أنوار التوضيح لركعات التراويح (مسنون رکعات تراویح)

کفایت اللہ نے 'اسلامی کتب' میں ‏مئی 2, 2018 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. کفایت اللہ

    کفایت اللہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏اگست 23, 2008
    پیغامات:
    2,018
    رکعات تراویح پر نئی کتاب
    =============
    أنوار التوضيح لركعات التراويح (مسنون رکعات تراویح)
    تالیف: کفایت اللہ سنابلی
    صفحات : 400 ، طباعت : دارالسنہ ایم ، پی انڈیا۔
    =============
    اس کتاب کی چند نمایاں خصوصیات درج ذیل ہیں:
    ✿ اس موضوع سے متعلق تمام مرفوع و موقوف روایات کی جملہ اسانید پر بحث ہے، اس سے قبل اس موضوع پر لکھی جانے والی کتابوں میں مخالفین کی طرف سے جو بعض بے سند روایات پیش کی جاتی تھیں، ان کے جواب میں ہماری طرف سے صرف سند کا مطالبہ کیا جاتا رہا ہے، لیکن اب بعض نئی کتابوں کی طباعت کے بعد فریقِ مخالف کی طرف سے پیش کردہ ایسی روایات کی سندیں بھی منظرِ عام پر آگئی ہیں، لہٰذا زیرِ نظر کتاب میں ان کی حقیقت بھی واضح کر دی گئی ہے۔
    ✿ صحیح بخاری وغیرہ میں مروی حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کی حدیث پر احناف نے اضطراب کا جو اعتراض کیا ہے اس کا مفصل جواب پہلی بار اس کتاب میں قارئین پڑھیں گے ۔
    ✿ رات کی نماز میں گیارہ رکعات سے زائد پڑھنا اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے ثابت نہیں ہے، اس سلسلے کی جملہ روایات پر سیر حاصل بحث شاید اس کتاب کے علاوہ کسی اور مقام پر قارئین کو نہ ملے۔
    ✿ عہدِ فاروقی سے متعلق موطا کی روایت پر شذوذ وغیرہ کے جو اعتراضات اٹھائے جاتے ہیں، ان کے مفصل جوابات بفضلہ تعالیٰ اس کتاب میں قارئین پہلی بار ملاحظہ فرمائیں گے۔
    ✿ کسی بھی روایت پر صحت و ضعف کا حکم لگانے کے لیے محض اس کی ظاہری سند دیکھ کر فیصلہ نہیں کیا گیا، بلکہ ہر روایت پر حکم لگانے سے پہلے اس کے تمام طرق و اسانید نیز جملہ متابعات و شواہد کو پیشِ نظر رکھنے کی حتی المقدرکوشش کی گئی ہے۔
    ✿ اسانید کی تحقیق اور روایات پر حکم لگانے میں محدثین کے منہج پر چلتے ہوئے وہی طریقہ اپنا یا گیاہے جس کی وضاحت ہم نے اپنی کتاب ’’أنوار البدر في وضع الیدین علی الصدر‘‘ (ص: ۴۳۔۶۱) میں کی ہے۔
    ✿ تابعی کا قول و عمل کسی کے یہاں بھی حجت و دلیل کی حیثیت نہیں رکھتا، لہٰذا تابعین سے متعلق جملہ روایات پر بحث نہیں کی گئی، تاہم یہ ضرور واضح کیا گیا ہے کہ تابعین میں ایک جماعت نے نمازِ تراویح میں مسنون تعداد، یعنی گیارہ رکعات ہی کو اپنایا ہے اور یہی راجح ہے، جب کہ بعض تابعین نے نفل سمجھ کر کچھ اضافی رکعات بھی پڑھی ہیں، لیکن کسی معین و مخصوص تعداد پر ان کے یہاں کوئی اتفاق نہیں پایا جاتا، بلکہ بعض نے تیس رکعات پڑھی ہیں تو بعض نے چالیس
    رکعات پڑھی ہیں، جب کہ بعض نے سینتالیس رکعات بھی پڑھی ہیں۔
    ✿ ایک بریلوی عالم احمد یار خان نعیمی کی ’’جاء الحق‘‘ نامی کتا ب میں بیس رکعات کو سنت ثابت کرنے کے لیے بعض عجیب و غریب اور مضحکہ خیز استدلالات پیش کیے گئے تھے، اس کتاب میں ان کے تسلی بخش جوابات بھی شامل کر دیے گئے ہیں۔
    ✿ حرمین میں بیس رکعات کی نوعیت اور اس کے پسِ منظر پر بھی مفصل گفتگو کی گئی ہے۔
    ✿ علمائے احناف میں بہت سارے حضرات نے اعتراف کیا ہے کہ اللہ کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے آٹھ رکعات تراویح ہی پڑھی ہیں، اس سلسلے میں ایک کثیر تعداد کے حوالے اصل کتابوں سے پیش کیے گئے ہیں۔

    Titale 1.jpeg
     
    Last edited: ‏مئی 3, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  2. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    7,109
    جزاک اللہ خیرا
     
  3. حافظ عبد الکریم

    حافظ عبد الکریم رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏ستمبر 12, 2016
    پیغامات:
    521
    جزاک اللہ خیرا
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  4. رفی

    رفی منتظمِ اعلٰی

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,208
    جزاک اللہ خیرا!
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں