سعودیہ اور عالم عرب پہ ہمارے لفظوں کے تازیانے

ابوعکاشہ نے 'حالاتِ حاضرہ' میں ‏اپریل 4, 2018 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,217
    سعودیہ اور عالم عرب پہ ہمارے لفظوں کے تازیانے

    ( ابوعکاشہ)
    اس موضوع کو شروع کرنے کا مقصد کسی خاص ملک، اس کے حکمران یا ان کی غلطی و کوتاہیوں کا دفاع کرنا یا وضاحتیں پیش کرنا نہیں. بلکہ حقائق سے پردہ اٹھانا ہے.جہاں اللہ کی نافرمانی میں مخلوق کی اطاعت و حمایت جایز نہیں. وہاں ہم پر یہ بھی واجب ہے کہ لوگوں کے ساتھ نیکی، تقوی، بھلائی کے کاموں میں تعاون کریں. اگر وہ کسی کی دشمنی و گناہ، شکوک و شبہات ، تساہل پر آمادہ ہوں تو لوگوں کو ان کے شر و فتنہ سے آگاہ کریں.
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  2. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,217
    تحریر عنوان بشکریہ.. عزیز احمد

    کچھ لوگ واقعی واقعی بہت بڑے ٹھرکی ہوتے ہیں، جملوں کو توڑ مروڑ کے پیش کرنا ایک تو ان کی سب سے بڑی خصوصیت ہے، دوسری بات ان کو اپنے ملک سے زیادہ دوسرے ملک کی چنتا ہوتی ہے، شاید جب تک لیبیا کی طرح اسے بھی تباہ نہ کرادیں، چین سے نہ بیٹھیں.

    خیر عرض یہ ہے کہ محمد بن سلمان نے یہ جملہ کہا ہی نہیں تھا، جو آپ نے کہا ہے، اخباروں نے جو لکھا وہ واشنگٹن پوسٹ کو Quote کرتے ہوئے لکھا ہے جس کی حقیقت کیا ہے ایک لنک دے رہا ہوں، دل تھام کے پڑھ لیجئے گا.

    Debunked: West demanded spread of Wahabism said Crown Prince

    دوسری بات، محمد بن سلمان کی جو بات اخباروں نے اپنی سرخی بنائی وہ کچھ اس طرح تھی کہ “مغرب کے ایماء پہ وہابی ازم کو پھیلایا گیا”، اب جناب والا ٹھرکی صاحب نے اس جملے کو اس طرح لیا کہ وہابیت مغرب کی پیداوار ہے، پہلے تو یہ جملہ شہزادے نے کہی نہیں، جیسا کہ اوپر کی لنک سے ظاہر ہے، لیکن اگر کہا بھی ہو تو اس کا پورا انٹرویو پھر سے پڑھیے، اور کس سینس میں کہا ہے اس کو بھی پڑھیے، اگر کچھ سمجھ میں آئے تو ٹھیک ہے، اور نہ آئے تو پھر کیا ہے، نکالتے رہیے بھڑاس.

    شہزادے نے کبھی نہیں کہا ہے کہ وہابیت مغرب کی پیداوار ہے، اور جو واشنگنٹن پوسٹ وغیرہ نے پیش کیا ہے اس میں بھی نہیں کہا گیا ہے کہ وہابیت مغرب کی پیداوار ہے، بلکہ یہ لکھا گیا ہے کہ وہابیت کو مغرب کے ایماء پہ پھیلایا گیا ہے، پھیلانا اور پیداوار قرار دینا دو الگ الگ چیزیں ہیں، اور دونوں کو ایک قرار دینا حد درجہ جہالت ہے، اور پھیلانے کا ریزن بھی شہزادے نے بتایا ہے کہ مغرب اسلامی ممالک میں سوویت یونین کے انکروچمنٹ سے ڈر رہا تھا، اس کے کمیونزم کی بڑھتی ہوئی مقبولیت اس کے کیپٹلزم کے لئے خطرے کی گھنٹی تھی، اس لیے مغرب نے سعودیہ کو اپنے افکار و نظریات پھیلانے کے لیے فری ہینڈ دے دیا، اور اسی کا اعتراف ایک کتاب Jihad and International Security میں بھی کیا گیا ہے کہ سعودیہ نے یوروپین ممالک میں مساجد و اسلامک و سینٹرز پہ بے اتھاہ پیسہ خرچ کیا ہے، اور یہ ممکن نہیں تھا اگر مغربی ممالک نہ چاہتے، خود امریکہ میں سعودیہ نے سوفٹ پاور کس طریقے سے استعمال کیا ہے وہ واقعی قابل دید و قابل تعریف ہے.

    مزید یہ کہ اسرائیل کے تعلق سے جو خبر گردش کر رہی ہے، اس کی بھی سرخی حقیقت نہیں ہے، شاہزادے نے کیا کہا ہے، لیجیے اسے پڑھ لیجیے.
    ایک معقد سوال کے جواب میں بن سلمان نے کہا:


    “محمد بن سلمان: أعتقد عمومًا أن كل شعب، في أي مكان، له الحق في العيش في بلده المسالم. أعتقد أن الفلسطينيين والإسرائيليين لهم الحق في امتلاك أرضهم الخاصة. لكن يجب أن يكون لدينا اتفاق سلام عادل ومُنصف لضمان الاستقرار للجميع ولإقامة علاقات طبيعية بين الشعوب.”

    “میں اس بات کا اعتقاد رکھتا ہوں کہ فلسطینی اور اسرائیلی دونوں کو اپنی خاص زمینوں کی ملکیت کا حق ہے، لیکن اس کے لیے واجب اور ضروری ہے کہ ہمارے پاس عادلانہ و منصفانہ ایگریمنٹ ہو جو تمام لوگوں کے استقرار کا ضامن ہوسکے، تاکہ مختلف قوموں کے درمیان طبعی تعلقات قائم ہوسکیں”

    اس میں غلط کیا ہے، عربوں کو پتہ ہے کہ اسرائیل کو بے دخل کرنا آسان نہیں ہے، ایسے ہی جیسے کہ کشمیر سے بھارت کو بے دخل کرنا ممکن نہیں ہے، کیونکہ عرب اس پوزیشن میں بالکل نہیں ہیں کہ اسرائیلیوں سے دو بدو جنگ کر سکیں، اس کا حل صرف اور صرف مہلت ہے جو کہ بات چیت اور Peaceful Settlement کے ذریعہ ہی ممکن ہے.

    ان تمام جسٹیفکیشن کے باوجود بھی میرا محمد بن سلمان سے متفق ہونا ضروری نہیں، میں نے یہ سب باتیں اس وجہ سے لکھ دیں کہ تصویر کا دوسرا رخ بھی لوگوں کے سامنے آنا ضروری ہے، ایسا نہ ہو کہ صرف ایک ہی قسم کی باتیں سن سن کے ان کے غلط ہونے کا گمان یقین میں بدل جائے.

    آخری بات، بر صغیر کے لوگوں کو سعودیہ سے زیادہ اپنے ملک پہ دھیان دینے کی ضرورت ہے، سعودیہ کے ساتھ جو ہونا ہے، وہ ہوکر رہے گا، اس کے ذمہ دار وہاں کے افراد، وہاں کے ارکان اور وہیں کی حکومت ہوگی، لیکن برصغیر کے مسلمانوں کے ساتھ جو کچھ ہو رہا ہے، اس کے ذمہ دار ہم ہیں، کشمیریوں کے ساتھ اتنے دن سے ظلم ہو رہا ہے مگر ہماری اتنی بھی مجال نہیں ہے کہ ہم اس پہ خامہ فرسائی کرسکیں، صرف اسی ڈر کی وجہ سے کہ مبادا کہیں ہم پہ حکومت کی گاج نہ گر جائے، لیکن سعودیہ اور عالم عرب پہ ہمارے لفظوں کے تازیانے ہمیشہ برستے رہتے ہیں، کیونکہ ہمیں اپنی بزدلی چھپانے کے لیے کوئی چیز چاہیے جسے ہم متہم کر سکیں، اور جس پہ اپنے دل کی بھڑاس نکال سکیں.

    (نوٹ. Tribune نے وہابی ازم کے پھیلاؤ کے تعلق سے جو سرخی لگائی تھی وہ کچھ یوں تھی.
    Wahhabism was spread at behest of West during Cold War: Mohammed bin Salman
    اور اس کا لنک یہ ہے
    https://tribune.com.pk/story/ 1672777/3-wahhabism- spread-behest-west-cold- war-mohammed-bin-salman/”
    لیکن بھلا ہو تحریکیوں کا کہ اس کا ترجمہ انھوں نے کچھ یوں کیا کہ محمد بن سلمان نے کہا ہے وہابی ازم مغرب کی پیداوار ہے)
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  3. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,217
    سعودی ولی عہد کا دورہ امریکہ اور میڈیا پروپیگنڈہ !

    سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان سے متعلق کچھ کنٹروسیز پچھلے کئی ماہ سے میڈیا میں گردش کرتی رہی ہیں،ان کی طرف منسوب بیانات اور باتوں میں سے زیادہ تر بے بنیاد،پروپیگنڈہ اور سیاق و سباق سے ہٹا کر پیش کرنے کے علاوہ کچھ نہیں ہے.
    چند ماہ پہلے محمد بن سلمان سے متعلق امریکی اخبار وال اسٹریٹ جرنل نے یہ افواہ پھیلائی کہ شہزادے نے نیویارک کے نیلم گھر سے اطالوی آرٹسٹ لیونارڈو ڈاونچی کی بنائی 500 سالہ قدیم حضرت عیسی کی تصویر 45 ارب ڈالر میں خرید لی ہے،اس خبر کو بی بی سی سمیت دنیا بھر کے اخبارات اور ٹی وی چینل اور سوشل میڈیا نے مرچ مسالہ لگا کر خوب اچھالا،امریکہ میں قائم سعودی سفارتخانے نے سختی سے اس خبر کی تردید کردی اور اسے سعودی عرب کے خلاف پروپیگنڈہ قرار دے دیا.
    سعودی سفارتخانے کی تردید کے بعد نیویارک ٹائمز اور برطانوی جریدے ٹیلیگراف نے دعوی کیا کہ تصویر محمد بن سلمان نے نہیں بلکہ ایک اور شہزادہ بندر بن عبداللہ نے خرید لی ہے،شہزادہ بندر نے اپنے آفیشل ٹیوٹر اکاؤنٹ سے اس خبر کی تردید کردی،یہ پروپیگنڈہ جاری تھا کہ فرانس کے لوور میوزیم کی ابو ظبی میں کھلنے والی شاخ نے اپنے ٹوئٹر پر اعلان کیا کہ یہ پینٹنگ ان کے پاس ہے اور ابو ظبی کے میوزیم میں نمائش کے لیے رکھی جائے گی.
    ان دنوں محمد بن سلمان امریکہ کے دورے پر ہیں،وہاں انہوں نے مختلف اخبارات اور صحافیوں کو انٹرویوز دیے ان انٹرویوز میں سے واشنگٹن پوسٹ کو دیا انٹرویو اور جریدہ ایٹلانٹک کے صحافی جیفری گوڈلڈ بیرگ کو دیا انٹرویو کافی متنازعہ بنا کہ ہر دو میں وہابیت کے بارے سخت سوالات تھے.
    واشنگٹن پوسٹ کے ساتھ انہوں نے جو بات کی تھی اسے سیاق و سباق سے ہٹا کر غلط رنگ دیا گیا،محمد بن سلمان سے سوال یہ ہوا تھا کہ دنیا بھر میں سعودی عرب شدت پسندوں کو مالی امداد دیتا ہے،جواب میں ولی عہد کا کہنا تھا یہ فنڈنگ آپ کے کہنے پر ہی ہو رہی تھی محمد بن سلمان کا اشارہ سویت یونین کے خلاف جنگ کے دوران (امریکی اسلحہ،پاکستانی بندہ اور سعودی چندہ کی طرف تھا)یہ جواب ایسا ہی تھا جب امریکہ ہمیں طالبان کا طعنہ دیتا ہے تو ہم کہتے ہیں جناب طالبان تو تمہارے پیارے تھے،انہیں وائٹ ہاؤس بلا کر ایوارڈز تم نے دیے تھے،محمد بن سلمان نے بھی وہی الزامی جواب امریکہ کو دیا ہے.
    ایٹلانٹک کے صحافی جیفری گوڈلڈ بیرگ کے ساتھ تو شہزادے کا انٹرویو نوک جھونک ٹائپ کا رہا،وہابیت سے متعلق سوالات اور جوابات ملاحظہ فرمائیں
    جیفری :
    کیا یہ درست نہیں ہے کہ 1979ء بلکہ 1979ء سے پہلے بھی وہ گروہ جسے سعودی عرب میں تحفظ حاصل ہے،تیل کی انکم کو اسی گروہ نے وہابی ازم کے فروغ کے لیے خرچ کیا،وہی وہابی ازم جو اسلام میں سب سے زیادہ تعصب پر مبنی گروہ ہے جو اخوانیت کی آئیڈیالوجی کے قریب ہے.
    محمد بن سلمان :
    سب سے پہلے کیا آپ اس اصطلاح وہابی ازم کی تعریف کرنا پسند کریں گے کہ کیا ہے؟ہم تو اس کے بارے کچھ نہیں جانتے ہیں.
    جیفری :
    کیا مطلب آپ کا کہ آپ کچھ نہیں جانتے ہیں؟
    محمد بن سلمان :
    یہی کہ وہابی ازم کیا ہے؟
    جیفری :
    آپ سعودی عرب کے ولی عہد ہیں آپ یقینا جانتے ہوں گے.
    محمد بن سلمان :
    میرے خیال میں وہابیت کی حقیقی تعریف کوئی شخص نہیں کرسکتا ہے،آپ جسے وہابی ازم کہتے ہیں وہ ہمارے ہاں نہیں ہے،ہم اپنا آئین اسلام اور قرآن کو بناتے ہیں،ہمارے ہاں دو مکتب فکر ہیں اہل سنت ہیں ان کے علاوہ اہل تشیع،اہل تشیع کو بھی مکمل آزادی اور تحفظ حاصل ہے،ہماری اساس لوگوں کے ایمان پر ہے،اس کے بعد تمام افراد کے مفادات کا تحفظ ہماری ترجیح ہے."
    اب جو لوگ تاریخ کو جانتے ہیں وہ بخوبی آگاہ ہیں کہ اہل سنت کے سلفی مکتب فکر نے خود کو وہابی نام سے کبھی موسوم نہیں کیا بلکہ یہ لقب انگریز نے اس لیے دیا تھا کہ یہ لوگ ہمارے خلاف لڑ رہے ہیں،تب سے اب تک سلفیوں کے دیسی اور گورے مخالفین بطور طعنہ سلفیوں کو وہابی پکارتے ہیں،سو محمد بن سلمان نے بھی مغرب کی اس تعریف سے انکار کیا ہے کہ ہمارے ہاں ایسا کوئی گروہ نہیں ہے جو آپ کی تعریف پر پورا اترتا ہو.
    اسی انٹرویو کے دوران ولی عہد سے اسرائیل اور فلسطین کے بارے بھی سوالات ہوئے لیکن بی بی سی نے بدترین صحافتی بددیانتی کا ثبوت دیتے ہوئے اپنی سرخی یوں جمائی کہ "اسرائیلیوں کو اپنی سرزمین کا حق حاصل ہے" (محمد بن سلمان ) حالانکہ یہ الفاظ محمد بن سلمان کے نہیں تھے بلکہ ان کے الفاظ یہ تھے کہ میرا ماننا یہ ہے کہ دنیا میں تمام لوگوں کو یہ حق حاصل ہے کہ وہ ایک پرامن ریاست میں رہیں،اس میں اسرائیلیوں کا ذکر کہاں سے آیا؟
    آخری بات
    اس بات سے انکار نہیں کہ سعودی عرب میں کافی ساری تبدیلیاں رونما ہو رہی ہیں،مگر یاد رکھیں دین اسلام کسی ملک خطہ اور قوم کے رویوں اور پالیسیوں کا نام نہیں ہے،اسلام قرآن و حدیث کا نام ہے جو کسی ملک کی سیاست کے بدلنے سے بدل نہیں جائے گا.
    سعودی عرب میں جو تبدیلیاں رونما ہو رہی ہیں انہیں روکنا میرے اور آپ کا کام نہیں ہے نہ ہی ہمارے روکنے سے یہ رک جائیں گی ہاں مگر جو تبدیلیاں سعودی عرب میں ابھی رونما ہو رہی ہیں کلمہ طیبہ کے نام پر حاصل کیے گئے ہمارے ملک میں بہت پہلے رونما ہوچکی ہیں ہم اسے بدل سکتے ہیں ہمیں اپنی توانائیاں وہی لگانا چاہئے.
    بقلم فردوس جمال !!!
    http://abutalhazahack.com/2018/04/04/saudi-shahzada-urdu/
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  4. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,282
    اسرائیل بارے سعودی منصوبہ اور فلسطینی
    ابوبکر قدوسی
    ...........
    یہ دو ہزار دو عیسوی کا مارچ تھا - بیروت میں عرب ممالک کی سربراہی کانفرنس ہو رہی تھی - شاہ عبد اللہ مرحوم نے اپنی تقریر میں اسرائیل اور فلسطین جھگڑے کا اک حل پیش کیا - جس پر تمام دنیا چونک اٹھی ، کیونکہ یہ حل ایسا تھا کہ اگر فریقین چاہتے کہ برسوں کی جنگ ختم ہو تو ممکن تھا -
    اس حل کا مقصد 67ء کے وقت کی سرحدات پر ایک فلسطینی ریاست کا قیام جس کا دارالحکومت مشرقی بیت المقدس ہو ، مقبوضہ گولان کے شامی علاقے سے اسرائیل کا انخلاء تھا -
    اس کے بدلے میں عرب اسرائیلی تنازع کو ختم سمجھا جائے گا اور اسرائیل 57 کے قریب اسلامی ممالک کے ساتھ تعلقات قائم کرنے میں کامیاب ہو سکے گا۔
    یہ ایسا راستہ تھا کہ جو مسلم مالک کی عسکری حالت کے پیش نگاہ حقیقت پسندی پر مبنی تھا - یہی وجہ تھی کہ تمام عرب ممالک نے اس کو قبول کر لیا ، اور غیر عرب ممالک نے اس کی تائید کی -
    ٹھیک اسی منصوبہ کی بنیاد پر کل محمد بن سلمان نے اسرائیل کو ایک راستہ فراہم کرنے کی بات کی ، اور ان کے بیان کی تائید یا وضاحت میں شاہ سلمان کا بیان بھی اخبارات کی زینت بنا - حیرت مگر یہ ہوئی کہ بندرہ برس پرانا منصوبہ دوبارہ زیر بحث آنے پر ہمارے میڈیائی دوست یوں پریشان ہوے کہ جیسے کسی نے بیت المقدس کا سودا کر دیا ہو ....اندازہ کیجئے کہ محمد بن سلمان کا بیان رپورٹ کرتے ہوے "دنیا " اخبار نے اس جلمے کا اضافہ کیا کہ وہ پہلے سعودی شاہ ہیں جنہوں نے اسرائیلی حق مملکت کو تسلیم کیا ہے ہے ، حالانکہ اس حق کو ، مجبورا ہی سہی ، تمام عالم عرب تسلیم کر چکا ہے -
    سوال یہ ہے کہ آج سے پندرہ برس پہلے تمام عالم اسلام نے اس منصوبے کی تصدیق کی تھی ، تب کیا ہم آج کی نسبت کمزور تھے اور آج ہم دنیا کی سپر پاور بن گئے ہیں ؟
    اصل معاملہ یہ ہے ہی نہیں ، اصل یہ ہے کہ اس وقت سعودی عرب بارے نفرت کا طوفان کھڑا کیا جا رہا ہے ، اور اس کے لیے جھوٹ کا ہر راستہ اختیار کیا جا رہا ہے - اور کمال یہ ہے کہ بعض ایسے دوست بھی اس طوفان میں امت کے دشمن طبقے کی ہاں میں ہاں ملا رہے ہیں کہ جو امت امت کرتے نہیں تھکتے تھے -
    ہمارے بعض دوست ممالک ایسے بھی ہیں جنہوں نے اسرائیل کو باقاعدہ تسلیم کر لیا ہوا ہے ، ان کے اس سے باقاعدہ سفارتی تعلقات موجود ہیں ، جیسا کہ ترکی اور قطر - لیکن انہی ممالک سے گہری ہمدردی رکھنے والے دوست جانے یہ سب کیسے بھول جاتے ہیں اور اس ملک بارے دشنام کرنے لگ جاتے ہیں جس نے ابھی تک اسرائیل کو قبول نہیں کیا نہ تسلیم کیا ہے - اور حیرت تب ہوتی ہے کہ جب کوئی مغربی یا اسرائیلی اخبار میں بھی کوئی ایسی خفیہ ملاقات کی خبر چل جاتی ہے تو اسے لے اڑتے ہیں ، شور قیامت شروع کر دیتے ہیں -
    دیکھئے ! ان دوستوں کا شور تب حق پر مبنی ہو گا جب یہ اپنے ممدوح ممالک کی اسرائیل سے دوستی پر بھی اعتراض کرتے ہوں - حیرت تب دوچند ہو جاتی ہے کہ اسرائیل سے دوستی کے لیے تب جواز تراشے جاتے ہیں - مجھے یاد ہے کہ ایک دوست نے ترکی بارے دلیل پیش کی جناب اس کے تعلقات تو ماضی سے چلے آ رہے ہیں ..
    ناطقہ سر بگریباں ہے اسے کیا کہیے
    موضوع کی طرف آتے ہیں -
    دوستو! یہ بیان اور منصوبہ کوئی نیا نہیں ہے - عرض کر چکے کہ وہی پرانا ہے جس کی تائید عالم اسلام کر چکا ہے ، اور دل چسپ ترین امر یہ ہے کہ خود فلسطینی صدر نے اس کو قبول کرنے پر زور دیا ہے -
    محمود عباس کی اس تاکید اور موجودہ اصرار کا سبب ممکنہ امریکی منصوبے کی پریشانی ہے - شنید ہے کہ امریکہ ایسا منصوبہ پیش کرنا چاہ رہا ہے کہ جس میں یروشلم پر اسرائیلی قبضہ تسلیم کیا جائے گا -
    اسی خدشے کے پیش نگاہ فلسینی صدر محمود عباس آج کل شاہ عبد اللہ کے منصوبے پر زور دے رہے ہیں ..............لیکن دوست ہیں کہ چائے کی پیالی میں طوفان اٹھا رہے ہیں - حالانکہ شاہ سلمان کے آج کے بیان نے اس بات کی تصدیق بھی کر دی ہے کہ ان کی مراد وہی سن دو ہزار دو کا شاہ عبد اللہ والا منصوبہ ہے جس میں یروشلم فلسطینیوں کو دیا جائے گا اور گولان کی پہاڑیاں شام کو ..جب کہ اس کے بدلے مسلمان ممالک اسرائیل کو تسلیم کر لیں گے ----
     
    • مفید مفید x 1
  5. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,217
    عمدہ. شاید اس کی طرف اشارہ ہے.
    https://en.m.wikipedia.org/wiki/Arab_Peace_Initiative
    یہاں یہ بات بھی دلچسپی سے خالی نہیں کہ فلسطینی قایدین نے بھی یہ تجویز مسترد کردی تھی.
     
  6. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,217

    ایک کذب،جھوٹ، امام حرم کا ریاض میں جوئے کے اڈے کا افتتاح ہے.جو آجکل سوشل میڈیا پر بہت زیادہ وائرل ہے..
    عادل کلبانی نے ایک سال رمضان مبارک میں کچھ دن مسجد حرام میں تراویح پڑھائی تھی. ان کی اپنی سیرت یہ ہے کہ موصوف نے بچپن سے دین کی باقاعدہ تعلیم حاصل نہیں کی. پہلے میوزک کو حلال سمجھتے تھے. آواز اچھی تھی. بعد میں توبہ کی تو اناشید کہنے لگے.. قرآن حفظ کیا. کئی سال ریاض کی ایک مسجد میں نماز پڑھائی. ہھر ایک سال مسجد حرام میں تراویح پڑھائی. تو مشہور ہو گئے.
    بعض لوگوں کو شہرت اور عزت ہضم نہیں ہوتی.یہی کچھ عادل کلبانی کے ساتھ ہوا. بہت جلد موسیقی و حجاب کے تعلق سے اپنے سابقہ جواز کے فتوی کو قبول کر لیا. پھر ریاض کی مسجد سے بھی فارغ کر دیے گئے..آجکل مشہور سعودی لبرل سعد الفقیہ کی جماعت سے تعلق بتایا جاتا ہے..واللہ اعلم
    یہ وضاحت بھی ان کی حرم مکی کی نسبت کی وجہ سے لکھی گئی. ورنہ اس طرح کے گلابی قسم کے مولوی ہر ملک میں موجود رہتے ہیں.
    کارڈ گیم کے مقابلہ کے حوالے سے ایک خبر دو ماہ پہلے اخباروں میں آئی تھی. یہ ویسی ہی ان ڈور گیم ٹورنامنٹ ہوتا ہے. جس طرح دوسرے ممالک میں کھیلا جاتا ہے. جس میں پہلی تین پوزیشنز پر آنے والے کھلاڑیوں کو انعامات دیے جاتے ہیں.
    http://www.arabnews.com/node/1248136/saudi-arabia
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
    • دلچسپ دلچسپ x 1
  7. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,217
    آئمہ حرمین کے سوشل اکاؤنٹ کے حوالے سے پروپیگنڈا کی حقیقت.
    بشکریہ. شیخ ڈاکٹر اجمل منظور مدنی.

    ائمہ حرمين كا سوشل ميڈيا پر كوئى اكاونٹ نہيں ہے

    جى ہاں فى الحال بہت ساری انٹی سعودی فیک خبروں کی طرح یہ خبر بھی پهيلائى جارہى ہے كہ حرم مكى كے امام شيخ شريم كے ٹيوٹر اكاونٹ كو حكومت كى طرف سے بند كر ديا گيا ہے۔ اور اس كا سبب بتايا جارہا ہے كہ ان كے فالوور لاكهوں ميں ہوچكے تهے اس لئے حكومت كو خدشہ ہوگيا تها اور اسى وجہ سے شيخ عوده كو گرفتار كيا گيا تها كيونكہ ٹيوٹر پر ان كے چوده ملين سے زياده فالوور تهے۔
    در اصل يہ بهى رافضيوں اور تحريكيوں كى طرف سے پهيلائے جارہے پروپيگنڈوں كا ايك حصہ ہے ۔ الجزيره ٹى وى چينل اور بى بى سى سے ہوتے ہوئے بر صغيرى تحريكيوں تك ايسى خبريں پہونچتى رہتى ہيں اور پهر يہ پورى دنيا ميں پھيلانے كى ذميدارى لے ليتے ہيں۔لگتا ہے کچھ تحریکی اور تقلیدی باقاعدہ اس کا ٹھیکہ لئے ہوئے ہیں۔
    آج ہى الرياض روزنامہ ميں سركارى طور پر يہ بيان آيا ہے كہ ائمہ حرمين ميں سے كسى كے نام سے سوشل ميڈيا پر كوئى اكاونٹ نہيں ہے۔ مناسب سمجهتا ہوں كہ وه پورا بيان نوٹ كردوں :
    ((أكد المتحدث الرسمي بالرئاسة العامة لشؤون المسجد الحرام والمسجد النبوي الأستاذ أحمد بن محمد المنصوري بأنه لا يوجد أي حسابات لأئمة الحرمين الشريفين في مواقع التواصل الاجتماعي ونظرًا لما للحرمين الشريفين من مكانة عظيمة ولما لأصحاب الفضيلة الأئمة من منزلة كريمة وحيث أن بعض هذه المواقع تعمد إلى التشويش والإثارة والبلبلة وتعج بإثارة موضوعات جدلية تخضع لتأويلات متباينة لها تأثيرات سلبية على وحدة الأمة واجتماعها على الكتاب والسنة فلذلك وتحقيقاً للمصلحة العامة وحفاظاً على شرف الإمامة وعلى مكانة الأئمة في نفوس المسلمين جميعاً فإن الرئاسة تؤكد بأنه لاتوجد أي حسابات لأصحاب الفضيلة الأئمة وما يوجد من حسابات فهي وهمية غير رسمية لاتمثل الأئمة.))
    ترجمہ: حرمين كى طرف سے سركارى نمائندے استاذ احمد بن محمد منصورى نے يہ تاكيد سے كہا ہے كہ سوشل ميڈيا پر ائمہ حرمين ميں سے كسى كا كوئى اكاونٹ نہيں ہے۔ چونكہ حرمين شريفين كى شان بہت بڑى ہے اور وہاں كے ائمہ كا مقام بهى بلند ہے۔ اور سوشل ميڈيا پر ايسے متنازعہ فيہ اور سياسى موضوعات اٹھائے جاتے ہيں جو تشويش كا باعث اور وحدت اسلامى اور كتاب وسنت پر مبنى اتحاد كيلئے خطره ہوتے ہيں۔ اسى لئے ان محترم ائمہ كا كوئى اكاونٹ نہيں كهولا گيا ہے ، اور اگر ان ميں سے كسى كے نام سے كوئى اكاونٹ پايا جاتا ہے تو اسے وہمى غير سركارى مشتبہ مانا جائے گا ، اسے ان ائمہ كا اكاونٹ نہيں مانا جائے گا۔ ديكهيں يہ ويب سائٹ:
    http://www.alriyadh.com/1673751
    ويسےعربى اخبار وں كے مطالعہ سے معلوم ہوتا ہے كہ سوشل ميڈيا اور بعض اخبار ميں چند شبہات كا اظہار كيا جا رہا ہے جو درج ذيل ہيں:
    1- شيخ شريم كے ٹيوٹر اكاونٹ پر جانے سے جس طرح وہاں پيغام آرہاہے كہ ابهى يہ كام نہيں كر رہا ہے اس سے لگتا ہے كہ اكاونٹ كو خود شيخ شريم نے بند كرديا ہے۔ كيونكہ اس طرح بغير كسى پيشگى اطلاع كے كئى بار وقتى طور پر آپ كا اكاونٹ بند ہوا ہے۔
    2- ہوسكتا ہے بطور تنبيہ كے حكومت كى طرف سے بند كيا گيا ہو ۔ الجزيره نے اسى موقف كو ليكر خبر لگاكر پورى دنيا ميں پھيلائى ہے ۔اور يہ وجہ بتائى ہے كہ موجوده حكومت كى پاليسيوں كے خلاف يہ لكھتے رہتے تهے۔ اور اسى بنياد پر 2016 ميں بہت سارے غيور علماء ودعاة كو پابند سلاسل كرديا ہے۔ بہر حال يہ ایک منظم سعودی کے خلاف پروپیگنڈہ ہے ۔ رافضى اور اخوانى يہى كہيں گے چاہے وجہ كچھ بهى ہو۔
    ديكهيں اسكى ويب سائٹ كو:
    http://aljazeera.net/news/arabic/2018/4/6/إيقاف-حساب-الشريم-يشعل-تويتر
    3- سعودى عرب كے خلاف اس وقت بہت سارے فيك اكاونٹ بناكر پروپيگنڈه پهيلايا جا رہا ہے۔ اس لئے حكومت كى طرف سے ذرا سا شبہ ہونے پر كسى بهى اكاونٹ كو بند كرديا جاتا ہے يہاں تك کہ خود صاحب اكاونٹ آفس ميں جاكر اسكى وضاحت نامہ نہ پيش كردے۔ ہوسكتا ہے شيخ شريم كے نام پر جعلى اكاونٹ بنے ہوں اور ان كے ذريعے حكومت كى پاليسيوں كے خلاف باتيں شيئر كى جاتى ہوں ۔ اس لئے اس قانون كے تحت آپ كے نام پر يہ اكاونٹ بهى بند كر ديا گيا ہے۔
    سعودى مخالف پروپیگنڈے پر پیش ہے ایک مختصر جائزہ:
    - دس ہزار 10000 ویب سائٹ ایسے ہیں جو برابر سعودی مخالف پروپیگنڈوں کیلئے وقف ہیں۔
    - گزشتہ سال کے آخری تین مہینوں میں صرف قطر سے سعودی کے خلاف بیس ہزار 20000 جھوٹی خبریں نشر کی گئیں۔
    - تیئیس ہزار 23000 اکاؤنٹ ٹوئٹر پر ایسے ہیں جہاں سے سعودی کے خلاف فی منٹ نوے 90 ٹویٹ مسلسل کئے جا رہے ہیں۔
    - قطری ذرائع ابلاغ کی اڑھتالیس 48% فیصد خبریں سعودی عرب کے خلاف ہوتی ہیں۔
    - اخبارات، ویب سائٹ اور سوشل میڈیا کے علاوہ پینتیس 35 ایرانی ٹی وی چینل ایسے ہیں جو صرف سعودی دشمنی میں خبریں پھیلانے کیلئے خاص ہیں۔
    - الجزیرہ ٹی وی چین اور بی بی سی لندن کے علاوہ کچھ عراقی، لبنانی، شامی، افغانی اور پاکستانی ایسے چینل ہیں جو برابر سعودی مخالف خبریں نشر کرتے رہتے ہیں۔
    4- رئاسة الحرمين كميٹى كى طرف سے 2016 ہى ميں يہ قانون بنايا گيا تها كہ ائمہ حرمين ميں كسى كے لئے يہ مناسب نہيں ہے كہ وه سوشل ميڈيا ميں اپنے نام سے كوئى اكاونٹ كهولے ۔ كيونكہ ائمہ حرمين كى شان اس سے كہيں بلند ہے كہ مختلف قسم كے لوگ ان پر ردود اور طنز لكهيں جس سے ان كى شخصيت مجروح ہو۔ جیسا کہ اوپر سرکاری بیان میں اس کی وضاحت آچکی ہے۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  8. کنعان

    کنعان محسن

    شمولیت:
    ‏مئی 18, 2009
    پیغامات:
    2,817
    سوشل میڈیا پر سعودی عرب میں بغاوت کی افواہوں کے بعد ریاض میں رات گئے زور دار دھماکوں کی اصل حقیقت سامنے آ گئی

    22 اپریل 2018 (00:56)


    ریاض (ڈیلی پاکستان آن لائن) سعودی عرب کے دارالحکومت ریاض میں شاہی محل کے قریب مشتبہ کھلونا نما ڈرون کو مار گرایا ہے، تاہم سوشل میٖڈیا پر شاہی محل کے قریب فائرنگ کی آوازیں سنی گئی ہیں جبکہ سعودی سیکیورٹی حکام نے تصدیق کی ہے کہ شاہی محل کے قریب بغیر اجازت اڑنے والے مشتبہ ڈرون کو مار گرایا ہے۔

    Haidar Sumeri @IraqiSecurity
    BREAKING: Reports that King Salman has been evacuated to King Khaled air base as gunfire and explosions continue near the Royal Palace and Khuzama district.

    غیر ملکی میڈیا کے مطابق سعودی دارالحکومت ریاض میں شاہی محل کے قریب سیکیورٹی فورسز نے ایک مشتبہ کھلونا نما ڈرون کو مار گرایا گیا ہے جبکہ غیر مصدقہ طور پر کہا جا رہا تھا کہ شاہی محل کے قریب بھاری ہتھیاروں سے کی جانے والی شدید فائرنگ کی آوازیں سنائی دے رہی ہیں اور ایسا لگ رہا ہے کہ سعودی شاہی محل پر حملہ ہو گیا ہے، اس سے قبل سوشل میڈ یا پر کچھ غیر مصدقہ ویڈیوز زشئیر کی جا رہی تھی کہ سعودی عرب میں بغاوت ہو گئی اور شاہی محل کے قریب شدید فائرنگ اور دھماکوں کی آوازیں آ رہی ہیں جبکہ شاہ سلمان کو بھی محفوظ فوجی بنکر میں منتقل کر دیا گیا ہے تاہم اب حقیقت سامنے آ گئی ہے کہ ایسا کوئی حملہ یا فائرنگ نہیں ہو رہی بلکہ ایک مشتبہ ڈرون کو سیکیورٹی فورسز نے مار گرایا ہے جبکہ سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی متعدد ویڈیوز بھی کافی پرانی ہیں۔

    دوسری طرف ریاض پولیس کے ترجمان کے مطابق کھلونا نما ڈرون خزامہ ڈسٹرکٹ کے قریب ایک چیک پوائنٹ پر متعین پولیس اہلکاروں نے دیکھا تھا جسے سیکیورٹی اہلکاروں نے فوری مار گرایا جبکہ سعودی سرکاری ٹی وی کا کہنا ہے کہ ڈرون اڑانے کیلیےاجازت نامہ نہیں لیا گیا تھا اور مشتبہ ہونے کی وجہ سے اسے گرایا گیا تاہم اس کے علاوہ فائرنگ کا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا۔


    دوسری جانب سعودی ذرائع نے تصدیق کی ہے کہ شاہی محل کے قریب حملے کی خبریں بے بنیاد ہیں, شاہی محل کے قریب کسی بھی قسم کی فائرنگ کا کوئی واقعہ پیش نہیں آیا تاہم کہا جا رہا ہے کہ سعودی شاہی محل کے قریب ایک کھلونا نما ڈرون پرواز کر رہا تھا جسے سیکیورٹی حکام نے فوری گرا دیا۔

    دوسری طرف ذرائع کا کہنا ہے کہ سوشل میڈیا پر سعودی شاہی محل کے قریب ہونے والے مبینہ حملے کے حوالے سے شیئر کی جانے والی ویڈیو فوٹیج پرانی ہیں جنہیں سعودی حکومت کے مخالفین پوری دنیا میں اضطراب اور انارکی پیدا کرنے کے لئے پھیلا رہے ہیں، سوشل میڈیا پر پھیلی ہوئی افواہوں کا حقیقت سے کوئی تعلق نہیں ہے۔
     
  9. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    7,208
    جی بھائ یہ خبر سے زیادہ مملکت کے چند بد خواہوں کی خواہش تھی۔ یہاں ایسا کچھ نظر نہیں آیا۔
    ڈرون کو فائرنگ کر کے گرایا گيا۔ تو پھر فائرنگ کی آوازیں تو آنی ہی تھی۔ باقی سب نارمل ہے۔
     
    • تخلیقی تخلیقی x 1
  10. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    14,217
    یہ بھی کہا جاتا ہے کہ کسی بچے کا ریموٹ کنٹرول ڈرون شاہی محل کے قریب پہنچ گیا تھا. جسے گرا دیا گیاتھا
     
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں