پلاسٹک سرجری کاشرعی حکم

زبیراحمد نے 'اتباعِ قرآن و سنت' میں ‏نومبر 3, 2013 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. زبیراحمد

    زبیراحمد -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏اپریل 29, 2009
    پیغامات:
    3,446
    جسمانی عیب دور کرنے کے لئے پلاسٹک سرجری جائز ہے اور عیب سے مراد جسم میں پائی جانے والی ایسی صورت ہے جو معروف و معتاد اور عمومی تخلیقی کیفیت سے مختلف ہو، چاہے پیدائشی عیب ہو یا بعد میں پیدا ہواہو۔

    جسمانی تکلیف کے ازالہ کے لئے ، اگر ڈاکٹر کا مشورہ ہو تو پلاسٹک سرجری جائز ہے۔

    درازئ عمر کی وجہ سے طبعی طور پر انسان کی ظاہری حیثیت میں جو تغیر آتا ہے ، جیسے جھرّیوں کا پیدا ہوجانا وغیرہ ، ان کو ختم کرنے کے لئے پلاسٹک سرجری کرانا جائز نہیں۔

    ناک اور دوسرے اعضاء خلقی طور پر کم خوبصورت اور غیر متناسب ہوں، مگر انسان کی عمومی معتاد خلقت کے دائرہ سے باہر نہ ہوں تو زینت اور محض خوبصورتی کے لئے پلاسٹک سرجری جائز نہیں۔

    اپنی شناخت چھپانے کیلئے پلاسٹک سرجری جائز نہیں، سوائے اس کے کہ مظلوم کو ظالم سے بچنے کیلئے ایسا کرنا پڑے۔
    (مأخوذ از فقہی فیصلے ، اسلامی فقہ اکیڈمی انڈیا)​
     
  2. ساجد تاج

    ساجد تاج -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 24, 2008
    پیغامات:
    38,758
    جزاک اللہ خیرا
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں