صوفیاء کی برصغیر پاک و ہند میں آمد (تاریخ کے آئينے سے)

منہج سلف نے 'غیر اسلامی افکار و نظریات' میں ‏فروری 11, 2008 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. منہج سلف

    منہج سلف --- V . I . P ---

    شمولیت:
    ‏اگست 9, 2007
    پیغامات:
    5,050
    صوفیاء کی برصغیر پاک و ہند میں آمد



    برصغیر پاک و ہند اسلام اس وقت آچکا تھا جب کہ کسی صوفی کا اس دنیا میں وجود تھا اور نہ تصوف کا۔ گو دوسری صدی ہجری کی اواخر یا تیسری صدی کے اوائل میں چند ایک بزرگوں کو صوفی کہا جانے لگا تھا- تاہم ان کی ابتداء تیسری صدی ہجری میں شمار ہوتی ہے۔ اور جوصوفیائے کرام بریصغیر پاک و ہند میں تشریف لائے اور ان کی وساطت سے ہند میں اشاعت اسلام کا کام ہوا، ان میں دو ہستیاں ہی زیادہ مشھور ہیں جو پہلے پہل تشریف لائيں- پہلے حضرت علی ہجویری (1009ء تا 1072ء) ہیں، یہ ہندستان میں 1069ء میں تشریف لائے اور دوسرے بزرگ خواجہ معین الدین چشتی اجمیری (1124ء تا 1235ء) ہیں- جن کی ہندستان میں آمد کی تاریخ 10 محرم 561ھ بمطابق 1161ء بتلائی جاتی ہے جوکہ سخت مشکوک ہے- تذکرہ نگاروں کے بیان کے مطابق یہ تاریخ 577ھ یا 580ھ ہونی چاہیے۔
    ان دو شمھور بزرگوں کے علاوہ دو اور بزرگوں کی آمد کا بھی تذکروں سے پتہ چلتا ہے- ان میں سے ایک تو شیخ محمد اسماعیل بخاری جو 395ھ بمطابق 1005ء میں لاھور تشریف لائے۔ (روح تصوف ص: 99 تا 102)
    اور دوسرے بزرگ خواجہ ابو محمد بن ابو احمد جو محمود غزنوی کے ساتھ ہندستان تشریف لائے۔ (تاریخ مشائخ چشت، خلیق نظامی ص: 145)
    اور محمود غزنوی نے 1001ء سے لے کر 1025ء تک ہندستان پر 17 حملے کیے تھے اور آخری حملہ سومنات پر 1025ء میں کیا گیا تھا-
    ان تمام تو پصریحات سے یہ معلوم ہوتا ہے کہ کوئی بھی صوفی یا بزرگ، وہ مشھور و معروف ہو یا غیر معروف سلطان محمود غزنوی سے پہلے بریصغیر پاک و ہند میں وارد نہیں ہوا تھا- لیکن مسلمان اس سے بہت پہلے یہاں نظر آتے ہیں، جن کی تفصیل کچھ اس طرح ہے- اور یہ تفصیل ہم ( تاریخ پاک و ہند از پروفیسر عبداللہ ملک" صدر شعبہ تاریخ اسلامیہ کالج، ریلوے روڈ لاھور ساتواں ایڈیشن 1978ء") سے پیش کررہے ہیں- آپ کی یہ کتاب کالجوں میں بطور نصاب پڑھائی جاتی ہے-
    " اسلام مذھب کی حیثیت سے پہلے جنوبی ہند پہنچا- مسلمان تاجرو اور مبلغین ساتویں صدی عیسوی میں (یاد رہے کہ رسول اللہۖ کی وفات 632ء میں ہوئی تھی- یعنی آپ کی وفات کے بعد جلد ہی مسلمان) مالیبار اور جنوبی سواحل کے دیگر علاقوں میں آنے جانے لگے- مسلمان چونکہ بہترین اخلاق و کردار کے مالک اور کاروباری لین دین میں دیانتدار واقع ہوئے تھے- لہذا مالیبار کے راجاؤں، تاجروں اور عام لوگوں نے ان کے ساتھ رواداری کا سلوک روا رکھا- چنانچہ مسلمانوں نے بریصغیر پاک و ہند کے مغربی ساحلوں پر قطعی اراضی حاصل کرکے مسحدیں تعمیر کیں- (یاد رہے کہ اس وقت حانقاہوں کی تعمیر کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا تھا) اور اپنے دین کی تبلیغ میں مصروف ہوگئے- ہر مسلمان اپنے اخلاق اور عمل کے اعتبار سے اپنے دین کا مبلغ تھا نتیجہ عوام ان کے اخلاق و اعمال سے متاثر ہوتے چلے گئے- تجارت اور تبلیغ کا یہ سلسلہ ایک صدی تک جاری رہا یہاں تک کہ مالیبار میں اسلام کو خاطر خواہ فروغ حاصل ہوا اور وہاں کا راجہ بھی مسلمان ہوگیا- جنوبی ہند میں فروغ اسلام کی وجہ یہ بھی تھی کہ اس زمانے میں جنوبی ہند مذھبی کشمکش کا شکار تھا- ہندو دھرم کے پیروکار بدھ مت اور جین مت کے شدید محالف اور ان کی بیخ کنی میں مصروف تھے- ان حالات میں جب مبلغین اسلام نے توحید باری تعالی اور ذات پات اور چھوت چھات کی لا یعنی اور خلاف انسانیت قرار دیا، تو عوام جو ہزاروں سال سے تفرقات اور امتیازات کا شکار ہورہے تھے- بے اختیار اسلام کی طرف مائل ہونے لگے- چونکہ حکومت اور معاشرہ کی طرف سے تبدیلی مذھب پر کوئی پابندی نہیں تھی- لہذا ہزاروں غیر مسلم مسامان ہوگئے- (تاریخ پاک وہند، ص:390)
    اس اقتباس سے مندرجہ ذیل امور واضح ہوتے ہیں:

    1- پہلی ہی صدی ہجری اسلام جنوبی ہند بالخصوص مالیبار اور مغربی سواحل میں پھیل گيا- ان علاقوں کے ہزارہا غیر مسلم مسلمان ہوچکے تھے اور راجہ بھی مسلمان ہوگيا-
    2- اشاعت اسلام کی اصل وجوہات 3 تھیں-
    (1) عقیدہ توحید تعالی کی سادگی (2) ذات پات اور چھوت چھات کو خلاف انسانیت قرار دینا (3) مسلمانوں کے اعمال و اخلاق کی پاکیزگی اور شائستگی
    گویا ہندوستان میں اشاعت اسلام کا اصل سبب اولیاءاللہ یا صوفیاء کی کرامات نہیں بلکا درج بالا مجوہات تھیں-
    اب اس پہلی صدی ہجری میں بریصغیر پاک وہند میں جن جن مقامات پر اشاعت اسلام ہوئی اس کی مزید تفصیل درج ذیل اقتباس میں ملاحضہ فرمائيے:
    " بریصغیر پاک وہند میں عربوں کے تجارتی مراکز میں سراندیپ، مالدیپ، مالابار، کارومنڈل، گجرات اور سندہ قابل ذکر ہیں- ان کی علاوہ جنوبی ہند اور ساحلی علاقوں میں بھی جابجا عرب تاجروں کی نوآبادت موجود تھیں- جہاں عراق اور عرب کے تاجر موجود تھے- ظہور اسلام کے بعد عربوں کی سیاسی، مجلسی اور اقتصادی سرگرمیاں تیز تر ہوگئيں- اب وہ تبلیغ اسلام کے شوق سے سرشار، اخلاق و اطوار کے لحاظ سے بلند معیار کے حامل اور صداقت و دیانت کے پیکر تھے- ان میں سے اکثر نے بریصغیر میں ہی رہائش اختیار کرلی۔ آہستہ آہستہ جنوبی ہند کی اکثر مقامات پر مسلمانوں کی نوآبادت قائم ہوگئيں- انہوں نے مقامی لوگوں کو مشرف بہ اسلام کرنا شروع کردیا- مقامی راجاؤں سے مسلمان تاجروں کے تعلقات نہایت خوشگوار تھے اور انہیں تبلیغ اسلام اور عبادت کی پوری آزادی حاصل تھی" (تاریخ پاک وہند ص: 17،18)
    اس اقتباس سے معلوم ہوتا ہے کہ:
    پہلی صدی ہجری میں اسلام صرف مالیبار اور مغربی سوحل پر ہی نہیں پھیلا بلیہ جزائر سراندیپ، مالدیپ، اور علائقہ ہائے کارمنڈل، گجرات اور سندہ میں اسلام کی اشاعت ہوچکی تھی- ان مقامات پر عربوں کی نوآبادیات بھی قائم تھیں اور بہت سے عرب مسلمان مشتقل یہاں قیام پذیر ہوکر اسلام کی تبلیغ و اشاعت میں مصروف ہوگئے تھے-
    بریصغیر میں اشاعت اسلام کے سلسلہ میں یہ کچھہ تو نجی سطح پر ہوا- اب جو کجھہ سرکاری سطح پر ہوا اس کی تفصیل کچھہ اس طرح ہے:

    1۔ دور فاروقی

    دور فاروقی میں بحرین وعمان کے حاکم عثمان بن ابوالعاص ٹقفی نے 636ء-637ء میں (وفات رسول اللہ سے صرف 4 سال بعد) ایک فوجی مہم تھانہ نزد ممبئی میں بھیجی- پھر اس کی اطلاع حضرت عمر رض کو دی- آپ ناراض ہوئے اور لکھا" تم نے میری اجازت کے بغیر سواحل ہند پر فوج بھیجی- اگر ہمارے آدمی وہاں مارے جاتے تو میں تمہارے قبیلہ کے اتنے ہی آدمی قتل کرڈالتا" (تاریخ پاک وہند ص: 18)

    2۔ عہد عثمانی

    عہد عثمانی میں عراق کے حاکم عبداللہ بن عامر نے حکیم بن حبلہ کو بریصغیر سرحدی حالات کی تحقیق پر مامور کیا- واپسی پرانہوں نے حضرت عثمان رض کو اپنی رپورٹ میں بتلایا کہ " وہاں پانی کیمیاب ہے، پھل نکمے ہیں، ڈاکو بہت دلیر ہیں اگر قلیل التعداد فوج بھیجی تو ہلاک ہوجائے گی اور اگر زیادہ لشکر بھیجا گیا، تو بھوکوں مرجائے گا" اس رپورٹ کی بناء پر حضرت عثمان غنی رض نے مہم بھیجنے کا ارادہ ترک کردیا۔ (تاریخ پاک وہند ص: 19)

    3۔ دور معاویہ

    حضرت امیر معاویہ رض کے دور حکومت میں مشہور سپہ سالار مہلب بن ابی صفرہ نے برصغیر کی سرحد پر حملہ کیا اور لاھور تک بڑھ آیا- انہی ایام میں خلیفہ اسلام نے ایک اور شپہ سالار عبداللہ بن سوار عبدی کو سواحل برصغیر کے سرکش لوگوں کی گوشمالی کے لیے 4 ھزار کی عسکری جمیعت کے ساتھ بھیجا- اس نے قیقان کے باشندوں کو سخت شکست دی اور مال غنیمت لے کر واپس چلاگیا- ان نے حضرت امیر معاویہ رض کی خدمت میں قیقانی گھوڑے پیش کیے- لیکن کچھ مدت بعد عبداللہ بن سوار قیقان واپس آگیا، جہاں ترکوں نے یورش کرکے اسے قتل کردیا- (تاریخ پاک وہند ص:19)

    4۔ عہد ولید بن مالک

    بعد ازاں 712ء یعنی 93ھ میں ولید بن مالک کے زمانہ میں وہ واقعہ پیش آیا جس نے برصغیر میں اسلام کی اشاعت کے سلسلہ میں بڑا موثر کردار ادا کیا یعنی محمد بن قاسم رح نے اس سال سندھ کے سارے علائقہ کو فتح کرلیا- اس حملہ ک ےاسباب و محرکات ہمارے موضوع سے خارج ہیں- ہم ت ویہ دیکھنا چاہتے ہیں اس مہم میں محمد بن قاسم نے دیبل، نیرون، سیوستان، سیسم، رادڑ، برہمن آباد، اوور، باتیہ (موجودہ بہاولپور کے قرب و جوار میں موجود تھا)، اور ملتان کو فتح کیا اور قنوج کی تسخیر کا ارادہ کررہا تھا کہ اسے واپس بلالیا گیا-
    محمد بن قاسم رح کے جانے کے بعد فتوحات کا سلسلہ اچانک رک گیا- بہرحال عرب سندھ و ملتان پر 200 سال سے زیادہ عرصہ تک (یعنی 10 صدی عیسوی تک) قابض رہے، چوتھی صدی ہجری تک خلیفۃ المسلمین والیان سندھ کا تقرر کرتے رہا- اس کے سندھ میں عربوں کی دو نیم ریاستیں قائم ہوگئیں- ان میں سے ایک ملتان اور دوسری منصورہ تھی۔ (تاریخ پاک وہند ص: 35)
    محمد بن قاسم کی ان فتوحات نے اشاعت اسلام کے سلسلہ میں کیا کردارادا کیا؟ وہ پروفیسر عبدالقادر و شجاع الدین کی زبان سے سنیے:
    " فتح سندھ کے بعد بےشمار علماء، مبلغین، تاجر اور صناع عرب سے آکے سندھ میں آباد ہوئے۔ مقامی باشندوں میں اسلام رائج ہوا اور یہ سرزمین فرزندان توحید کا گہوارہ بن گئي- آج سندھ اسی طرح اسلامی خطہ ہے جس طرح عراق اور مصر- ہم عربوں کی فتح سندھ کی عظمت، اس کی تاریخی اہمیت اور اس کے نتائج کے منکر نہیں ہوسکتے" (تاریخ پاک وہند ص: 40)

    5۔ دورسبکتگین غزنوی

    976ء (چوتھی صدی ہجری) میں سبکتگین غزنوی نے پشاور کے قریب جے پال کو شکست دے کر لمغان (جلال آباد) سے دريائے سندھ تک کے تمام علائقے اپنی سلطنت میں شامل کرلیے- ان لڑائیوں کا نتیجہ یہ ہوا کہ برصغیر کی عسکری کمووری مسلمانوں پر عیاں ہوگئي اور سندھ پار کے علائقے میں ایک طاقتور اسلامی حکومت قائم ہوگئي جو بعد ازاں پنجاب اور برصغیر کے دوسرے حصوں پر چھاگئي، نیز بریصغیر کی فتح کے دروازے کھل گئے-
    سبکتگین کے عہد کا دوسرا اہم واقعہ افغان قوم کے معرص وجود میں آنے کا ہے- افغان پشاور اور غزنی کے درمیانی علاقہ کے باشندے تھے اور متعدد قبائل میں بٹے ہوئے تھے- سبکتگین نے ان کا تعاون حاصل کرنے کے لیے ان سے دوستانہ مراسم استوار کیے اور وہ تمام علائقے جو ان کے قبصے میں تھے ان کے سپرد کردیے۔ نتیجہ افغان قوم کی بنیاد پری- نیز یہ قبائل نہ صرف حلقہ بگوش اسلام ہوئے بلکہ سلاطین غزنہ کی افواج میں بھرتی ہوگئے- (تاریخ پاک وہند ص:64)

    6۔ عہد محمود غونوی

    سبکتگین کے بعد سلطان محمود غونوی (997 تا 1030ء) کا دور اتا ہے جس نے پہلا حملہ 1001ء میں برصغیر پر کرکے درّہ خیبر کے نواحی علائقوں کی تسخیر کی- اس نے کل 17 حملے کیے تھے- آخری حملہ 1025ء میں کیا جس میں سومنات کو فتح کیا اس دوراں محمود غزنوی رح نے برصغیر کے جن علاقوں کو فتح کیا انکے نام یہ ہیں:
    درہ خیبر اور اس کے نواحی علاقے، ملتان (یہاں کا حاکم شیخ حمید بوی مسلمان تھا لیکن محمود غونوی کی مخالفت کرکے راجہ بجے رائے کا حلیف تھا) پنجاب، کانگڑہ، نگر کوٹ، تھانیسر، کشمیر، قنوج، کالنجر، گوالیار اور سومنات- (تاریخ پاک وہند ص: 60،61)
    سلطان محمود غونوی رح (م 1030ء) کے بعد اس کے جانشین مزید 150 سال 1186ء تک ان علاقوں پر قابص رہے-

    7۔ ادوار غوری اور دوسرے

    غزنی خاندان کے بعد غور چاندان ہند پر قابض ہوتا ہے- سلطان شھاب الدین محمد غوری نے سب سے پہلے حملہ 1175ء میں ملتان کو فتح کیا- پھر غوریوں کے بعد ہندوستان میں خاندان غلاماں، خلجی، تغلق، سادات اور لودھی بر سر اقتدار آئے پھر 1526ء مین بابر نے ہندوستان میں مغلیہ خاندان کی بنیاد رکھی اور یہ مغلیہ خاندان 1857ء تک برصغیر پاک وہند میں برسر اقتدار رہا-
    یہ وہ تاریخی حقائق ہین جن سے کوئی شخص انکار نہیں کرسکتا- ان سے معلوم ہوتا ہے کہ 712ء یا 93ھ سے لےکر 1857ء تک کوئی ایسا وقت نہیں گزرا جب کہ بریصغیر کے کسی نہ کسی حصے پر مسلمانوں کی حکومت موجود نہ رہی ہو- اب صوفیاء کی طرف سے دعوای یہ کیا جاتا ہے کہ پہلے صوفیاء ہندوساتان گئے- انہوں نے وہاں اشاعت اسلام کا فریضہ انجام دیا اور مسلمان خکمرانوں کے حملہ اور فتح کے لیے زمین ہموار کرتے رہے- لیکن تاریخی حقائق کی روشنی میں صوفیاء کے اس مزعومہ دعوے کو کیوں کر باور کیا جاسکتا ہے جبکہ صوفی تو پیداوار ہی 3 صدی ہجری کی ہیں اور پہلے صوفی جو ہندوستان تشریف لائے وہ اسماعیل بخاری ہیں جو 1005ہ (395ھ) میں محمود غزنوی کے ساتھ ہندوستان تشریف لاتے ہیں جبیہ ملسلمان حکمرانوں کا 712ء (93ھ) سے لے کر 1857ء تا ایسا تسلسل قائم رہا ہے کہ اس میں ایک دن کا بھی انقطاع واقع نہیں ہوا-
    زیادہ سے زیادہ جو چيز باور کی جاسکتی ہے، وہ یہ ہے کہ محمود غزنوی چونکہ خود بھی صوفی منش اور صوفیاء کا قدردان تھا- اس لیے اس نے یہ تحریک پیدا کی کہ دوسرے علمائے دین کے ساتھ صوفیاء بھی اس سرزمین پر تشریف لائيں اور مفتوجہ علاقوں میں اشاعت اسلام کا فریضہ سر انجام دیں- چنانچہ پہلے صوفی جن کا نام تذکروں میں ملتا ہے وہ اسماعیل بخاری ہیں جنہیں 1005ء میں اپنے ساتھ لایا تھا- حالانکہ وہ خود 1001ء سے ہندوستان پر حملے کررہا تھا-

    (شریعت و طریقت، باب 7، ص: 381 تا 387)
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں