مروجہ چھ کلموں کی حقیقت و تحقیق

ابوعکاشہ نے 'غیر اسلامی افکار و نظریات' میں ‏جنوری 27, 2018 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,234
    مروجہ چھ کلموں کی حقیقت و تحقیق

    تحریر کس کی ہے. معلوم نہیں. افادہ عام کی خاطر اسے نقل کیا جا رہا ہے.

    أَعُوذُ بِاللهِ مِنَ الشَّيْطَانِ الرَّجِيمِبِ
    سمِ اللہِ الرحمٰنِ الرحِیمّ
    برصغیر پاک وہند میں شش کلمےکےنام سےچند دعائیہ کلمات اور تسبیحات بہت پابندی سےبچوں کو یاد کروائےجاتےہیں-
    اس تحریر میں ہم آپکےسامنےان کلمات کی حقیقت بیان کرنےکی کوشش کریں گے-

    چھ کلمےجو معروف ہیں-
    پہلا کلمہ طیب
    لَآ اِلٰهَ اِلَّا اﷲُ مُحَمَّدٌ رَّسُوْلُ اﷲِ•
    ترجمہ!!!
    "اللہ کےسوا کوئی عبادت کےلائق نہیں-
    محمد (صلی اللہ علیہ وسلم) اللہ کےرسول ہیں-"
    یہ کلمہ احادیث مبارکہ سےثابت ہے-
    سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتےہیں- کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نےفرمایا:-
    " اللہ تعالیٰ نےاپنی کتاب میں تکبر کرنےوالی ایک قوم کا ذکر کیا ہے-
    یقیناجب انہیں
    لاالہ الااللہ کہاجاتا ہے- تو تکبر کرتےہیں-
    اور اللہ تعالیٰ نےفرمایا:-
    "جب کفر کرنےوالوں نےاپنےدلوں میں جاہلیت والی ضد رکھی- تو اللہ نےاپنا سکون و اطمینان اپنےرسول اور مومنوں پر اتارا- اور انکےلئے کلمة التقوی کو لازم قرار دیا- اور اسکےزیادہ مستحق اور اہل تھے-"
    اور وہ (کلمة التقوی) ہے-
    " لّا إِلَهَ إِلاَّ اللَّهُ مُحَمَّدٌ رَسُولُ اللهِ"
    حدیبیہ والےدن جب رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نےمدت (مقرر کرنے) والےفیصلےمیں مشرکین سےمعاہدہ کیاتھا- تو مشرکین نےاس کلمہ سےتکبر کیا تھا-
    (کتاب الاسماء والصفات للبیہقی-جلد نمبر 1صفحہ نمبر:263حدیث نمبر:195۔ ناشر:مکتبة السوادی، جدة ،الطبعة الأولی)
    یہ حدیث بالکل صحیح ہے- اسکی سندکے سارےراوی سچےاورقابل اعتماد ہیں-


    دوسرا کلمہ شہادت کہاجاتا ہے-
    جو ایمان کا لفظی اقرار ہے-
    " اَشْهَدُ اَنْ لاَّ اِلٰهَ اِلاَّ اﷲُ وَحْدَهُ لَا شَرِيْکَ لَهُ، وَاَشْهَدُ اَنَّ مُحَمَّدًا عَبْدُهُ وَرَسُوْلُهُ•"
    یہ کلمہ الفاظ کمی بیشی کےساتھ احادیث سےثابت ہے- اور احادیث میں اسکو پڑھنےکی بہت فضیلت بیان کی گئی ہے-
    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نےفرمایا-
    "جو شخص دن بھر میں سو مرتبہ یہ دعا پڑھےگا-"
    " لا إله إلا الله وحده لا شريك له،‏‏‏‏ له الملك،‏‏‏‏ وله الحمد،‏‏‏‏ وهو على كل شىء قدير‏•"
    ترجمہ!!!
    "نہیں ہےکوئی معبود، سوا اللہ تعالیٰ کے، اسکا کوئی شریک نہیں، ملک اسی کا ہے- اور تمام تعریف اسی کےلیےہے- اور وہ ہر چیز پر قادر ہے-"
    تو پڑھنےوالےکو دس غلام آزاد کرنےکےبرابر ثواب ملےگا- سو نیکیاں اسکےنامہ اعمال میں لکھی جائیں گی- اور سو برائیاں اس سےمٹا دی جائیں گی- اس روز دن بھر یہ دعا شیطان سےاسکی حفاظت کرتی رہےگی- تاوقتکہ شام ہوجائے-
    اور کوئی شخص اس سےبہتر عمل لےکر نہ آئےگا- مگر جو اس سےبھی زیادہ یہ کلمہ پڑھ لے-
    (بخاری-3293)

    تیسرا کلمہ تمجید کےنام سےمنسوب کیاجاتا ہے-
    سُبْحَانَ ﷲِ، وَالْحَمْد ﷲِ، وَلَآ اِلٰهَ اِلَّااللہُ، وَﷲُ اَکْبَرُ، وَلَا حَوْلَ وَلَا قُوَّةَ اِلَّا بِاﷲِ الْعَلِيِ الْعَظِيْمِ•"
    یہ الفاظ دو الگ الگ مقام پر دو مختلف احادیث میں آئےہیں-
    سیدنا ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سےروایت ہے-
    نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نےفرمایا-
    میں یہ کلمات کہوں-
    سبحان اللہ، الحمداللہ، لاالہ الااللہ، اللہ اکبر•
    تو یہ میرےنزدیک ان سب اشیا سےزیادہ محبوب ہیں- جن سورج طلوع ہوتا ہے-
    (یعنی ساری دنیا سےزیادہ محبوب)
    (صحیح مسلم)
    سیدنا ابوموسیٰ اشعری رضی اللہ عنہ سےروایت ہے- کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نےفرمایا-
    "اےعبداللہ بن قیس کلمہ
    لاحول ولا قوۃ الا بااللہ
    کہا کرو- کیونکہ یہ جنت کےخزانوں میں سےایک خزانہ ہے-"
    (بخاری ، مسلم)

    چوتھا کلمہ جس کو توحید کہاجاتا ہے-
    لَآ اِلٰهَ اِلاَّ ﷲُ وَحْدَهُ لَاشَرِيْکَ لَهُ، لَهُ الْمُلْکُ وَلَهُ الْحَمْدُ، يُحْی وَيُمِيْتُ، وَهُوَ حَيٌّ لَّا يَمُوْتُ اَبَدًا اَبَدًا، ذُوالْجَلَالِ وَالْاِکْرَامِ، بِيَدِهِ الْخَيْرُ، وَهُوَعَلٰی کُلِّ شَيْئٍ قَدِيْر•
    ان میں سےبعض الفاظ قرآن و حدیث کےضرور ہیں- مگر یہ کلمات اس ترتیب کےساتھ ثابت نہیں ہیں-

    پانچواں کلمہ اِستغفار
    اَسْتَغْفِرُ ﷲَ رَبِّيْ مِنْ کُلِّ ذَنْبٍ اَذْنَبْتُهُ عَمَدًا اَوْ خَطَاً سِرًّا اَوْ عَلَانِيَةً وَّاَتُوْبُ اِلَيْهِ مِنَ الذَّنْبِ الَّذِيْ اَعْلَمُ وَمِنَ الذَّنْبِ الَّذِيْ لَآ اَعْلَمُ، اِنَّکَ اَنْتَ عَلَّامُ الْغُيُوْبِ وَسَتَّارُ الْعُيُوْبِ وَغَفَّارُ الذُّنُوْبِ وَلَاحَوْلَ وَلَا قُوَّةَ اِلَّا بِاﷲِ الْعَلِيِّ الْعَظِيْمِ-
    یہ الفاظ اس ترتیب کےساتھ قرآن وحدیث میں کہیں بھی مذکور نہیں ہیں-

    چھٹا کلمہ ردِِّ کفر
    اَللّٰهُمَّ اِنِّيْ اَعُوْذُ بِکَ مِنْ اَنْ اُشْرِکَ بِکَ شَيْئًا وَّاَنَا اَعْلَمُ بِهِ وَاَسْتَغْفِرُکَ لِمَا لَآ اَعْلَمُ بِهِ تُبْتُ عَنْهُ وَتَبَرَّاْتُ مِنَ الْکُفْرِ وَالشِّرْکِ وَالْکِذْبِ وَالْغِيْبَةِ وَالْبِدْعَةِ وَالنَّمِيْمَةِ وَالْفَوَاحِشِ وَالْبُهْتَانِ وَالْمَعَاصِيْ کُلِّهَا وَاَسْلَمْتُ وَاَقُوْلُ، لَآ اِلٰهَ اِلَّا اﷲُ مُحَمَّدٌ رَّسُوْلُ اﷲِ-"
    یہ دعائیہ کلمات ہیں- لیکن قرآن و حدیث سےثابت نہیں- اِن کا مصدر نامعلوم ہے-

    تحریر کا خلاصہ یہ ہے-
    کہ چھ کلموں کو برصغیر میں علماء نےمشہور کیا ہے- کیونکہ عوام عربی سےناواقف تھے- لہذا انکو مختصر الفاظ میں دعائیں سکھا دیں-
    لیکن ان پر دوام اور سختی سےعمل پیرا ہونےکا ایک نقصان یہ بھی ہوا- کہ جس طرح سورہ یٰس کی فضیلت میں غلو سےکام لیا گیا-
    بدعات ایجاد کی گئیں-
    نتیجۃً سورة البقرۃ اور سورة الکہف جیسی افضل سورۃ کو لوگوں نےنظر انداز کیا- اور ثابت شدہ فضائل سےبھی محروم ہوگئے-
    بلکل اسی طرح یہ مجوزہ چھ کلمےیاد کروانےمیں شدت اور فضیلت میں غلو سےکام لیا گیا- کہ ہمارےبچوں کی اکثریت سیدالاستغفار اور صبح شام کےمسنون اذکار سےمحروم ہو گئی-
    ان میں سےزیادہ تر صرف عربی میں بعض قرانی الفاظ پر مشتمل الله کی تعریف پر منبی کلمات ہیں- جن کا کوئی شرعی ثبوت مذکورہ ترتیب اور مذکورہ اسماء کےساتھ نہیں ملتا- انکو جو یاد نہ کرےُ- اس پر کوئی عیب نہیں-
    اور جو حدیث میں موجود نبی کریم صلی الله علیہ وسلم کی دعائیں یاد کرےُ- تو وہ بھی بہتر ہے- کلمات میں جو الفاظ و دعائیں ہیں- ان میں سےجو حدیث میں موجود ہیں- اور نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سےثابت ہیں- انکو یاد کر سکتےہیں-
    لوگوں میں یہ چیز باور کرائی جارہی ہے-
    کہ نعوذ باللہ جس کو یہ چھہ کلمےیاد نہیں- اسکا ایمان کمزور ہے-
    کلمےیاد ہونا یا نہ ہونا ایمان کا پیمانہ نہیں- نہ ہی اسکی کوئی اضافی فضیلت ہے-
    مسنون کلمات کو اکٹھا کر کےایک مجموعہ بنا دینےپر دو مؤقف ہوسکتےہیں- لیکن اسکو عوام پر تھوپ دینا نری جہالت کےعلاوہ کچھ نہیں-

    نوٹ:-
    واضح رہے- کہ یہ ترتیب اور تعداد احادیث سےکسی طور پر ثابت نہیں ہیں. واللہ اعلم
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 3
  2. ابو حسن

    ابو حسن رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏جنوری 21, 2018
    پیغامات:
    360
    یہ پوسٹ کافی عرصہ پہلے فیس بک پر "ضعیف احادیث و موضوع روایات " کے پیج والوں نے بناکر شیئر کی تھی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
    • معلوماتی معلوماتی x 1
  3. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,291
    بھائی ہمارے ہاں یعنی انڈیا پاکستان میں تو چھ کلمے سنائے بغیر نکاح بھی نہیں ہوتا ;)
     
    • ظریفانہ ظریفانہ x 1
    • دلچسپ دلچسپ x 1
  4. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,234
    شکریہ. تو کیا اس موضوع کو حذف کردیا جائے؟ اصول یہی ہے.
    اور سورۃ الکہف کی اتنی فضیلت ہے اس کی پہلی دس آیات جمعہ والے دن پڑھنی چاہیں. جو کہ ثابت ہے. پوری سورت کی نہیں
     
    • مفید مفید x 1
  5. ابو حسن

    ابو حسن رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏جنوری 21, 2018
    پیغامات:
    360
    آپ نے سنائے تھے ؟ ;) یا وہابی بن گئے تھے ;)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  6. ابو حسن

    ابو حسن رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏جنوری 21, 2018
    پیغامات:
    360
    اسکو رہنے دیا جائے تاکہ عوام الناس کے علم میں اضافہ کا ذریعہ بنے
     
  7. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,291
    پہلے تین تک سنائے اور اگلے تین قاضی صاحب نے پڑھائے :LOL:
     
    • ظریفانہ ظریفانہ x 2
  8. ابو حسن

    ابو حسن رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏جنوری 21, 2018
    پیغامات:
    360
    آپ نے قاضی صاحب سے یہ نہیں کہا کہ

    قاضی صاحب جب آپکو کلمے آتے نہیں تو ہر دلہے سے سن کر سیکھنے کی کوشش کیوں کر رہے ہیں ؟:LOL: ایک ہی بار کیوں نہیں یاد کر لیتے ؟:LOL:
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  9. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,291
    ہہہہہہ ان کو مسلمانی چیک کرنا ہوتی ہے شکر ہے بات کلموں تک ہی رہتی ہے;)
     
    • ظریفانہ ظریفانہ x 1
  10. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,234
    سبحان اللہ. عجیب بات ہے.، چھ کلمے نا ہوئے پی ایچ ڈی کی ڈگری ہو گئی. جس کو حاصل کیے بغیر نکاح نہیں ہوتا. افسوس..
     
    • متفق متفق x 1
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں