پير كا نام لينے سے قبر ميں نجاد

زبیراحمد نے 'غیر اسلامی افکار و نظریات' میں ‏جنوری 7, 2019 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. زبیراحمد

    زبیراحمد -: ماہر :-

    شمولیت:
    ‏اپریل 29, 2009
    پیغامات:
    3,447
    بريلوى خطيب پاكستان افتحار الحسن شاه اپنے مرشد لاثانى پير جماعت على شاه صاحب اور ان كے ايك مريد كا قصه بيان كرتے هوئے فرماتے هيں:

    "نام تو ان كا كچھ اور تها مگر مرشد پاك ان كو پيار سے فرمايا كرتے تهے كه يه ميرے ڈيرے كا نمبردار هے- اور پهر وه نمبردار كے نام سے هى مشهور هو گيا- ان كا كام صرف مرشد پاك كى بھينسوں كو چاره ڈالتا تها-ايك دن مرشد لاثانى نے پيار سے فرمايا-نمبردار ! قبر ميں منكر نكير نے سوال پوچهے تو كيا جواب دے گا- نمبردار نے عرض كى – يا حضرت ميں كهه دوں گا كه ميں تے اپنے پير دياں مجهاں نوں پٹهے پاندا هوندا ساں-آپ نے مسكرا كر فرمايا – جا نمبردار يهى كه دينا تيرى نجات هو جائے گى-"(مقامات اوليا~:ص 119)



    [​IMG]



    [​IMG]

    پھر تو نیک اعمال کرنے کی ضرورت نہیں پیر کے ذریعے ہی بخشش کرادو اسلام کا نہیں پیر پرستی کا یہ اصول ہوسکتا ہے۔
     

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں