ایک کہانی بہت پرانی

غلام نبی نوری نے 'ادبی مجلس' میں ‏اپریل 27, 2015 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. غلام نبی نوری

    غلام نبی نوری نوآموز.

    شمولیت:
    ‏اپریل 23, 2015
    پیغامات:
    70
    ایک زمیندار تھا. اس سے اپنا کام ختم نہیں ہوتا تھا کیونکہ اس پیشے میں کام ویسے ہی بہت کرنا پڑتا ہے. اس نے سوچا کہ کوئی جن قابو کر لیا جائے تو پھر اس مشکل کا مداوا ہو سکتا ہے. اس نے ایک پیر صاحب سے رابطہ کیا. انہوں نے اسے ایک وظیفہ بتایا. وظیفہ پڑھنے سے ایک جن حاضر ہو گیا. اس نے اس شرط پر غلامی کی حامی بھری کہ وہ صبح سے شام تک فارغ نہیں بیٹھے گا اور اگر وہ زمیندار اسے کوئی کام نہ بتا سکا تو پھر جن اس کی گردن مروڑ دے گا. زمیندار نےاپنے آپ پر محمول کرتے ہوئے سوچا کہ اس جن سے کون سا کام ختم ہو جائے گا. زمیندار نے یہ شرط قبول کر لی اور جن اس کا غلام بن گیا. اگلے روز علی الصبح جن حسب وعدہ حاضر ہو گیا اور کام کی بابت پوچھا. زمیندار نے اسے چارہ کاٹ لانے کا حکم دیا. وہ یہ کام دومنٹ میں نمٹا کر واپس چلا آیا اور پوچھا اب کیا کروں؟ زمیندار نے اسے ہل چلا کر دو ایکڑ زمین ٹھیک کرنے کا حکم دیا. وہ ایک گھنٹے بعد یہ کام ختم کرکے واپس آ گیا. اب زمیندار یہ سوچ رہا تھا کہ اس سے یہ کام شام تک ختم نہیں ہو گا. لیکن جن کو سامنے پا کر اس کے اوسان خطا ہو گئے. پوچھا کام ختم کر لیا؟ جن نے کہا کہ ہاں. اور اب کیا کروں؟ زمیندار نے اسے گاؤں کے سارے راستے ہموار کرنے کا حکم دے کر مصروف کر دیا. اب جن اس تاڑ میں تھا کہ اس کے بعد وہ اپنے آقا کی گردن مروڑ دے گا. ادھر زمیندار نہایت پریشانی کے عالم میں اس پیر کے پاس پہنچا اور اسے صورتحال سے آگاہ کیا اور پوچھا کہ اب کیا کروں؟ اب تو موت سامنے ہے. پیر صاحب نے کہا فکر نہ کریں اور جن کے واپس آنے تک یہ کتے کا پِلّا اپنے پاس رکھ لیں. اور جب وہ واپس آئے اور نئے کام کا پوچھے تو پھر یہ پِلّا اسے پکڑا دینا اور کہنا کہ اس کی دم سیدھی کر دے لیکن شرط یہ ہے کہ یہ مرنے نہ پائے. زمیندار یہ کتورا لے کر واپس چلا آیا. دس منٹ بعد جن صاحب مسکراتے ہوئے تشریف لائے اور پوچھا کہ اب کیا حکم ہے یا پھر وہ اپنا کام کرے یعنی کہ گردن مروڑ دے. زمیندار نے اسے پِلّا پکڑا دیا اور اس کی مذکورہ شرط کے ساتھ دم سیدھی کرنے کا فرمان عالیشان جاری کیا. اب جن اس کی دم پکڑ کر کھڑا ہو گیا. اب ہوتا یہ کہ جب تک وہ دم پکڑے رکھتا وہ سیدھی رہتی. جونہی چھوڑتا ٹیڑھی ہو جاتی. جن کا بقیہ سارا دن اس عذاب میں گذرا. شام کو جن ہاتھ باندھ کر زمیندار کے سامنے کھڑا ہو گیا اور درخواست کی کہ وہ سارا کام کرے گا اور اپنی شرط بھی واپس لے لے گا لیکن اس دم سیدھی کرنے کے عذاب سے اسے نجات دلائی جائے. زمیندار نے جن کی استدعا قبول کر لی اور اپنی جان بچائی
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں