صفائ پسند

بابر تنویر نے 'ادبِ لطیف' میں ‏اگست 11, 2014 کو نیا موضوع شروع کیا

Tags:
  1. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    رکن انتظامیہ

    پیغامات:
    7,313
    ہمارے پرانے گھر کی کھڑکی سے سامنے والے گھر کی بالکونی کا ایک منظر۔

    دیکھیے یہ بالکونی میں کون کھڑا ہے۔


    یہ تو ایک خاتون ہیں۔ شکل اور لباس سے تو کافی ماڈرن نظر آ رہی ہیں۔


    ان کے ایک ہاتھ میں چھری پکڑی ہوئ ہے۔


    اور دوسرے ہاتھ میں کیا ہے؟


    ایک عدد پیاز۔


    اور یہ کیا کر رہی ہیں ؟


    آپ سمجھ تو گۓ ہوں گے کہ وہ کیا کر رہی ہیں؟


    بھئ وہ پیاز کاٹ رہی ہیں۔


    لگتا ہے کہ وہ بہت صفائ پسند ہیں۔ اپنے گھر کو خوب صاف رکھتی ہوں گی ۔


    جبھی تو وہ پیاز کو بالکونی پر کھڑے ہو کر کاٹ رہی ہیں۔


    اور اس کے چھلکے براہ راست گلی میں گر رہے ہیں۔


    دیکھیے کیا خوب طریقہ ہے اپنے گھر کو صاف رکھنے کا۔


    گھر میں کچرا جمع ہونے کا کوئ امکان ہی نہیں ہی۔


    میرا خیال ہے کہ وہ ہر روز اسی طرح سبزی یا پھل وغیرہ کاٹنے کے وقت اپنی بالکونی میں چھری سمیت نمودار ہوتی ہوں گی۔ اور وہی حرکت فرماتی ہوں گی جو کہ انہوں پیاز کے چھلکوں کے ساتھ کی ہے۔


    کیا خیال ہے آپ سب لوگوں کا؟


    یہ خاتون کتنی صفائ پسند ہیں۔ مجال ہے کہ گھر کے کسی کونے میں کچرا پڑا نظر آجاۓ۔


    رہی اس گلی کی بات تو وہ گلی ویسے بھی سیوریج لائن وغیرہ کے لیے مخصوص ہے۔ اور یہاں عرف عام میں اسے گندی گلی بھی کہتے ہیں۔ اور گندی گلی تھوڑی اور گندی ہوگئ تو کیا ہوا۔ گھر تو صاف رہا۔ صبح کچرا چننے والا آۓ گا اور تمام کچرا اٹھا کر لے جاۓ گا۔
     
    dani, ساجد تاج, نصر اللہ اور 12 دوسروں نے شکریہ ادا کیا .
  2. عطاءالرحمن منگلوری

    عطاءالرحمن منگلوری -: ماہر :-

    پیغامات:
    1,475
    کیا بات ہے بابر بھائ...قوت مشایدہ اور قوت استنباط دونوں خوب ہیں.البتہ ان آنسوؤں کا تذکرہ نہیں جو پیاز کاٹتے ہوئے گرتے ہیں..اتنی صفائ پسند کہ قطرہ آنسو بھی گھر کےاندر پسند نہیں..
    ایسے کرداروں کی معاشرے میں کمی نہیں..جزاک اللہ
     
    ساجد تاج, عائشہ, رفی اور 4 دوسروں نے شکریہ ادا کیا .
  3. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    پیغامات:
    15,455
    شکریہ ـ یہ صفائی کم اور ستھرائی زیادہ ہے ـ ـ ام القری میں ایسا مشاہد ہ نہیں ہوا ـ لیکن پاکستا ن کے مختلف شہروں میں رہتے ہوئے ایسے سلجھے ہوئے لوگ دیکھنے میں آئے خاص جہاں فلیٹس وغیرہ بنے ہوتے ہیں ـ ـ ـ آسان زبان میں اس کو کام چوری بھی کہ سکتے ہیں ـ
     
  4. اعجاز علی شاہ

    اعجاز علی شاہ -: ممتاز :-

    پیغامات:
    10,324
    اور اگر ایسے لوگوں کو آپ سمجھائیں گے کہ یہ بات غلط ہے اور اس طرح گلیوں میں گند پھیلے گا جو مختلف بیماریوں کا سبب بن سکتا ہے تو پھر وہ یہ جواب دیں گے کہ تو پھر کچرا اٹھانے والے کیوں نہیں آتے۔ ان کو کہیں کہ چلو گھر کی بالکونی آپ کے گھر کے اوپر ہی ہے کل میں بھی پیاز آپ کے گھر کے سامنے کاٹتا ہوں تاکہ میرا گھر صاف رہے اور آپ کے گھر کے سامنے کچرا ہو۔
     
  5. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    پیغامات:
    12,450
    ہہہہہ بہت خوب ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

    کہیں یہ اس سوال کا جواب تو نہیں؟

    عکاشہ بھائی سلجھے ہوئے لوگوں کی یہاں پر بھی کمی نہیں، اس سے پہلے جہاں ہم رہتے تھے اس بلڈنگ کے پیچھے ایک پہاڑ تھا اور ہم فرسٹ فلور پر تھے جبکہ اوپر والے فلور زکے کرم فرما اپنا کچرا اسی طرح اپنی کھڑکیوں سے بائی ائر نیچے پہنچایا کرتے تھے۔ کئی بار اردو، عربی اور انگلش میں ان کے لئے نوٹس پرنٹ کر کے لگائے مگر شاید ہی کسی نے پڑھنے کی زحمت اٹھائی ہو، اللہ کا شکر ہے کہ اب گھر تبدیل کر لیا ہے اور نسبتاً کم سلجھے ہوئے لوگوں کے ساتھ رہائش پذیر ہیں۔ جہاں مکمل سکون ہے۔
     
  6. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    رکن انتظامیہ

    پیغامات:
    7,313
    نہیں شاہ جی یہ اس سوال کا جواب نہیں ہے۔ یہ میں نے کافی عرصہ پہلے لکھ رکھا تھا۔ پھر لکھ کر بھول گیا۔
     
    ام ثوبان, ساجد تاج اور رفینے شکریہ ادا کیا .
  7. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    پیغامات:
    15,455
    جی ۔ ایسے لوگ ہر جگہ ہو سکتے ہیں ۔ یہ معاشرے کا حصہ ہیں ۔ اور بعض اوقات پڑوسیوں کے احترام میں ان کی کچرے کی قیمت بھی ادا کرنی پڑتی ہے ۔
     
    ام ثوبان, بابر تنویر اور رفینے شکریہ ادا کیا .
  8. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    رکن انتظامیہ

    پیغامات:
    7,313
    شاہ جی کیا یاد دلا دیا بلکہ کیا کیا یاد دلا دیا۔ آپ کے مہربان اوپر سے نیچے گراتے تھے لیکن ہمارے ساتھ اس کے برعکس ہوا۔

    گراؤنڈ فلور پر نۓ کراۓ دار تشریف لائے تعلق ان کا پڑوسی ملک سے تھا۔ آتے ہیں انہوں نے کچرا سیڑھیوں میں رکھنا شروع کیا۔ جس کی وجہ سے آنے جانے میں مشکل ہونے لگی۔ ان سے کہا گیا کہ ایسا نہ کریں تو پھر انہوں نے اس کے لیے پانی کی موٹر کے ساتھ والی جگہ منتخب فرمائ جس کا ساتھ ہی ٹینکی کا ڈھکن بھی تھا۔ ان سے دوبارہ درخواست کی گئ کہ بھائ یہ جگہ بھی مناسب نہیں ہے۔ لیکن وہ باز نہ آۓ۔ پھر ایک دن بلڈنگ کے دوسرے تمام رہائشیوں نے فیصلہ کیا کہ کچرے کو وہاں سے اٹھا کر ان کے دروازے کے سامنے رکھ دیا جا‎ۓ اور ایسا ہی کیا گیا۔ اور پھر اس کے بعد انہوں نے وہاں کچرا رکھنا بند کردیا۔ اور ہمارے فلیٹ کے سامنے دو سیڑھیوں کے درمیان والی جگہ اس نیک کام کے لیے منتخب کر لی۔ صبح ہم گھر سے باہر نکلے تو سامنے ہی کچرا پڑا ہوا تھا۔ اور پھر سب نے فیصلہ کیا کہ عقاری کے آفس جاکر ان کی شکایت لگائ جاۓ۔ عقاری نے اپنا ایک بندہ ان صاحب کے پاس بھیجا اور انہیں وارننگ دی کہ اپنا کچرا باہر کچرے کے ڈبے میں پھینکا کرو اکر دوبارہ تمہاری شکایت آئ تو پھر تم سے فلیٹ خالی کروالیں گے۔ بہر حال اس کے بعد ان صاحب نے مجبورا اپنا کچرا باہر پھینکنا شروع کیا۔
     
    ام ثوبان, ساجد تاج, عائشہ اور 2 دوسروں نے شکریہ ادا کیا .
  9. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    پیغامات:
    24,484
    اور اگر چھلکے کی بجائے چھری نیچے جا پڑے تو؟
     
    بابر تنویر, ام ثوبان اور ساجد تاجنے شکریہ ادا کیا .
  10. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    پیغامات:
    24,484
    توبہ
    ایک خاتون یا د آگئیں وہ کچن میں کچرے کے ڈبے کے پاس ہی چولہا رکھنے پر مصر تھیں جس پر گھر بھر کی روٹیاں پکتی تھیں۔ اللہ ہی جانتا ہے زمین پر کس کس قسم کے انسان مونگ دل رہے ہیں۔
     
    ام ثوبان اوربابر تنویر نے اس کا شکریہ ادا کیا
  11. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    پیغامات:
    24,484
    جی صفائی پسند خواتین آنچل کے پلو سے بہت سے کام کر لیتی ہیں ، شرم آنے پر "ہا "کرنے سے لے کر اپنی اور منو چنو کی ناک صاف کرنے تک ۔
    اسئ طرح صفائی پسند مرد حضرات قمیص کی آستین سے پسینہ بھی پونچھ لیتے ہیں ، ناک بھی اور بوقت ضرورت عینک اور موبائل بھی رگڑ کر چمکا لیتے ہیں ۔
     
  12. عفراء

    عفراء webmaster

    پیغامات:
    3,920
    ایک استعمال رہ گیا ۔ یعنی آنسو صاف کرنا! :LOL:
     
    ام ثوبان, ساجد تاج اور بابر تنویرنے شکریہ ادا کیا .
  13. ساجد تاج

    ساجد تاج -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    پیغامات:
    38,758
    ایسے لوگ تو پاکستان میں بھرے پڑے ہیں ، اپنا آپ دیکھو اور سامنے والے کو چاہے گولی مار دو ، اپنا گھر صاف رکھا دوسرے کا گھر گندا کرتے رہو ، خؤد کا دامن داغ داغ ہے اور دوسروں کو تنقید کا نشانہ بناتے رہو، خؤد اپنا دل نفرتوں سے بھرا ہو اور دوسروں کو پیار کا سبق دیتے رہو، بغل میں ہو چُھری اور منہ میں رام رام کرتے رام رام کرتے رہو
     
    ام ثوبان اوربابر تنویر نے اس کا شکریہ ادا کیا
  14. dani

    dani نوآموز.

    پیغامات:
    4,333
    ام ثوبان اوربابر تنویر نے اس کا شکریہ ادا کیا
  15. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    پیغامات:
    24,484
    کچھ عرصہ پہلے یوں ہوا کہ صبح صبح ہمارے گھر کے سامنے کوڑا بکھرا ہو ملتا۔ صبح ہماری پڑوسی خاتون تشویش سے جائزہ لے رہی ہوتیں کہ میں یونیورسٹی کے لیے نکلتی اور ہم مل کر سوچتے کہ آخر یہ کون پھیلا رہا ہے۔ ایک دن عشا کے بعد چھت پر واک کر رہی تھی تو دیکھا سامنے والے گھر کی چھت سے ایک خاتون نے ایک گولا سا اٹھا کر ہمارے گیٹ کی جانب پوری قوت سے یوں پھینکا جیسے کوئی جیولین تھرو میں ریکارڈ بنا رہا ہو۔ مجھے ذرا سمجھ نہیں آئی۔ اگلے دن پھر اتفاق سے یہی منظر دیکھا تو نشانے کی جگہ جا کر دیکھا کہ ہوا کیا ہے۔ تب سمجھ آئی کہ کوڑا ہمارے گھر کے سامنے کیسے بکھرتا ہے۔ ہماری پڑوسی خاتون نے ان سے جا کر بات کی۔ جمعدار کی فیس بچانے کے لیے وہ خاتون یہ کر رہی تھیں، ان سے کیسے نمٹا نہیں معلوم، لیکن اب سکون ہے۔ کسی دن صبح صبح ان کے گھر کی چھت پر نظر پڑ جائے تو نشانہ لگاتی ہوئی خاتون یاد آ جاتی ہیں۔
     
    بابر تنویر نے شکریہ ادا کیا ہے.

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں