تعلیم کی غرض سے نوجوان لڑکی کا گھر سے باہر نکلنا

مقبول احمد سلفی نے 'اتباعِ قرآن و سنت' میں ‏اکتوبر، 28, 2018 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. مقبول احمد سلفی

    مقبول احمد سلفی ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏اگست 11, 2015
    پیغامات:
    650
    سوال : ایک نوجوان لڑکی گھر سے تیس چالیس منٹ کی دوری پر قرآن کی تفسیر سیکھنے کے لئے اکیلی جاتی ہے تو اس کے والد باہر نکلنے سے منع کرتے ہیں ایسی صورت میں لڑکی کو کیا کرنا چاہئے ؟

    جواب : ضرورت کے تحت نوجوان لڑکی کو گھر سے باہر جانے کی شریعت میں اجازت ہے۔ رشتہ داروں سے ملنے، مریض کی عیادت کرنے،خیرکا کام کرنے، وعظ ونصیحت سننے اور تعلیم حاصل کرنے یادوسروں کو تعلیم دینے کی غرض سے نوجوان لڑکی گھر سے باہر جاسکتی ہے اور یہ امور ضرورت کے دائرے میں آتے ہیں جبکہ تعلیم کا حصول لڑکی کے لئے بڑی اہم ضرروت ہے ۔نبی ﷺ کا فرمان ہے : قد أَذنَ اللهُ لكنَّ أن تخرجْنَ لحوائجِكنَّ(صحيح البخاري:5237)
    ترجمہ:اللہ تعالیٰ نے تمہیں اجازت دی ہے کہ تم اپنی ضروریات کے لیے باہر جا سکتی ہو۔
    یہ حدیث اس بات کی دلیل ہے کہ عورت ضرروت کی تکمیل کے لئے گھر سے باہر جاسکتی ہے تاہم گھر سے باہر جاتے ہوئے زیب وزینت سے بچنا ہے اور کامل طورپر شرعی حجاب کو اپنانا ہے۔ ایک باپ کو یا لڑکی کے ولی کو ضرورت کے تحت باہر جانے سے منع نہیں کرنا چاہئے بلکہ نیکی کے کاموں پرلڑکیوں کا تعاون کرنا چاہئے ۔ نبی ﷺکا فرمان ہے:إذا استأذَنَكم نساؤُكم بالليلِ إلى المسجدِ فأذَنوا لهن(صحيح البخاري:865)
    ترجمہ:اگر تم سے تمہاری عورتیں رات میں مسجد آنے کی اجازت طلب کریں تو تم لوگ انہیں اس کی اجازت دے دیا کرو۔

    اس حدیث سے ایک بات یہ معلوم ہوئی کہ عورت کو اجازت لیکر گھر سے باہر جانا چاہئے اور دوسری بات یہ ہے کہ جس کام میں عورت کے لئے خیروبھلائی ہو اس کام کے لئے عورت کو گھر سے باہر جانے کی اجازت دینی چاہئے ۔

    چونکہ یہ زمانہ فتنے کا ہے اس وجہ سے آج کل نوجوان لڑکی کا گھر سے نکلنا پرخطر ہے، راستہ مامون ہو تو تعلیم حاصل کرنے کی غرض سے نوجوان لڑکی حجاب کے ساتھ اکیلے گھر سے باہر جاسکتی ہےلیکن فتنہ کا اندیشہ ہو تو باپ کو قطعی حق نہیں ہے کہ وہ اپنی بیٹی کو اکیلے گھر سے باہر ایسی جگہ جانے دے جہاں اس کی عزت وآبرو کے لئے خطرہ ہوخواہ باہر جانے کی غرض تعلیم ہو یا کچھ اور۔ راستہ میں فتنہ کی صورت میں ایسا ممکن ہے کہ کوئی محرم نوجوان لڑکی کو تعلیم گاہ تک چھوڑ آئے اور لوٹتے وقت بھی گھر تک اپنے ساتھ لائے اور اگرایسی سہولت نہ ہو تو پھر اپنے گھر ہی تعلیم کا بندوبست کر یا عورتوں کے لئے مخصوص تعلیم گاہ میں مستقل طورپر رہائش اختیار کرکے تعلیم حاصل کرے۔

    واللہ اعلم بالصواب
    کتبہ
    مقبول احمد سلفی
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 4
    • مفید مفید x 1
  2. رفی

    رفی -: ممتاز :-

    شمولیت:
    ‏اگست 8, 2007
    پیغامات:
    12,280
    جزاک اللہ خیرا شیخ!
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  3. مقبول احمد سلفی

    مقبول احمد سلفی ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏اگست 11, 2015
    پیغامات:
    650
  4. بابر تنویر

    بابر تنویر منتظم

    رکن انتظامیہ

    شمولیت:
    ‏دسمبر 20, 2010
    پیغامات:
    7,203
    جزاک اللہ خيرا شیخ
     
  5. مقبول احمد سلفی

    مقبول احمد سلفی ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏اگست 11, 2015
    پیغامات:
    650
  6. عائشہ

    عائشہ ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏مارچ 30, 2009
    پیغامات:
    24,161
    جزاک اللہ خیرا۔
    شک ایک بیماری بھی ہے۔ ایسے خواتین و حضرات جو بلاوجہ اولاد یا شریک حیات وغیرہ پر شک اور ناروا پابندیوں کے عادی ہوں ان کے نفسیاتی علاج پر توجہ دینے کی بھی ضرورت ہے۔
     
    • متفق متفق x 1
  7. Bilal-Madni

    Bilal-Madni -: منفرد :-

    شمولیت:
    ‏جولائی 14, 2010
    پیغامات:
    2,466
    جزاک اللہ خیرا۔
    فتنہ کے دور میں لڑکا ہو یا لڑکی دینی تربیت ضروری ہے ماں باپ تربیت پر زور دے حفاظت اللہ کرے گا ان شااللہ
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
  8. مقبول احمد سلفی

    مقبول احمد سلفی ركن مجلس علماء

    شمولیت:
    ‏اگست 11, 2015
    پیغامات:
    650
    اللہ ھو الموفق
     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 1
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں