داعش کی پے در پے شکستوں کا سلسلہ جاری

Fawad نے 'حالاتِ حاضرہ' میں ‏مارچ 26, 2018 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. Fawad

    Fawad -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 19, 2007
    پیغامات:
    928
    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ


    افغانستان ميں داعش کی شکست اور ان کے خفيہ ٹھکانوں کا صفايا جاری

    ننگرہار صوبے ميں داعش کے اہم مرکز کی تبائ۔

    https://www.khaama.com/isis-command-and-control-center-comes-under-airstrike-in-nangarhar-04651/

    افغانستان کی وزارت دفاع نے اپنے بيان ميں کہا کہ ضلع آچن ميں فضائ بمباری سے دہشت گرد گروہ کے مواصلاتی نظام کا خاتمہ کر ديا گيا ہے۔

    داعش کے خلاف اتحادی مہم کاميابی سے جاری ہے۔ داعش قريب 98 فيصد علاقے پر اپنا اثر کھو چکی ہے۔ علاوہ ازيں قريب 7۔7 ملين افراد پر مبنی انسانی آبادی اب داعش کے عتاب سے آزاد ہو چکی ہے۔

    جب تک داعش ايک عالمی خطرے کے طور پر موجود رہے گی، امريکی حکومت اپنے علاقائ اور عالمی اتحاديوں اور شراکت داروں کے ساتھ مل کر اپنی پيش قدمی جاری رکھے گی اور جہاں بھی دہشت گردی کا نيٹ ورک فعال ہو گا، ان کے خلاف تاديبی کاروائ کی جاۓ گی۔

    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    digitaloutreach@state.gov

    www.state.gov

    https://twitter.com/USDOSDOT_Urdu

    http://www.facebook.com/USDOTUrdu

    https://www.instagram.com/doturdu/

    https://www.flickr.com/photos/usdoturdu/
     
  2. Fawad

    Fawad -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 19, 2007
    پیغامات:
    928
    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    عراق اور شام ميں داعش کی سرکردہ قيادت کے خلاف عالمی اتحاد کی حاليہ اہم ترين کاميابيوں کے علاوہ دہشت گرد تنظيموں کے معاشی وسائل اور ان تک مالی امداد کی ترسيل روکنے کے ليے بھی انتہائ اہم اقدامات کيے گۓ ہيں۔

    اب سے کچھ عرصہ قبل تک يہ دعوی کيا جاتا رہا ہے کہ داعش دنيا کی ديگر تمام دہشت گرد تنظيموں کے مقابلے ميں زيادہ وسائل سے مالا مال ہے۔ تاہم اب صورت حال يکسر بدل چکی ہے۔

    داعش نے تيل کے جن کنوؤں اور ذخائر پر قبضہ جما رکھا تھا، ان کو غير فعال کرنے کے ليے عالمی اتحاد کی جانب سے تسلسل کے ساتھ کوششيں کی گئ ہيں اور ان کوششوں ميں امريکی بمباری کا کليدی کردار رہا ہے۔

    ستمبر 2014 ميں امريکہ کی جانب سے داعش کے تيل کے ذخيرے پر پہلا بڑا حملہ کيا گيا تھا۔

    مئ 2015 ميں امريکی کمانڈوز نے داعش کے تيل کے کاروبار کے منتظم کو گرفتار کرنے کے ليے رات کی تاريکی ميں شام کی سرحد کو عبور کر کے اہم کاروائ کی۔ ابو سيف اس کاروائ کے دوران ہلاک ہو گيا تاہم اس کے ذاتی سامان اور خط وکتابت سے جو معلومات حاصل ہوئيں، ان سے عالمی اتحاد کو مزيد کاروائيوں کے ليے اہم ٹھکانوں کا پتہ چل گيا۔

    سال 2016 ميں داعش کے زير انتظام تيل کے قريب 600 ذخائر پر حملے کيے گۓ جن ميں سے نصف مشرقی شام ميں تھے جہاں سے تيل کی پيداوار کے ذريعے داعش اپنی دہشت گرد کاروائيوں کے ليے مالی وسائل حاصل کرتی تھی۔ عالمی اتحاد کی جانب سے ان کاروائيوں ميں 900 کے قريب ٹرکوں کو بھی نشانہ بنايا گيا۔

    سال 2017 کے پہلے چھ ماہ کے دوران اتحادی افواج کی جانب سے داعش کے زير اثر تيل کے ذخائر پر مجموعی طور پر 1500 حملے کيے گۓ جن ميں 358 ٹرک بھی تباہ کيے گۓ۔

    داعش کے تيل کے کاروبار پر سب سے کاری ضرب جون 2017 ميں لگی جب صرف ايک ماہ کے دوران تيل کے وسائل پر 363 حملے کيے گۓ۔ موسم گرما کے دوران ان کاروائيوں ميں مزيد تيزی ديکھنے ميں آئ اور جولائ 2017 ميں 655 حملے کيے گۓ۔

    مجموعی طور پر سال 2017 کے دوران داعش کے زير انتظام 500 کے قريب ٹرک اور تيل کے ذخائر مکمل طور پر تباہ کر ديے گۓ۔


    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    digitaloutreach@state.gov

    www.state.gov

    https://twitter.com/USDOSDOT_Urdu

    http://www.facebook.com/USDOTUrdu

    https://www.instagram.com/doturdu/

    https://www.flickr.com/photos/usdoturdu/
     
  3. Fawad

    Fawad -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏دسمبر 19, 2007
    پیغامات:
    928
    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ


    https://www.almasdarnews.com/articl...iraq-border-to-euphrates-river-in-deir-ezzor/

    مقامی مزاحمت اور اتحادی افواج کے ہاتھوں داعش کا خاتمہ جاری۔

    سيرين ڈيمرکريٹک فورسز (ايس ڈی ايف) کی تازہ کاروائ کے بعد ايک اہم ترين قصبے کو دہشت گرد گروہ کی گرفت سے آزاد کروا ليا گيا ہے جس کے بعد داعش کے ہاتھوں سے درياۓ فرات سے عراقی سرحد تک رسائ کا آخری راستہ اور وسيلہ بھی چلا گيا ہے۔

    داعش کے خلاف اتحادی مہم کاميابی سے جاری ہے۔ ستمبر 2014 سے اب تک داعش عراق اور شام ميں مجموعی طور پر 107،575 کلوميٹر تک رقبے پر اپنا اثر ورسوخ اور اثر کھو چکی ہے۔

    علاوہ ازيں قريب 7۔7 ملين افراد پر مبنی انسانی آبادی اب داعش کے عتاب سے آزاد ہو چکی ہے۔

    جب تک داعش ايک عالمی خطرے کے طور پر موجود رہے گی، امريکی حکومت اپنے علاقائ اور عالمی اتحاديوں اور شراکت داروں کے ساتھ مل کر اپنی پيش قدمی جاری رکھے گی اور جہاں بھی دہشت گردی کا نيٹ ورک فعال ہو گا، ان کے خلاف تاديبی کاروائ کی جاۓ گی۔


    فواد – ڈيجيٹل آؤٹ ريچ ٹيم – يو ايس اسٹيٹ ڈيپارٹمينٹ

    digitaloutreach@state.gov

    www.state.gov

    https://twitter.com/USDOSDOT_Urdu

    http://www.facebook.com/USDOTUrdu

    https://www.instagram.com/doturdu/

    https://www.flickr.com/photos/usdoturdu/
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں