آدمی کے گنہگار ہونے کے لیے یہ کافی ہے کہ

ابو حسن نے 'اسلامی متفرقات' میں ‏اکتوبر، 30, 2019 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. ابو حسن

    ابو حسن محسن

    شمولیت:
    ‏جنوری 21, 2018
    پیغامات:
    444

    السلام علیکم و رحمۃ اللہ و برکاتہ

    (تحریر از ✍ أبو حسن ،میاں سعید)


    بہت سے ایسے لوگ ہیں جو ان لوگوں پر خرچ کرنے سے کتراتے ہیں جن پر خرچ کرنا یا جن کی ضروریات انسان کے ذمہ داری میں شامل ہے

    اور ایسوں پر سیدالاولین و الاخرین صلی اللہ علیہ وسلم نے وعید فرمائی ہے

    جیسے کہ بوڑھے والدین ، چھوٹے بہن بھائی ، بیوی یا بیویاں ، اولاد


    اور بعض ایسے ہیں کہ بیوی کو طلاق دے دی اور بچے بھی بیوی کے ذمہ ڈال دیتے ہیں اور پھر اپنی اس اولاد سے آنکھیں پھیر لیتے ہیں اور وہ عورت طلاق کے بعد بچوں کو بھی سنبھالتی پھرتی ہے

    اور یہ مطلقہ اگر کہیں دوسری جگہ شادی کرنا چاہے تو بچوں کی وجہ سے رشتہ نہیں ہوپاتا اور جو شرعی اعتبار سے اصل ذمہ دار ہے وہ حقیقت سے نظریں چراتا پھرتا ہے اور کہیں اور نکاح کرکے گھر بسائے بیٹھا ہوتا ہے

    حالانکہ کہ روز محشر اپنی اولاد کی ذمہ داری کا جواب دینا ہوگا

    عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ كَفَى بِالْمَرْءِ إِثْمًا أَنْ يُضَيِّعَ مَنْ يَقُوتُ .

    عبداللہ بن عمرو رضی اللہ عنہما سے مروی ہے کہ

    رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا

    آدمی کے گنہگار ہونے کے لیے یہ کافی ہے کہ وہ ان لوگوں کو جن کے اخراجات کی ذمہ داری اس کے اوپر ہے ضائع کر دے ۱؎ ۔


    وضاحت : ۱؎ یعنی جن کی کفالت اس کے ذمہ ہو ان سے قطع تعلق کرکے نیکی کے دوسرے کاموں میں اپنا مال خرچ کرے

    یا اپنے بیوی بچوں پر خرچ کرنے پر تنگی کرے

    یا ایک سے زائد بیویاں ہوں تو کسی پر خرچ کرے اور کسی پر خرچ سے ہاتھ روک لے
    ( سنن ابو داود، باب صلۃ الرحم ، صحیح حدیث 1692 )

    حالیہ میں ہی ایک لڑکی کا علم ہوا کہ شوہر نے حمل میں ہی طلاق دے دی اور اس کے بعد لڑکی کو چند سو روپے دیئے ہیں اوربچہ پیدا ہونے کے بعد کچھ بھی نان نفقہ نہیں دیا اور بچے کی ماں سے کہا ہے کہ تم بچے کی دوسال تک پرورش کرو اور لڑکی اپنے والدین سے خرچ لیکر اپنا اور بچے پیٹ پال رہی ہے اور بچہ بھی 4 ماہ کا ہوچکا ہے غالبا

    اسکی تین بیویاں موجود ہیں اور صاحب اپنی طرف سے دیندار اور اہلحدیث ہونے کے ساتھ ساتھ کسی شہر کے اعلی عہدے دار بھی ہیں جماعت کی طرف سے اور لڑکی کو دھمکی بھی دی گئی ہے کہ اگر تم نے کسی سے ذکر کیا تو تمہاری دوسری بہن کو بھی طلاق دلوا دی جائے گی

    ایسے لوگ دینداری کا لبادہ اوڑھ کر لوگوں کو تو دھوکہ دیتے ہیں لیکن رب کائنات کو دھوکہ نہیں دے سکتے

    اللہ تعالی ایسے لوگوں سے مسلمانوں کی عزتوں کی حفاظت فرمائے ،آمین

    [​IMG]

     
    • پسندیدہ پسندیدہ x 2
Loading...

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں