نبی‌اکرم‌ کی‌ “ آل “ سے مراد کون لوگ ہیں

ابوعکاشہ نے 'امام ابن قيم الجوزيۃ' میں ‏مئی 12, 2008 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,375
    بسم اللہ الرحمن الرحیم

    السلام علیکم !

    نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے “آل “ سے کون سے مراد ہیں ، اس سلسلے میں چار اقوال ہیں
    پہلا قول آل نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے وہ لوگ مراد ہیں جن پر صدقہ کو حرام کر دیا گیا ہے اور جب لوگوں کے لئے صدقہ کو حرام کیا گیا ہے ان کی تعیین میں تین اقوال ہیں

    ایک تو یہ کہ وہ بنو ہاشم اور بنو مطلب ہیں ۔امام شافعی کا یہی قول ہے اور امام احمد سے منقول دو اقوال میں سے ایک قول یہی ہے

    دوسرا یہ کہ جن کے لئے صدقہ کو حرام کر دیا گیا ہے وہ صرف بنو ہاشم ہیں ۔ امام ابوحنیفہ کا یہی قول ہے اور امام احمد کا دوسرا قول یہی ہے ۔نیز امام مالک کے اصحاب میں ابن القاسم نے اسی قول کو اختیار کیا ہے ۔

    تیسرا یہ کہ اس میں بنو ہاشم اور ان کے اوپر بنوغالب تک کے تمام خاندان ہیں اسی اعتبار سے اس میں بنو مطلب ، بنو امیہ ، بنو نوفل ، اور ان کے اوپر بنو غالب کی تمام شاخیں آ جایئں گی ۔ اصحاب امام مالک میں‌ اشہاب نے اسی قول کو اختیار کیا ہے ۔ صاحب “ جواہر“ نے ان سے یہی قول نقل کیا ہے ۔ لیکن اصحاب “ التبصرہ “ لخمی نے اصحاب امام مالک میں اشہاب کی نجائے اصبغ سے یہ قول نقل کیا ہے

    چانچہ آل نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے سلسلے میں پہلا قول ، یعنی یہ کہ اس سے مراد وہ لوگ ہیں جن کے لئے صدقہ کو حرام کر دیا گیا ہے ۔ امام شافعی ، امام احمد اور دوسرے بہت سے فقہا سے منصوصا نقل کیا گیا ہے اور جمہور اصحاب امام احمد اور اصحاب امام شافعی کی اختیار کردہ یہی رائے ہے

    دوسرا قول آل نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے خاص طور پر آپ کی ذریت اور ازواج مطہرات مراد ہیں ۔ ابن عبد البر نے اپنی کتاب “ التمہید “ میں اس رائے کو اختیار کیا ہے ۔ انھوں نے عبدااللہ بن ابی بکر سے متعلق باب میں ابوحمید ساعدی کی روایت کردہ حدیث کی تشریح کرتے ہو ئے لکھا ہے کہ بہت سے لوگوں نے اس حدیث سے استدلال کرتے ہوئے کہا کہ “ آل محمد “ سے مراد آپ کی ازواج مطہرات اور ذریت ہے ، کیونکہ ابوحمید ساعدی کی روایت کردہ حدیث میں یہ الفاظ منقول ہیں کہ ( اللھم صل علی محمد وازواجہ و ذریتہ ) لہزا یہ حدیث آپ کے قول .اللھم علی محمد و علی آل محمد ) کی تشریح بیان کرتی ہے ، کہ “ آل محمد “ سے آپ کی ازواج مطہرات اور ذریت ہی مراد ہیں ۔ ان لوگوں کا یہ بھی کہنا ہے کہ اسی وجہ سے کسی شخص کا سامنا جب آپ کی ازواج مطہرات یا ذریت میں سے کسی سے ہو تو ان کے لئے دعائیہ کلمات کے طور پر “ صلی اللہ علیک “ کہنا جائز ہے ۔، ان کے غائبانہ میں ان ک لئے “ صلی علیہ علیہ “ بھی کہنا جائز ہے ۔ لیکن آپ کی ذات اور آپ کی ازواج و ذریت کے علاوہ کسی ور شخص کے حق میں اس طرح کے دعائیہ کلمات کہنا جائز نہیں ہے ۔

    ان کایہ بھی کہنا ہے کہ “ آل “ اور “ اھل “ میں کوئی فرق نہیں ۔ کیوں کہ کسی شخص کے اہل ہی کو آل کہا جاتا ہے ۔ اور اس سے مراد اس کی ازواج اور ذریت ہوتی ہے ۔ اس دعوے کی دلیل مذکورہ بالا حدیث (‌اللھم صلی علی محمد و ازواجہ و ذریتہ ) ہے

    تیسرا قول
    آپ کے “‌آل “ سے مراد قیامت تک آپ کے نقش قدم پر چلنے والے امتی مراد ہیں ۔ ابن البر بعض اہل علم سے یہ قول نقل کیا ہے ، اور جابر بن عبد اللہ ان اولین لوگوں میں ہیں جن سے یہ قول منقول ہے ۔ امام بیہقی اور سفیان ثوری نے صحابی رسول صلی اللہ علیہ وسلم جابر سے یہی قول نقل کیا ہے ۔ اور امام شافعی کے بعض اصحاب نے اسی قول کو اختیار کیا ہے ۔ ابوالطیب الطبری نے اپنی تعلیق میں امام شافعی سے یہی قول نقل کیا ہے اور مام نووی نے صحیح‌ مسلم کی شرح میں اس کو راجح‌ قرار دیا ہے اور ازھری کا بھی قول مختار یہی ہے ۔

    چوتھا قول آپ کے “ آل “ سے امت محمدیہ کے اتقیاء و صلحا کی جماعت مراد ہے ۔ قاضی حسین راغب اور بہت سے دوسے اہل علم سے یہی قول منقول ہے

    امام ابن قیم رحمہ اللہ نے ان سارے اقوال کے ادلہ کوتصحیح اور تضعیف کے ساتھ بیان کیا ہے

    فضل الصلاتہ علی النبی صلی اللہ علیہ وسلم
    امام شمس الدین ابن القیم رحمہ اللہ
    ترجمہ : فضل الرحمن ندوی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  2. کارتوس خان

    کارتوس خان محسن

    شمولیت:
    ‏جون 2, 2007
    پیغامات:
    934
    بسم اللہ الرحمٰن الرحیم


    السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔۔۔وبعد!۔
    جزاک اللہ خیر عُکاشہ بھائی اللہ پاک آپ کے علم میں‌مزید اضافہ فرمائے۔ آمین یارب العالمین۔
    والسلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ۔۔۔
     
  3. خادم خلق

    خادم خلق -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 27, 2007
    پیغامات:
    4,948
    جزاک اللہ خیر۔
     
  4. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,450
    جزاک اللہ خیر عُکاشہ بھائی
     
  5. ابن عمر

    ابن عمر رحمہ اللہ بانی اردو مجلس فورم

    شمولیت:
    ‏نومبر 16, 2006
    پیغامات:
    13,365
  6. محمد نعیم

    محمد نعیم -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 26, 2007
    پیغامات:
    901
    میں حافظ محمد عبداللہ بہاولپوری (نور اللہ مرقدہ) کی ایک کتاب کا مطالعہ کر رہا تھا جس میں انہوں نے قرآن مجید کی اس آیت " واغرقنا آل فرعون ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ " کے حوالے سے تشریح کی تھی کہ جس طرح آل فرعون سے مراد فرعون کے حواری، مشیر، وزیر ، خدام، اور دیگر فرعون کے ماننے والے ہیں اسی طرح آل محمد سے بھی امت محمدیہ کے صلحاء و نیک لوگ مراد ہیں۔
    اور میرے ناقص علم کے مطابق یہی بات صحیح ہے۔
     
  7. ام اقصمہ

    ام اقصمہ -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏نومبر 7, 2007
    پیغامات:
    3,892
    جزاک اللہ خیراـ
     
  8. dani

    dani نوآموز.

    شمولیت:
    ‏اکتوبر، 16, 2009
    پیغامات:
    4,333
    جزاک اللہ خیرا
     
  9. Truthness

    Truthness -: محسن :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 1, 2009
    پیغامات:
    100
    شکریہ بھائی
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں