آپ کے گھر آپ کے نہیں بلکہ آپ کی بیویوں کے ہیں !

عبد الرحمن یحیی نے 'اسلامی متفرقات' میں ‏اگست 11, 2017 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. عبد الرحمن یحیی

    عبد الرحمن یحیی محسن

    شمولیت:
    ‏نومبر 25, 2011
    پیغامات:
    2,283
    آپ کے گھر آپ کے نہیں بلکہ آپ کی بیویوں کے ہیں !
    السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ
    قرآن کریم سے چند آیات :

    یہ آیت نظر سے گزری :

    " لَا تُخْرِجُوهُنَّ مِنْ بُيُوتِهِنَّ " ﴿1 الطلاق﴾
    ( نہ تم انہیں ان کے گھروں سے نکالو )

    اللہ مالک الملک نے کیوں گھروں عورتوں کی طرف منسوب کیا حالانکہ کہ وہ مردوں کی ملکیت ہوتے ہیں ؟!

    اس چیز نے مجھے ابھارا کہ ایسی آئتیں دیکھیں جائیں جن میں گھروں کو عورتوں کے ساتھ منسلک کیا گیا ہے ، مجھے یہ آئتیں ملیں ، جو عورت کی عزت افزائی ، اس کی قدرومنزلت اور اسلام میں اس کے مقام کے لیے کافی ہیں :

    "وَرَاوَدَتْهُ الَّتِي هُوَ فِي بَيْتِهَا عَنْ نَفْسِهِ "﴿23 يوسف﴾
    (اس عورت نے جس کے گھر میں یوسف تھے، یوسف کو بہلانا پھسلانا شروع کیا کہ وه اپنے نفس کی نگرانی چھوڑ دے)

    عزیز مصر کی بیوی نے سیدنا یوسف علیہ السلام کو بہکانا چاہا اور دعوت گناہ دی ، اس کے باوجود اللہ مالک الملک نے یہ نہیں فرمایا کہ عزیز مصر کی بیوی نے بہکایا یا عزیز مصر کے گھر میں اس کی بیوی نے بہکایا

    "وَاذْكُرْنَ مَا يُتْلَىٰ فِي بُيُوتِكُنَّ مِنْ آيَاتِ اللَّهِ وَالْحِكْمَةِ"﴿34 الأحزاب﴾
    (اور تمہارے گھروں میں اللہ کی جو آیتیں اور رسول کی احادیث پڑھی جاتی ہیں ان کا ذکر کرتی رہو)

    اللہ مالک الملک کی کیا شان ہے ۔ ۔ کیا یہ گھر نبی ﷺ کی ملکیت نہیں ، لیکن انہیں کیوں آپ ﷺ کی ازواج مطہرات سے منسوب کیا ؟!

    اس میں ہر مرد کے لیے ایک پیغام ہے کہ : اگر تم مادی لحاظ سے گھروں کے مالک ہو تو عورت معنوی لحاظ سے گھر کی مالک ہے ، یہ گھر ہی اس کی زندگی ہے ، اس کی مملکت ہے ، تمہیں فکر معاش گھر سے باہر رکھتا ہے ، تمہاری زندگی گھر اور باہر گزرتی ہے ، لیکن عورت کے لیے اس کا گھر ہی اس کی پناہ گاہ اور اس کا محافظ ہے ، اگرچہ وہ بھی گھر سے باہر نکلتی ہے لیکن یہ بات ثانوی امور کی حیثیت رکھتی ہے ، جہاں تک گھر کی بات ہے تو یہ عورت کو عزت ، حفاظت ، اہمیت اور مرتبہ و مقام دیتا ہے ۔ گھر انسان کے لیے امن و امان کا مصدر ہے اور اللہ مالک الملک نے گھر کو عورت کے ساتھ منسوب کیا ہے


    لَا تُخْرِجُوهُنَّ مِنْ بُيُوتِهِنَّ ﴿1 الطلاق﴾
    ( نہ تم انہیں ان کے گھروں سے نکالو)

    حتی کہ آپس میں اختلاف کے وقت اور جب لڑائی شدت پکڑ جائے اور بات طلاق رجعی تک پہنچ جائے ، یہ گھر اُس کا گھر ہے ، اُس پر ظلم کرنے سے بچیں ، اس کی بےعزتی نہ کریں ، اسے دھتکاریں مت ، اس کے جذبات کو ٹھیس مت پہنچائیں ، اسے بے کس اور بے بس ثابت مت کریں
    کہ وہ اس گھر میں فقط مہمان ہے جب چاہا گھر سے نکال دیا
    یاد رکھیں آپ مادی لحاظ سے گھر کے مالک ہیں اور اللہ مالک الملک نے عورت کو معنوی لحاظ سے گھر کی مالک بنایا ہے

    اور اے میری بہن !
    اپنے گھر میں رہو اور قرار پکڑو
    ضد ، ہٹ دھرمی اور طمع و لالچ کے ساتھ نہیں
    بلکہ پیار و محبت کے ساتھ رہو اور اس احساس کے ساتھ کہ اس گھر کو اللہ مالک الملک نے آپ کے ساتھ منسوب کیا ہے

    اپنے گھروں میں رہو آپ کا گھر ہی آپ کی اولین ترجیح ہونا چاہیئے
    اپنے گھروں میں رہو ، اور اللہ کا شکر کرتی رہو ، جس نے عورت کو یہ عزت اور مرتبہ و مقام دیا


    ایک آیت باقی رہ گئی کہ ازدواجی زندگی میں جس میں گھر کو عورت کی طرف منسوب نہیں کیا گیا :

    "واللاتي يأتين الفاحشة من نسائكم فاستشهدوا عليهن أربعة منكم فإن شهدوا فأمسكوهن في البيوت '' ﴿١٥﴾ سورة النساء
    (تمہاری عورتوں میں سے جو بے حیائی کا کام کریں ان پر اپنے میں سے چار گواه طلب کرو، اگر وه گواہی دیں تو ان عورتوں کو گھروں میں قید رکھو)

    ہمارا دین کتنا پیارا دین ہے ، جو لوگ کہتے ہیں کہ اسلام عورتوں پر ظلم کرتا ہے
    اگر وہ انصاف اور دیانتداری سے کام لیں تو وہ بھی یہ اعلان کرنے پر مجبور ہوجائیں گے کہ اسلام ہی نے عورت کو عزت اور مقام دیا ہے ۔

    منقول
    ( اصل مضمون عربی میں تھا ، افادہ عام کے لیے اردو زبان میں ترجمہ کیا گیا ہے )
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 5
    • متفق متفق x 1
    • اعلی اعلی x 1
    • تخلیقی تخلیقی x 1
  2. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    6,661
    جزاک اللہ خیرا
    عمدہ۔
     
  3. مقبول احمد سلفی

    مقبول احمد سلفی ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏اگست 11, 2015
    پیغامات:
    480
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  4. ابو ابراهيم

    ابو ابراهيم -: رکن مکتبہ اسلامیہ :-

    شمولیت:
    ‏مئی 11, 2009
    پیغامات:
    3,838
    جزاک اللہ خیرا
     
  5. عطاءالرحمن منگلوری

    عطاءالرحمن منگلوری -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏اپریل 9, 2012
    پیغامات:
    1,392
    عورت ہی تو گھر کی ملکہ ہوتی ہے..مرد چاہے بادشاہ بنے یا نہ بنے..
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  6. اظہر عطاء

    اظہر عطاء رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏ستمبر 2, 2016
    پیغامات:
    7
    بہت خوب لکھا ہے آپ نے
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  7. کنعان

    کنعان محسن

    شمولیت:
    ‏مئی 18, 2009
    پیغامات:
    2,693
    السلام علیکم


    أَسْكِنُوهُنَّ مِنْ حَيْثُ سَكَنتُم مِّن وُجْدِكُمْتم
    تم اُن (مطلّقہ) عورتوں کو وہیں رکھو جہاں تم اپنی وسعت کے مطابق رہتے ہو
    الطلاق 65، آیت 6

    ایک فورمی دوست فاروق سرور خان اہل قرآن یا شائد جن کے خیالات غامدی صاحب سے ملتے جلتے ہیں چند سال پہلے ان کے ساتھ اس پر بحث ہو چکی ہے، شائد یحیی صاحب کی نظروں سے ان کی تحریر گزری ہو،

    جنہیں پروناؤن چارٹ سے واقفیت ہے ان کے لئے اسے سمجھنا مشکل نہیں ہو گا۔

    والسلام
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں