فیض احمد فیض کی ایک کفریہ نظم

ابوعکاشہ نے 'نقد و نظر' میں ‏جنوری 7, 2020 کو نیا موضوع شروع کیا

  1. ابوعکاشہ

    ابوعکاشہ منتظم

    پیغامات:
    15,455
    فیض احمد فیض کی ایک کفریہ نظم
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    جس کی اج کل ہندوستان میں بہت دھوم ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    فیض احمد فیض ( ولادت 1911- وفات 1984ء) اردو ادب کا ایک بڑا نام ہے۔ا
    ن کی شاعری نے بہت سے بعد کے شعراء پر اثر ڈالا۔
    اعلی معیار کی شاعری کی۔
    دیوان غالب انہیں حفظ تھا۔
    زبان و بیان کا خاص خیال رکھتے تھے۔
    اردو ادب ان کی نگارشات پر ناز کرتا رہے گا۔

    روس اور چین میں اشتراکیت نے اقتدار حاصل کیا۔ سرمایہ دارانہ نظام مغرب کے خلاف یہ ایک بڑا چیلنج تھا۔

    بیسویں صدی عیسوی سرمایہ دارانہ نظام اور اشتراکیت نظام کی کشمکش سے عبارت ہے۔
    دنیا کی کئی ایک حکومتیں کسی نہ کسی بلاک سے وابستہ ہوگئیں۔

    1934 ء میں انجمن ترقی پسند مصنفین کی بنیاد پڑی۔

    اردو ادب پر اشتراکیت نے بہت سے اثرات مرتب کیے۔
    کئی شاعر، ادیب افسانہ نگار اس تحریک میں شامل ہوگئے۔
    شاعروں میں فیض ، مخدوم محی الدین ، علی سردار جعفری ، کیفی اعظمی وغیرہ کی دھوم رہی۔
    ان ادیبوں میں کچھ منکر خدا تھے۔
    کچھ خدا کے قائل تھے۔لیکن مذھب اور شریعت کو نہیں مانتے تھے۔
    کچھ کہتے تھے کہ ہم پیدائشی مسلمان ہیں اس لیے مسلم گھرانوں میں شادی کرلیتے ہیں ، ورنہ اعتقادی طور پر ہم مسلمان نہیں ، البتہ تہذیب و ثقافت کے تقاضے یہی ہیں کہ سماجی طور پر ان کے ساتھ رہیں۔شادیوں اور جنازوں میں اسلامی روایات کی پاسداری کریں۔
    کچھ ایسے تھے جن میں یہ نفاق نہیں تھا۔
    علی الاعلان مذھب کا انکار بھی کرتے تھے اور مسلمان ہندو اور ہندو مسلم لڑکیوں کے ساتھ مذھب تبدیل کیے بغیر بچ بلا نکاح رہتے تھے۔
    ارونا آصف علی، وشوامتر عادل ، کرشن چندر ، نرگس سنیل دت وغیرہ کی مثالیں بہت ہیں۔
    بچپن میں مذھب کی چھاپ گہری تھی۔ پھر فیض بے دین ہوگئے۔
    فیض نے عربی زبان میں ایم اے کیا۔
    فوج میں ملازم ہوئے۔ کرنل کے عہدے پر فائز ہوئے۔
    راولپنڈی سازش کیس میں پکڑے گئے۔
    ان پر سازش کے ذریعہ سرخ انقلاب برپا کرنے کا الزام تھا۔
    شادی ایک برطانوی خاتون سے کی۔
    آخرت کے منکر تھے۔
    خود ہی فرماتے ہیں۔۔

    ذکر جنت ، بیان حور و قصور
    بات گویا یہیں کہیں کی ہے
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    آئے کچھ ابر ، کچھ شراب آئے
    پھر اس کے بعد جو آئے عذاب ، آئے ( مجھے کیا پروا)
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    آج کل ان کی نظم بھارت میں مودی کے خلاف بہت گائی جارہی ہے۔ پاکستان میں اقبال بانو نے اسے گاکر مشہور کیا۔
    پہلے نظم ملاحظہ فرمائیے۔
    پھر ہمارا تبصرہ ۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

    ہم دیکھیں گے

    لازم ہے کہ ہم بھی دیکھیں گے

    وہ دن کہ جس کا وعدہ ہے

    جو لوح ازل میں لکھا ہے

    جب ظلم و ستم کے کوہ گراں

    روئی کی طرح اڑ جائیں گے

    ہم محکوموں کے پاؤں تلے

    جب دھرتی دھڑ دھڑ دھڑکے گی

    اور اہل حکم کے سر اوپر

    جب بجلی کڑ کڑ کڑکے گی

    جب ارض خدا کے کعبے سے

    سب بت اٹھوائے جائیں گے

    ہم اہل صفا مردود حرم

    مسند پہ بٹھائے جائیں گے

    سب تاج اچھالے جائیں گے

    سب تخت گرائے جائیں گے

    بس نام رہے گا اللہ کا

    جو غائب بھی ہے حاضر بھی

    جو منظر بھی ہے ناظر بھی

    اٹھے گا انا الحق کا نعرہ

    جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو

    اور راج کرے گی خلق خدا

    جو میں بھی ہوں اور تم بھی ہو
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    فیض قیامت کے سلسلے میں قرآنی تصورات اور قرآنی مضامین استعمال کرتے ہیں ،
    لیکن ان کے نزدیک روز قیامت وہ دن نہیں ہے ، جس کا ذکر قرآن و سنت نہیں ہے ، جس پر ساری دنیا کے سارے مسلمان ایمان لاتے ہیں۔ جس دن ہر انسان کا حساب و کتاب ہوگا۔ جس کے بارے میں قرآن کہتا ہے۔ لا ظلم الیوم ( آج کوئی ظلم نہ ہوگا)۔
    سو فی صد انصاف ہوگا۔
    بچپن سے موت تک کے چھوٹے بڑے اعمال ، اعمال ناموں میں درج ہوں گے ،
    بلکہ
    فیض کے نزدیک " وہ دن " سے مراد ، اشتراکی انقلاب کا دن ہے۔
    فیض کے نزدیک
    و تکون الجبال کالعھن المنفوش سے مراد ، دنیا کے سارے پہاڑ نہیں(جیسا کہ دین کہتا ہے )، فیض کے نزدیک سرمایہ دارانہ نظام کے "ظلم و ستم کے کوہ گراں" ہیں۔
    بس نام رہے گا اللہ کا۔

    فیض کے نزدیک " اللہ" سے مراد " باغی محکوم انقلابی عوام " ہیں۔
    اس تعبیر کے لیے انہوں نے " کفریہ تصوف کا سہارا لیا ہے۔
    " بت " سے مراد ، فیض کے نزدیک اصنام و اوثان نہیں ، جیسا کہ قرآن و سنت کی تصریحات ہیں ، بلکہ
    بت سے مراد سرمایہ دارانہ نظام کے بت ہیں۔

    وہ کہتے ہیں کہ " منظر" اور " ناظر " ایک ہی ہیں۔
    غالب نے بھی اس عقیدے پر حیرانی کا اظہار کیا تھا۔
    اصل شہود و شاہد و مشہود ایک ہے۔
    حیراں ہوں پھر مشاہدہ ہے کس حساب میں ؟
    یعنی عوام ہی خدا ہیں۔
    ان ہی کا نام باقی رہے گا۔

    فیض کمیونسٹ ہوتے ہوئے " انا الحق " میں ہی خدا ہوں ۔
    اور میں ہی ٹہرنے والا ہوں۔ اور باقی رہوں گا کی بات کرتے ہیں۔
    جب کہ قرآن کہتا ہے
    " کل من علیھا فان۔
    و یبقی وجہ ربک ذو الجلال والاکرام
    سب کے لیے فنا ہے
    بقا صرف اللہ کے لیے ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔
    حسین بن منصور حلاج ایک مجوسی تھا۔ بصرہ اور کوفہ کے درمیان واقع شہر واسط کا رہنے والا تھا۔
    اس نے اسلام قبول کیا۔ ابتداء میں حالت اچھی تھی۔
    پھر گمراہ صوفیوں کی صحبت میں رہ کر بگڑا۔
    اس کی خرافات سن کر
    حضرت جنید نے اس کے قتل کی پیش گوئی کی تھی۔
    دو بار گرفتار ہوا۔
    علماء نے تفتیش کی۔ پہلے چھوڑ دیا گیا۔ دوبارہ تفتیش ہوئی۔
    پھر دوسری گرفتاری کے بعد 309 ھ میں قتل کیا گیا۔
    انا الحق ہم بھی ہیں اور تم بھی ہو۔
    اللہ اور مخلوق ایک ہی ہیں۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ظالم مودی اور اس کے ہم خیال اس نظم پرناراض ہیں کہ اس سے ان کے بتوں کی بے عزتی ہورہی ہے۔
    اللہ کا نام باقی رہے گا۔
    مودی کو کیا علم کہ شاعر تو ان کے ہندو مذھب ہی کی بات کررہا ہے، جہاں ہمہ اوست کی تعلیمات ہیں۔

    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    پکے دہریے اور ملحد شاعر جاوید اختر سمجھا رہے ہیں کہ
    تم نے فیض کی نظم کو سمجھا ہی نہیں۔
    فیض تو ہندوؤں کے دوست تھے۔
    وہ تو جواہر لال نہرو کی طرح دہری عقیدہ رکھتے تھے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ہے نہ دلچسپ صورتحال ؟
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔
    بخآری کی حدیث ہے
    انما الاعمال بالخواتیم
    " اعمال کا دار و مدار آخری اعمال پر ہے۔
    فیض پکے دہریے اور کمیونسٹ تھے۔
    ان کی شاعری اسی کا پرچار کرتی ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    لیکن فیض کے نواسے کی گواہی ہے کہ 1984ء میں انتقال سے دو چار دن پہلے مسجد گئے اور عصر کی نماز پڑھائی۔
    اللہ ہی جانتا ہے کہ ان کی موت کس عقیدے پر ہوئی۔
    اغلب یہی ہے کہ فیض کی موت اسلام پر ہوئی ہوگی۔
    اگر اسلام پر ہوئی ہے تو ہماری دعا ہے کہ اللہ ان کی مغفرت فرمائے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    ان فی ذلک عبرة لمن یخشی
    اس میں ہمارے لبرل دوستوں کے لیے عبرت کا سامان ہے۔
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اچھا فارمولا ہے نا ؟

    تصوف + انا الحق + کمیونزم + لبرلزم + ترقی پسندی= مسلمانی

    مسلمانوں کو گمراہ کرنے کے لیے اس سے بہتر کوئی اور نسخہ بھی ہے کہ انہیں قرآن و سنت کے صحیح فہم اور تعبیرات صحابہ و تابعین و تبع تابعین سے محروم کرکے نئی صوفیانہ اشتراکی دانش کشید کی جائے ؟
    ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    خلیل الرحمن چشتی
    4 جنوری 2020 ء
    اسلام آباد
     
    ابو ابراهيم نے شکریہ ادا کیا ہے.

اردو مجلس کو دوسروں تک پہنچائیں