس کے بعد چار چکروں میں آپ اپنی عام رفتار سے چلے۔ ( مسلم) حضرت عبداﷲ بن عباسؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا کہ بیت اﷲ کا طواف نماز کی طرح کی عبادت ہے۔ فرق صرف یہ ہے کہ طواف میں تم کو باتیں کرنے کی اجازت ہے۔ جو کوئی طواف کی حالت میں کسی سے بات کرے تو نیکی اور بھلائی کی بات کرے۔ (جامع ترمذی، سنن نسائی ، سنن دارمی)
    حجرہ اَسود اور رکن یمانی: امیر المومنین حضرت عمرؓ سے روایت ہے کہ وہ طواف میں حجراسود کے پاس آئے پھر اس کو بوسہ دیا اور کہا کہ بیشک میں جانتا ہوں کہ تو ایک پتھر ہے نہ کسی کو نقصان پہنچا سکتا ہے اور نہ فائدہ دے سکتا ہے اور اگر میں نے نبی کو تیرا بوسہ دیتے نہ دیکھا ہوتا تو میں تجھے بوسہ نہ دیتا۔سیدنا ابن عباسؓ کہتے ہیں کہ نبی ﷺ نے حجةالوداع میں اپنے اونٹ پر سوار ہوکر طواف کیا، اور لاٹھی سے آپ ﷺ نے حجر اسود کو بوسہ دیا۔ یعنی حجر اسود کو لاٹھی لگا کر اسے چوم لیا۔ (بخاری)
    حضرت عبداﷲ بن عباسؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے حجر اسود کے بارے میں فرمایا: خدا کی قسم! قیامت کے دن اﷲ تعالیٰ اس کو نئی زندگی دے کر اس طرح اٹھائے گا کہ اس کی دو آنکھیں ہوں گی جن سے وہ دیکھے گا۔ اور زبان ہوگی جس سے وہ بولے گا۔ جن بندوں نے اس کا استلام کیا ہوگیا ان کے حق میں سچی شہادت دے گا۔ ( ترمذی، ابن ماجہ، سنن دارمی) حضرت عبداﷲ بن عمرؓ سے روایت ہے کہ میں نے رسول اﷲ ﷺسے سنا کہ حجر اسود اور رکن یمانی ان دونوں پر ہاتھ پھیرنا گناہوں کے کفار ہ کا ذریعہ ہے۔ جس نے اﷲ کے اس گھر کا سات بار طواف کیا اور اہتمام اور فکر کے ساتھ کیاتو اس کا یہ عمل ایک غلام آزاد کرنے کے برابر ہوگا۔ بندہ طواف کرتے ہوئے جب ایک قدم رکھ کر دوسرا قدم اٹھائے گا تو اﷲ تعالیٰ اس کے ہر قدم کے بدلہ ایک گناہ معاف کرے گا اور ایک نیکی کا ثواب اس کے لئے لکھا جائے گا (ترمذی)
    حضرت عبداﷲ بن السائبؓ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اﷲ ﷺ کو حالتِ طواف میں رکن یمانی اور حجر اسود کے درمیان یہ دعا پڑھتے ہوئے سنا: رَبَّنَا اٰتِنَا فِی الدُّنیَا حَسَنَةً وَّفِی الا خِٰرَةِ حَسَنَةً وَّ قِنَا عَذَابَ النَّارِ ( ابو داوؤد) حضرت ابو ہریرہؓ راوی ہیں کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا کہ: رکن یمانی پر ستر فرشتے مقرر ہیں جوہر اس بندے کی دعا پر امین کہتے ہیں جو اسکے پاس یہ دعا کرے کہ : اَللّٰھُمَّ اِنِّی اَسئَلُکَ االعَفوَ وَالعَافِیَةَ فِی الدُّنیَا وَالا خِٰرَةِ رَبَّنَآ اٰتِنَا فِی الدُّنیَا حَسَنَةً وَّفِی الا خِٰرَةِ حَسَنَةً وَّقِنَا عَذَابَ النَّارِ (اے اﷲ! میں تجھ سے دنیا اور آخرت میں معافی اور عافیت مانگتا ہوں۔ اے پروردگار! ہم کو دنیا میں بھی بھلائی عطا فرما اور آخرت میں بھی، اور دوزخ کے عذاب سے ہم کو بچا)( ابن ماجہ)
    زم زم کا پانی : سیدنا ابنِ عباس ؓ کہتے ہیں کہ میں نے رسول اﷲ ﷺ کو زم زم کا پانی پلایا تو آپ ﷺ نے کھڑے ہوکر نوش فرمایا۔ رسول اﷲ ﷺ اس دن اونٹ پر سوار تھے (بخاری)
    صفا و مروا کی سعی : اُمُّ المومنین حضرت عائشہ صدیقہؓ سے ان کی بہن کے بیٹے عروہ بن زبیرؓ نے اﷲ تعالیٰ کے قول (ترجمہ) ”بے شک صفا اور مروہ دونوں اﷲ کی نشانیوں میں سے ہیں پھر جو شخص کعبہ کا حج کرے یا عمرہ کرے تو اس پر کچھ گناہ نہیں کہ صفا اور مروہ کے درمیان سعی کرے“ (بقرہ۔ 158) کے بارے میں دریافت کیا اور کہا کہ واﷲ اس سے تو معلوم ہوتا ہے کہ کسی پر کچھ گناہ نہیں اگر وہ صفاومروہ کی سعی نہ کرے؟ اُمُّ المومنین عائشہ صدیقہؓ نے جواب دیا کہ اے بھانجے! تم نے بہت بُرا مطلب بیان کیا اگر یہی مطلب ہوتا جو تم نے بیان کیا تو آیت یوں ہوتی (ترجمہ) بے شک کسی پر کچھ گناہ نہ تھا کہ ان کے درمیان سعی نہ کرتا۔ بلکہ یہ آیت انصار کے بارے میں نازل ہوئی ہے جو مسلمان ہونے سے پہلے ”مناة“ بت کی پوجا کرتے تھے ۔یہ لوگ زمانہ جاہلیت میں جب احرام باندھتے تو صفا مروہ کے درمیان سعی کرنے کو گناہ سمجھتے تھے۔ لہٰذا جب مسلمان ہوگئے تو انہوں نے اس بارے میں دریافت کیا کہ یا رسول اﷲ ﷺ ہم صفاومروہ کی سعی میں حرج سمجھتے تھے۔ تب اﷲ تعالیٰ نے یہ آیت نازل فرمائی۔ اُمُّ المومنین حضرت عائشہ صدیقہ ؓ نے کہا کہ بے شک رسول اﷲ ﷺ نے ان دونوں کے درمیان سعی کو جاری فرمایا پس کسی کو یہ اختیار نہیں ہے کہ صفا و مروہ کی سعی کو ترک کردے۔ (بخاری)
    قیامِ منیٰ : سیدنا انس بن مالکؓ سے عبدالعزیز بن رفیع نے پوچھا کہ نبی ﷺ سے نے ظہر اور عصر کی نمازیں آٹھویں ذوالحجہ کے دن کہاں پڑھیں؟ تو انہوں نے کہا ”منیٰ میں“ اس شخص نے دوبارہ پوچھا کہ نفر کے دن عصر کی نماز کہاں پڑھی؟ تو انہوں نے کہا ”ابطح میں“ پھر سیدنا انسؓنے کہا کہ تم ویسا ہی کرو جس طرح تمہارے سردار لوگ کریں۔ (بخاری) عبدالرحمن بن یعمر دئلی سے روایت ہے کہ میں نے رسول اﷲ ﷺ کوفرماتے سنا: حج وقوف عرفہ ہے۔ جو حاجی مزدلفہ والی رات یعنی ۹اور10 ذی الحجہ کی درمیانی شب میں بھی صبح صادق سے پہلے عرفات میں پہنچ جائے تو اس نے حج پالیا اور اس کا حج ہوگیا۔منیٰ میں قیام کے تین دن میں (جن میں تینوں جمروں کی رمی کی جاتی ہے 11، 12، 13 ذی الحجہ) اگر کوئی آدمی صرف دو دن میں یعنی11، 12 ذی الحجہ کو رمی کرکے منیٰ سے چل دے تو اس میں بھی کوئی گناہ نہیں ہے۔ ( ترمذی، ابی داوؤد، نسائی، ابن ماجہ، سن)
     
  4. یوسف ثانی

    یوسف ثانی -: معاون :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 25, 2012
    پیغامات:
    36
    یومِ عرفہ: سیدناعبداﷲبن عمرؓ نے عرفہ کے دن زوالِ آفتاب کے بعد حجاج کے خیمے کے قریب آکر بلند آواز دی تو حجاج نے باہر نکل کر پوچھا کہ اے ابو عبدالرحمن کیا بات ہے؟ تو انہوں نے کہا کہ اگر تو سنت کی پیروی چاہتا ہے تو تجھے اسی وقت وقوف کے لےے چلنا چاہیئے۔ حجاج نے عرض کیا کہ مجھے اتنی مہلت دیجئے کہ میں اپنے سر پر پانی ڈال لوں۔ پھر حجاج نکلا تو چل پڑے ۔ اس موقع پر موجودسالم بن عبداﷲ نے حجاج سے کہا کہ اگر تو سنت کی پیروی چاہتا ہے تو خطبہ مختصر پڑھنا اور وقوف میں عجلت کرنا تو وہ حجاج عبداﷲ بن عمرؓ کی طرف دیکھنے لگا ۔جب عبداﷲ بن عمرنے کہا کہ سالم صحیح کہتے ہیں ۔سیدنا اسامہ بن زیدؓ سے پوچھا گیا کہ جب رسول اﷲ ﷺ حجةالوداع میں عرفات سے روانہ ہوئے تو کس طرح چل رہے تھے؟ تو سیدنا اسامہؓ نے کہا کہ ہجوم میں بھی تیز تیز چل رہے تھے اور جب میدان صاف ہوتا تو اور بھی تیز چلنے لگتے۔ (بخاری)
    حضرت عائشہ صدیقہؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲﷺ نے فرمایا: کوئی دن ایسا نہیں ہے جس میں اﷲ تعالیٰ عرفہ کے دن سے زیادہ اپنے بندوں کے لئے جہنم سے آزادی اور رہائی کا فیصلہ کرتا ہو۔ اس دن اﷲ تعالیٰ اپنی صفت ر حمت کے ساتھ عرفات میں جمع ہونے والے اپنے بندوں کے بہت ہی قریب ہوجاتا ہے اور ان پر فخر کرتے ہوئے فرشتوں سے کہتا ہے کہ دیکھتے ہو!میرے یہ بندے کس مقصد سے یہاں آئے ہیں؟(صحیح مسلم) تابعی حضرت طلحہ بن عبید اﷲ کریز سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا کہ: شیطان کسی دن بھی اتنا ذلیل خوار، پھٹکارا ہوا اورجلا بھنا ہوا نہیں دیکھا گیا جتنا وہ عرفہ کے دن دیکھا جاتا ہے۔ ایسا صرف اس لےے ہے کہ وہ اس دن رحمتِ الٰہی کوبرستے ہوئے اور بڑے بڑے گناہوں کی معافی کا فیصلہ ہوتے دیکھتا ہے ۔(موطا امام مالک)
    ضعیفوں کا وقوف مزدلفہ نہ کرنا: اُمُّ المومنین حضرت عائشہ صدیقہؓ کہتی ہیں کہ ہم مزدلفہ میں اترے تو اُمُّ المومنین سودہؓ نے نبی ﷺ سے اجازت مانگی کہ لوگوں کے ہجوم سے پہلے چل دیں اور وہ ایک سست عورت تھیں تو آپ ﷺ نے انہیں اجازت دیدی اور وہ لوگوں کے ہجوم سے پہلے چل دیں اور ہم لوگ ٹھہرے رہے یہاں تک کہ صبح ہوگئی پھر ہم رسول اﷲ ﷺ کے ہمراہ روانہ ہوئے ۔مگر مجھے اس قدر تکلیف ہوئی کہ میں تمنا کرتی تھی کہ کاش میں نے بھی رسول اﷲ ﷺ سے اجازت لے لی ہوتی جس طرح کہ سودہؓ نے لے لی تھی تو مجھے ہر خوشی کی بات سے زیادہ پسند ہوتا۔ (بخاری)
    وقوف ِمزدلفہ: سیدنا عبداﷲ بن مسعودؓ سے روایت ہے کہ وہ سب لوگوں کے ہمراہ مزدلفہ گئے اور ہم نے مغرب اور عشاءکی نمازیں ایک ساتھ پڑھیں ۔ ہر نماز کے صرف فرض پڑھے اذان و اقامت کے ساتھ اور دونوں نمازوں کے درمیان کھانا کھایا اس کے بعد جب صبح کا آغاز ہوا تو فوراً فجر کی نماز پڑھ لی۔ نماز سے فراغت پانے کے بعد سیدنا عبداﷲ بن مسعودؓ نے کہا کہ بے شک رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا ہے کہ یہ دونوں نمازیں اس مقام یعنی مزدلفہ میں اپنے وقت سے ہٹادی گئی ہیں مغرب اور عشاء۔ پس لوگوں کو چاہیئے کہ جب تک عشاءکا وقت نہ ہوجائے مزدلفہ میں نہ آئیں اور فجر کی نماز صبح صبح اسی وقت پڑھیں۔ جب خوب سفیدی پھیل گئی تو عبداﷲ بن مسعودؓ نے کہا کہ اگر امیر المومنین عثمانؓ اب منیٰ کی طرف چل دیتے تو سنت کے موافق کرتے ۔چنانچہ امیر المومنین نے کوچ کردیا ۔ پھر سیدنا ابنِ مسعودؓ برابر تلبیہ کرتے رہے اور قربانی کے دن جمرةالعقبہ کو کنکریاں ماریں۔تب تلبیہ موقوف کردیا۔ امیر المومنین سیدنا عمرؓ نے فجر کی نماز مزدلفہ میں پڑھی پھر ٹھہرے رہے اس کے بعد فرمایا کہ مشرک لوگ جب تک آفتاب طلوع نہ ہوتا یہاں سے کُوچ نہ کرتے تھے اورثبیر نامی پہاڑ سے کہا کرتے تھے کہ اے ثبیرآفتاب کی کرنوں سے چمک جا۔بے شک نبی ﷺ نے ان کی مخالفت فرمائی تھی۔ اس کے بعد سیدنا عمرؓ نے آفتاب کے نکلنے سے پہلے ہی کوچ کردیا۔ (بخاری)
    حج کی قربانی: سیدنا جابر بن عبداﷲؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے نبی ﷺ کے ہمراہ حج کیا جب کہ آپ ﷺ اپنے ہمراہ قربانی لے گئے تھے اور سب صحابہ نے حج مفرد کا احرام باندھا تھا تو آپ ﷺ نے ان سے فرمایا کہ تم لوگ کعبہ کا طواف اور صفا مروہ کی سعی کرکے احرام سے باہر آجاو¿ اور بال کتروا ڈالو پھر احرام سے باہر ہوکر ٹھہرے رہو یہاں تک کہ جب ترویہ کا دن آجائے تو تم لوگ حج کا احرام باندھ لینا اور یہ احرام جس کے ساتھ تم آئے ہو اس کو تمتع کردو تو صحابہ نے عرض کیا کہ ہم اس کو تمتع کردیں حالانکہ ہم حج کا نام لے چکے؟ تو آپ ﷺ نے فرمایا جو کچھ میں تم کو حکم دیتا ہوں وہی کرو اگر میں قربانی نہ لایا ہوتا تو میں بھی ویسا ہی کرتا جس طرح تم کو حکم دیتا ہوں لیکن اب مجھ سے احرام علیحدہ نہیں ہوسکتا جب تک کہ قربانی اپنی اپنی قربان گاہ پر نہ پہنچ جائے۔ (بخاری)
    سیدنا ابن عمرؓ کہتے ہیں کہ رسول اﷲ ﷺ نے حجةالوداع میں عمرہ اور حج کے ساتھ تمتع فرمایا اور قربانی لائے پس ذوالحلیفہ سے قربانی اپنے ہمراہ لی اور سب سے پہلے آپ نے عمرہ کا احرام باندھا۔ اس کے بعد حج کا احرام باندھا پس اور لوگوں نے بھی نبیﷺ کے ہمراہ عمرہ اور حج کے ساتھ تمتع کیا اور ان میں سے بعض لوگ تو قربانی ساتھ لائے تھے اور بعض نہ لائے تھے۔ پس جب نبی ﷺ مکہ میں تشریف لے آئے تو لوگوں سے فرمایا کہ تم میں سے جو شخص قربانی ساتھ لایا ہو وہ احرام میں جن چیزوں سے پرہیز کرتا ہے حج مکمل ہونے تک پرہیز کرے اور جو نہیں لایا اُسے چاہیئے کہ کعبہ کا طواف اور صفامروہ کی سعی کر کے بال کتر والے اور احرام کھول دے۔ اس کے بعد سات یا آٹھ ذوالحجہ کو کو صرف حج کا احرام باندھے ۔پھر حج کرے اور قربانی کرے۔ پھر جسے قربانی میسر نہ ہوتو تین روزے حج کے دنوں میں رکھے اور سات روزے اس وقت رکھے جب اپنے گھر واپس لوٹ کر جائے۔ (بخاری)
    قربانی کے جانور: سیدنا ابو ہریرہؓ راوی ہیں کہ ایک شخص کو قربانی کے جانور کو ہانکتے دیکھ کر رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا کہ اس پر سوار ہوجا۔ اس نے عرض کیا کہ یا رسول اﷲ ﷺ! یہ تو قربانی کا جانور ہے اس پرکیسے سوار ہوسکتا ہوں؟ تو آپ ﷺ نے فرمایا اس پر سوار ہوجاو¿۔سیدنا مسور بن مخرمة اور مروانؓ سے روایت ہے کہ صلح حدیبیہ میں ایک ہزار سے زائد صحابہؓ کے ہمراہ جب ذوالحلیفہ پہنچے تو نبی ﷺ نے قربانی کے جانور کے گلے میں ہار ڈالا اور عمرہ کا احرام باندھا۔ایک اور روایت میں کہ آپ ﷺ بکریوں کو قلادہ پہنا کر روانہ کردیتے تھے اور حج پر نہ جانے کے باعث اپنے گھر میں بغیر احرام کے رہتے تھے۔ اُمُّ المومنین حضرت عائشہ صدیقہ ؓ فرماتی ہیں کہ میں نے قربانی کے جانوروں کے لےے ہار بنائے تھے۔(بخاری)
    اونٹ کو کھڑا کرکے نحر کرنا: سیدنا عبداﷲ بن عمرؓ کا گزر ایک ایسے شخص پر ہوا جس نے اونٹ کو نحر کرنے کے لےے بٹھا رکھا تھا تو انہوں نے کہا کہ اس کو کھڑا کرکے اس کا پیر باندھ دے پھر اس کو نحر کر کیونکہ یہی محمد ﷺ کی سنت ہے۔امیر المومنین سیدنا علیؓ کہتے ہیں کہ مجھے نبی ﷺ نے حکم دیا تھا کہ میں قربانی کے جانوروں کے پاس کھڑا رہوں اور ان کی بنوائی کی اجرت میں قصاب کو گوشت یا کھال وغیرہ نہ دوں۔سیدنا جابر بن عبداﷲ ؓ کہتے ہیں کہ ہم لوگ قربانی کا گوشت تین دن سے زیادہ نہ کھاتے تھے اور وہ بھی صرف منیٰ میں ۔ اس کے بعد نبی ﷺ نے ہمیں اجازت عنایت کی اور فرمایا کہ کھاو¿ اور ساتھ لے جاو¿۔ پس ہم نے کھایا بھی اور ساتھ بھی لے کرآئے۔ (بخاری)
    یومِ نحر عظمت والا دن: حضرت عبداﷲ بن قرطؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲﷺ نے فرمایا: اﷲ کے نزدیک سب سے زیادہ عظمت والا دن یوم النحر(۰۱ ذی الحجہ) ہے۔ اس کے بعد اس سے اگلا دن یوم القر(۱۱ذی الحجہ) کا درجہ ہے۔ اس کے بعد (یعنی 12 ذی الحجہ) اگر کی جائے تو ادا تو ہوجائے گی۔ ایک دفعہ پانچ یا چھ اونٹ کے لئے رسول اﷲ ﷺ کے قریب لائے گئے تو ان میں سے ہر ایک آپ کے قریب ہونے کی کوشش کرتا تھا، تاکہ پہلے اسی کو آپ ذبح کریں۔ ( ابو داو¿د)
    طوافِ زیارت: حضرت عائشہ صدیقہ اور حضرت ابن عباسؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے طواف زیارت کو دسویں ذی الحجہ کی رات تک مو¿خر کرنے کی اجازت دی ۔(گو طوافِ زیارت 10 ذی الحجہ کے دن افضل ہے تاہم اس دن کے ختم ہونے کے بعد رات میں بھی کیا جاسکتا ہے) ۔حضرت حارث ثقفیؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: جو شخص حج یا عمرہ کرے تو چاہئے کہ اس کی آخری حاضری بیت اﷲ پر ہو اور آخری عمل طواف ہو۔ (مسند احمد)
    جمرات کی رمی کرنا: سیدنا ابن عمرؓ سے کسی نے پوچھا کہ میں جمرات کو کنکریاں کس وقت ماروں تو انہوں نے فرمایا کہ جس وقت تمہارا امام مارے اسی وقت تم بھی مارو۔پھر آپ ؓ نے فرمایا کہ ہم انتظار کرتے رہتے اور آفتاب ڈھل جا نے کے بعد کنکریاں مارتے۔سیدنا عبداﷲ بن مسعودؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے وادی کے نشیب سے کنکریاں ماریں تو ان سے پوچھا گیا کہ کچھ لوگ تو وادی کے اوپر سے مارتے ہیں تو عبداﷲ ابن مسعودؓ نے جواب دیا کہ اللہ کی قسم! محمد کے رمی کرنے کی جگہ یہی ہے ۔سیدنا عبداﷲ مسعودؓ سے روایت ہے کہ وہ جب بڑے جمرے کے پاس پہنچے تو انہوں نے کعبہ کو اپنی بائیں جانب کرلیا اور منیٰ کو اپنی داہنی طرف اور سات کنکریوں سے رمی کی اور کہا کہ اسی طرح سے نبی ﷺ نے رمی کی ۔سیدنا ابنِ عمرؓ سے روایت ہے کہ وہ پہلے جمرے کو سات کنکریاں مارتے تھے ہر کنکری کے بعد تکبیر کہتے تھے اس کے بعد آگے بڑھ جاتے تھے یہاں تک کہ نرم ہموار زمین میں پہنچ کر قبلہ رو کھڑے ہوجاتے اور دیر تک کھڑے رہتے اور ہاتھ اٹھا کر دعا مانگتے پھر درمیان والے جمرہ کی رمی کرتے اس کے بعد بائیں جانب چلے جاتے اور نرم ہموار زمین پر پہنچ کر قبلہ رو کھڑے ہوجاتے اور ہاتھ اٹھا کر دعا مانگتے اور یونہی کھڑے رہتے پھر وادی کے نشیب سے جمرہ عقبہ کو کنکریاں مارتے اور اس کے پاس نہ ٹھہرتے بلکہ واپس آجاتے تھے اورکہتے تھے کہ میں نے نبی ﷺ کو ایسا کرتے دیکھا ہے۔ (بخاری)حضرت عائشہ صدیقہؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲﷺ نے فرمایا: جمرات پر کنکریاں پھینکنا اور صفا و مروہ کے درمیان سعی کرنا ذکر اﷲ کی گرم بازاری کے وسائل ہیں۔(جامع ترمذی، سنن دارمی)
    طوافِ وداع : سیدنا ابنِ عباسؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ کی طرف سے لوگوں کو یہ حکم دیا گیا تھا کہ ان کا آخری وقت کعبہ کے ساتھ ہو یعنی مکہ سے واپسی کے وقت کعبہ کا طواف کرکے جائیں مگر حائضہ عورت کو یہ معاف کردیا گیا تھا۔سیدنا ابن عباسؓ کہتے ہیں کہ جو عورت طوافِ زیارت کے بعد حائضہ ہوئی ہو اس کے لےے جائز ہے کہ وہ طوافِ وداع کےے بغیرمکہ سے چلی جائے۔ رسول اﷲ ﷺ کی طرف سے حائضہ عورتوں کوایسا کرنے کی اجازت تھی۔ (بخاری)
    مدینة النبی ﷺ:حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ لوگوں کا دستور تھا کہ جب وہ درخت پر نیا پھل دیکھتے تو اس کو لاکر رسول اﷲ ﷺ کی خدمت میں پیش کرتے، آپ اس کو قبول فرما کر اس طر ح دعا فرماتے : اے اﷲ! ہمارے پھلوں اور پیدا وار میں برکت دے، اور ہمارے شہر مدینہ میں برکت دے، اور ہمارے صاع اور ہمارے مد میں برکت دے ! الہٰی ! ابراہیم ؑ تیرے خاص بندے اور تیرے خلیل اور تیرے نبی تھے اور میں بھی تیرا بندہ اور تیرا نبی ہوں۔ انہوں نے مکہ کے لئے تجھ سے دعا کی تھی اور میں مدینہ کے لئے تجھ سے ویسی ہی دعا کرتا ہوں۔ (صحیح مسلم)
    ِمسجد نبوی ﷺ: حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا:مدینہ کے راستوں پر فرشتے مقرر ہیں۔ اس میں طاعون اور دجال داخل نہیں ہوسکتا۔“ ( صحیح مسلم) حضرت انس ؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: جس نے مسجد نبوی میں مسلسل ۰۴ نمازیں پڑھیں اورایک نماز بھی فوت نہیں کی اس کے لئے دوزخ سے نجات اور نفاق سے برا¿ت لکھ دی جائے گی۔(مسند احمد، معجم اوسط للطبرانی) حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: میرے گھر اور میرے منبر کے درمیان کی جگہ جنت کے باغوں میں سے ایک باغیچہ ہے ۔ میرا منبر میرے حوض کوثر پر ہے۔ (صحیح مسلم)
    روضہ رسولﷺ: حضرت عبداﷲ بن عمرؓ سے روایت ہے کہ نبیﷺ نے فرمایا : جس نے حج کے بعد میری قبر کی زیارت کی تو وہ انہی لوگوں کی طرح ہے جنہوں نے میری حیات میں میری زیارت کی۔ (شعب بیہقی ، طبرانی)۔ حضرت عبداﷲ بن عمرؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا : جس نے میری قبر کی زیارت کی اس کے لئے میری شفاعت واجب ہوگی( دار قطنی ، بیہقی)۔
    مدینہ میں مرنے اور دفن ہونے کی فضیلت: حضرت عبداﷲ بن عمرؓ راوی ہیں کہ نبیﷺ نے فرمایا کہ جو اس کی کوشش کرسکے کہ مدینہ میں اس کی موت ہو تو اس کو چاہئے کہ وہ مدینہ میں مرے۔ میں ان لوگوں کی ضرور شفاعت کروں گا جو مدینہ میں مریں گے ۔ ( ترمذی)یحییٰ بن سعید انصاری تابعی صحابی کا واسطہ ذکر کئے بغیر فرتے ہیں کہ نبی ﷺ کی موجودگی میںمدینہ کے قبرستان میںکسی میت کی قبر کھودی جارہی تھی۔ کسی نے قبر میں جھانک کر دیکھا اور ان کی زبان سے نکلا کہ مسلمان کے لئے یہ اچھی آرام گاہ نہیں۔آپ ﷺ نے فرمایا: یہ تمہاری زبان سے بہت بری بات نکلی۔ روئے زمین پر کوئی جگہ ایسی نہیں ہے جہاں اپنی قبرکا ہونا مجھے مدینہ سے زیادہ محبوب ہو۔یہ بات آپ نے تین دفعہ ارشاد فرمائی۔ (موطا امام مالک) ٭ ٭ ٭
     
  5. یوسف ثانی

    یوسف ثانی -: معاون :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 25, 2012
    پیغامات:
    36
    یومِ عرفہ: سیدناعبداﷲبن عمرؓ نے عرفہ کے دن زوالِ آفتاب کے بعد حجاج کے خیمے کے قریب آکر بلند آواز دی تو حجاج نے باہر نکل کر پوچھا کہ اے ابو عبدالرحمن کیا بات ہے؟ تو انہوں نے کہا کہ اگر تو سنت کی پیروی چاہتا ہے تو تجھے اسی وقت وقوف کے لےے چلنا چاہیئے۔ حجاج نے عرض کیا کہ مجھے اتنی مہلت دیجئے کہ میں اپنے سر پر پانی ڈال لوں۔ پھر حجاج نکلا تو چل پڑے ۔ اس موقع پر موجودسالم بن عبداﷲ نے حجاج سے کہا کہ اگر تو سنت کی پیروی چاہتا ہے تو خطبہ مختصر پڑھنا اور وقوف میں عجلت کرنا تو وہ حجاج عبداﷲ بن عمرؓ کی طرف دیکھنے لگا ۔جب عبداﷲ بن عمرنے کہا کہ سالم صحیح کہتے ہیں ۔سیدنا اسامہ بن زیدؓ سے پوچھا گیا کہ جب رسول اﷲ ﷺ حجةالوداع میں عرفات سے روانہ ہوئے تو کس طرح چل رہے تھے؟ تو سیدنا اسامہؓ نے کہا کہ ہجوم میں بھی تیز تیز چل رہے تھے اور جب میدان صاف ہوتا تو اور بھی تیز چلنے لگتے۔ (بخاری)
    حضرت عائشہ صدیقہؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲﷺ نے فرمایا: کوئی دن ایسا نہیں ہے جس میں اﷲ تعالیٰ عرفہ کے دن سے زیادہ اپنے بندوں کے لئے جہنم سے آزادی اور رہائی کا فیصلہ کرتا ہو۔ اس دن اﷲ تعالیٰ اپنی صفت ر حمت کے ساتھ عرفات میں جمع ہونے والے اپنے بندوں کے بہت ہی قریب ہوجاتا ہے اور ان پر فخر کرتے ہوئے فرشتوں سے کہتا ہے کہ دیکھتے ہو!میرے یہ بندے کس مقصد سے یہاں آئے ہیں؟(صحیح مسلم) تابعی حضرت طلحہ بن عبید اﷲ کریز سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا کہ: شیطان کسی دن بھی اتنا ذلیل خوار، پھٹکارا ہوا اورجلا بھنا ہوا نہیں دیکھا گیا جتنا وہ عرفہ کے دن دیکھا جاتا ہے۔ ایسا صرف اس لےے ہے کہ وہ اس دن رحمتِ الٰہی کوبرستے ہوئے اور بڑے بڑے گناہوں کی معافی کا فیصلہ ہوتے دیکھتا ہے ۔(موطا امام مالک)
    ضعیفوں کا وقوف مزدلفہ نہ کرنا: اُمُّ المومنین حضرت عائشہ صدیقہؓ کہتی ہیں کہ ہم مزدلفہ میں اترے تو اُمُّ المومنین سودہؓ نے نبی ﷺ سے اجازت مانگی کہ لوگوں کے ہجوم سے پہلے چل دیں اور وہ ایک سست عورت تھیں تو آپ ﷺ نے انہیں اجازت دیدی اور وہ لوگوں کے ہجوم سے پہلے چل دیں اور ہم لوگ ٹھہرے رہے یہاں تک کہ صبح ہوگئی پھر ہم رسول اﷲ ﷺ کے ہمراہ روانہ ہوئے ۔مگر مجھے اس قدر تکلیف ہوئی کہ میں تمنا کرتی تھی کہ کاش میں نے بھی رسول اﷲ ﷺ سے اجازت لے لی ہوتی جس طرح کہ سودہؓ نے لے لی تھی تو مجھے ہر خوشی کی بات سے زیادہ پسند ہوتا۔ (بخاری)
    وقوف ِمزدلفہ: سیدنا عبداﷲ بن مسعودؓ سے روایت ہے کہ وہ سب لوگوں کے ہمراہ مزدلفہ گئے اور ہم نے مغرب اور عشاءکی نمازیں ایک ساتھ پڑھیں ۔ ہر نماز کے صرف فرض پڑھے اذان و اقامت کے ساتھ اور دونوں نمازوں کے درمیان کھانا کھایا اس کے بعد جب صبح کا آغاز ہوا تو فوراً فجر کی نماز پڑھ لی۔ نماز سے فراغت پانے کے بعد سیدنا عبداﷲ بن مسعودؓ نے کہا کہ بے شک رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا ہے کہ یہ دونوں نمازیں اس مقام یعنی مزدلفہ میں اپنے وقت سے ہٹادی گئی ہیں مغرب اور عشاء۔ پس لوگوں کو چاہیئے کہ جب تک عشاءکا وقت نہ ہوجائے مزدلفہ میں نہ آئیں اور فجر کی نماز صبح صبح اسی وقت پڑھیں۔ جب خوب سفیدی پھیل گئی تو عبداﷲ بن مسعودؓ نے کہا کہ اگر امیر المومنین عثمانؓ اب منیٰ کی طرف چل دیتے تو سنت کے موافق کرتے ۔چنانچہ امیر المومنین نے کوچ کردیا ۔ پھر سیدنا ابنِ مسعودؓ برابر تلبیہ کرتے رہے اور قربانی کے دن جمرةالعقبہ کو کنکریاں ماریں۔تب تلبیہ موقوف کردیا۔ امیر المومنین سیدنا عمرؓ نے فجر کی نماز مزدلفہ میں پڑھی پھر ٹھہرے رہے اس کے بعد فرمایا کہ مشرک لوگ جب تک آفتاب طلوع نہ ہوتا یہاں سے کُوچ نہ کرتے تھے اورثبیر نامی پہاڑ سے کہا کرتے تھے کہ اے ثبیرآفتاب کی کرنوں سے چمک جا۔بے شک نبی ﷺ نے ان کی مخالفت فرمائی تھی۔ اس کے بعد سیدنا عمرؓ نے آفتاب کے نکلنے سے پہلے ہی کوچ کردیا۔ (بخاری)
    حج کی قربانی: سیدنا جابر بن عبداﷲؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے نبی ﷺ کے ہمراہ حج کیا جب کہ آپ ﷺ اپنے ہمراہ قربانی لے گئے تھے اور سب صحابہ نے حج مفرد کا احرام باندھا تھا تو آپ ﷺ نے ان سے فرمایا کہ تم لوگ کعبہ کا طواف اور صفا مروہ کی سعی کرکے احرام سے باہر آجاو¿ اور بال کتروا ڈالو پھر احرام سے باہر ہوکر ٹھہرے رہو یہاں تک کہ جب ترویہ کا دن آجائے تو تم لوگ حج کا احرام باندھ لینا اور یہ احرام جس کے ساتھ تم آئے ہو اس کو تمتع کردو تو صحابہ نے عرض کیا کہ ہم اس کو تمتع کردیں حالانکہ ہم حج کا نام لے چکے؟ تو آپ ﷺ نے فرمایا جو کچھ میں تم کو حکم دیتا ہوں وہی کرو اگر میں قربانی نہ لایا ہوتا تو میں بھی ویسا ہی کرتا جس طرح تم کو حکم دیتا ہوں لیکن اب مجھ سے احرام علیحدہ نہیں ہوسکتا جب تک کہ قربانی اپنی اپنی قربان گاہ پر نہ پہنچ جائے۔ (بخاری)
    سیدنا ابن عمرؓ کہتے ہیں کہ رسول اﷲ ﷺ نے حجةالوداع میں عمرہ اور حج کے ساتھ تمتع فرمایا اور قربانی لائے پس ذوالحلیفہ سے قربانی اپنے ہمراہ لی اور سب سے پہلے آپ نے عمرہ کا احرام باندھا۔ اس کے بعد حج کا احرام باندھا پس اور لوگوں نے بھی نبیﷺ کے ہمراہ عمرہ اور حج کے ساتھ تمتع کیا اور ان میں سے بعض لوگ تو قربانی ساتھ لائے تھے اور بعض نہ لائے تھے۔ پس جب نبی ﷺ مکہ میں تشریف لے آئے تو لوگوں سے فرمایا کہ تم میں سے جو شخص قربانی ساتھ لایا ہو وہ احرام میں جن چیزوں سے پرہیز کرتا ہے حج مکمل ہونے تک پرہیز کرے اور جو نہیں لایا اُسے چاہیئے کہ کعبہ کا طواف اور صفامروہ کی سعی کر کے بال کتر والے اور احرام کھول دے۔ اس کے بعد سات یا آٹھ ذوالحجہ کو کو صرف حج کا احرام باندھے ۔پھر حج کرے اور قربانی کرے۔ پھر جسے قربانی میسر نہ ہوتو تین روزے حج کے دنوں میں رکھے اور سات روزے اس وقت رکھے جب اپنے گھر واپس لوٹ کر جائے۔ (بخاری)
    قربانی کے جانور: سیدنا ابو ہریرہؓ راوی ہیں کہ ایک شخص کو قربانی کے جانور کو ہانکتے دیکھ کر رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا کہ اس پر سوار ہوجا۔ اس نے عرض کیا کہ یا رسول اﷲ ﷺ! یہ تو قربانی کا جانور ہے اس پرکیسے سوار ہوسکتا ہوں؟ تو آپ ﷺ نے فرمایا اس پر سوار ہوجاو¿۔سیدنا مسور بن مخرمة اور مروانؓ سے روایت ہے کہ صلح حدیبیہ میں ایک ہزار سے زائد صحابہؓ کے ہمراہ جب ذوالحلیفہ پہنچے تو نبی ﷺ نے قربانی کے جانور کے گلے میں ہار ڈالا اور عمرہ کا احرام باندھا۔ایک اور روایت میں کہ آپ ﷺ بکریوں کو قلادہ پہنا کر روانہ کردیتے تھے اور حج پر نہ جانے کے باعث اپنے گھر میں بغیر احرام کے رہتے تھے۔ اُمُّ المومنین حضرت عائشہ صدیقہ ؓ فرماتی ہیں کہ میں نے قربانی کے جانوروں کے لےے ہار بنائے تھے۔(بخاری)
    اونٹ کو کھڑا کرکے نحر کرنا: سیدنا عبداﷲ بن عمرؓ کا گزر ایک ایسے شخص پر ہوا جس نے اونٹ کو نحر کرنے کے لےے بٹھا رکھا تھا تو انہوں نے کہا کہ اس کو کھڑا کرکے اس کا پیر باندھ دے پھر اس کو نحر کر کیونکہ یہی محمد ﷺ کی سنت ہے۔امیر المومنین سیدنا علیؓ کہتے ہیں کہ مجھے نبی ﷺ نے حکم دیا تھا کہ میں قربانی کے جانوروں کے پاس کھڑا رہوں اور ان کی بنوائی کی اجرت میں قصاب کو گوشت یا کھال وغیرہ نہ دوں۔سیدنا جابر بن عبداﷲ ؓ کہتے ہیں کہ ہم لوگ قربانی کا گوشت تین دن سے زیادہ نہ کھاتے تھے اور وہ بھی صرف منیٰ میں ۔ اس کے بعد نبی ﷺ نے ہمیں اجازت عنایت کی اور فرمایا کہ کھاو¿ اور ساتھ لے جاو¿۔ پس ہم نے کھایا بھی اور ساتھ بھی لے کرآئے۔ (بخاری)
    یومِ نحر عظمت والا دن: حضرت عبداﷲ بن قرطؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲﷺ نے فرمایا: اﷲ کے نزدیک سب سے زیادہ عظمت والا دن یوم النحر(۰۱ ذی الحجہ) ہے۔ اس کے بعد اس سے اگلا دن یوم القر(۱۱ذی الحجہ) کا درجہ ہے۔ اس کے بعد (یعنی 12 ذی الحجہ) اگر کی جائے تو ادا تو ہوجائے گی۔ ایک دفعہ پانچ یا چھ اونٹ کے لئے رسول اﷲ ﷺ کے قریب لائے گئے تو ان میں سے ہر ایک آپ کے قریب ہونے کی کوشش کرتا تھا، تاکہ پہلے اسی کو آپ ذبح کریں۔ ( ابو داو¿د)
    طوافِ زیارت: حضرت عائشہ صدیقہ اور حضرت ابن عباسؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے طواف زیارت کو دسویں ذی الحجہ کی رات تک مو¿خر کرنے کی اجازت دی ۔(گو طوافِ زیارت 10 ذی الحجہ کے دن افضل ہے تاہم اس دن کے ختم ہونے کے بعد رات میں بھی کیا جاسکتا ہے) ۔حضرت حارث ثقفیؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: جو شخص حج یا عمرہ کرے تو چاہئے کہ اس کی آخری حاضری بیت اﷲ پر ہو اور آخری عمل طواف ہو۔ (مسند احمد)
    جمرات کی رمی کرنا: سیدنا ابن عمرؓ سے کسی نے پوچھا کہ میں جمرات کو کنکریاں کس وقت ماروں تو انہوں نے فرمایا کہ جس وقت تمہارا امام مارے اسی وقت تم بھی مارو۔پھر آپ ؓ نے فرمایا کہ ہم انتظار کرتے رہتے اور آفتاب ڈھل جا نے کے بعد کنکریاں مارتے۔سیدنا عبداﷲ بن مسعودؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے وادی کے نشیب سے کنکریاں ماریں تو ان سے پوچھا گیا کہ کچھ لوگ تو وادی کے اوپر سے مارتے ہیں تو عبداﷲ ابن مسعودؓ نے جواب دیا کہ اللہ کی قسم! محمد کے رمی کرنے کی جگہ یہی ہے ۔سیدنا عبداﷲ مسعودؓ سے روایت ہے کہ وہ جب بڑے جمرے کے پاس پہنچے تو انہوں نے کعبہ کو اپنی بائیں جانب کرلیا اور منیٰ کو اپنی داہنی طرف اور سات کنکریوں سے رمی کی اور کہا کہ اسی طرح سے نبی ﷺ نے رمی کی ۔سیدنا ابنِ عمرؓ سے روایت ہے کہ وہ پہلے جمرے کو سات کنکریاں مارتے تھے ہر کنکری کے بعد تکبیر کہتے تھے اس کے بعد آگے بڑھ جاتے تھے یہاں تک کہ نرم ہموار زمین میں پہنچ کر قبلہ رو کھڑے ہوجاتے اور دیر تک کھڑے رہتے اور ہاتھ اٹھا کر دعا مانگتے پھر درمیان والے جمرہ کی رمی کرتے اس کے بعد بائیں جانب چلے جاتے اور نرم ہموار زمین پر پہنچ کر قبلہ رو کھڑے ہوجاتے اور ہاتھ اٹھا کر دعا مانگتے اور یونہی کھڑے رہتے پھر وادی کے نشیب سے جمرہ عقبہ کو کنکریاں مارتے اور اس کے پاس نہ ٹھہرتے بلکہ واپس آجاتے تھے اورکہتے تھے کہ میں نے نبی ﷺ کو ایسا کرتے دیکھا ہے۔ (بخاری)حضرت عائشہ صدیقہؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲﷺ نے فرمایا: جمرات پر کنکریاں پھینکنا اور صفا و مروہ کے درمیان سعی کرنا ذکر اﷲ کی گرم بازاری کے وسائل ہیں۔(جامع ترمذی، سنن دارمی)
    طوافِ وداع : سیدنا ابنِ عباسؓ کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ کی طرف سے لوگوں کو یہ حکم دیا گیا تھا کہ ان کا آخری وقت کعبہ کے ساتھ ہو یعنی مکہ سے واپسی کے وقت کعبہ کا طواف کرکے جائیں مگر حائضہ عورت کو یہ معاف کردیا گیا تھا۔سیدنا ابن عباسؓ کہتے ہیں کہ جو عورت طوافِ زیارت کے بعد حائضہ ہوئی ہو اس کے لےے جائز ہے کہ وہ طوافِ وداع کےے بغیرمکہ سے چلی جائے۔ رسول اﷲ ﷺ کی طرف سے حائضہ عورتوں کوایسا کرنے کی اجازت تھی۔ (بخاری)
    مدینة النبی ﷺ:حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ لوگوں کا دستور تھا کہ جب وہ درخت پر نیا پھل دیکھتے تو اس کو لاکر رسول اﷲ ﷺ کی خدمت میں پیش کرتے، آپ اس کو قبول فرما کر اس طر ح دعا فرماتے : اے اﷲ! ہمارے پھلوں اور پیدا وار میں برکت دے، اور ہمارے شہر مدینہ میں برکت دے، اور ہمارے صاع اور ہمارے مد میں برکت دے ! الہٰی ! ابراہیم ؑ تیرے خاص بندے اور تیرے خلیل اور تیرے نبی تھے اور میں بھی تیرا بندہ اور تیرا نبی ہوں۔ انہوں نے مکہ کے لئے تجھ سے دعا کی تھی اور میں مدینہ کے لئے تجھ سے ویسی ہی دعا کرتا ہوں۔ (صحیح مسلم)
    ِمسجد نبوی ﷺ: حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا:مدینہ کے راستوں پر فرشتے مقرر ہیں۔ اس میں طاعون اور دجال داخل نہیں ہوسکتا۔“ ( صحیح مسلم) حضرت انس ؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: جس نے مسجد نبوی میں مسلسل ۰۴ نمازیں پڑھیں اورایک نماز بھی فوت نہیں کی اس کے لئے دوزخ سے نجات اور نفاق سے برا¿ت لکھ دی جائے گی۔(مسند احمد، معجم اوسط للطبرانی) حضرت ابو ہریرہؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا: میرے گھر اور میرے منبر کے درمیان کی جگہ جنت کے باغوں میں سے ایک باغیچہ ہے ۔ میرا منبر میرے حوض کوثر پر ہے۔ (صحیح مسلم)
    روضہ رسولﷺ: حضرت عبداﷲ بن عمرؓ سے روایت ہے کہ نبیﷺ نے فرمایا : جس نے حج کے بعد میری قبر کی زیارت کی تو وہ انہی لوگوں کی طرح ہے جنہوں نے میری حیات میں میری زیارت کی۔ (شعب بیہقی ، طبرانی)۔ حضرت عبداﷲ بن عمرؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ ﷺ نے فرمایا : جس نے میری قبر کی زیارت کی اس کے لئے میری شفاعت واجب ہوگی( دار قطنی ، بیہقی)۔
    مدینہ میں مرنے اور دفن ہونے کی فضیلت: حضرت عبداﷲ بن عمرؓ راوی ہیں کہ نبیﷺ نے فرمایا کہ جو اس کی کوشش کرسکے کہ مدینہ میں اس کی موت ہو تو اس کو چاہئے کہ وہ مدینہ میں مرے۔ میں ان لوگوں کی ضرور شفاعت کروں گا جو مدینہ میں مریں گے ۔ ( ترمذی)یحییٰ بن سعید انصاری تابعی صحابی کا واسطہ ذکر کئے بغیر فرتے ہیں کہ نبی ﷺ کی موجودگی میںمدینہ کے قبرستان میںکسی میت کی قبر کھودی جارہی تھی۔ کسی نے قبر میں جھانک کر دیکھا اور ان کی زبان سے نکلا کہ مسلمان کے لئے یہ اچھی آرام گاہ نہیں۔آپ ﷺ نے فرمایا: یہ تمہاری زبان سے بہت بری بات نکلی۔ روئے زمین پر کوئی جگہ ایسی نہیں ہے جہاں اپنی قبرکا ہونا مجھے مدینہ سے زیادہ محبوب ہو۔یہ بات آپ نے تین دفعہ ارشاد فرمائی۔ (موطا امام مالک) ٭ ٭ ٭
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  6. یوسف ثانی

    یوسف ثانی -: معاون :-

    شمولیت:
    ‏مارچ 25, 2012
    پیغامات:
    36
  7. سیما آفتاب

    سیما آفتاب ناظمہ

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اپریل 3, 2017
    پیغامات:
    398
    جزاک اللہ خیرا
     
  8. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,232
    السلام و علیکم و رحمت اللہ و برکاتہ!

    چونکہ تھریڈ کافی پرانا ہے اس لئے چند ایک چیزوں میں تبدیلی آ چکی ہے، جو کہ مندرجہ ذیل ہیں:

    عرفات میں بھی حج پیکج کے حساب سے تمام سہولیات دستیاب ہیں، جیسے ایئر کنڈیشند خیمے کھانے پینے کا انتظام و غیرہ۔ کھانے کا انتظام تو حج کے شروع سے لے کر آخر تک ہر گروپ کے لئے لازمی ہے خیموں میں چٹائیاں، قالین، تکیے وغیرہ، ٹھنڈا پینے کا پانی اور نارمل پنکھوں کے علاوہ مسٹنگ فینز بھی لگے ہوتے جو ہوا کے ساتھ ساتھ پانی کا سپرے بھی کرتے ہیں۔

    ٹرانسپورٹ کی سہولت دینا بھی ہر گروپ کےلئے لازمی کر دیا گیا ہے البتہ زیادہ تر سرکاری اسکیم والے حجاج کو اب ٹرین کی سہولت دی جاتی ہے جس سے یہ سفر اب اتنا مشکل نہیں رہا، جبکہ پرائیویٹ والے بسوں کے ذریعے عرفات جاتے ہیں، جانا تو انتہائی آرام دہ ہوتا ہے البتہ واپسی رینگ رینگ کر ہی ہوتی ہے، جبکہ پیدل چلنے والے بس والوں سے پہلے پہنچ جاتے ہیں۔ لیکن پیدل چلنے والے بھی مزدلفہ کے آغاز میں ہی بیٹھ جاتے ہیں جس کی وجہ سے بعد میں آنے والوں کے لئے رستہ نہیں بچتا اور انہیں پریشانی سے دوچار ہونا پڑتا ہے۔

    اب جگہ جگہ پر مستقل بیت الخلاء بھی تعمیر ہو چکے ہیں جو پہلے والے تنگ حمامات سے بہت بہتر ہیںِ۔

    کنکریوں کے ایسے مخصوص ڈھیر تو موجود نہیں، البتہ بعض مقامات پر بجری پڑی ہوتی ہے جس کے کنکر مطلوبہ سائز سے کافی بڑے ہوتے ہیں بہرحال کچی اور پہاڑی والی زمین سے کہیں سے بھی کنکریاں چنی جا سکتی ہیں اور مزدلفہ سے نہ چن سکیں تو رمی جمرات کو جاتے وقت کہیں سے بھی چن سکتے ہیںِ۔
    منی میں جمرات کے مقام پر حجام کے لئے مخصوص جگہ مہیا کی گئی ہے، جہاں رمی کے بعد وزارت حج اور وزارت صحت سے منظور شدہ حجام حفظان صحت کے اصولوں کو مد نظر رکھ کر حلق یا قصر کی سہولیات مہیا کرتے ہیں۔ اگر آپ خود ایسا کرنا چاہیں تو حفظان صحت کے اصولوں کا خاص خیال رکھیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
    • متفق متفق x 1
  9. سیما آفتاب

    سیما آفتاب ناظمہ

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اپریل 3, 2017
    پیغامات:
    398
    متفق
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں