مختلف کھانوں کی تصاویر فیس بک پر اپلوڈ کرنا

صدف شاہد نے 'کچن کارنر' میں ‏اکتوبر، 3, 2018 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. صدف شاہد

    صدف شاہد ناظمہ

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏مارچ 16, 2018
    پیغامات:
    268
    السلام علیکم و رحمۃ اللہ وبرکاتہ

    آج کل سوشل میڈیا پر یہ پیغام گردش کر رہا ہے مجھے بھی موصول ہوا ہے اس میں جس حدیث کا ذکر کیا گیا ہے مجھے اس کا حوالہ نہیں مل رہا مہربانی فرما کر اس معاملے میں رہنمائی فرما دیں ۔



    عموما دیکھا گیا کہ بعض لوگ مختلف کھانوں کی تصاویر فیس بک پر اپلوڈ کردیتے ہیں کہ میں اس وقت یہ کھارہا ہوں۔ عین ممکن ہے کہ آپ کی فرینڈ لسٹ میں کوئی ایسا شخص بھی موجود ہو جس کو سوکھی روٹی بھی میسر نہ ہو یا وہ کسی۔معاشی پریشانی کا شکار ہو،ایسے میں آپ مجھے بتائیں کہ اس کے دل پر کیا گذرے گی؟ حدیث شریف میں تو اس بات سے بھی منع فرمایا گیا کہ فروٹ کے چھلکے بھی گھر کے سامنے نہ پھینکے جائیں، کہیں پڑوس کے بچے اس کو دیکھ کر یہ نہ سوچنے لگیں کہ ہمیں تو یہ فروٹ میسر نہیں اور ہم مرغن اور مہنگے کھانوں کی مختلف زاویوں سے تصاویر اپلوڈ کرنے سے بھی نہیں کتراتے۔ یہ وبا فیس بک پربہت عام ہے اور ہم بسا اوقات یہ کام اس انداز سے کرجاتے ہیں کہ ہمیں احساس تک نہیں ہوتا کہ ہمارے اس عمل سے کتنے لوگوں کے دل پر چوٹ لگی اور اللہ بچائے نہ جانے کتنے لوگ اس وجہ سے ناشکری کے گناہ مبتلا ہوئے۔ اس سے خود بھی بچنا چاہیے اور دوسروں کو بھی اس کی طرف متوجہ کرنا چاہیے۔ دوسری اہم بات یہ ہے کہ ایسے کھانوں اور چیزوں کو دیکھ کر نظر لگنے کا بھی قوی امکان ہے کہ کھانے والے کو وہ فائدہ کے بجائے نقصان پہنچائے واللہ تعالٰی اعلم

    رشید احمد خورشید
     
  2. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,161
    وعلیکم السلام ورحمتہ اللہ وبرکاتہ
    مجھے ایسی حدیث کا علم نہیں
    میرے خیال میں تصویر اپ لوڈ کرنے میں کوئی حرج نہیں۔
    1۔اگر اسے شیئر کرنے والے کی نیت بری نہیں۔اس لیے کہ
    2۔کوکنگ ایک آرٹ ہے اور جس طرح دوسرے لوگ اپنی دلچسپی کی چیزیں دوسرے سے شیئر کرتے ہیں اچھی کوکنگ کرنے والے اپنے فرینڈز سے کھانے کی ترکیب اور اس کی تصویر بنا کر شیئر کر سکتے ہیں۔ اس سے وہ سب ایک دوسرے سے سیکھتے ہیں۔
    3۔ اگر نظر لگنے سے یوں ہی ڈرا جاتا رہا تو پھر ہم بازار سے سودا خرید کر گھر لانے کے قابل بھی نہیں رہیں گے کہ ہاتھ میں سامان دیکھ کر شاید کوئی یہ سوچے کہ انہوں نے کتنی خریداری کی ہے اور ہم خریداری نہیں کر سکتے۔
    اسی طرح پھر گھر میں بھی کھانا نہیں بنایا جا سکے گا کہ خوشبو باہر جائے گی اور نظر لگ جائے گی کہ آپ کے گھر سے ا چھی اچھی مہک آتی ہے۔
    اسلام نظر لگنے سے ڈرانے کے لیے نہیں آیا تھا اسلام نے صرف یہ بتایا ہے کہ نظر لگتی ہے اور اس کا علاج یہ ہے کہ دعا کر لیں۔ ہم دعا کرنے کی بجائے نظر سے ڈرتے رہتے ہیں یہ ایسا ہی ہے کہ آپ جراثیم کے ڈر میں مبتلا ہو کر گھر میں قید رہ جائیں اور کوئی کام نہ کر سکیں۔ جراثیم ہوتے ہیں لیکن ہم سب اپنے کام کرتے ہیں اور جراثیم لگنے کی صورت میں ہم دوا استعمال کرتے ہیں۔ بالکل اسی طرح نظر بد کی دعائیں پڑھنی چاہیے اور شریعت میں بتائی ہوئی طریقے سے علاج کرنا چاہیے لیکن اس کا وہم نہیں پالنا چاہیے۔لوگوں کے پاس ہمیں نظر لگانے کے علاوہ بہت سے کام ہیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
    • متفق متفق x 1
  3. صدف شاہد

    صدف شاہد ناظمہ

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏مارچ 16, 2018
    پیغامات:
    268
    رہنمائی کے لیے بہت شکریہ سسٹر جی
    جزاک اللہ خیرا
     
    • حوصلہ افزا حوصلہ افزا x 1
  4. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,161
    وایاک۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  5. سیما آفتاب

    سیما آفتاب ناظمہ

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏اپریل 3, 2017
    پیغامات:
    454
    انما الاعمال بالنیات

    عموماً سوشل میڈیا پر اس طرح کی تصاویر کو 'ریا کاری' کے زمرے میں لیا جاتا ہےجس کی وجہ سے اس کو معیوب سمجھا جاتا ہے۔
    اگر آپ نے کچھ اچھا کھایا ہے تو سب میں مشتہر کرنے کا مقصد؟؟
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
  6. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,161
    جی
    اسی لیے شروع میں عرض کیا کہ اگر اس کی نیت بری نہ ہو۔
    معاملے کا دوسرا پہلو یہ بھی ہے کہ نیت کا معاملہ صرف خدا کو معلوم ہے اس لیے ہمیں کسی کی نیت پر شک نہیں کرنا چاہیے۔ یہ خدا کو معلوم ہے کون نمائش کر رہا ہے، کون صرف دوستوں کو ایک اچھے ہوٹل یا کھانے، یا اپنی علاقائی ثقافت کا تعارف کروا رہا ہے، آپ ایسی چیزوں سے کچھ مثبت سیکھنا چاہیں تو سیکھیں ورنہ برکت کی دعا دے کر کسی اور پوسٹ پر توجہ مرکوز کر دیں۔
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں