بیت بازی کی روایات اور اس کے فروغ میں شنکر پور کا کردار

صادق تیمی نے 'ادبی مجلس' میں ‏جولائی 25, 2018 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. صادق تیمی

    صادق تیمی رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏مارچ 21, 2018
    پیغامات:
    27
    تحریر: محمد صادق جمیل تیمی
    بیت بازی بر صغیر ہندو وپاک کی پرانی تہذیب و تمدن میں شامل رہی ہے ،یہ دو گروپ کے مابین ایک کھیل ہے جس میں زبان کے معروف و مشہور شعراء کے کلاموں کو پیش کرکے کھیلا جاتا ہے ،یہ کھیل ہندوستان ،پاکستان اور ایران جیسے ممالک میں کافی مقبول ہے خاص طور پر بھارت میں اسے "انتا کشری "کے نام جانا جاتا ہے جس میں گیت کہے جاتے تھے -پاکستان میں اس اہم صنف کو جناب طارق عزیز صاحب اپنی شام و سحر کی محنتوں و کاوشوں سے تقریباً تیس سالوں سے چار چاند لگاتے رہے ہیں ،اسکول و کالج کے بچے کے مابین بیت بازی کرواتے ہیں اوران کا یہ عمل تاہنوز جاری و ساری ہے- بیت بازی کی روایت و آغاز کے سلسلے میں حتمی طور پر کچھ نہیں کہا جاسکتا ہے ،البتہ اس کی کچھ شروعاتی نقوش والی ووڈ فلم "مغل اعظم "میں ملتی ہیں جو گیت کی شکل میں ہے جس گیت کا بول یہ ہے --
    ****
    تیری محفل میں قسمت آزما کر ہم بھی دیکھیں گے
    گھڑی بھر کو تیرے نذدیک آکر ہم بھی دیکھیں گے
    ****
    اس کے بعد اس کی پرتو اسکول و کالج مدارس و جامعات اور تعلیمی درسگاہوں میں پھیلتی گئی ،اور اس کی اثر انگیزی کی بنا پر گاہ بہ گاہ کسی اہم تقریب کے موقع پر اس کا مقابلہ کیا جانے لگا اور دھیرے دھیرے ملک کے گوشے گوشے میں پھیل گئی -ادھر " یوم اردو" کی مناسبت سے سنجیو صراف جو ہندوستان کے ایک بڑے صنعت کار اور پالی پلکس کارپوریشن لمیٹیڈ کے بانی و چئرمین اور اہم حصص دار بھی ہیں "جشن ریختہ "کے نام سے ملک کی بڑی "بیت بازی "کرواتے ہیں جو قابل تحسین و لائق ستائش ہیں اور اردو کے تئیں ان کی محبت کو ڈھیر ساری آداب و تسلیمات پیش خدمت ہیں!!!!
    بیت بازی کی مذکورہ تاریخی روایات وتہذیبی اقدار کو زندہ و تابندہ رکھنے کے لئے ریاست بہار (ھند )کی مشہور تعلیمی درسگاہ "جامعہ اسلامیہ ریاض العلوم شنکرپور " کا حساس شعبہ "نادی الطلبہ "کی جانب سے ایک شاندار "بیت بازی "کا پروگرام انعقاد عمل میں آیا - جس میں بچوں کو دو دن کاقلیل سا موقع دیا گیا تھا اس مختصر سی مدت میں تمام مراحل کے منتخب طلبہ پوری تیاری و مستعدی کے ساتھ شرکت کی-اس میں کوئی شک نہیں کہ ادبی فن پارے خصوصاً شعر و شاعری اور شعراء کے کلام سے محبت کی یہ ایک کھلی مثال ہے ،اردو زبان و ادب کی تہذیب و تمدن کی یاد تازہ کرنے کا ایک مظہر ہے ،نسل نو کے اندر زبان و ادب کے تئیں خوبصورت محبت پیدا کرنے کا ایک اہم ذریعہ ہے -یہ بزم "بیت بازی "حسب معمول اپنی روایت کی پاسداری کرتے ہوئے اپنا آغاز قرآن مقدس کی چند خوبصورت آیات کے ذریعہ سے کیا اور صدر محفل نسیم جوہر تیمی نے اپنا ایک خوبصورت شعر -
    جو تھے راہ سے بھٹکے ہوئے
    پیغام الفت سنایا نبی نے

    سے شروعات کی ،مرحلہ متوسطہ و فضیلت کے مابین تقریبا ایک گھنٹے کی بیت بازی جاری رہی ،اس کی یہ خوبی رہی کہ جامعہ سے جڑے ادب نواز طبقہ بھی اس بزم میں بچوں کی ہمت افزائی کی خاطر اس کی زینت بنے رہے جس میں قابل ذکر شمیم ندوی عمید جامعہ ھذا ،رفیق افسر تیمی مساعد عمید جامعۃ البنات جامعہ ،شمس الحق تیمی مدیر ادارۃ الامتحان قابل ذکر ہے -اس بزم کی ان خصوصیات کے ساتھ ساتھ اس میں اقبال کی خودی ،غالب کی بذلہ سنجی و عاشقی ،اکبر کی تلون مزاجی ،جگر مرادآبادی کی تغزل پسندی اور احمد فراز کی سنیجدگی پورے طور پر نمایاں رہیں -اسی کے ساتھ دور حاضر کے کے قومی و بین الاقوامی شہرت کے حامل عظیم شاعر راحت اندوری کو خوب پڑھا گیا خاص طور پر ان کے یہ اشعار:
    طوفانوں سے آنکھ ملاو
    سیلابوں پر وار کرو
    ملاحوں کا چکر چھوڑو
    تیر کے دریا پار کرو
    ***
    پھولوں کی دکانیں کھولو خوشبو کا بیو پار کرو
    عشق گر خطا ہے ایک بار نہیں سو بار کرو
    ***
    اسی طرح ماں پر بہت اشعار کہنے والے منور رانا کا یہ شعر:
    کسی کو گھر ملا حصہ میں یا کسی کو دکاں آئی
    میں گھر سب سے چھوٹا تھا میرے حصہ میں ماں آئی
    ***
    نے پورے بزم کو اپنا اسیر کر لیا ----

    اس ادبی محفل میں ایک تجویز یہ رکھی گئی کہ اردو کے مشہور و ممتاز شعرا کے ان کلاموں کو منتخب کیا جائے جو طلبہ کو بلند ہمتی ،آفاقی پرواز اور تعلیمی بلندی پر مہمیز کا کام کرے ،افادہ عامہ کی خاطر اسے کتابی شکل دے کر منظر عام پر لایا جائے گا ،بچوں کی دلچسپی و خواہش کو دیکھتے ہوئے علم دوست افراد اس کام کے لئے جوٹ گیے ہیں اور عمل ہنوز جاری ہے -
    اس کے ساتھ ساتھ وقتا فوقتا اردو برجستہ صحافتی مسابقہ کا اہتمام کیا جاتا ہے جس کا ایک خاطر خواہ فائدہ یہ مرتب ہوا کہ وہ بچے جو قلم پکڑنا نہیں جانتے تھے آج وہ بحسن خوبی اپنی بھولی بسری یادوں ،روزنامچہ یا کسی چیز کی حسن رپورٹنگ اور اپنے منفرد افکار و خیالات کو صفحہ قرطاس میں بیکھرتے ہیں -گویا ایک علمی شعاع و روشنی کی پرتو چمکتی ہوئی نظر آرہی ہے -اللہ اس گہورہ علم و عرفاں کو سدا تابندہ و درخشندہ رکھے (آمین )
     
    Last edited: ‏جولائی 26, 2018
    • پسندیدہ پسندیدہ x 3
  2. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    شمولیت:
    ‏اگست 2, 2007
    پیغامات:
    15,432
    واہ، عمدہ شعر.
    بیت بازی بھی ذہین لوگوں کا شوق ہے. جنہیں شعر یاد رہتے ہیں. اب اس طرح کے مقابلے کم ہوتے ہیں.
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  3. صادق تیمی

    صادق تیمی رکن اردو مجلس

    شمولیت:
    ‏مارچ 21, 2018
    پیغامات:
    27
    ابو عکاشہ صاحب!!!!
    بہت بہت شکریہ آپ کا!!!
    سلامت رہیں!!!!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
    • حوصلہ افزا حوصلہ افزا x 1
  4. صدف شاہد

    صدف شاہد نوآموز.

    شمولیت:
    ‏مارچ 16, 2018
    پیغامات:
    308
    بہت عمدہ
    شئیرنگ کے لیے شکریہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں