جو اللہ کا نافرمان اس کی بیوی نافرمان

عائشہ نے 'اتباعِ قرآن و سنت' میں ‏جولائی 23, 2017 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482
    شیخ صالح المنجد حفظہ اللہ فرماتے ہیں:
    توبة الزوج من الذنوب، من أحسن الحلول لإصلاح نشوز زوجته، قال الفضيل بن عياض: "إني لأعصي الله، فأعرف ذلك في خُلُق دابتي وجاريتي". [صيد الخاطر]
    اگر کسی شخص کی بیوی نافرمان ہے تو اس کا بہترین حل یہ ہے کہ شوہر اپنے گناہوں سے توبہ کرے۔ فضیل بن عیاض کا قول ہے۔ "میں کسی معاملے میں اللہ کی نافرمانی کربیٹھتا ہوں تو اس کا اثر اپنی سواری اور اپنی شریک حیات کے رویے میں دیکھتا ہوں۔"
    ترجمہ ناچیز
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
    • مفید مفید x 1
  2. Bilal-Madni

    Bilal-Madni -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 14, 2010
    پیغامات:
    2,466
    نافرمانی بھی ہو سکتی ہے اور ازمائش بھی ہو سکتی ہے نیک بندے پر اللہ کی طرف سے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
    • ظریفانہ ظریفانہ x 1
    • حوصلہ افزا حوصلہ افزا x 1
  3. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482
    جو نیک بندے ہیں وہ تو اس سے اختلاف نہیں کریں گے، عاجزی کی وجہ سے!
    نشوز اور عصیان کا ترجمہ نافرمانی ہوتا ہے اس لیے اسے مترجمہ کی سازش نہ سمجھا جائے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  4. عطاءالرحمن منگلوری

    عطاءالرحمن منگلوری -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏اپریل 9, 2012
    پیغامات:
    1,473
    زوجہ حضرت نوح علیہ السلام اور زوجہ حضرت لوط علیہ السلام کے بارے میں کیا کہیں گے؟ ان کی نافرمانی کے ذمہ دار یا سبب شوہر ہرگز نہ تھے.یہ موصوف کا اپنا تجربہ ہے جو جزوی طور پہ درست ہے.اللہ اصلاح اعمال کی توفیق دے.آمین.
    یہ مراسلہ عمدہ تذکیر ہے.
     
  5. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482
    موضوع شروع کرتے وقت اندازہ تھا کہ بھائی لوگ اس نصیحت کو مشکل سے مانیں گے لیکن یہ توقع نہیں تھی کہ پچھلی تاریخوں میں اپلائے کرنا شروع کر دیں گے۔ یہ اس امت کے مردوں کو نصیحت ہے وہیں تک رہنے دیں۔
     
  6. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482

    "رأيت صلاح المرء يصلح أهله
    ويعديهمُ داءَ الفساد إذا فسد
    ويَشرُف في الدنيا بفضل صلاحه
    ويُحفظ بعد الموت في الأهل والولد"


    میں نے دیکھا ہے کہ آدمی کا نیک ہونا اس کے گھر والوں کے صالح ہونا کا سبب بنتا ہے، اور اگر انسان خود خراب ہو تو خرابی گھر والوں تک پھیل جاتی ہے۔ نیک انسان اس دنیا میں اپنی نیکی کی وجہ سے عزت پاتا ہے اور موت کے بعد اس کے گھر اور اولاد ( کی نیکی) کی وجہ سے اس کی حفاظت ہوتی ہے۔ ​
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  7. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,482
    حقوق مرداں والے جیتے ہم ہارے۔ توپھر عنوان یہ ہو سکتا ہے کہ۔۔۔
    جو اللہ کا نافرمان اس کی گاڑی خراب!
     
  8. Bilal-Madni

    Bilal-Madni -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 14, 2010
    پیغامات:
    2,466
    سیکھنے کی عادت انسان میں ہو تو ہر عمل ردعمل سے انسان سیکھتا ہے اسی میں کامیابی ہے
    اس کا یہ مطلب نہیں کے انسان سیکھنے کیلئے ہر کسی کو تنگ کرتا رہے
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں