کیا ماہ رمضان کی فضلیت کی وجہ سے گناہ کرلینے میں کوئی حرج نہیں؟

عبدالرحیم نے 'ماہِ رمضان المبارک' میں ‏جون 22, 2016 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. عبدالرحیم

    عبدالرحیم -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏جنوری 22, 2012
    پیغامات:
    949
    بسم اللہ الرحمن الرحیم​
    فضیلۃ الشیخ محمد بن صالح العثیمین رحمہ اللہ المتوفی سن 1421ھ
    (سابق سنئیر رکن کبار علماء کمیٹی، سعودی عرب)
    ترجمہ: طارق علی بروہی
    مصدر: مجموع فتاوى ورسائل ابن عثيمين (ج 20 / رقم 254 )

    شیخ محمد بن صالح العثیمین رحمہ اللہ سے پوچھا گیا کہ جب کوئی روزے دار کسی معصیت کا مرتکب ہو اور اسے تنبیہ کی جائے تو وہ کہتا ہے ’’رمضان کریم‘‘ یہ کلمہ کہنے کا کیا حکم ہے؟ اور اس رویے کاکیا حکم ہے؟

    جواب: اس کا حکم یہ ہے کہ یہ کلمہ ’’رمضان کریم‘‘ صحیح نہيں ہے۔ بلکہ ’’رمضان مبارک‘‘ یا اس جیسے کلمات کہنے چاہیے۔ کیونکہ رمضان کامہینہ خود کوئی چیز عطاء نہیں کرتا کہ اسے کریم کہا جائے بلکہ وہ اللہ تعالی ہی ہے جس نے اس میں فضلیت رکھ کر فضلیت والا اور ارکان اسلام میں سے ایک رکن کو ادا کرنے کا مہینہ بنایا ہے۔

    گویا کہ اس قسم کے مقولے کہنے والے کا خیال ہے کہ کسی شرف والے وقت میں گناہ کرنا جائز ہوتا ہے۔ حالانکہ یہ تو اہل علم کے قول کے بالکل برخلاف ہے کیونکہ ان کا قول ہے کہ فضلیت والی جگہ یا وقت میں کیا گیا گناہ عام گناہ سے بڑھ کر شدید ہوتا ہےیعنی بالکل اس قائل کے تصور کے برعکس۔ اور فرماتے ہیں کہ ایک انسان پر واجب ہے کہ وہ ہرزمان ومکان میں اللہ تعالی سے ڈرے خصوصا ًفضلیت والے اوقات واماکن میں۔ فرمان الہی ہے:

    ﴿يٰٓاَيُّهَا الَّذِيْنَ اٰمَنُوْا كُتِبَ عَلَيْكُمُ الصِّيَامُ كَمَا كُتِبَ عَلَي الَّذِيْنَ مِنْ قَبْلِكُمْ لَعَلَّكُمْ تَتَّقُوْنَ﴾ (البقرۃ: 183)

    (اے ایمان والو تم پر روزے رکھنا فرض کیا گیا جس طرح تم سے پہلے لوگوں پر فرض کئے گئے تھے، تاکہ تم تقویٰ اختیار کرو)

    پس روزے کی فرضیت کی حکمت اللہ تعالی کے اوامر پر عمل اور نواہی سے اجتناب کرکے تقویٰ الہی کا حصول ہے ۔ اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم سے ثابت ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے فرمایا:

    ’’مَنْ لَمْ يَدَعْ قَوْلَ الزُّورِ وَالْعَمَلَ بِهِ، فَلَيْسَ لِلَّهِ حَاجَةٌ فِي أَنْ يَدَعَ طَعَامَهُ وَشَرَابَهُ‘‘([1])

    (جو کوئی جھوٹی بات اور اس پر عمل کو نہیں چھوڑتا تو اللہ تعالی کو کوئی حاجت نہیں کہ وہ محض اپنا کھانا پینا چھوڑدے)۔

    لہذا ثابت ہوا کہ روزہ اللہ تعالی کی عبادت ہے اور نفس کی تربیت اور اس کا محارم الہی سے بچاؤ ہے ناکہ جیسے یہ جاہل کہتا ہے کہ اس ماہ کی شرف وبرکت کی وجہ سےاس میں معاصی و گناہ کرنا رواں ہے([2]

    [1] صحیح بخاری 1903۔

    [2] شیخ صالح الفوزان حفظہ اللہ کا بھی اسی قسم کا فتوی ہے کہ رمضان کریم استعمال نہیں کرنا چاہیے۔ البتہ قرآن کی آیات سے مخلوق کے لیے کریم کا استعمال ثابت ہے اور بعض ضعیف احادیث میں رمضان کریم کے الفاظ آئے ہیں، اس کے علاوہ بہت سے اہل علم یہاں تک کہ خود فضیلۃ الشیخ ابن عثیمین رحمہ اللہ اسے استعمال فرماتے تھے۔ لہذا رمضان کریم کہہ سکتے ہیں مگر فضل کی حقیقی نسبت اس کی طرف نہ ہو کیونکہ وہ مخلوق ہے اور فضل سارے کا سارا اللہ تعالی ہی کا ہے وہ جسے چاہے فضلیت دیتا ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں