خواتین کی اصلاح میں لکھی گئی مرد حضرات کی شگفتہ تحریریں {اسلامی مضامین پر ہنسنا منع ہے}

عائشہ نے 'طنز و مزاح' میں ‏فروری 19, 2017 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,049
    حکیم الامت مولانا اشرف علی تھانوی فرماتے ہیں:
    " بعض لوگ عورتوں کو جغرافیہ پڑھاتے ہیں میری سمجھ میں نہیں آتا کہ اس سے کیا نفع۔ اگر ضرورت بتلائی جائے کہ ان میں روشن دماغی پیدا ہو گی تو میں جواب میں عرض کرتا ہوں کہ جی ہاں بجا ہے اور یہی مصلحت ہے کہ اگر بھاگنے کا ارادہ کریں تو کوئی دقت بھی نہ ہو کیوں کہ جغرافیہ سے ان کو معلوم ہو چکا ہے کہ ادھر غازی آباد جنکشن ہے ادھر لکھنؤ ہے۔ یہاں سے دہلی اتنی دور ہے اور اس کا راستہ یہ ہے اور دہلی میں اتنے سرائے اور اتنے ہوٹل ہیں جس طرف کو چاہو چلے جاؤ اور جہاں چاہو ٹھہر جاؤ۔ بتلاؤ عورتوں کو جغرافیہ پڑھنے سے بھاگنے میں آسانی ہو گی یا نہیں۔:giggle: اس کے سوا کوئی اور نفع ہو تو میں سننا چاہتا ہوں۔ بیان کے بعد ایک صاحب آئے اور کہا کہ میں اپنی مستورات کو جغرافیہ پڑھاتا تھا مگر آج معلوم ہوا کہ حماقت ہے۔ اب لڑکیوں کو جغرافیہ نہیں پڑھاؤں گا۔"
    اقتباس از اصلاح خواتین
    اگر کسی خاتون نے جغرافیہ پڑھا ہے اور ابھی تک بھاگنے کا شرف حاصل نہیں ہوا تو ساری پڑھائی چولہے میں جھونک دی۔
     
    • ظریفانہ ظریفانہ x 1
  2. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,049
    مولانا اشرف علی تھانوی لکھتے ہیں" میری سمجھ میں نہیں آتا کہ عورتوں کو اپنی تصنیف پر نام لکھنے سے کیا مقصود ہوتا ہے۔ اگر ایک مضمون دوسری عورتوں کے کان تک پہونچانا ہے تو اس کے لیے نام کی کیا ضرورت ہے مضمون تو بغیر نام کے بھی پہونچ سکتا ہے پھر نام کیوں لکھا جاتا ہے؟"
    اقتباس از اصلاح خواتین
    یاد رہے کہ حکیم الامت نے جس کتاب میں یہ سطور لکھی ہیں اس پران کا نام بطور مصنف درج ہے!
    :giggle:
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں